Sections
< All Topics
Print

20. Hazrat Qasim Bin Muhammad Bin Abu Bakar Siddique (رحمہ اللہ )

Hazrat Qasim Bin Muhammad Bin Abu Bakar Siddique (رحمہ اللہ)

Agar meray ikhtiyar mein hota to Qasim Bin Muhammad رحمہ اللہ ko Khalifah muqarrar kar deta.

Umar bin Abdul Azeez (رحمہ اللہ)

Kya aap is Jaleelul qadar tab’ai kay mut’alliq jaante hain?

Yeh aik aisa nojawaan hai keh har jaanib say majd-o-sharaf is par aakar markuz ho jata h woh is tarah keh:

Us kay daada Hazrat Siddique-e-Abu Bakar (رضی اللہ عنه) hain.

Us ki walidah Iran kay aakhri hukmaraan Yazdajar ki beti hai.

Us ki phupho Umm ul momineen Hazrat Ayesha Siddiqua (رضی اللہ عنها).

In tamaam tar khasusiyaat say badh kar yeh taqwa aur ilm kay zewar say aarasta thay.

Kya is say badh kar koi aur sharf ho sakta hai keh jis kay husool kay liye log koshaan hon?

Yeh hein Qasim Bin Muhammad Bin Abu Bakar Siddique (رضی اللہ عنه)

Saat Fuqaha-e-Madinah mein sai aik……………

Apne daur kay sab say bade aalim………………

Ulama mein sab say badh kar zaheen…………..

Sab say badh kar Muttaqi-o-Parhaizgaar………..

Aaiyye in ki Dastaan-e-Hayaat kay bayaan ka aaghaz kartay hain.


Hazrat Qasim bin Muhammad (رحمہ اللہ) Ameer ul Momineen Hazrat Usman bin Afaan (رضی اللہ عنه) kay Daur-e-Khilaafat kay aakhri ayyam mein paida huye. Yeh nanha saa bacha abhi panghura jhool raha tha keh musalmaanon kay gharon par haulnaak fitnay ki tez aandhi chali.  Zahid, Abid, Zulnoorain aur raqeeq ul qalab Khalifah Hazrat Usman (رضی اللہ عنه) ko is haal mein shaheed kar diya gaya jabkeh woh sahifah aasmani Quran-e-Majeed par jhuke huye us ki tilawat kar rahe thay.

Ameer ul Momineen Hazrat Ali (رضي الله عنه) aur sar Zameen-e-Shaam kay governor Ameer Muawiyah Bin Sufiyan kay darmiyaan shahaadat Usman (رضی اللہ عنه) ki wajah say shadeed ikhtalafaat paida ho gaye.

Khoon raiz jhadapon ka aghaaz hua. Dono taraf musalmaanon ka khoon behne laga, Haulnaak aur azeeyatnaak waqiyat runoma hone lage. Is khoon Aashaam daur mein us bache aur us ki behen ko Madinah say misar muntaqil kar diya. Kyunkeh un kay abba jaan ko Ameer ul Momineen Hazrat Ali (رضي الله عنه) ne Misr ka governor muqarrar kar diya tha.

Phir is khooni fitney kay istabdaadi panje us kay abba jaan ki taraf badhe aur usey buri tarah apne shikanje mein le kar qatal kar diya.

Jab Ameer-e-muawiyah (رضی اللہ عنه) kay saathi ghaalib aaye to usey dobaara Misr say Madinah Munawwarah muntaqil kar diya gaya.


Ab yeh yateem ho chuke thay. Hazrat Qasim apne is azeeyatnaak safar ki rawadaad bayaan kartay huye farmaate hain:

Jab mere abba jaan ko Misr mein qatal kar diya gaya.

Mere chacha Abdul Rehmaan Bin Abu Bakar رحمہ اللہ tashreef laaye.

Mujhe aur meri choti behen ko god mein liya aur Madinah rawaana huye, Jab ham Madinah Munawwarah pohnche to meri phuphi Hazrat Ayesha Siddiqua رضی اللّٰہ عنها hamein chacha kay ghar say uthaa kar apne ghar le gayin aur apni nigraani mein hamaari parwarish karne lagi, Main ne un say badh kar kisi maa ya baap ko apni aulaad par shafqat karne waala na dekha.

Yeh apne haath say hamein khaana khilaati aur khud na khaatein balkeh jab khaana ham say bach jata to phir aap tanaawul kartein. Yeh hamaare sath is tarah shafqat say pesh aatein jaise doodh pilaane waali maa apne doodh peetay huye bachhay par Shafqat-o-Mohabbat nichaawar karti hai. Hamein nehlaatein, Hamary baalon mein kanghi kartein aur saaf suthray, Chamkilay, Safaid kapde pehnaatein, Hamein har waqt naiki karne ki targheeb dilaatein aur Kaar-e-Khair karne ki tarbiyat daitein aur bure kaamon say mana’ kartein aur un say baa’z rehnay ki talqeen karti rehteen.

Quran-e-Majeed ki aayaat kay zariye Hamein us aasaan aur aam Fahem andaaz mein talqeen karteen keh ham aasani say samajh jaate aur hamein Hadees-e-Rasool (ﷺ) ko riwaayat karne ki tarbiyat daitein.

Eidain mein dil khol kar hamein tahaaif say nawaztein, 9 Zil hajj Arfah ki shaam ko meri hajaamat banwatein, Mujhe aur meri behen ko nehlaatein, 10 Zil hajj eid kay din hamein naye kapde pehnaatein.

Aur Namaz-e-Eid padhany kay liye pyaar bhare andaaz mein rawaana kartien. Jab ham eid ki namaz say faarigh ho kar ghar aatay to mere aur meri behen kay saamne qurbaani ka jaanwar zibah karwaatien.


Aik roz aap ne hamein safaid kapde pehnaye, Mujhe aap ne aik ghutne par bithaya aur meri behen ko doosre ghutne par aur hamaare chachha Abdul Rehmaan ko bulaaya, Jab woh andar tashreef laaye aap ne usey salaam kaha aur Hamd-o-Sana kay baad aisi khush usloobi, Fasaahat-o-Blaaghat say goya hueen keh mein ne aisi raseeli, Ras bhari guftagu pehle kisi say na suni thi, Aap ne irshaad farmaaya: Bhai jaan jab say main ne ye do nonihaal aap say paakar kar apni god mein liye maine mehsoos kiya keh aap ko yeh nagawaar guzra aur aap qadre mujh say khinche khinche rehne lage.

Allah ki qasam is say aap ko koi takleef dena maqsood na thi, Aur na hi aap par koi bartari jatlaana matloob thi, Na hi koi badgumaami, Aur na hi yeh Pesh-e-Nazar tha keh aap in ki parwarish mein koi kotaahi karenge. Balkeh main ne socha aap ayaaldaar aadmi hain yeh chote bachhe hain, Apna aap nahi sambhal sakte, Mujhe andeshah hua keh kahin aap ki biwiyan inhein apne liye bojh na samjhein.

Maine socha keh is Surat-e-Haal mein sab say zyaadah mujh par farz aayed hota hai keh in ki dekh bhaal karun.

Ab Ma sha Allah yeh jawaan ho chuke hain, Apna aap sambhal sakte hain ab aap inhein apne hamrah le jaa sakte hain. Us kay baad hamaaray chachha Abdul Rehmaan hamein apne ghar le gaye.


Lekin us Siddiuqi nojawaan ka dil apni phupho Umm ul Momineen Hazrat Ayesha Siddiqua رضی اللّٰہ عنها  kay ghar kay sath waabasta raha.

Us ghar ki Gulzar-e-Nabuwwat say mu’atar fizaa mein parwarish paai.

Siddique-e-Kayenat aur Nabi aakhiruz zamaa ki Rafeeqa-e-Hayaat ki god mein parwaan chadhe un kay meethe chashme say sairaab huye.

Din ka kuch hissa chachha kay ghar guzaarte aur baaqi hissa apni phupho kay ghar.


Apni phupho kay ghar ki kastoori ki khushboo mein lipti hui aur motiyon ki tarah chamakti hui yaadashtain zindagi bhar nahan Khana-e-Dil mein rachi basi rahein.

Un rooh parwar daastanon ka tazkarah kartay huye bayaan farmaate keh main ne aik din apni phupho Hazrat Ayesha Siddiqua رضی اللّٰہ عنها say kaha:

Amma jaan, Nabi Akram ﷺ aur aap kay dono jaanisar saathiyon ki qabron say parda hataayen, Main unhein dekhna chahta hoon. Un ki ziyaarat mera dili shauq hai. Yeh teeno qabrain Hazrat Ayesha Siddiqua رضی اللّٰہ عنها kay hujre mein banai gayi thien aur unhein kapde say dhaanpa hua tha unho ne teeno qabron say pardah hataya, Main ne dekha keh na to woh zyadah unchi thien aur na hi zameen kay sath lagi huien aur un par surkh rang kay sangraize phelaaye huye thay jo Masjid-e-Nabwi kay sehen mein bichaaye huye thay.

Main ne pucha: Rasool Allah (ﷺ) ki qabar kaunsi hai?

Unho ne hath say ishaara kiya yeh!

Yeh kehte huye unki aankhon se aansu beh nikle, Lekin jaldi say unhein saaf karne lagien takeh main na dekh loon. Main ne dekha keh Nabi Akram ﷺ ki qabar apne dono saathiyon ki qabron say qadre aage badh kar banayi gayi thi. Main ne pucha mere dada jaan Hazrat Abu Bakar Siddique رضی اللہ عنه ki qabar kaunsi hai?

Aap ne farmaaya: Woh yeh hai.

Aap ko Nabi Akram ﷺ kay sar mubarak kay nazdeek dafnaya gaya.

Main ne kaha yeh Hazrat Umar رضی اللہ عنه ki qabar hai.

Aap ne farmaaya: Haan.

Hazrat Umar رضی اللہ عنه ka sar mere dada jaan kay seenay aur Nabi Akram ﷺ kay mubarak qadmon kay qareeb tha.


Jab yeh Siddiqui honhaar birwa jawaani ko pohcha to yeh Quran-e-Majeed ko hifz kar chuka tha aur apni phoophi Hazrat Ayesha Siddiqua رضی اللّٰہ عنها say Hadees-e-Rasoolﷺ ka ilm bhi kaafi had tak haasil kar chuka tha.

Phir woh mazeed ilm haasil karne kay liye Masjid-e-Nabwi mein phaile huye ilmi halqon ki taraf mutawajjah hua, Yeh ilmi halqay Masjid-e-Nabwi kay sehen mein is tarah jagmagaa rahe thay jaise aasman par sitaare.

Is Siddiqui nojawaan, Aalim Faqeeh ne Hazrat Abu Hurairah رضی اللہ عنه,  Hazrat Abdullah bin Umar رضی اللہ عنه, Hazrat Abdullah bin ‘Abbas رضی اللہ عنه,  Hazrat Abdullah Bin Zubair رضي الله عنه, Hazrat Abdullah Bin ja’afir رضی اللہ عنه,  Hazrat Abdullah Bin khabbaab رضی اللہ عنه, Hazrat Rafee’ Bin khadeeja رضى اللہ عنه aur Hazrat Aslam Maula Umar bin khattaab رضی اللہ عنه say Hadees riwaayat ki.

Yahan tak keh mujhatid Imam kay mansab par fayez huye yeh apne daur kay sab say bade aalim, Faqeeh aur muhaddis kehlaaye.


Jab yeh Siddiuqi nojawaan Ilm-o-M’aarfat kay A’alaa-o-Arfa’ maqaam par fayez huye to log un say ilm haasil karne kay liye deewana waar un ki taraf lapkay aur unhon ne bhi badi faraakh dili ka muzaahira karte huye Husool-e-Ilm kay liye aane waalon ki taraf apni tawajjah mabzool kar li.

Yeh har roz subah kay waqt Masjid-e-Nabwi tashreef laate aur kabhi naagha na kartay. Do raka’at namaz ada kartay, Phir yeh Rozah-e-Rasoolﷺ aur mimbar kay darmiyan apni Masnad-e-Ilm par birajmaan hotay, Har jaanib say aane waale tulabaa ka yahan hujoom rehta.

Aur us kay saaf shaffaaf meethay chashme say pyase apni pyas bujhaate. Aur ji bhar kar Ilm-o-M’aarfat kay jaam nosh kartay. Thoday hi arsay mein Qasim bin Muhammad aur un kay khala zaad bhai Abdullah bin Umar Madinah kay Qaabil-e-Aitemaad Imaam mashoor huye. Logon kay dilon par un ki hukumat thi. Halankeh yeh Hukumat-o-Saltanat kay kisi ohday par faaiz na thay. Logon ne unhein apna sardaar bana liya kyunki yeh Taqwa-o-Taharat kay zewar say aarasta thay, Un ka seena Ilm-o-Fiqh say munawwar tha.

Yeh logon say beniyaaz aur Allah ta’ala kay har dam niyaaz mand rehtay.


Un kay buland martabay ka aap yahan say andazah lagayen keh banu Umayyah kay hukmaraan Umoor-e-Saltanat mein say har ahem ma’amla un ki raye say niptaate.

Jaisa keh Waleed Bin Abdul Malik ne Masjid-e-Nabwi ki tausee’ ka iraadah kiya to yeh tausee’ us waqt tak mumkin na thi jab tak usey chaaron taraf say munhamind na kar diya jaata. Aur Azwaaj-e-Mutahharaat kay gharon ko gira kar Masjid mein shaamil na kar diya jaata. Yeh baat aam logon kay liye nagawaar thi, Un kay dil is aqdaam par khush na thay.

Waleed Bin Abdul Malik ne Madinah kay governor Hazrat Umar bin Abdul Azeez ki taraf khat likha keh Masjid-e-Nabwi ki do sau ghaz zarab do sau ghaz tausee’ karna chahta hoon. Is ki chaaron jaanib say deewaarain gira dain aur Azwaaj-e-Mutahharaat kay hujray Masjid mein shaamil kar dain aur Masjid kay Qurb-o-Jawaar kay ghar bhi khareed lain. Ho sake to qible ki taraf Masjid ko mazeed aage badha dain.

Aap yeh kaam bakhubi kar saktay hain, Kyunkeh logon kay dilon mein aap ki mohabbat hai. Agar Madinah waale phir bhi inkaar karain to Qasim Bin Muhammad aur Saalim Bin Abdullah Bin Umar ka taawun haasil kar lena, Logon kay gharon ki qeemtain fauran ada karain aur is ki adaaigi mein sakhaawat ka saboot dain. Aap ko is ka mukammal ikhtiyar hai. Yeh kaam sar anjaam denay kay liye Hazart Umar Bin Khattaab رضی اللہ عنه aur Hazrat Usman Bin Affaan رضی اللہ عنه ka sadaaqat par mabni namoona aap kay saamne hai.

Hazrat Umar Bin Abdul Azeez رحمہ اللہ ne Qasim Bin Muhammad, Saalim Bin Abdullah aur Madinah Munawwarah ki deegar shakhsiyaat ko bulaaya aur un kay saamne Ameer ul Momineen ka khat padh kar sunaya. Masjid-e-Nabwi ki tausee’ kay mut’alliq Khalifah ka azam sun kar sab ne musarrat ka izhaar kiya. Aur is kaam ko Paaya-e-Takmeel tak pohchany kay liye sab taiyaar ho gaye.

Jab logon ne dekha, keh Madinah kay do Azeem ul martabat aalim apnay hathon say Masjid-e-Nabwi ki diwaarain gira rahay hain. To sab log Fard-e-Wahid ki tarah aage badhe takeh Masjid-e-Nabwi ki tausee’ kay liye zameen ko hamwaar kiya jaye. Is waqt Lashkar-e-Islaam Istanbul kay mazboot qilon par dastak day raha tha. Aur yake baad deegary bahadur general Musaylmah Bin Abdul Malik Bin Marwaan ki qayaadat mei nawaahi ilaqajaat kay qiley fatah kar raha tha. Yeh darasal Istanbul ko fatah karnay ki tamheed thi.

Jab Rome kay badshaah ko Ameer ul Momineen kay Masjid-e-Nabwi ki tausee’ kay mansoobay ka ilm hua to us ne qurb haasil karne kay liye aik laakh misqaal sona, Sau maahir mo’maar, mazdooron ki aik khep aur kaafi miqdaar mein a’alaa qism ka Sang-e-Mar mar Ameer ul Momineen Waleed Bin Abdul Malik ki taraf rawaana kiya, Waleed ne yeh tamaam samaan Hazrat Umar Bin Abdul Azeez ki taraf Madinah bhej diya takeh woh usey Masjid-e-Nabwi ki ta’meer mein istmaal karay. Hazart Umar Bin Abdul Azeez رحمہ اللہ ne Hazrat Qasim Bin Muhammad aur Hazrat Saalim Bin Abdullah kay mashware say yeh qeemti Samaan Masjid-e-Nabwi mein istemaal kiya.


Hazrat Qasim Bin Muhammad Adaat-o-Khasaail mein hubahu apne dada Hazrat Siddique Abu Bakar رضی اللہ عنه say mushaabhat rakhte thay. Logon mein yeh baat mash-hoor thi keh Hazrat Siddique Abu Bakar رضی اللہ عنه kay khandaan mein yeh ladka Akhlaaq-o-Atwaar ki pakeezagi, Imaan-o-Taqwa ki mazbooti, Faraakh dili aur sakhaawat mein bilkul Siddique Abu Bakar رضی اللہ عنه ki nishani hai.

Bohat say Aqwaal-o-Af’aal is par shahid hain.

Aik baddu ne Masjid mein un say sawaal kiya:

Tum bade aalim ho yah Saalim Bin Abdullah?

Aap ne us sawaal kay jawaab mein chashm poshi ikhtiyar ki.

Us ne dobara sawaal kiya. To aap ne jawaab mein sirf Subhan Allah kaha.

Us ne teesri martabah sawaal dohraya to aap ne sirf yeh irshaad farmaaya: Dekho bhai Salim wahan baithay hain. Un say dariyafat kar lo.

Darasal aap apne munh say yeh kehna unhein napasand tha keh mein Salim say bada aalim hoon, Aur yeh bhi nahi kehna chahtay thay keh woh bada aalim hai. Is tarah yeh jhoot ho jaata kyunki haqiqat mein un ka darja Maidaan-e-Ilm mein Salim say bada tha.


Aik din Mina mein yeh Manzar dekha gaya keh Hazrat Qasim tashreef farmaa hain chaaron taraf say Hujjaj kiraam masaail dariyafat karnay kay liye sawaal kar rahe hain.

Jin masaail ka unhein ilm tha woh jawaab day rahe thay aur jin ka ilm nahi tha un kay mut’alliq barmala keh rahe thay keh is masle ka mujhe ilm nahi yeh masla main nahi jaanta.

Logon ne bada ta’ajjub kiya, Aap ne farmaaya: Allah ki qasam jo masaail tum puch rahay ho woh sab kay sab ham nahi jaante agar jaante hote to woh aap logon sey chupaa kar na rakhte aur na hi deeni masaail ko chhupana hamary liye jaiz hai.

Meray nazdeek jaahil kehlana is say kahin behter hai keh woh na jaante huye bhi logon ko ghalat masaail bataye.


Aik martabah mustahiqeen mein sadqah baantnay ki zimmedari unhein sonpi gayi. Aap ne har haq waale ko haq ada kar kay puri mehnat, Diyaanat aur amaanat ka saboot diya. Mustahiqeen mein say sirf aik aadmi apne hissay say raazi na hua. Woh Masjid mein aaya, Aap namaz padh rahe thay, Us ne sadqay ki taqseem par aiteraaz kiya. To aap ka beta bol pada:

Us ne kaha: Bakhudaa tum us shakhs kay mut’alliq aitraaz kar rahe ho jis ne tumhary sadqay say apne liye aik dumri bhi nahi li. Kabhi aik khajoor kay rawaadar bhi nahi huye, Hazrat Qasim ne apni namaz mukhtasir ki apne betay ki taraf mutawajjah huye.

Aur farmaaya beta aaj kay baad kabhi aisi baat na karna jis ka tujhe ilm nahi.

Log bolay: Betay ne sach kaha hai, Lekin yeh us ki tarbiyat kar rahe hain takeh is ki zubaan zyadah bolnay say parhaiz kare.


Hazrat Qasim Bin Muhammad رحمہ اللہ ne bahattar saal say kuch zyadah umar paayi.

Aakhri umar mein budhaape ki wajah say un ki nazar jaati rahi.

Aap ne apni zindagi kay aakhri ayyaam mein Hajj ki gharz say Makkah Mu’azzmah jaane ka iraadah kiya. Abhi raaste mein hi thay keh maut ka waqt aa gaya, Jab aap ko apni zindagi kay aakhri lamhaat ka ahsaas hua to apne betay ko paas bulaaya aur irshaad farmaaya:

Jab main fout ho jaaon to mujhe meray un kapdon ka kafan pehnana jin say main namaz padhta hoon, Kameez, Tahband aur chaadar yehi teray dada Hazrat Abu Bakar رضی اللہ عنه ka kafan tha.

 Beta phir mujhe lehed mein utaar dena. Aur apne ghar chale jaana. Meri qabar par khade ho kar yeh na kehna keh mera baap aisa tha ya aisi khoobiyon ka maalik tha.

Suno main kuch bhi nahi hoon. Aur na thaa.


Hazrat Qasim Bin Muhammad Bin Abu Bakar Siddique رضی اللہ عنه kay mufassal Halaat-e-Zindagi ma’loom karnay kay liye darjzail kitaabon ka muta’ala karain:

1: Sifat ul Safwah                                                                                                        2/82
2: Tahzeeb ul Tahzeeb                                                                                             8/333
3: Wafayat ul Aayan Ibn-e-Khlkan                                                              4/59-60
4: Al Tabaqat ul Kubra Ibn-e-Saad                                                              8/187
5: Shazarat ul Zahab Imad Hanbali                                                              1/135
6: Nukat ul Himyan (Safadi)                                                                              230
7: Al Kamil Fil Tarikh                                                                                                5/114
8: Tarikh-e-Tabari                                                                                                  3/422
9: Hilyat ul Awliya                                                                                                     2/183
10: Al Aghani (Abul Faraj Asfhani)                                                              20/279

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

حضرت قاسم بن محمد بن ابوبکر صدیق رضی اللہ تعالی عنہا



اگر میرے اختیار میں ہوتا تو قاسم بن محمد کو خلیفہ مقرر کر دیتا

     عمر بن عبد العزیز رضی اللہ تعالی عنہ

 

کیا آپ اس جلیل القدر تابعی کے متعلق کچھ جانتے ہیں؟
یہ ایک ایسا نوجوان ہے کہ:
 ہر جانب سے مہبد و شرف اس پر آکر مرکوز ہو جاتا ہے وہ اس طرح کہ:
اس کے دادا حضرت صدیق اکبر رضی اللہ تعالی عنہ ہے
اس کی والدہ ایران کے آخری حکمران یزد جر کی بیٹی ہے۔
اس کی پھوپھو بھی ام المومنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالی عنہا ان تمام تر خصوصیات سے بڑھ کر یہ تقویٰ اور علم کے زیور سے آراستہ تھے۔
کیا اس سے بڑھ کر کوئی اور شرف ہو سکتا ہے کہ جس کے حصول کے لئے لوگ کوشاں ہوں یہ ہیں قاسم بن محمد بن ابوبکر صدیق رضی اللہ تعالی عنہا
سات فقہائے مدینہ میں سے ایک _
اپنے دور کے سب سے بڑے عالم _
علمامیں سب سے بڑھ کر ذہین_
آئی ان کے داستان حیات کے بیان کا آغاز کرتے ہیں۔


حضرت قاسم بن محمد رضی اللہ تعالی عنہ امیرالمومنین حضرت عثمان بن حضرت عفان رضی اللہ تعالی عنہ کے دور خلافت کے آخری ایام میں پیدا ہوئے۔
یہ ننھا سا بچہ ابھی پنگھوڑ ا جول رہا تھا کہ مسلمانوں کے گھروں پر ہولناک فتنے کی تیز آندھی چلی. عابد ‘ زاہد ‘ ذوالنورین اور رقیق القلب خلیفہ حضرت عثمان رضی اللہ تعالی عنہا کو اس حال میں شہید کردیا گیا۔
جب کہ وہ صحیفہ آسمانی قرآن مجید پر جھکے ہوئے اس کی تلاوت کر رہے تھے۔
امیر المومنین حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ اور سرزمین شام کے گورنر امیر معاویہ بن ابو سفیان کے درمیان شادت عثمان رضی اللہ تعالی عنہ کی وجہ سے شدید اختلافات پیدا ہو گئے۔
خونریز جھڑیوں کا آغاز ہوا۔ دونوں طرف مسلمانوں کا خون بہنے لگا ہولناک اور اذیت ناک واقعات رونما ہونے لگے ۔ اس خون آشام دور میں اس بچے اور اس کی بہن کو مدینہ سے مصر منتقل کردیا۔ کیونکہ ان کے ابا جان کو امیر المومنین حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ نے مصر کا گورنر مقرر کر دیا تھا۔ پھر اس خونی فتنے کے استسبدادی نیچے اس کے ابا جان کی طرف بڑھے اور اس سے بری طرح اپنے شکنجے میں لے کر قتل کر دیا۔
جب امیر معاویہ رضی اللہ تعالی عنہ کے ساتھ ہی غالب آئے تو اسے دوبارہ مصر سے مدینہ منورہ منتقل کر دیا گیا۔ اب یہ یتیم ہو چکے تھے۔
                           



حضرت قاسم آپ نے اس اذیت ناک سفر کی بیان کرتے ہوئے فرماتے ہیں ۔
جب میرے ابا جان کو مصر میں قتل کر دیا گیا میرے چچا عبدالرحمان ابوبکر صدیق رضی اللہ تعالی عنہا تشریف لائے مجھے اور میری چھوٹی بہن کو گود میں لیا اور مدینہ روانہ ہوئے جب ہم مدینہ منورہ پہنچے تو میری پھوپھی حضرت عائشہ صدیقہ رضی ﷲ عنہا ہمیں چچا کے گ سے اٹھا کر اپنے گھر لے گئیں اور اپنی نگرانی میں ہماری پرورش کرنے لگی میں نے ان سے بڑھ کر کسی ماں یا باپ کو اپنی اولاد پر شفقت کرنے والا نہ دیکھا۔

یہ اپنے ہاتھ سے ہمیں کھانا کھلاتیں اور خود ساتھ نہ کھاتیں بلکہ جب کھانا ہم سے بچ جاتا تو پھر آپ تناول کرتیں۔
یہ ہمارے ساتھ اس طرح شفقت سے پیش آتیں جیسے دودھ پلانے والی ماں اپنے دودھ پیتے بچے پر شفقت و محبت نچھاور کرتی ہے۔
ہمیں نہلاتیں، ہمارے بالوں میں کنگھی کرتیں اور صاف ستھرے چمکیلے سفید کپڑے پہناتیں، ہمیں ہر وقت نیکی کرنے کی ترغیب دلاتیں اور کار خیر کرنے کی تربیت دیتیں اور برے کاموں سے منع کرتیں اور ان سے باز رہنے کی تلقین کرتی رہتیں۔

قرآن مجید کی آیات کے ذریعے ہمیں اس آسان اور عام فہم انداز میں تلقین کرتیں کہ ہم آسانی سے سمجھ جاتے اور ہمیں حدیث رسول (ﷺ) کو روایت کرنے کی تربیت دیتیں۔

عیدین میں دل کھول کر ہمیں تحائف سے نوازتیں ، ۹ ذی الحجہ عرفہ کی شام کو میری حجامت بنواتیں، مجھے اور میری بہن کو نہلاتیں، ۱۰ ذی الحجہ عید کے دن ہمیں نئے کپڑے پہناتیں۔

اور نماز عید پڑھنے کے لیے پیار بھرے انداز میں روانہ کرتیں جب ہم عید کی نماز سے فارغ ہو کر گھر آتے تو میرے اور میری بہن کے سامنے قربانی کا جانور ذبح کرواتیں۔

ایک روز آپ نے ہمیں سفید کپڑے پہنائے، مجھے آپ نے ایک گھٹنے پر بٹھالیا اور میری بہن کو دوسرے گھٹنے پر اور ہمارے چچا عبد الرحمان کو بلایا جب وہ اندر تشریف لائے آپ نے اسے سلام کہا اور حمد و ثناء کے بعد ایسی خوش اسلوبی، فصاحت و بلاغت سے گویا ہوئیں کہ میں نے ایسی رسیلی رس بھری گفتگو پہلے کسی سے نہ سنی تھی، آپ نے ارشاد فرمایا، بھائی جان جب سے میں نے یہ دو نو نہل آپ سے پکڑ کر اپنی گود میں لیے میں نے محسوس کیا کہ آپ کو یہ ناگوار گذرا اور آپ قدرے مجھ سے کھچے کھچے رہنے لگے۔

اللہ کی قسم اس سے آپکو کوئی تکلیف دینا مقصود نہ تھی، نہ ہی آپ پر کوئی برتری جتلانا مطلوب تھی، نہ ہی کوئی بد گمانی اور نہ ہی یہ پیش نظر تھا کہ آپ ان کی پرورش میں کوئی کوتاہی کریں گے۔ بلکہ میں نے سوچا آپ عیالدار آدمی ہیں یہ چھوٹے بچے ہیں خود اپنا آپ سنبھال نہیں سکتے ، مجھے اندیشہ ہوا کہ کہیں آپ کی بیویاں انہیں اپنے لیے بوجھ نہ سمجھیں۔

میں نے سوچا کہ اس صورت حال میں سب سے زیادہ مجھ پر فرض عائد ہوتا ہے کہ ان کی دیکھ بھال کروں۔

اب ماشاء اللہ یہ جوان ہو چکے ہیں ، اپنا آپ سنبھال سکتے ہیں اب آپ انہیں اپنے ہمراہ لے جاسکتے ہیں۔ اس کے بعد ہمارے چچا عبد الرحمان ہمیں اپنے گھر لے گئے۔

لیکن اس صدیقی نوجوان کا دل اپنی پھوپھی ام المومنین حضرت عائشہ صدیقہ رضیﷲعنہا کے گھر کے ساتھ وابستہ رہا۔
اس گھر کی گلزار نبوت سے معطر فضا میں پرورش پائی۔
صدیقہ کائنات اور نبی آخر الزماں کی رفیقہ حیات کی گود میں پروان چڑھے انکے میٹھے چشمے سے سیراب ہوئے۔
دن کا کچھ حصہ چچا کے گھر گزارتے اور باقی حصہ اپنی پھوپھی کے

اپنی پھوپھی کے گھر کی کستوری کی خوشبو میں لپٹی ہوئی اور موتیوں کی طرح چمکتی ہوئی یادداشتیں زندگی بھر نہاں خانہ دل میں رچی بسی رہیں۔

ان روح پرور داستانوں کا تذکرہ کرتے ہوئے بیان فرماتے ہیں کہ میں نے ایک دن اپنی پھوپھی حضرت عائشہ رضیﷲعنہا سے کہا۔
اماں جان: نبی اکرم (ﷺ) اور آپ کے دونوں جانثار ساتھیوں کی قبروں سے پردہ ہٹائیں، میں انہیں دیکھنا چاہتا ہوں۔ ان کی زیارت میرا دلی شوق ہے۔ یہ تینوں قبریں حضرت عائشہ رضیﷲعنہا کے حجرے میں بنائی گئی تھیں اور انہیں کپڑے سے ڈھانپا ہوا تھا انہوں نے تینوں قبروں سے پردہ ہٹایا میں نے دیکھا کہ نہ وہ زیادہ اونچی تھیں اور نہ ہی زمین کے ساتھ لگی ہوئیں اور ان پر سرخ رنگ کے وہ سنگریزے پھیلائے ہوئے تھے جو مسجد نبوی کے صحن میں بچھائے ہوئے تھے۔

میں نے پوچھا: رسول ﷲ (ﷺ) کی قبر کون سی ہے؟
انہوں نے اپنے ہاتھ سے اشارہ کیا یہ!
یہ کہتے ہوئے ان کی آنکھوں سے آنسو بہہ نکلے، لیکن جلدی سے انہیں صاف کرنے لگیں تاکہ میں نہ دیکھ نہ لوں۔ میں نے دیکھا کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر اپنے دونوں ساتھیوں کی قبروں سے قدرے آگے بڑھا کر بنائی گئی تھی۔

میں نے پوچھا میرے دادا جان حضرت ابو بکر صدیق اللہ کی قبر کونسی ہے؟

آپ نے فرمایا: وہ یہ ہے۔
آپ کو نبی اکرم (ﷺ) کے سر مبارک کے نزدیک دفنایا گیا۔
میں نے کہا یہ حضرت عمر رضىﷲعنه کی قبر ہے۔
آپ نے فرمایا: ہاں۔

حضرت عمر رضىﷲعنه کا سر میرے دادا جان کے سینے اور نبی اکرم (ﷺ) کے مبارک قدموں کے قریب تھا۔

جب یہ صدیقی ہونہار بروا جوانی کو پہنچا تو یہ قرآن مجید حفظ کر چکا تھا اور اپنی پھوپھی حضرت عائشہ رضیﷲعنہا سے حدیث رسول (ﷺ) کا علم بھی کافی حد تک حاصل کر چکا تھا۔

پھر وہ مزید علم حاصل کرنے کے لیے مسجد نبوی میں پھیلے ہوئے علمی حلقوں کی طرف متوجہ ہوا یہ علمی حلقے مسجد نبوی کے صحن میں اس طرح جگمگا رہے تھے جیسے آسمان پر ستارے۔

اس صدیقی نوجوان، عالم، فقیہہ نے حضرت ابو ہریرة رضىﷲ عنه ، حضرت عبداللہ بن عمر رضىﷲ عنه ، حضرت عبداللہ بن عباس رضىﷲ عنه ، حضرت عبداللہ بن زبیر رضىﷲعنه ، حضرت عبد الله بن جعفر رضىﷲعنه ، حضرت عبد الله بن خباب رضىﷲعنه ، حضرت رافع بن خدیج رضىﷲعنه اور حضرت اسلم مولی عمر بن خطاب رضىﷲ عنه سے حدیث روایت کی یہاں تک کہ یہ مجتہد امام کے منصب پر فائز ہوئے یہ اپنے دور کے سب سے بڑے عالم، فقیمہ اور محدث کہلائے جب یہ صدیقی نوجوان علم و معرفت کے اعلی و ارفع مقام پر فائز ہوئے تو لوگ ان سے علم حاصل کرنے کے لیے دیوانہ وار ان کی طرف لپکے اور انہوں نے بھی بڑی فراخدلی کا مظاہرہ کرتے ہوئے حصول علم کے لیے آنے والوں پر اپنی توجہ مبذول کی۔
یہ ہر روز صبح کے وقت مسجد نبوی تشریف لاتے اور کبھی ناغہ نہ کرتے۔ دو رکعت نماز پڑھتے پھر یہ روضہ رسول (ﷺ) اور منبر کے درمیان اپنی مسند علم پر براجمان ہو جاتے، ہر جانب سے آنے والے طلبہ کا یہاں ہجوم رہتا۔ اور اس کے صاف شفاف میٹھے چشمے سے پیاسے اپنی پیاس بجھاتے۔ اور جی بھر کر علم و معرفت کے جام نوش جان کرتے۔ تھوڑے ہی عرصے میں قاسم بن محمد اور ان کے خالہ زاد بھائی عبداللہ بن عمر مدینہ کے قابل اعتماد امام مشہور ہوئے۔ لوگوں کے دلوں پر ان کی حکومت تھی۔ حالانکہ یہ حکومت و سلطنت کے کسی عہدے پر فائز نہ تھے۔ لوگوں نے انہیں اپنا سردار بنا لیا کیونکہ یہ تقوی و طہارت کے زیور سے آراستہ تھے ‘ ان کا سینہ علم و فقہہ سے منور تھا ۔ یہ لوگوں سے بے نیاز اور اللہ تعالی کے ہر دم نیاز مند رہتے
                           



  ان کے بلند مرتبے کا آپ یہاں سے اندازہ لگائیں کے بنو امیہ کے حکمران امور سلطنت میں سے ہر اہم معاملہ ان کی رائے سے نکل پٹاتے۔
جیسا کہ ولید بن عبدالملک نے جب مسجد نبوی کی توسیع کا ارادہ کیا تو یہ توسیع اس وقت تک ممکن نہ تھی جب تک اسے چاروں طرف سے منہدم نہ کر دیا جاتا ۔ اور ازواج مطہرات کے گھروں کو گرا کر مسجد میں شامل نہ کر دیا جاتا یہ بات عام لوگوں کے لیے ناگوار تھی ‘ ان کے دل اس اقدام پر خوش نہ تھے۔ ولید بن عبدالملک نے مدینہ کے گورنر حضرت عمر بن عبد العزیز کی طرف خط لکھا کہ میں مسجد نبوی کی دو سو ضرب دو سو گز کے حساب سے توسیع کرنا چاہتا ہوں۔ اس کی چاروں جانب سے دیوار میں گرا دیں اور ازواج مطہرات کے حجرے مسجد میں شامل کر دیں اور مسجد کے قرب و جوار کے گھر بھی خرید لیں۔ ہو سکے تو قبلے کی طرف مسجد کو مزید آگے بڑھا دیں۔
آپ یہ کام بخوبی کر سکتے ہیں، کیونکہ لوگوں کے دلوں میں آپ کی محبت ہے۔ اگر مدینہ والے پھر بھی انکار کریں تو قاسم بن محمد اور سالم بن عبداللہ بن عمر کا تعاون حاصل کر لینا ، لوگوں کے گھروں کی قیمتیں فورا ادا کریں اور اس کی ادائیگی میں سخاوت کا ثبوت دیں۔ آپ کو اس کا مکمل اختیار ہے۔ یہ کام سر انجام دینے کے لیے حضرت عمر بن خطاب رضىﷲعنه اور حضرت عثمان بن عفان رضی اللہ عنما کا صداقت پر مبنی نمونہ آپ کے سامنے ہے۔

حضرت عمر بن عبد العزیز رضىﷲعنه نے قاسم بن محمد سالم بن عبد اللہ اور مدینہ منورہ کی دیگر ممتاز شخصیات کو بلایا اور ان کے سامنے امیر المومنین کا خط پڑھ کر سنایا۔ مسجد نبوی کی توسیع سے متعلق خلیفہ کا عزم سن کر سب نے مسرت کا اظہار کیا اور اس کام کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے لیے سب تیار ہو گئے۔

جب لوگوں نے دیکھا کہ مدینہ کے دو عظیم المرتبت عالم اپنے ہاتھوں سے مسجد نبوی کی دیواریں گرا رہے ہیں۔ تو سب لوگ فرد واحد کی طرح آگے بڑھے تا کہ مسجد نبوی کی توسیع کے لیے زمین کو ہموار کیا جائے۔ اس وقت لشکر اسلام استنبول کے مضبوط قلعوں پر دستک دے رہا تھا۔ اور یکے بعد دیگرے بہلاور جرنیل مسلمہ بن عبد الملک بن مروان کی قیادت میں نواحی علاقہ جات کے قلعے فتح کر رہا تھا۔ یہ در اصل استنبول کو فتح کرنے کی تمہید تھی۔

جب روم کے بادشاہ کو امیر المومنین کے مسجد نبوی کی توسیع کے منصوبے کا علم ہوا تو اس نے قرب حاصل کرنے کے لیے ایک لاکھ مثقل سونا سو ماہر معمار مزدوروں کی ایک کھیپ اور کافی مقدار میں اعلی قسم کا سنگ مر مر امیر المومنین ولید بن عبد الملک کی طرف روانہ کیا ولید نے یہ تمام سامان حضرت عمر بن عبد العزیز کی طرف مدینہ بھیج دیا تا کہ وہ اسے مسجد نبوی کی تعمیر میں استعمال کرے حضرت عمر بن عبد العزیز رضىﷲعنہ نے حضرت قاسم بن محمد اور حضرت سالم بن عبد اللہ کے مشورے سے یہ قیمتی سامان مسجد نبوی میں استعمال کیا۔

حضرت قاسم بن محمد عادات و خصائل میں ہو بہو اپنے دادا حضرت صدیق اکبر رضىﷲعنہ سے مشابہت رکھتے تھے۔ لوگوں میں یہ بات مشہور تھی کہ حضرت صدیق اکبر رضىﷲعنہ کے خاندان میں یہ لڑکا اخلاق و اطوار کی پاکیزگی ، ایمان و تقوی کی مضبوطی ، فراخی دل اور سخاوت میں بالکل صدیق اکبر رضىﷲعنہ کی نشانی ہے۔

بہت سے اقوال و افعال اس پر شاہد ہیں۔
ایک بدوی نے مسجد میں ان سے سوال کیا۔
تم بڑے عالم ہو یا سالم بن عبداللہ ؟

آپ نے اس سوال کے جواب میں چشم پوشی اختیار کی۔
اس نے دوبارہ سوال کیا۔ تو آپ نے جواب میں صرف سبحان اللہ کہا۔ اس نے تیسری مرتبہ سوال دہرایا ، تو آپ نے صرف یہ ارشاد فرمایا :
دیکھو بھائی وہ سالم وہاں بیٹھے ہیں۔ ان سے دریافت کر لو۔
در اصل آپ اپنے منہ سے یہ کہنا انہیں ناپسند تھا کہ میں سالم سے بڑھا عالم ہوں اور یہ بھی کہنا نہیں چاہتے تھے کہ وہ بڑھا عالم ہے۔ اس طرح یہ جھوٹ ہو جاتا کیونکہ حقیقت میں ان کا درجہ میدان علم میں سالم سے بڑا تھا۔

ایک دن منی میں یہ منظر دیکھا گیا کہ حضرت قاسم تشریف فرما ہیں چاروں طرف سے حجاج کرام مسائل دریافت کرنے کے لیے سوالات کر رہے ہیں۔ جن مسائل کا انہیں علم تھا وہ جواب دے رہے ہیں اور جن کا علم نہیں تھا۔ ان کے متعلق بر ملا کہ رہے اس مسئلے کا مجھے علم نہیں۔ میں یہ مسئلہ نہیں جانتا۔

لوگوں نے بڑا تعجب کیا آپ نے انہیں فرمایا: اللہ کی قسم جو مسائل تم پوچھ رہے ہو وہ سب کے سب ہم نہیں جانتے اگر جانتے ہوتے تو وہ آپ لوگوں سے چھپا کر نہ رکھتے اور نہ ہی دینی مسائل کو چھپانا ہمارے لیے جائز ہے۔

میرے نزدیک جاہل کہلانا اس سے کہیں بہتر ہے کہ وہ نہ جانتے ہوئے بھی لوگوں کو غلط سلط مسائل بتائے۔

ایک مرتبہ مستحقین میں صدقات بانٹنے کی ذمہ داری انہیں سونپی گئی۔ اور آپ نے ہر حق والے کو حق ادا کرنے کے لیے پوری محنت دیانت اور امانت کا ثبوت دیا۔ مستحقین میں سے صرف ایک آدمی اپنے حصے سے راضی نہ ہوا۔ وہ مسجد میں آیا، آپ نماز پڑھ رہے تھے اس نے صدقے کی تقسیم پر اعتراض کیا۔ تو آپ کا بیٹا بول پڑا۔

اس نے کہا: بخدا تم اس شخص کے متعلق اعتراض کر رہے ہو جس نے تمہارے صدقے سے اپنے لیے ایک دمڑی بھی نہیں لی۔ کبھی ایک کھجور کے روا دار بھی نہیں ہوئے ، حضرت قاسم نے اپنی نماز مختصر کی اپنے بیٹے کی طرف متوجہ ہوئے۔

اور فرمایا: بیٹا آج کے بعد کبھی ایسی بات نہ کرنا جس کا تجھے علم نہیں۔ لوگ بولے : بیٹے نے سچ کہا ہے لیکن یہ اس کی تربیت کر رہے ہیں تا کہ اس کی زبان زیادہ بولنے سے پرہیز کرے۔

حضرت قاسم بن محمد رضىﷲعنہ نے بہتر سال سے کچھ زیادہ عمر پائی آخری عمر میں بڑھاپے کی وجہ سے ان کی نظر جاتی رہی۔
آپ نے اپنی زندگی کے آخری ایام میں حج کی غرض سے مکہ معظمہ سے جانے کا ارادہ کیا ۔

ابھی آپ راستے میں ہی تھے کہ موت کا وقت آگیا ‘ جب آپ کو اپنی زندگی کے آخری لمحات کا احساس ہوا تو اپنے بیٹے کو پاس بلایا اور ارشاد فرمایا ۔

جب میں فوت ہو جاؤں تو مجھے میرے ان کپڑوں کا کفن پہنانا جن سے میں نماز پڑھتا ہوں قمیض تہبند اور چادر یہی تیرے دادا حضرت ابو بکر رضی اللّٰہ عنہ کا کفن تھا ۔
بیٹا پھر مجھے لحد میں اتار دینا ۔ اور اپنے گھر چلے جانا۔ میری قبر پر کھڑے ہو کر یہ نہ کہنا کہ میرا باپ ایسا تھا یا ایسی خوبیوں کا مالک تھا۔
سنو میں کچھ بھی نہیں ہوں۔ اور نہ تھا۔


حضرت قاسم بن محمد بن ابوبکر صدیق رضی اللّٰہ عنہ کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لیے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں ۔
١- صفتہ الصفوہ
٢/ ٨٢
٢- تہزیب التہذیب
٨/ ٣٣٣
٣- وفیات الاعیان لابن خلکان
٤/ ٥٩- ٦٠
٤- الطبقات الکبری لابن سعد
٥/ ١٨٧
٥- شزرات الزہب لعماد حنبلی
١/ ١٣٥
٦- نکت الہمیان (صفدی)
٢٣٠
٧- الکامل فی التاریخ
٥/ ١١٤
٨- تاریخ الطبری
٣/ ٤٢٢
٩- حلیتہ الاولیاء
٢/ ١٨٣
١٠- الا غانی ( ابو الفرج اصفہانی)
٢٠/ ٢٧٩

 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر
Table of Contents