Sections
< All Topics
Print

19A. Hazrat Taoos Bin Kaisan (رحمہ اللہ)

Hazrat Taoos Bin Kaisan (رحمہ اللہ)

Hamrah Muhammad Bin Yousuf Saqfi

 

Main ne Taoos Bin Kaisan jaisa nidar, Jayyed Aalim koi na dekha. 

(Umar Bin Deenaar)

Woh hidayat kay darakhshandah sitaaron mein jagmagaaya. Nooraani kirnon ne usay apne jalu mein liya, Dil mein noor, Zubaan peh noor, Upar noor, Niche noor, Daayen noor, Baayen noor. Zindagi bhar noor un kay aage raqsaan raha.


Hazrat Muhammad (ﷺ) key madarsay se faraaghat haasil ki aur Ilm-o-Amal kay a’alaa maqaam par fayez huye, Imaan ki pukhtagi, Baat ki sadaaqat, Faani duniya se beraghbati, Razaye Ilaahi kay liye mar mitne aur haq ki baat Babaang-e-Dahl kehne mein sahaaba kay Naqsh-e-Qadam par gaamzan thay. Muhammadi Madarsah ne usey yeh ta’leem di keh deen khair khwahi ka naam hai, Woh khair khwahi Allah ta’ala, us ki kitaab, Us kay Rasool, Musalmaan hukmaraanon aur Awaamun naas kay liye hai, Tajarbay ne usey yeh bataaya keh islaah ki ibtada hukmaraanon se hoti hai aur unhein par intehaa.

Hukmaran agar durust ho jaye to ri’aaya bhi durust ho jaati hai, Agar hukmaraan kharaab ho jaye to ri’aaya ka sanwarnaa bohat mushkil ho jaata hai. Yeh hain Zakwaan Bin Kaisan (علیہ الرحمة) jin ka laqab Taoos thaa, Unhein yeh laqab is binaa par diya gaya keh woh haqiqtan apne daur mein tamaam Ulmaa se mumtaaz thay, jis tarah mor tamaam parindon mein apne Husan-o-Jamaal ki wajah se mumtaaz hota hai.


Taoos Bin Kaisan Yaman kay rehne waale thay, un dinon Yaman ka governor Hajjaj Bin Yousuf ka Bhai Muhammad Bin Yousuf Saqfi tha. Hajjaj Bin Yousuf ne Hazrat Abdullah Bin Zubair (رضي الله عنه) ki Tahreek-e-Khilaafat ko kuchal kar pure Hijaaz aur Gird-o-Nawah par apni giraft mazboot kar li thi, Saare ilaaqay mein Ro’ab-o-Dabdabah aur Shaan-o-Shoquat qaaim ho jaane kay ba’ad us ne apne bhai Muhammad Bin Yousuf ko Yaman ka governor muqarrar kar kay bheja, Us mein apne bhai Hajjaj ki bohat si burayian to paai jaati thein lekin us ki kisi bhi khoobi se aaraasta na thaa.


Mousam-e-Sarma kay aik khanak din subah saveray Hazrat Taoos Bin Kaisan Wahab Bin Manabbah kay hamrah governor Muhammad Bin Yousuf Saqfi se milne gaye, Diwaan mein pehle hi bohat se log us kay saamne baithay huye thay. Hazrat Taoos ne aate hi Waa’z-o-Nasihat shuru kar di, Governor ne apne aik darbaan ko hukm diya keh aik qeemti aur faakhirana jubbah laao. Aur is waa’z mehmaan kay kandhon par daal do. Darbaan ne shaahi hukm ki taa’meel karte huye aik qeemti aalishaan jubbah Hazrat Taoos kay kandhon par daal diya, Lekin unhon ne kamaal hikmat amli ka muzaahira karte huye Waa’z-o-Nasihat kay dauraan apne kandhon ko jhatka dena shuru kar diya, Jis se dheere dheere jubbah kandhon se sarakta hua niche gir gaya.

Aap usey wahin chod kar darbaar se chale gaye. Aur usey dekha tak nahi jaise tabiyat par us ka wujood bohat giraan guzra ho. Beniyaazi ka yeh manzar dekh kar governor Warta-e-Hairat mein pad gaya. Darbaarion ki maujoodgi mein aik waa’z kay haathon apni subki se sharmindah hua. Ghussey se chehre ka rang surkh ho gaya lekin zubaan se kuch na kaha.

Jab Taoos aur us kay saathi majlis se bahri gaye to us ne Taoos se kaha: Bakhuda! Hamein governor ko ghussa dilaane ki chandaa zarurat na thi, Agar aap qeemti shaahi jabay ka tohfah qabool kar lete to kya harj tha, Agar aap usey apne paas nahi rakhna chahte thay to usey bech kar fuqraa aur masaakin ki madad kar dete.

Hazrat Taoos bole aap mujhe yeh kaisa mashwara de rahe hain? Agar aaj main usey qabool kar leta aur fuqraa aur masaakin mein ise taqseem bhi kar deta to kal Ulama apne hukmaraanon se tahaaif qabool karne kay liye yeh daleel pesh karte keh Taoos ne bhi to tohfah qabool kar liya tha lekin woh fuqraa aur masaakin mein taqseem karne ki bajaye khud apne masraf mein laate.


Yaman kay governor Muhammad Bin Yousuf ne ise apni toheen samjha, Aur Taoos se badlah lene kay pukhta irada kar liya. Us ne unhein shikaar karne kay liye aik khatarnaak jaal phainka, Woh yeh keh sone kay saat sau deenaar thaili mein band kiye aur apne darbaari qaarindon mein say aik nihayat hi zaheen hoshiyar aur Chaak-o-Chuband shakhs ko bula kar kaha: Keh yeh deenaaron ki thaili Taoos kay sapurd kar aaye. Agar woh isey qabool karne say inkaar kare to har heela istemaal karna jis se woh thaili lene kay liye tayyar ho jaye. Agar Tum is mission mein kamyaab ho gaye aur us ne yeh thaili qabool kar li to main tujhe apna muqarrab bana loonga. Aur tujhe In’aam-o-Karam aur Tal’at-e-Fakhrah se nawaazunga. Woh shakhs thaili le kar us basti ki taraf rawaana hua jis mein Hazrat Taoos rehaish pazeer thay. Yeh basti Yaman kay daar ul hukumat san’aa kay qareeb hi waqe’ thi, Yeh shakhs wahan pohncha Hazrat Taoos kay paas haazir ho kar salaam arz kiya aur nihayat hi modbaana andaaz mein sapaas guzaar hua keh Janaab-e-Waala governor ne yeh kuch raqam aap kay liye bheji hai.

Isey Sharf-e-Qabooliyat bakhsh kar shukriya ka mouqa dain. Us ne badi beniyaazi se farmaaya: Mujhe is ki zaroorat nahi. Us ne yeh thaili dene kay liye har harbah Istemaal kiya lekin unho ne usey qabool karne se qat’an inkaar kar diya, Ab qaasid bebasi kay aalam mein baitha hai. Beniyaazi dekh kar Warta-e-Hairat mein hai. Apni nakaami se Hairaan-o-Pashemaan tik tiki lagaye musalsal unhein dekhe ja raha hai.

Jab us ne dekha keh Hazrat Taoos ki tawajjo kisi doosri taraf ho chuki hai woh chupke se utha unse aankh bacha kar thaili diwaar kay aik taaqche mein rakhi aur chala gaya, Governor ko jaa kar bataaya keh Taoos ne thaili qabool kar li hai. Woh yeh sun kar bada khush hua keh ab hamaare daao mein shikaar phansa. Ab us se puchoonga keh janaab ab aap ki beniyaazi kidhar gayi? Kya mahez darbaar mein mujhe ruswa karne kay liye taqway ka dhong racha rakha thaa, Lekin woh khaamosh raha aur us raaz se usey aagah na kiya, Jab chand din guzar gaye to darbaar kay do qaabil aitemaad kaarindon ko Taoos ki taraf rawaana kiya aur un kay hamrah us shakhs ko bhi bheja jo pehle unhein thaili de aaya tha, Unhein yeh hukam diya keh Taoos se mera salaam kehna, Aur unhein yeh paighaam dena keh chand din pehle governor ki taraf se deenaaron ki aik thaili ghalti se aap kay paas aagayi, Darasal woh kisi aur kay liye thi aur qaasid ghalti se aap kay sapurd kar gaya, Woh baraaye meherbaani wapis lotaa dijiye takeh usey asal maqaam tak pohnchaa diya jaye. Hazrat Taoos ne yeh sun kar farmaaya: Main ne koi thaili li hi nahi usey lotaaon kaise? Dono ne baik zubaan kaha aap ne chand din pehle yeh thaili wasool ki thi aur yeh shakhs aap ko thaili de kar gaya hai.

Hazrat Taoos ne ghazabnaak nigaahon se us ki taraf dekha aur ghazabnaak lehje mein us se pucha:

Are bataao kya main ne koi cheez tujh se li hai?

Yeh manzar dekh kar us shakhs kay jism mein kapkapi taari ho gayi aur kehne laga hargiz nahi balkeh main ne aap se aankh bacha kar thaili us taaqche mein rakh di thi. In’aam-o-Qurb kay laalach mein governor ko yeh report di keh aap ne yeh thaili qabool kar li hai aap ka is mein koi qasoor nahi yeh meri ghalati hai jis ka main khule dil se aiteraaf karta hoon.

Aap ne farmaaya: Jaao us taaqche mein jaa kar dekho woh dono sarkaari numaiynde kya dekhte hain keh taaqche mein aik thaili padi hui hai aur makdi ne us par jaala bun rakha hai. Unho ne woh thaili pakdi aur governor kay paas wapis chale gaye, Woh yeh rawadaad sun kar Angusht-e-Badnidan reh gaya.


Allah ta’ala ne bhi Yaman kay governor ko Sar-e-Aam ruswa karne aur chalaaki ka badlah chukane ki thaan li.

Bhala yeh waqiya kis tarah pesh aaya?

Hazrat Taoos Bin Kaisan bayaan karte hain:

Jab main Hajj karne kay liye Makkah mu’azzmah gaya, Hajjaj Bin Yousuf bhi wahan tha. Meri maujoodgi ka sun kar mulaqaat kay liye us ne mujhe bulaaya, Main us kay diwaan mein pohcha, Us ne mujhe Khush aamdeed kaha, Aur apne qareeb bithaya, Aazaad majlis ka khayaal karte huye us ne gaao takiyah mujhe pesh kiya takeh main taik lagaa kar aaram se baith sakun. Phir woh mujh se Hajj kay masaail puchne laga, Ham Mahw-e-Guftagu thay keh Hajjaj ne kisi Talbiah kehne waale ki sureeli awaaz suni us ki awaaz mein aik jaadu tha. Har sun’ne waala us ki taraf besaakhta mutawajjah ho jaata. Hajjaj ne kaha is shakhs ko mere paas laao. Usey laaya gaya.

Hajjaj ne pucha tum kaun ho?

Us ne kaha main aik musalmaan hoon.

Hajjaj ne kaha: Meri muraad yeh hai keh tum kahan kay rehne waale ho?

Us ne kaha: Main Yaman ka bashindah hoon.

Hajjaj ne pucha: Apne governor ko kaisa paaya?

Us ne kaha: Woh bada mota taaza hai, Faakhirana libaas pehnta hai, Baar baar libaas tabdeel karta hai, Ghode par sawaar kabhi aata hai kabhi jaata hai.

Hajjaj ne kaha: Main ne tum se yeh nahi pucha.

Us ne kaha: Phir aap ne kya pucha hai?

Hajjaj ne kaha: Main us kay kirdaar aur ikhlaaq kay mut’alliq puchta hoon.

Us ne kaha: Woh bada hi zaalim jaabir hai. Makhlooq ki ita’at karne waala aur apne Khaaliq ka nafarmaan hai.

Yeh jawaab sun kar Hajjaj Bin Yousuf ka chehra ghussay ki wajah se surkh ho gaya.

Hajjaj ne us shakhs se kaha tujhe yeh sab kehne ki jurrat kaise hui? Kya jaante ho governor ka mere saath kiya rishtah hai?

Us ne badi hi beniyaazi se kaha:

Us ka qurb tujh se aur mera qurb Allah ta’ala se hai. Kya tum us kay rishtay ko mere is is talluq se bada samjhte ho?

Suno: Main Allah kay is azeem ghar ka mehmaan hoon. Main us kay Nabi علیہ السلام ki tasdeeq karne waala hoon. Aur main us ka woh qarz chukane waala hoon jo deeni aitbaar se mere zimmah hai. Yeh sun kar Hajjaj khamosh ho gaya. Hazrat Taoos bayaan kartay hain keh woh yeh jurrat mandaana baat karte hi baghair ijaazat liye wahan se chala gaya. Main bhi us kay peeche ho liya, Main ne apne dil mein kaha, yeh shakhsiyat bohat naik hai.

Is se mulaqaat karni chahiye kahin yeh logon ki bheed ki wajah se nigahon se uojhal na ho jaye lehazah main us kay peeche ho liya. Main ne dekha keh woh Ghilaaf-e-Ka’bah se chimta hua Allah kay Huzoor Aah-o-Zaari karte huye keh raha hai.

Ilaahi: Main teri panaah chahta hoon.

Ilaahi: Main tere Hazoor gunahon ki bakhshish kay sath iltijaa karta hoon.

Ilaahi: Apni sakhaawat kay sadqe aur apni kafaalat kay tufail bakheelon ki nok jhonk aur rok tok se mehfooz farmaa. Aur jo kuch duniya waalon kay qabzay mein hai us se beniyaaz kar de.

Ilaahi: Main teri bargaah main Khushhaali-o-Farawaani ka talab gaar hoon aur teri rehmat ka sawaali hoon.

Ilaahi: Main Teri jaanib se naazil kardah Khair-o-Barkat ka faqeer hoon. Phir tawaaf karne waalon ka aik raila usey bahaa le gaya. Aur palak jhapakte hi usey meri aankhon se uojhal kar diya.

Mujhe yaqeen ho gaya keh ab us se mulaqaat nahi ho sakegi lekin phir bhi main ne Maidan-e-Arafaat mein shaam kay waqat usey dekha keh logon kay shaana bashaana Muzdalifah ki taraf jaa raha hai. Main us kay qareeb hua woh Allah se Mahw-e-Guftagu tha, aur keh raha tha:

Ilaahi: Agar tu ne mera Hajj qabool na kiya to mera kya banega?

Ilaahi: Is Mubarak safar kay Ajar-o-Sawaab se mujhe mehroom na karna.

Phir woh raat ki tareeki mein meri nigaahon se uojhal ho gaya. Jab main talaash basiyar kay bawajood usey na dekh saka. Us ki mulaqaat se mayoos ho gaya to main apne Allah se iltijaa karne laga.

Ilaahi: Meri aur us shakhs ki du’aa ko qabool farmaa.

Ilaahi: Meri aur is ki ummidon ko baar laana.

Ilaahi: Mujhe aur usey saabit qadam rakhna jis din aksar logon kay qadam dagmagaa rahe honge. Aye karam karne waale Khudaya! Meri aur us ki mulaqaat Hauz-e-Kausar par karna.


Ab ham aayinda satoor mein Jaleelul Qadar tab’aee Hazrat Zakwaan Bin Kaisan jo Taoos kay laqab se mashoor thay, Ki zindagi kay mazeed chand dilchasp halaat bayaan karenge.

Allah un par raazi aur Allah ne unhein raazi kar diya. Aur unhein Bahisht-e-Bareen mein jagah ataa ki.

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

حضرت طاووس بن کیسان رضی اللّٰہ عنہ

ہمراہ محمد بن یوسف ثقفی

میں نے طاووس بن کیسان جیسا نڈر جید عالم کوئی نہ دیکھا-

(عمر و بن دینار)

 

وہ ہدایت کے درخشندہ ستاروں میں جگمگایا نورانی کرنوں نے اسے اپنے جلو میں لیا دل میں نور زباں پہ نور اوپر نور نیچے نور دائیں نور بائیں نور اور زندگی بھر نور ان کے آگے رقصاں رہا –


حضرت محمد ﷺ کے مدرسہ سے فراغت حاصل کی اور علم و عمل کے اعلی مقام پر فائز ہوئے, ایمان کی پختگی بات کی صداقت, فانی دنیا سے بے رغبتی, رضائے الٰہی کے لیے مر مٹنے اور حق بات ببانگ دہل کہنے میں صحابہ کے نقش قدم پر گامزن تھے – محمدی مدرسہ نے اسے یہ تعلیم دی کہ دین خیر خواہی کا نام ہے, وہ خیر خواہی اللّٰہ تعالیٰ, اسکی کتاب اس کے رسول, مسلمان حکمرانوں اور عوام الناس کے لیے ہے, تجربے نے اسے یہ بتایا کہ اصلاح کی ابتداء حکمرانوں سے ہوتی ہے اور انہیں پر انتہا –
حکمران اگر درست ہو جائے تو رعایا بھی درست ہو جاتی ہے, اگر حکمران خراب ہو جائے تو رعایا کا سنورنا بہت مشکل ہو جاتا ہے یہ ہیں ذکوان بن کیسانؒ علیہ الرحمۃ جن کا لقب طاووس تھا, انہیں یہ لقب اس بنا پر دیا گیا کہ وہ حقیقتاً اپنے دور میں تمام علماء سے ممتاز تھے جس طرح مور تمام پرندوں میں اپنے حسن و جمال کی وجہ سے ممتاز ہوتا ہے –


طاووس بن کیسان یمن کے رہنے والے تھے ان دنوں یمن کا گورنر حجاج بن یوسف کا بھائی محمد بن یوسف ثقفی تھا- حجاج بن یوسف نے حضرت عبد اللّٰہ بن زبیر رضی اللّٰہ عنہ کی تحریک خلافت کو کچل کر پورے حجاز اور گردونواح پر اپنی گرفت مضبوط کر لی تھی, سارے علاقے میں رعب و دبدبہ اور شان و شوکت قائم ہو جانے کے بعد اس نے اپنے بھائی محمد بن یوسف کو یمن کا گورنر مقرر کر کے بھیجا اس میں اپنے بھائی حجاج کی بہت سی برائیاں تو پائی جاتی تھیں لیکن اس کی کسی بھی خوبی سے آراستہ نہ تھا –


موسم سرما کے ایک خشک دن صبح سویرے حضرت طاؤوس بن کیسان وہب بن منبہ کے ہمراہ یمن کے گورنر محمد بن یوسف ثقفی سے ملنے گئے دیوان میں پہلے ہی بہت سے لوگ اس کے سامنے بیٹھے ہوئے تھے حضرت طاووس نے آتے ہی وعظ و نصیحت شروع کر دی, گورنر نے اپنے ایک دربان کو حکم دیا کہ ایک قیمتی اور فاخزانہ جبہ لاو- اور اس واعظ مہمان کے کندھوں پر ڈال دو- دربان نے شاہی حکم کی تعمیل کرتے ہوئے ایک قیمتی عالیشان جبہ حضرت طاووس کے کندھوں پر ڈال دیا, لیکن انہوں نے کمال حکمت عملی کا مظاہرہ کرتے ہوئے وعظ و نصیحت کے دوران اپنے کندھوں کو جھٹکا دینا شروع کیا, جس سے دھیرے دھیرے جبہ کندھوں سے سر کتا ہوا نیچے گر گیا – آپ اسے وہیں چھوڑ کر دربار سے باہر چلے گئے -اور اسے دیکھا تک نہیں جیسے طبیعت پر اس کا وجود بہت گراں گزرا ہو – بے نیازی کا یہ منظر دیکھ کر گورنر ورطہ حیرت میں پڑ گیا – درباریوں کی موجودگی میں ایک واعظ کے ہاتھوں اپنی سبکی سے شرمندہ ہوا – غصے سے چہرے کا رنگ سرخ ہو گیا لیکن زبان سے کچھ نہ کہا : جب طاووس اور اس کے ساتھی مجلس سے باہر گئے تو اس نے طاووس سے کہا بخدا ہمیں گورنر کو غصہ دلانے کی چنداں ضرورت نہ تھی, اگر آپ قیمتی شاہی جبے کا تحقہ قبول کر لیتے تو کیا حرج تھا, اگر آپ اسے اپنے پاس رکھنا نہیں چاہتے تھے, تو اسے بیچ کر فقراء مساکین کی مدد کر دیتے – حضرت طاووس بولے آپ مجھے یہ کیسا مشورہ دے رہے ہیں -اگر آج میں اسے قبول کر لیتا اور فقراء و مساکین میں اسے تقسیم بھی کر دیتا تو کل علماء اپنے حکمرانوں سے تحائف قبول کرنے کے لیے یہ دلیل پیش کرتے کہ طاووس نے بھی تو تحفہ قبول کیا تھا لیکن وہ فقراء و مساکین میں تقسیم کرنے کی بجائے خود اپنے مصروف میں لاتے-


یمن کے گورنر محمد بن یوسف نے اسے اپنی توہین سمجھا, اور طاووس سے بدلہ لینے کا پختہ ارادہ کر لیا -اس نے انہیں شکار کرنے کے لیے ایک خطرناک جال پھینکا, وہ یہ کہ سونے کے سات سو دینار تھیلی میں بند کیے اور اپنے درباری کارندوں میں سے ایک نہایت ہی ذہین ہوشیار اور چاق و چوبند شخص کو بلا کر کہا : کہ یہ دیناروں کی تھیلی طاووس کو سپرد کر آئے – اگر وہ اسے قبول کرنے سے انکار کرے تو ہر حلیہ استعمال کرنا جس سے وہ یہ تھیلی لینے کے لیے تیار ہو جائے – اگر تم اس مشن میں کامیاب ہو گئے اور اس نے یہ تھیلی قبول کر لی تو میں تجھے اپنا مقرب بنالوں گا – اور تجھے انعام و اکرام اور طلعت فاخرہ سے نوازوں گا – وہ شخص تھیلی لے کر اس بستی کی طرف روانہ ہوا جس میں حضرت طاووس رہائش پذیر تھے اور یہ بستی یمن کے دارالحکومت صنعاغہ کے قریب ہی واقع تھی, یہ شخص وہاں پہنچا حضرت طاووس کے پاس حاضر ہو کر سلام عرض کیا اور نہایت ہی مودبانہ انداز میں سپاس گزار ہوا کہ جناب والا گورنر نے یہ کچھ رقم آپکے لیے بھیجی ہے –
اسے شرف قبولیت بخش کر شکریہ کا موقعہ دیں – آپ نے بڑی بے نیازی سے فرمایا : مجھے اس کی ضرورت نہیں – اس نے یہ تھیلی دینے کے لیے ہر حربہ استعمال کیا, لیکن انہوں نے اسے قبول کرنے سے قطعا انکار کر دیا, اب قاصد بے بسی کے عالم میں بیٹھا ہے – بے نیازی دیکھ کر ورطہ حیرت میں ہے- اپنی ناکامی سے حیران و پریشان ٹکٹکی لگائے مسلسل انہیں دیکھے جارہا ہے –


جب اس نے دیکھا کہ حضرت طاؤوس کی توجہ کسی دوسری طرف ہو چکی ہے وہ چپکے سے اٹھا ان سے آنکھ بچا کر تھیلی دیوار کے ایک طاقچے میں رکھی اور چلا گیا, گورنر کو جا کر بتایا کہ طاووس نے تھیلی قبول کر لی ہے – وہ یہ خبر سن کر بڑا خوش ہوا کہ اب ہمارے دام میں شکار پھنسا اب اس سے پوچھوں گا کہ جناب اب آپ کی بے نیازی کدھر گئی ‘کیا محض دربار میں مجھے رسوا کرنے کے لیے تقوے کا ڈھونگ رچا رکھا تھا, لیکن وہ خاموش رہا اور اس راز سے اسے آگاہ نہ کیا جب چند دن گزر گئے – تو دربار کے دو قابل اعتبار کارندوں کو طاؤوس کی طرف روانہ کیا اور انکے ہمراہ اس شخص کو بھی بھیجا جو پہلے انہیں تھیلی دے آیا تھا, انہیں یہ حکم دیا کہ طاووس سے میرا سلام قبول کہنا, اور انہیں یہ پیغام دینا کہ چند دن پہلے گورنر کی طرف سے دیناروں کی ایک تھیلی غلطی سے آپکے پاس گئی, دراصل وہ کسی اور کیلئے تھی اور قاصد غلطی سے آپکے سپرد کر گیا وہ برائے مہربانی واپس لوٹا دیجئے تاکہ اسے اصل مقام تک پہنچا دیا جائے حضرت طاؤوس نے یہ سن کر فرمایا :
میں نے کوئی تھیلی لی ہی نہیں اسے لوٹاوں کیسے, دونوں نے بیک زبان کہا آپ نے چند دن پہلے یہ تھیلی وصول کی تھی اور یہ شخص آپکو تھیلی دے کر گیا ہے –
حضرت طاؤوس نے غضب آلودہ نگاہوں سے اس کی طرف دیکھا اور غضبناک لہجے میں اس سے پوچھا :
ارے بتاؤ کیا میں نے کوئی چیز تجھ سے لی ہے ؟
یہ منظر دیکھ کر اس شخص کے جسم میں کپکپی طاری ہو گئی اور کہنے لگا ہر گز نہیں بلکہ میں نے آپ سے آنکھ بچا کر تھیلی اس طاقچے میں رکھ دی تھی انعام اور قرب کے لالچ میں گورنر کو جا کر یہ رپورٹ دی کہ آپ نے یہ تھیلی قبول کر لی ہے آپ کا اس میں کوئی قصور نہیں یہ میری غلطی ہے جس کا میں کھلے دل سے اعتراف کرتا ہوں –
آپ نے فرمایا : جاؤ اس طاقچے میں جا کر دیکھو وہ دونوں سرکاری نمائندے کیا دیکھتے ہیں کہ طاقچے میں ایک تھیلی پڑی ہوئی ہے اور مکڑی نے اس پر جالا بن رکھا ہے – انہوں نے وہ تھیلی پکڑی اور گورنر کے پاس واپس چلے گئے وہ یہ روئیداد سن کر انگشت بدنداں رہ گیا –


اللّٰہ تعالیٰ نے بھی یمن کے گورنر کو سر عام رسوا کرنے اور چالا کی کا بدلہ چکانے کی ٹھان لی –
بھلا یہ واقعہ کس طرح پیش آیا؟
حضرت طاؤوس بن کیسان بیان کرتے ہیں –
جب میں حج کرنے کے لیے مکہ معظمہ گیا, حجاج بن یوسف بھی وہاں موجود تھا – میری موجودگی کا سن کر ملاقات کے لیے اس نے مجھے بلایا, میں اس کے دیوان میں پہنچا, اس نے مجھے خوش آمدید کہا, اور اپنے قریب بٹھایا آزاد مجلس کا خیال کرتے ہوئے اس نے گاو تکیہ مجھے پیش کیا تا کہ میں ٹیک لگا کر آرام سے بیٹھ سکوں- پھر وہ مجھ سے حج کے مسائل پوچھنے لگا, ہم محو گفتگو تھے کہ حجاج نے کسی تلبیہ کہنے والے کی سریلی آواز سنی اس کی آواز میں ایک جادو تھا- ہر سننے والا اس کی طرف بے ساختہ متوجہ ہو جاتا حجاج نے کہا اس شخص کو میرے پاس لاو اسے لایا گیا –
حجاج نے پوچھا تم کون ہو ؟
اس نے کہا میں ایک مسلمان ہوں-
حجاج نے کہا میری مراد یہ ہے کہ تم کہاں کے رہنے والے ہو-
اس نے کہا میں یمن کا باشندہ ہوں-
حجاج نے پوچھا اپنے گورنر کو کیسا پایا؟
اس نے کہا وہ بڑا موٹا تازہ ہے فاخرانہ لباس پہنتا ہے, بار بار لباس

گھوڑے پر سوار کبھی آتا ہے کبھی جاتا ہے۔ اس کے کیا کہنے۔
حجاج نے کہا میں نے تم سے یہ نہیں پوچھا:
اس نے کہا : پھر آپ نے کیا پوچھا ہے ؟
حجاج نے کہا میں اس کے کردار اور اخلاق کے متعلق پوچھتا ہوں –
اس نے کہا, وہ بڑا ہی ظالم جابر ہے. مخلوق کی اطاعت کرنے والا اور اپنے خالق کا نافرمان ہے.
یہ جواب سن کر حجاج بن یوسف کا چہرہ غصے کی وجہ سے سرخ ہو گیا-
حجاج نے اس شخص سے کہا تجھے یہ سب کچھ کہنے کی جرات کیسے ہوئی؟ کیا جانتے ہو گورنر کا میرے ساتھ کیا رشتہ ہے؟
اس نے بڑی ہی بے نیازی سے کہا:
اسکا قرب تجھ سے اور میرا قرب اللّٰہ تعالیٰ سے ہے. کیا تم اس کے رشتے کو میرے اس تعلق سے بڑا سمجھتے ہو؟
سنو: میں اللّٰہ کے اس عظیم گھر کا مہمان ہوں . میں اس کے نبی علیہ السلام کی تصدیق کرنے والا ہوں . اور میں اس کا وہ قرض چکانے والا ہوں جو دینی اعتبار سے میرے ذمے ہے. یہ سن کر حجاج خاموش ہو گیا – حضرت طاؤوس بیان کرتے ہیں کہ وہ جرات مندانہ بات کرتے ہی بغیر اجازت لیے وہاں سے چلا گیا – میں ابھی اس کے پیچھے ہو لیا, میں نے اپنے دل میں کہا, یہ شخص بہت نیک ہے – اس سے ملاقات کرنی چاہئے کہیں یہ لوگوں کی بھیڑ کی وجہ سے نگاہوں سے اوجھل نہ ہو جائے –

لہذا میں اس کے پیچھے ہو لیا-
میں نے دیکھا کہ وہ غلاف کعبہ سے چمٹا ہوا اللّٰہ کے حضور آہ وزاری کرتے, ہوئے کہہ رہا ہے –
الٰہی : میں تیری پناہ چاہتا ہوں-
الٰہی : میں تیرے حضور گناہوں کی بخشش کے لیے التجا کرتا ہوں –
الٰہی : اپنی سخاوت کے صدقے اور اپنی کفالت کے طفیل مجھے بخیلوں کی نوک جھونک اور روک ٹوک سے محفوظ فرما- اور جو کچھ دنیا والوں کے قبضے میں ہے اس سے بے نیاز کر دے-
الٰہی : میں تیری بارگاہ میں خوشحالی و فراوانی کا طلبگار ہوں اور تیری رحمت کا سوالی ہوں-
الٰہی : میں تیری جانب سے نازل کردہ خیرو برکت کا فقیر ہوں پھر طواف کرنے والوں کا ایک ریلا اسے بہالے گیا – اور پلک جھپکتے ہی اسے میری آنکھوں سے اوجھل کر دیا –
مجھے یقین ہو گیا کہ اب اس سے ملاقات نہیں ہو سکے گی لیکن پھر میں نے میدان عرفات میں شام کے وقت اسے دیکھا کہ لوگوں کے شانہ بشانہ مزدلفہ کی طرف جا رہا ہے – میں اس کے قریب ہوا وہ اپنے اللّٰہ سے محو گفتگو تھا, اور کہہ رہا تھا –
الٰہی : اگر تو نے میرا حج قبول نہ کیا تو میرا کیا بنے گا ؟
الٰہی : اس مبارک سفر کے اجروثواب سے مجھے محروم نہ کرنا-

پھر وہ رات کی تاریکی میں میری نگاہوں سے اوجھل ہو گیا – جب میں تلاش بسیار کے باوجود اسے نہ دیکھ سکا – اس کی ملاقات سے مایوس ہو گیا,
تو میں اپنے اللّٰہ سے التجا کرنے لگا-
الٰہی : میری اور اس شخص کی دعا کو قبول فرما –
الٰہی میری اور اس کی امیدوں کو برلانا-
الٰہی مجھے اور اسے قیامت کے دن ثابت قدم رکھنا جس دن اکثر لوگوں کے قدم ڈگمگا رہے ہونگے – اے کرم کرنے والے خدایا میری اور اس کی ملاقات حوض کوثر پر کرنا-


اب ہم آئندہ سطور میں جلیل القدر تابعی حضرت ذکوان بن کیسان جو طاؤوس کے لقب سے مشور تھے کی زندگی کے مزید چند دلچسپ حالات بیان کریں گے – اللّٰہ ان پر راضی اور انہیں اللّٰہ نے راضی کر دیا –
اور انہیں بہشت بریں میں جگہ عطا کی –

 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر

 

Table of Contents