Sections
< All Topics
Print

29. Hazrat Abul Aaliyah Rafee Bin Mehraan (رحمہ اللہ)

HAZRAT ABUL Aaliyah RAFEE BIN MEHRAAN رحمہ اللہ

Sahaba ke baad Abul Aaliyah se badh kar Qur’an ka koi dusra Aalim dikhayi nahi deta. Us ke baad Saed bin Jubair ka naam aata hai.

Abu Bakar bin Dawohod

Rafee’ Bin Mehraan jin ki kuniyat Abu ul Aaliyah hai, Millat-e-Islaam kay nabghah rozgaar hain.

Allamaھ or Muhaddiseen kay sarkheel

Taab’een mein kitaab ul Allah or Hadees-e-Rasool kay sab say bade Aalim

Quran-e-Aziz kay Fahem-o-Idraak or iskay Matallib-o-Mafaheem ki gehrayi tak pahunchne mein sab say badh kar qudrat, Salahiyat yadd-e-Tola ratkhnay walay aur Quran-e-Hakeem kay maqaasid aur Asraar-o-Rumooz par gehri nazar rakhnay waaly they.

Aaiye in ki dastaan-e-Hayat ka aaghaz karen!

In ki Dastaan-e-Hayat dilchasp aur nasihat amooz waqiyat say labraiz hai.


Rafee’ Bin Mehraan Iran mein paida huye wahin pale badhay aur jawaan huye. Jab musalmanon ne sar zameen-e-Iran par chadhaai ki taakeh is kay baashindon ko kuffar ki taarikiyon say nikaal kar Islaam say aashna kar dain, Us waqat Rafee’ ka Ehd-e-Shabaab tha. Is jang mein Lashkar-e-Islaam ko ghalbah haasil hua aur bohat say Irani giraftaar huye, In jangi qaidiyon mein Rafee’ Bin Mehraan bhi shaamil tha, Is tarhaan usey Islaam ki khoobiyon say aashnai hasil hui aur us ne gehri nazar say buttparasti aur Allah ki ibaadat ka mawazna kiya, Irani qaidi badi tezi say islaam qubool karnay lage, Quran fahmi mein dilchasapi lenay lagey aur Hadees-e-Rasool ke ilm say seraab honay lage.

Rafee’ us daur ki ek jhalak bayaan kartay huye farmate hain keh main aur meri qaum ke chand afraad mujahideen ke hathon qaidi huye, Basarah chaoni mein muslamanon ke Zair-e-Hirasat ghulaami ke din guzare they, Thoday hi arsay ke bad hum Allah par Imaan le aaye aur Allah ki kitaab Quran-e-Hakeem ko zubani yaad karna shuru kar diya, Hum mein say chand aik apnay maalikon ko tax ada kartay thay aur doosary un ki khidmat par mamoor they. Main bhi un mein shamil tha.

Hum Quran-e-Hakeem har raat khatam kar liya kartay they lekin humein is mein mushkil paish aane lagi aur hum do raaton mein khatam karne lagy, Jab yeh bhi dushwar hua to teen raaton mein khatam karty lekin jab humein yeh bhi mushkil mehsoos honay laga to hum ne is ka b’aaz Sahaba-e-Karam رضي الله عنهم say tazkarah kiya to unhon ne farmaya haftay mein aik dafah Quran-e-Majeed khatam kar liya karo to us ke baad hum raat ko Quran-e-Hakeem bhi padhtay aur araam bhi kartay.

Rafee’ Bin Mehraan Banu Tameem ki aik muttaqi, Padhaizghar, Danishmand aur reham dil khatoon ke ghulam they.

Din mein us ka gharelu kaam bhi karty aur aaram bhi kartey, Faraaghat ke waqt likhne padhnay mein masroof rehtay, Din ka kuch hissa deeni uloom haasil karne mein guzaarte.


Aik roz Jummah ke din Rafee’ ne badi tasalli say wazu kiya phir apni aaqa say ijaazat talab ki.

Khatoon ne pucha kahan jaane ka irada rakhtey ho?

Kaha Masjid jana chahta hoon!

Khatoon ne pucha kaun si Masjid jana chahtay ho?

Kaha Jama Masjid jane ka khayal hai!

Khatoon ne kaha mein bhi aap ke sath chalti hoon, Dono ghar say nikley aik sath Masjid mein dakhil huye, Rafee’ ko qat’an m’aaloom na tha keh yeh khatoon aaj us ke hamrah Masjid kyun aayi hai.

Jab Masjid logon say khacha khach bhar gayi, Imaam mimbar par khutbah deney ke liye baith gaya to khatoon ne us ka hath pakad kar buland kiya aur kaha logon gawah rehna main ne apne is ghulam ko Allah ki raza ke liye aazad kar diya hai.

Main is amal say Allah ki khushnudi, Sawaab aur apnay gunahon ki maafi chahati hoon.

Phir us ki taraf dekhte huye yeh du’aa ki keh Ilaahi Main is amal ko teray haan us din ke liye zakhirah banati hoon jis din nah maal faidah dega aur na hi aulad.

Namaz-e-Jummah khatam hone ke baad Rafee’ ghulami say aazad ho kar apni nayi manzil ki taraf rawana hogaye aur mu’azziz khatoon apnay ghar wapis aa gaye.


Rafee’ Bin Mehraan usi roz madinah ki taraf rawana hogaye wahan pohanch kar Hazrat Siddique-e-Akbar رضي الله عنه say mulaqat ka sharf hasil hoa, Chand roz bad Siddique-e-Akbar (رضی اللہ) Allah ko piyary ho gaye Is tarhaan Ameer ul Momineen Hazrat Umar bin khataab(رضی اللہ عنه) ke sath bethy unhain Quran-e-Hakeem sunanein aur un ke peechay Namaz padhane ki sa’adat hasil hui.


Abu ul Aaliyah Rafee’ Bin Mehraan Quran-o-hadees ka ilm hasil karnay mein Humah tan masroof ho gaye

Un taab’een Karam رحمهم الله say ahadees suntay Jo basrah mein rehaish pazair they lekin un ka dili shoq ye tha keh sma’at-e-Hadees mein issay barh kar mazboot wastah ikhtiyar kiya jay is liye keh woh Aksar-o-Beshtar Madinah munawrah ka safar ikhtiyar kartay taa keh wahan maujood sahabah-e-Karam say Barah-e-Raast ahadees Rasool علیہ السلام ki sama’at ka sharf hasil kiya jaye is tarhan unhone Hazrat Abdullah bin Mas’ood, Hazart Ubai bin Ka’ab, Hazart Abu Ayyub Ansaari, Hazrat Abu Hurairah aur Hazrat Abdullah bin Abbas رضی اللّٰہ عنهم say ilm-e-Hadees hasil karnay ki sa’adat naseeb hui.

Abu ul Aaliyah ne Madinah munawrah mein maujood sahabah-e-Karam رضي الله عنهم say ilm-e-Hadees hasil karnay par hi iktafa na kiya balkeh deegar maqamaat par bhi pohchay jahan Ashaab-e-Rasool علیہ السلام maujood the. Jab unhain pata chala hai keh kisi door daraaz maqaam par ilmi shakhsiyat maujood hai to wohh us ki ziyarat ke liye Rakht-e-Safar bandhte khwah kitna hi kathan raasta hota us par chalnein ke liye kamar bastah ho jatay.

Jab manzil par pahuchtay sab say pehlay us shakhs ke peechay Namaz ada kartay, Jab yeh dekhtey keh wohh shakhs Namaz sahi andaaz say ada nahi kar raha, Namaz ka haq ada nahi kar raha to apnay dil mein sochte keh jo shakhs Namaz mein susti karta hai woh deegar faraiyz mein aur zyada sust hoga, Phir woh apni hhadi pakadtey aur us say mulaqat kiye baghair wapis laut jatay.


Aik waqat aisa aya keh Abu ul Aaliyah ilm ke a’alaa darjay par fayez ho gaye. Ilmi maidan mein sab hum asar ahbaab par foqiyat le gaye, Un ke mut’alliq aik sathi ne kaha:

Main ne aik roz Abu ul Aaliyah ko wazu kartay huye dekha pani ke qatreh us ke chehrey aur hathon say motiyon ki tarhan gir rahay they.

Tuaharat-o-Pakizaghi ki kirnein us ke a’azaa par chamak rahi thain, Main ne unhain salam arz kartay huye kaha: Allah Ta’ala tobah karnay walon aur paakizah rehnay walon ko pasand karta hai. Unhon ne kaha bhai jaan paakizah woh nahi hotay jo pani say apni mail kuchail saaf kartay hain, Haqiqat mein paakizah woh log hotay hain jo gunahon say bachtay hain, Main ne un ki baat par dhyaan diya aur yeh mehsoos kiya keh woh sach kehte hain aur main ghalati par hoon main ne kaha Allah aap ko jazaye kher ataa karay aur aap ke ilm-o-Fahem mein izafah farmaye.


Abu ul Aaliyah Aksar-o-Beshtar logon ko ilm hasil karnay ki targheeb dilatay aur unhain shahirah-e-Ilm par gaamzan karnay ke liye mansoobay tashkeel detey rehtay.

Wohh kaha kartay logon ilm hasil karnay ke liye apnay aap ko ita’at shi’aar banao aur masaiyl dariyafat karnay ke liye ziyadah say ziyadah sawal kiya karo. Aur yeh baat zehan nasheen kar lo keh ilm apnay paron ko sharmilay aur mutakabbir ke samnay nahi bichaata, Sharmila apni sharam-o-Haya ki wajah say sawal nahi karta mutakabbir apnay takabbur aur nakhwat ki bina par masaiyl dariyafat nahi karta. Hazrat Rafee’ apnay talbah ko ilm hasil karnay is ke ahkamaat par amal paira honay aur bid’eyaton ki moshagaafion say aiteraaz baratane ki talqeen kiya kartay they.

Wohh farmaya kartay they keh Qur’an seekho, Jab tum Quran ka ilm hasil kar lo to phir us say beraghbati ikhtiyar na karna. Seedhe rastay ko lazim pakadna, Yaad rakhana Islam hi seedha rasta hai, khwahishat-e-Nafs say bach kar rehna wohh tumhary darmiyan adaawat aur bughaz paida kar deingi, Sahabah-e-Karam رضي الله عنهم ke Tarz-e-Amal say sarmoo inheraaf na karna.

Talabah ko Hifz-e-Quran ka asan tarikah samjhtay huye farmaya kartay they.

Quran-e-Hakeem ki panch panch aayat zubani yaad kar liya karo is tarhan tumhary zehnon par bojh nahi padega. Yeh tariqah Quran fahemi ke liye aazmoodah hai.


Abul Aaliyah faqat mua’llim hi nahi they balkeh woh aik murabbi bhi they woh apnay shaagirdon ko Ilm-o-Irfan, aur Deen-o-Danish ki daulat say malaa maal kar detay they, Neez un ke dilon ko dunia ko Maw’azah Husnah ki ghiza bsaham pohchatay.

Nasihat aaamoz guftagu kartay huye aksar auqaat do cheezon ka mila kar tazkarah kartay. Misaal ke taur par un ki guftagu ka yeh andaaz hota:

ان الله قضى على نفسه ان من امن به ه‍داه

“Bilashubah Allah ne apnay upar lazim qarar de lia hai keh jo us par Imaan lay aaya Allah ne usay hidayat di”.

Jaisa keh Allah Rabbul Izzat ka irshad hai:

ۭ وَمَنْ يُّؤْمِنْۢ بِاللّٰهِ يَهْدِ قَلْبَهٗ       التغابن

“Aur Jo Allah par Imaan lata hai to Allah us ke dil ko hidayat deta hai”.

وان من توكل عليه كفاه

“Aur jis ne us par bharosa kiya woh us ke liye kaafi hua”.

Jaisa keh irshaad baari ta’alaa hai:

وَمَنْ يَّتَوَكَّلْ عَلَي اللّٰهِ فَهُوَ حَسْبُهٗ  الطلاق

“Aur jo Allah par bharosa karta hai Allah us ke liye kafi ho jata hai”.

وان من اقر ضه جازه

“Aur haqeeqat yeh hai keh jis ne usay qarzah diya woh usay badla deta hai”.

Jesa keh Allah Azzawajal ka irshaad hai:

مَنْ ذَا الَّذِيْ يُقْرِضُ اللّٰهَ قَرْضًا حَسَنًا فَيُضٰعِفَهٗ لَهٗٓ اَضْعَافًا كَثِيْرَةً  البقرہ: 245

“Aur jis ne Allah se dua ki us ne us ki du’aa ko qubool kiya”.

 Jaisa keh Allah ta’alaa ka irshaad hai:

وَاِذَا سَاَلَكَ عِبَادِيْ عَنِّىْ فَاِنِّىْ قَرِيْبٌ ۭ اُجِيْبُ دَعْوَةَ الدَّاعِ اِذَا دَعَانِ ۙ البقرہ: 186

“Aur jab mery bandy aap say mere bare mein puchte hain to main qareeb hoon, ڈu’aa maangne wale ki du’aa qubool karta hoon jab woh mujh say du’aa karta hai”.

Woh apnay shaagirdon say kaha karty they: Allah ki ita’at ikhtiyar karo aur ita’at guzaron ke sath Husn-e-Salook say pesh aao. Nafarmaani say bacho aur Allah ki nafarmaani karne walon say bhi door raho phir nafarmaanon ka mu’amla Allah ke supurd karo agar woh chahe inhain azaab day chahe inhain bakhsh day. Woh yeh bhi farmaaya karte they keh jab tum kisi aisy shakhs ko dekho keh woh apni badayi bayaan kartay huye har aik se yeh kehta phirta hai keh main Allah ke liye mohabbat karta hoon aur Allah hi ke liye dushmani karta hoon. Main har kaam mein Allah ki razaa ko tarjeeh deta hoon aur Allah ke khauf say man’a kardah amoor say pehlu tahi karta hoon. To tum us ki kisi baat ki taraf dhayan na diya karo kyunki mukhlis log apni neki ka dhindhora nahi peeta karte.


Abu ul Aaliyah sirf Aalim aur wa’az hi na they balkeh woh Maidan-e-Jihaad ke shehsawaar bhi they.

Woh mujahideen ke Shana ba Shana maidaanhaye jihaad mein apna qeemti waqat guzara karte they.

Ya dushman ki sarhad par pehraydaar ki haisiyat say faraiyz saranjaam diya karty they. Unhon ne jihaad ke liye Sharq-o-Gharb ka safar ikhtiyar kiya. Sarzameen-e-Shaam mein Rome ki ladai mein shareek huye.

Aur isi tarhan, Iran, Turkey aur Roos mein ladi gayi jangon mein shareek huye. Yeh pehli Azeem ul shaan shakhsiat hai jis ne un ilaqoon mein azaan ki awaaz buland ki.

Farmatay hain jab Hazrat Ali aur Ameer muawiya ke darmiyan ma’arkah aarai joban pe thi. Main us waqt Chaak-o-Chuband tha, Jangi karwaiyyon mein hissa lena mera mehboob mashghala tha, mein shareek honay ke liye tayyar hua, Maidaan mein ayaa dekha keh dono taraf say na’arah-e-Takbeer ki awaazen goonj rahi hain. Shor-o-ghoo ghaan aur Cheekh-o-Pukaar ka alim yeh hai keh kaan padi awaaz bhi sunaai na deti. Mery dil mein aaya keh ab kya karoon? Kis ke khilaaf ladoon? Kis par hathiyar say waar karoon? Kisay apna dushman gardanoon? Kisay momin khayal kartay huye us ka sath doon, Dono taraf apnay hi Bhai band hain. Apnay hi pyare hain, Musalman hain momin hain yeh khayal aatey hi wapis ghar laut aaya.


Hazrat Abu ul Aaliyah ko zindagi bhar is baat ka afsos hi raha keh unhain Rasool Allah (ﷺ) ki ziyarat aur mulaqat ka sharf hasil na ho saka. Lehazah talaafi mafaat ke liye un ki koshish ye reheti keh un sahabah-e-Karam رضي الله عنهم ka taqarrub hasil kiya jaye jinhain Rasool-e-Aqdas (ﷺ) ke sath zyadah say zyadah qareeb rehnay ka sharf hasil raha hai. Woh unhain tarjeeh detay aur un say mohabbat kartay woh us ke sath tarjeeh salook kartay aur mohabbat say pesh atay.

Aik dafa ka waqia hai keh yeh Hazrat Abdullah bin Abbas رضي الله عنه ke paas gaye woh in dinon Hazrat Ali رضي الله عنه ki janib say Basrah ke governer they.

Hazrat Abdullah bin Abbasرضي  الله عنه ne unhain waalehana andaaz mein khush aamdeed kaha aur apni daayen taraf takht par bithaya is waqat majlis mein Qureshi sardaar bhi maujood they woh aik doosary ki taraf kankhiyon say dekhnay lagy aur apas mein khusar phusar karnay lage aur aik doosary say kehnay lagy dekha Hazrat Abdullah bin Abbas ne is ghulam ko Apnay sath takht par bithaya hai jab keh ham neechay aam logon ke sath baithe hain. Jab Hazrat Abdullah bin Abbas ne unhain apis mein ishaare karte huye dekha aur batain karte huye dekha to unhon ne Surat-e-Haal ko bhaanp liya.

In ki taraf mutawajjah huye aur farmaaya:

Ilm mu’aziz insan ki izzat mein izafah karta hai aur logon mein us ka martabah buland ho jata hai aur ghulamon ko takht nasheen bana deta hai.


Hazrat Abul Aaliyah ke khadim Rasool علیہ السلام Hazrat Anas bin Malikرضی اللہ عنه say bade geheray ta’alluqaat they.

Aik roz Hazrat Anas bin Malikرضی اللہ  عنه ne unhain saib diya. Aap ne un ke hath say saib liya aur usey choomna shuru kar diya aur baar baar yeh farmaane lagy keh yeh kaisa pyara saib hai jis ne in hathon ko chhua hai jo hath Rasool-e-Aqdas (ﷺ) ke hathon say lagy.


Aik dafa ka waqia hai keh Hazrat Abu ul Aaliyah ne Allah ki raah mein jihaad ka irada kiya, Jihaadi safar par rawangi ke liye tayyar huye, Mujahideen ke hamrah jane ke liye tayyar huye hi they keh aik paon mein shadeed dard honay laga, Dheery dheery dard mein izafah honay laga tabeeb ko bulaya gaya unhon ne jaizah letay huye kaha: Inhain aik aisi beemari lahaq ho chuki hai jo andar say gosht ko bhasam kiye ja rahi hai andesha hai keh agar is ko yahin qabu na kiya gaya to jisam mein phail jayegi, Behter hai tang kaat di jaye takeh bemari aagay na phailay.

Hazrat Abu ul Aaliyah ne badal nakhwastah taang katne ki ijazat day di.


Tabeeb ne chamda katnay aur haddi cheerne ke yani jarahi ke aalat mangwa liye aur kaha janab agar aap chahen to koi nasha aawar dawai pila dain takeh aap ko zyadah takleef mehsoos na ho?

Aap ne farmaaya: Agar main is say behter tariqa aap ko btaoon to?

Tabeeb ne pucha woh kya?

Aap ne farmaaya: Kisi aisy qaari ko bulao jo bohat umdah andaz mein Quran-e-Hakeem ki tilawat karta ho.

Woh mery paas beth kar Quran padhna shuru kar day jab tum dekho keh mera chehra surkh ho chuka hai aankhen aasman ki taraf uth chuki hain palkon ne jhapakna chod diya hai to phir tum apna amal shuru kar dena. Jis tarhan chahna tang kaat dena.

Tabeeb ne aisy hi kiya, Jab tilawat suntay suntay in par ye khud faramoshi ki kaifiat taari ho gayi to tabeeb ne tang kaat di, Jab hosh aayi tabeeb ne pucha aap ko tang kat’ty waqat takleef nahi hui farmaane lage: Allah ki mohabbat ki thandak aur nashah mery Rag-o-Resha me sarayat kar chuka tha Jis ki wajah say mujhe koi takleef mehsoos nahi hui. Haddi katnay wali aari ki hararat ko kitaab ul Allah ki halawat, Lazzat or mithas ne khatam kar diya tha. Phir unhon ne apni kati hui tang ko pakad kar is ki taraf dekhtay huye kehney lagy qayamat ke roz jab main apnay Rab say miloonga mera Rab mujh say puchay ga kya main chalees saal ke arse mein tery sath kisi haraam kaam ki taraf chal kar gaya? Main yeh jawab doon ga keh bilkul nahi, Allah ke Fazal-o-Karam say main is baat mein bilkul sacha hon ga.


Hazrat Abu ul Aaliyah ke taqway, Khauf-e-Khuda, Aakhrat ki tayyari, Allah Ta’alaa say mulaqat ke shoq ka ye aalim ho gaya keh unhon ne apne liye kafan tayyar karwaya, Har mahinay woh aik din kafan pehantey phir usay utar kar rakh detay. Unhon ne apni zindagi kay mein tandrusti ki halat mein taqriban satrah martaba wasiat likhi aur wasiat likhtay waqat apni zindagi ke aakhari lamhaat ka tazkarah bhi kar detay jab apni taraf muqarrah kardah waqt aata to wasiat naamah dekhtay. Us mein chand aik tabdeeliyan kar detay ya usay yaksur badal detay.

Gunahon say Paak.

Dunyavi aalaishon say mabraa

Apnay Rab ki rehmat ke ummeedwar

Nabi Akram (ﷺ) ki mulaqat ka shoq dil mein basaye, maah shawwal san 93  hijri ko Apnay Rab say ja milay. إِنَّا لِلَّٰهِ وَإِنَّا إِلَيْهِ رَاجِعُونَ


Abu ul Aaliyah Rafee’ Bin Mehraan ke mufassal Halat-e-Zindagi maloom karnay ke liye darjzail kitaabo ka muta’ala karen:

1: Siar Aalam ul Nubala Allamah Zahabi                                                          4/207
2: Al Tabaqat ul Kubra Ibn-e-Saad                                                                      7/112
3: Hilyat ul Awliya Abu Nuaim Asfahani                                                          216-417
4: Tahzeeb ul Tahzeeb Ibn-e-Hajar                                                                    3/284
5: Al Maarif Ibn-e-Qutabiah                                                                                    454
6: Al Isabah fi Tamyeez al Sahabah                                                                   1/6740
7: Tazkirat ul Huffaz Zahabi                                                                                      1/58

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

*حضرت ابوالعالیہ رفیع بن مہران* رضى الله عنه

 


(صحابہ رضى الله عنه کے بعد ابوالعالیہ سے بڑھ کر قرآن کا کوئی دوسرا عالم دیکھائی نہیں دیتااس کے بعد سعید بن جبیررضى الله عنه کا نام آتا ہے..


(ابوبکر بن داود)

 

 

رفیع بن مہران جن کی کنیت ابوالعالیہ ہے ملت اسلامیہ کے نابغہ روزگار ہیں..

*علما اور محدثین کے سرخیل*

تابعین میں کتاب اللہ اور حدیث رسول کے سب سے بڑے عالم قرآن عزیز کے فہم و ادراک اور اس کے مطالب و مفاہیم کی گھرائی تک پہنچنے میں سب سے بڑھ کر قدرت ،صلاحیت اور ید طولے رکھنے والے اور قرآن حکیم کے مقاصد اور اسرار رموز پر گہری نظر رکھنے والے تھے..

آٸیے ان کی داستان حیات کا آغاز کریں!
انکی داستان حیات دلچسپ اور نصیحت آموز واقعات سے لبریز ہے..


رفیع بن مہران ایران میں پیدا ہوۓ وہیں پلے بڑھے اور جوان ہوۓ جب مسلمانوں نے سرزمین ایران پر چڑھائی کی تاکہ اس کے باشندوں کو کفر کی تاریکیوں سے نکال کر نور اسلام سے آشنا کر دیں اس وقت رفیع کا عہد شباب تھا اس جنگ میں لشکر اسلام کو غلبہ حاصل ہوا اور بہت سے ایرانی گرفتار ہوۓ ان جنگی قیدیوں میں رفیع بن مہران بھی شامل تھا اس طرح اسے اسلام کی خوبیوں سے آشنائی حاصل ہوٸ اور اس نے گہری نظر سے بت پرستی اور اللہ کی عبادت کا موازنہ کیا ایرانی قیدی بڑی تیزی سے اسلام قبول کرنے لگے، قرآن فہمی میں دلچسپی لینے لگے اور حدیث رسول کے علم سے سیراب ہونے لگے..

رفیع اس دور کی ایک جھلک بیان کرتے ہوۓ فرماتے ہیں کہ میں اور میری قوم کے چند افراد مجاہدین کے ہاتھوں قیدی ہوۓ بصرہ چھاٶنی میں مسلمانوں کے زیر حراست غلامی کے دن گزار رہے تھے، تھوڑے ہی عرصے کے بعد ہم اللہ پر ایمان لے آۓ اور اللہ کی کتاب قرآن حکیم کو زبانی یاد کرنا شروع کر دیا ہم میں سے چند ایک اپنے مالکوں کو ٹیکس ادا کرتے تھے اور دوسرے ان کی خدمت پر مامور تھے.. میں بھی ان میں شامل تھا..

ہم قرآن کریم ہر رات ختم کر لیا کرتے تھے لیکن ہمیں اس میں مشکل پیش آنے لگی اور ہم دو راتوں میں 5y “t5y’ختم کرنے لگے، جب یہ بھی دشوار ہو گیا تو تین راتوں میں ختم کرتے لیکن جب ہمیں یہ بھی مشکل محسوس ہونے لگا تو ہم نے اس کا بعض صحابہ کرام رضى الله عنه سے تزکرہ کیا تو انہوں نے فرمایا ہفتے میں ایک قرآن مجید مکمل کر لیا کرو تو اس کے بعد ہم رات کو قرآن حکیم بھی پڑھتے اور آرام بھی کرتے..

رفیع بن مہران بنو تمیم کی ایک متقی،پرہیزگار، دانشمند اور رحم دل خاتون کے غلام تھے..

دن میں اس کا گھریلو کام بھی کرتے اور آرام بھی کرتے فراغت کے وقت tgr’;tgصروف رہتے دن کا کچھ حصہ دینی علوم حاصل کرنے میں گزارتے..

 

ایک روز جمعہ کے دن رفیع نے بڑی تسلی سے وضو کیا پھر اپنی آقا سے اجازت طلب کی ..

خاتون نے پوچھا کہاں جانے کا ارادہ ہے؟
کہا مسجد جانا چاہتا ہوں!
خاتون نے پوچھا کون سی مسجد جانا چاہتے ہو؟
کہا جامع مسجد جانے کا خیال ہے!
خاتون نے کہا چلیۓ میں بھی آپ کے ساتھ چلتی ہوں دونوں گھر سے نکلے ایک ساتھ مسجد میں داخل ہوۓ رفیع کو قطعا معلوم نہ تھا کہ یہ خاتون آج اس کے ہمراہ مسجد کیوں آٸی ہے..

جب مسجد لوگوں سے کھچا کھچ بھر گٸ ..

امام منبر پر خطبہ دینے کے لۓ بیٹھ گیا تو خاتون نے اسکا ہاتھ پکڑ کر بلند کیا اور کہا لوگو گواہ رہنا میں نے اپنے اس غلام کو اللہ کی رضا کے لیۓ آزاد کر دیا ہے..

میں اس عمل سے اللہ کی خوشنودی، ثواب اور اپنے گناہوں کی معافی چاہتی ہوں..

پھر اس کی طرف دیکھتے ہوۓ یہ دعا کی کہ الٰہی میں اس عمل کو تیرے ہاں اس دن کے لۓ ذخیرہ بناتی ہوں جس دن نہ مال فاٸدہ دے گا اور نہ ہی اولاد..

نماز جمعہ ختم ہونے کے بعد رفیع غلامی سے آزاد ہو کر اپنی نٸ منزل کی طرف روانہ ہو گۓ اور معزز خاتون اپنے گھر واپس آگٸ..

رفیع بن مہران اسی روز مدینہ کی طرف روانہ ہو گۓ وہاں پہنچ کر حضرت صدیق اکبر رضى الله عنه سے ملاقات کا شرف حاصل ہوا، چند روز بعد صدیق اکبر رضى الله عنه اللہ کو پیارے ہو گۓ. اس طرح امیرالمٶ منین حضرت عمر بن خطاب رضى الله عنه کے ساتھ بیٹھتے انہیں قرآن حکیم سناتے اور ان کے پیچھے نمازیں پڑھنے کی سعادت حاصل ہوٸ.

   



ابو العالیہ رفیع بن مہران قرآن و حدیث کا علم حاصل کرنے میں ہمہ تن مصروف ہو گۓ.

ان تابعین کرام رحمه الله سے احادیث سنتے جو بصرہ میں رہاٸش پزیر تھے لیکن ان کا دلی شوق یہ تھا کہ سماعت حدیث میں اس سے بڑھ کر مضبوط واسطہ اختیار کیا جاۓ اس لۓ وہ اکثر و بیشتر مدینہ منورہ کا سفر اختیار کرتے تاکہ وہاں موجود صحابہ کرام سے براہ راست احادیث رسول علیہ السلام کی سماعت کا شرف حاصل کیا جاۓ اس طرح أنہوں نے حضرت عبداللہ بن مسعود ، حضرت ابی بن کعب،حضرت ابو ایوب انصاری ،حضرت ابو ھریرة،اور حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہم سے علم حدیث حاصل کرنے کی سعادت نصیب ہوٸ.

ابوالعالیہ نے مدینہ منورہ میں موجود صحابہ کرام رضى الله عنه سے ہی علم حدیث حاصل کرنے پر ہی اکتفا نہ کیا بلکہ دیگر مقامات پر بھی پہنچے جہاں اصحاب رسول علیہ السلام موجود تھے.

جب انہیں پتہ چلتا کہ کسی دور دراز مقام پر علمی شخصیت موجود ہے تو وہ اس کی زیارت کے لیے رخت سفر باندھتے خواہ کتنا ہی کٹھن راستہ ہوتا اس پر چلنے کے لۓ کمر بستہ ہو جاتے جب منزل پر پہنچتے سب سے پہلے اس شخص کے پیچھے نماز ادا کرتے جب یہ دیکھتے کہ وہ شخص نماز صحیح انداز سے ادا نہیں کر رہا.
نماز کا حق ادا نہیں کر رہا اپنے دل میں سوچتے کہ جو شخص نماز میں سستی کرتا ہے وہ دیگر فراٸض میں اور زیادہ سست ہوگا پھر وہ اپنی چھڑی پکڑ تے اس سے ملاقات کۓ بغیر واپس لوٹ جاتے.

                       


ایک وقت ایسا آیا کہ ابو العالیہ علم کے اعلی درجے پر فاٸز ہو گۓ علمی میدان میں سب ہم عصر احباب پر فوقیت لے گۓ ان کے متعلق ایک ساتھی نے کہا:

میں نے ایک روز ابوالعالیہ کو وضو کرتے ہوۓ دیکھا پانی کے قطرے اس کے چہرے اور ہاتھوں سے موتیوں کی طرح گر رہے تھے.

طہارت و پاکیزگی کی کرنیں اس کے اعضاء پر چمک رہی تھیں میں نے انہیں سلام عرض کرتے ہوۓ کہا:
اللہ تعالی توبہ کرنے والوں اور پاکیزہ رہنے والوں کو پسند کرتا ہے.
انہوں نے کہا:
بھائی جان پاکیزہ وہ نہیں ہوتے جو پانی سے اپنی میل کچیل صاف کرتے ہیں حقیقت میں پاکیزہ وہ لوگ ہوتے ہیں جو گناہوں سے بچتے ہیں، میں نے ان کی بات پر دھیان دیا اور یہ محسوس

کیا کہ وہ سچ کہتے ہیں اور میں غلطی پر ہوں میں نے کہا : اللہ آپ کو جزاۓ خیر عطا کر اور آپ کے علم میں اضافہ فرماۓ.

                     


ابوالعالیہ اکثر و بیشتر لوگوں کو علم حاصل کرنے کی ترغیب دلاتے اور انہیں شاہراہ علم پر گامزن کرنے کے لۓ منصوبے تشکیل دیتے رہتے.
وہ کہا:
کرتے تھے لوگو علم حاصل کرنے کے لۓ اپنے آپ کو اطاعت شعار بناٶ اور مسائل دریافت کرنے کے لۓ زیادہ سے زیادہ سوال کیا کرو.
اور یہ بات ذہن نشین کر لو کہ علم اپنے پروں کو شرمیلے اور متکبر کے سامنے نہیں بچھاتا شرمیلا اپنی شرم و حیا کی وجہ سے سوال نہیں کرتا متکبر اپنے تکبر اور نخوت کی بنا پر مسائل دریافت نہیں کرتا.
حضرت رفیع اپنے طلبہ کو علم حاصل کرنے اس کے احکامات پر عمل پیرا ہونے اور بدعتیوں کی موشگافیوں سے اعراض برتنے کی تلقین کیا کرتے تھے.

وہ فرمایا کرتے تھے کہ قرآن سیکھو، جب تم قرآن کا علم حاصل کر لو تو پھر اس سے بے رغبتی اختیار نہ کرنا سیدھے راستے کو لازم پکڑنا یاد رکھنا اسلام ہی سیدھے راستہ ہے خواہشات نفس سے بچ کر رہنا وہ تمہارے درمیان عداوت اور بغض پیدا کر دیں گی صحابہ کرام رضى الله عنه کے طرز عمل سے سر مو انحراف نہ کرنا.

طلبہ کو حفظ قرآن کا آسان طریقہ سمجھاتے ہوۓ فرمایا کرتے تھے.
قرآن حکیم کی پانچ پانچ آیات زبانی یاد کیا کرو اس طرح تمہارے ذہنوں پر بوجھ نہیں پڑے گا.

.یہ طریقہ قرآن فہمی کے لۓ آزمودہ ہے



ابو العالیہ فقط معلم ہی نہیں تھے بلکہ وہ ایک مربی بھی تھے وہ اپنے شاگردوں کو علم و عرفاں، اور دین و دانش کی دولت سے مالا مال کر دیتے تھے، نیز ان کے دلوں کی دنیا کو موعظہ حسنہ کی غذا بہم پہنچاتے.

نصیحت آموز گفتگو کرتے ہوۓ اکثر اوقات دو چیزوں کا ملا کر تزکرہ کرتے مثال کے طور پر انکی گفتگو کا انداز یہ ہوتا.

ان للہ قضی علی نفسہ ان من آمن بہ ھداة
بلاشبہ اللہ نے اپنے اوپر لازم قرار دے لیا ہے کہ جو اس پر ایمان لایا اللہ نے اسے ہدایت دی.

جیسا کہ اللہ رب العزت کا ارشاد ہے.

ومن یومن باللہ یھد قلبہ التغابن. ١١


اور جو اللہ پر ایمان لاتا ہےتو وہ اس کے دل کو ہدایت دیتا ہے .

 

وان من توکل علیہ کفاہ


اور جس نے اس پر بھروسہ کیا وہ اس کے لۓ کافی ہوا.

 

جیسا کہ ارشاد باری تعالی ہے.

 

ومن یتوکل علی اللہ فھو حسبہ.


اور جو اللہ پر بھروسہ کرتا ہے وہ اس کے لیۓ کافی ہو جاتا ہے.

 

وان من اقرضہ جازاہ

اور حقیقت یہ ہے کہ جس نے اسے قرضہ دیا وہ اسے بدلہ دیتا ہے.

 

جیسا کہ اللہ عزوجل کا ارشاد ہے.

 

ومن ذالذی یقرض اللہ قرضا حسنا فیضا عفہ لہ اضعافہ کثیرة البقرة.٢٤٥
وان من دعاہ اجابہ


اور جس نے اللہ سے دعا کی اس نے اس کی دعا کو قبول کیا.

 

جیسا کہ اللہ تعالی کا ارشاد ہے.

 

واذ سالت عبادی عنی فانی قریب اجیب دعوة الداع اذا دعان : ”البقرة ١٨٦

.

اور جب میرے بندے آ پ سے میرے بارے میں پوچھتے ہیں تو میں قریب ہوں دعا مانگنے والے کی دعا قبول کرتا ہوں جب وہ مجھ سے دعا کرتا ہے.

 

وہ اپنے شاگردوں سے کہا کرتے تھے.
اللہ کی اطاعت اختیار کرو اور اطاعت گزاروں کے ساتھ حسن سلوک سے پیش آٶ.


نافرمانی سے بچو اور اللہ کی نافرمانی کرنے والوں سے بھی دور رہو پھر نافرمانوں کا معاملہ اللہ کے سپردکرو اگر وہ چاہے انہیں عذاب دے یا چاہے انہیں بخش دے۔
وہ یہ بھی فرمایا کرتے تھے کہ جب تم کسی ایسے شخص کو دیکھو کہ وہ اپنی بڑھاٸ بیان کرتے ہوۓ ہر ایک سے یہ کہتا پھرتا ہے کہ میں اللہ کے لۓ محبت کرتا ہوں اور اللہ ہی کے لۓ دشمنی کرتا ہوں.
میں ہر کام میں اللہ کی رضا کو ترجیح دیتا ہوں اور اللہ کے منع کردہ امور سے پہلو تہی اختیار کرتا ہوں.
تو تم اس کی کسی بات کی طرف دھیان نہ دیا کرو کیونکہ مخلص لوگ اپنی نیکی کا ڈھنڈورا نہیں پیٹا کرتے.



ابوالعالیہ صرف عالم اور واعظ ہی نہ تھے بلکہ وہ میدان جہاد کے شہسوار بھی تھے.

وہ مجاہدین کے شانہ بشانہ میدانہاۓ جہاد میں اپنا وقت گزارا کرتے تھے.

یا دشمن کی سرحد پر پہرے دار کی حیثیت سے فراٸض سر انجام دیا کرتے تھے.
انہوں نے جہاد کے لیۓ شرق و غرب کا سفر اختیار کیا. سر زمین شام میں روم کی لڑائی میں شریک ہو ۓ .

اور اسی طرح ایران ،ترکی اور روس میں لڑی گٸ جنگوں میں شریک ہوۓ.
یہ پہلی عظیم الشان شخصیت ہے جس نے ان علاقوں میں اذان کی آواز بلند کی.
فرماتے ہیں جب حضرت علی اور امیر معاویہ کے درمیان معرکہ آراٸ اپنے جوبن پہ تھی.
میں اس وقت چاق و چوبند تھا، جنگی کارواٸیوں میں حصہ لینا میرا محبوب مشغلہ تھا میں شریک ہونے کے لۓ تیار ہوا میدان میں آیا دیکھا کہ دونوں طرف سے نعرہ ء تکبیر کی آوازیں گونج رہی ہیں شورو غوغا اور چیخ و پکار کا عالم یہ ہے کہ کان پڑی آواز سناٸ نہ دیتی.

میرے دل میں آیا کہ اب کیا کروں؟ کس کے خلاف لڑوں؟ کس پر ہتھیار سے وار کروں؟ کسے اپنا دشمن گردانوں؟ کسے مٶمن خیال کرتے ہوۓ اس کا ساتھ دوں، دونوں طرف اپنے ہی بھاٸ بند ہیں.
اپنے ہی پیارے ہیں، مسلمان ہیں مومن ہیں یہ خیال آتے ہی واپس گھر لوٹ آیا.

   



حضرت ابو العالیہ کو زندگی بھر اس بات کا افسوس ہی رہا کہ انہیں رسول اللہ ﷺ کی زیارت اور ملاقات کا شرف حاصل نہ ہو سکا.

لہذا تلافی مافات کے لۓ ان کی کوشش یہ رہتی کہ ان صحابہ کرام رضى الله عنه کا تقرب حاصل کیا جاۓ جنہیں رسول اقدس (ﷺ) کے ساتھ زیادہ سے زیادہ قریب رہنے کا شرف حاصل رہا ہے.
وہ انہیں ترجیح دیتے اور ان سے محبت کرتے وہ بھی اس کے ساتھ ترجیحی سلوک کرتے اور محبت سے پیش آتے.
ایک دفعہ کا واقعہ ہے کہ یہ حضرت عبداللہ بن عباس رضى الله عنه کے پاس گۓ وہ ان دنوں حضرت علی رضى الله عنه کی جانب سے بصرہ کے گورنر تھے.

حضرت عبداللہ بن عباس رضى الله عنه نے انہیں والہانہ انداز میں خوش آمدید کہا اور اپنی داٸیں طرف تخت پر بٹھایا اس وقت مجلس میں قریشی سردار بھی موجود تھے وہ ایک دوسرے کی طرف کنکھیوں سے دیکھنے لگے اور آپس میں کھسر پھسر کرنے لگے اور ایک دوسرے سے کہنے لگے دیکھا عبداللہ بن عباس نے اس غلام کو اپنے ساتھ تخت پر بٹھا لیا ہے جبکہ ہم نیچے عام لوگوں کے ساتھ بیٹھے ہیں جب حضرت عبداللہ بن عباس نے انہیں آپس میں اشارے کرتے ہوۓ دیکھا اور باتیں کرتے ہوۓ دیکھا تو انہوں نے صورت حال کو بھانپ لیا.

ان کی طرف متوجہ ہوۓ اور فرمایا:

علم معزز انسان کی عزت میں اضافہ کرتا ہے اور لوگوں میں اس کا مرتبہ مزید بلند ہو جاتا ہے اور غلاموں کو تخت نشین بنا دیتا ہے.


حضرت ابوالعالیہ کے خادم رسول علیہ السلام حضرت انس بن مالک رضى الله عنه سے بڑے گہرے تعلقات تھے.

ایک روز حضرت انس بن مالک رضى الله عنه نے انہیں سیب دیا.
آپ نے ان کے ہاتھ سے سیب لیا اور اسے چومنا شروع کر دیا اور بار بار یہ فرمانے لگے یہ کیسا پیارا سیب ہے جس نے ان ہاتھوں کو چھوا ہے جو ہاتھ رسول اقدس (ﷺ) کے ہاتھوں سے لگے.

 


ایک دفعہ کا واقعہ ہے کہ حضرت ابو العالیہ نے اللہ کی راہ میں جہاد کا ارادہ کیا جہادی سفر پر روانگی کے لۓ تیار ہوۓ مجاہدین کے ہمراہ جانے کے لۓ تیار ہوۓ ہی تھے کہ ایک پاٶں میں شدید درد ہونے لگی دھیرے دھیرے درد میں اضافہ ہونے لگا طبیب کو بلایا گیا انہوں نے جاٸزہ لیتے ہوۓ کہا:
انہیں ایک ایسی بیماری لاحق ہو چکی جو اندر سے گوشت کو بھسم کۓ جا رہی ہے اندیشہ ہے کہ اگر اس کو یہیں قابو نہ کیا گیا تو پورے جسم میں پھیل جاۓ گی بہتر ہے ٹانگ کاٹ دی جا ۓ تاکہ بیماری آگے نہ پھیلے.

حضرت ابوالعالیہ نے بادل نخواستہ ٹانگ کاٹنے کی اجازت دے دی.


طبیب نے چمڑا کاٹنے اور ہڈی چیرنے کے یعنی جراحی کے آلات منگوا لۓ اور کہا:
جناب اگر آ پ چاہیں تو کوٸ نشہ آور دواٸ پلا دیں تاکہ آپ کو زیادہ تکلیف محسوس نہ ہو؟
آپ نے فرمایا:

اگر میں اس سے بہتر طریقہ آپ کو بتا دوں تو؟
طبیب نے پوچھا وہ کیا؟
آپ نے فرمایا:

کسی ایسے قاری کو بلاٶ جو بہت عمدہ انداز میں قرآن حکیم کی تلاوت کرتا ہو.

وہ میرے پاس بیٹھ کر قرآن پڑھنا شروع کردے جب تم دیکھو کہ میرا چہرا سرخ ہو چکا ہے آنکھیں آسمان کی طرف اٹھ چکی ہیں پلکوں نے جھپکنا چھوڑ دیا ہے تو پھر تم اپنا عمل جاری کر دینا.

جس طرح چاہنا ٹانگ کاٹ دینا.

طبیب نے ایسے ہی کیا جب تلاوت سنتے سنتے ان پر یہ خود فراموشی کی کیفیت طاری ہوگٸ تو طبیب نے ٹانگ کاٹ دی جب ہوش آٸ تو طبیب نے پوچھا آپ کو ٹانگ کاٹتے وقت تکلیف نہیں ہوٸ فرمانے لگے اللہ کی محبت کی ٹھنڈک اور نشہ میرے رگ و ریشہ میں سرایت کرچکا تھا.
جس کیکہا:
انہیں ایک ایسی بیماری لاحق ہو چکی جو اندر سے گوشت کو بھسم کۓ جا رہی ہے اندیشہ ہے کہ اگر اس کو یہیں قابو نہ کیا گیا تو پورے جسم میں پھیل جاۓ گی بہتر ہے ٹانگ کاٹ دی جا ۓ تاکہ بیماری آگے نہ پھیلے.

حضرت ابوالعالیہ نے بادل نخواستہ ٹانگ کاٹنے کی اجازت دے دی.


طبیب نے چمڑا کاٹنے اور ہڈی چیرنے کے یعنی جراحی کے آلات منگوا لۓ اور کہا:
جناب اگر آ پ چاہیں تو کوٸ نشہ آور دواٸ پلا دیں تاکہ آپ کو زیادہ تکلیف محسوس نہ ہو؟
آپ نے فرمایا:

اگر میں اس سے بہتر طریقہ آپ کو بتا دوں تو؟
طبیب نے پوچھا وہ کیا؟
آپ نے فرمایا:

کسی ایسے قاری کو بلاٶ جو بہت عمدہ انداز میں قرآن حکیم کی تلاوت کرتا ہو.

وہ میرے پاس بیٹھ کر قرآن پڑھنا شروع کردے جب تم دیکھو کہ میرا چہرا سرخ ہو چکا ہے آنکھیں آسمان کی طرف اٹھ چکی ہیں پلکوں نے جھپکنا چھوڑ دیا ہے تو پھر تم اپنا عمل جاری کر دینا.

جس طرح چاہنا ٹانگ کاٹ دینا.

طبیب نے ایسے ہی کیا جب تلاوت سنتے سنتے ان پر یہ خود فراموشی کی کیفیت طاری ہوگٸ تو طبیب نے ٹانگ کاٹ دی جب ہوش آٸ تو طبیب نے پوچھا آپ کو ٹانگ کاٹتے وقت تکلیف نہیں ہوٸ فرمانے لگے اللہ کی محبت کی ٹھنڈک اور نشہ میرے رگ و ریشہ میں سرایت کرچکا تھا.
جس کی وجہ سے مجھے کوٸ تکلیف محسوس نہیں ہوٸ.
ہڈی کاٹنے والی آری کی حرارت کو کتاب اللہ کی حلاوت، لذت اور مٹھاس نے ختم کر دیا تھا.
پھر انہوں نے اپنی کٹی ہوٸ ٹانگ کو پکڑا اس کی طرف دیکھتے ہوئے کہنے لگے قیامت کے روز جب میں اپنے رب سے ملوں گا میرا رب مجھ سے پوچھے گا.
کیا میں چالیس سال کے عرصے میں تیرے ساتھ کسی حرام کام کی طرف چل کر گیا میں یہ جواب دوں گا کہ بالکل نہیں اللہ کے فضل و کرم سے میں اپنی اس بات میں سچا ہوں گا.


حضرت ابوالعالیہ کے تقوے،خوف خدا، آخرت کی تیاری، اللہ تعالی سے ملاقات کے شوق کا یہ عالم ہو گیا کہ انہوں نے اپنے لۓ کفن تیار کروایا ہر مہینے وہ ایک دن کفن پہنتے پھر اسے اتار کر رکھ دیتے.
انہوں نے اپنی زندگی میں تن درستی کی حالت میں تقریبا سترہ مرتبہ وصیت لکھی اور وصیت لکھتے وقت اپنی زندگی کے آخری لمحات کا تزکرہ بھی کر دیتے جب اپنی طرف مقرر کردہ وقت آتا تو وصیت نامہ دیکھتے.
اس میں چند ایک تبدیلیاں کر دیتے یا اسے یکسر بدل دیتے.
گناہوں سے پاک
دنیاوی آلاٸشوں سے مبرا
اپنے رب کی رحمت کے امیدوار
نبی اکرم (ﷺ) کی ملاقات کا شوق دل میں بساۓ ہوۓ ماہ شوال

٩٣ ھجری کو وہ اپنے رب سے جا ملے.
انا للہ وانا الیہ راجعون


ابوالعالیہ رفیع بن مہران کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لۓ درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں

 

١۔ سیراسلام النباء علامہ ذھبی
٢٠٧/٤
٢۔الطبقات الکبری لابن سعد
١٢/٧
٣۔حلیتہ الاولیاء ابو نعیم اصفہانی
٢٢٤.٢١٧/٢
٤۔تھذیب التھذیب لابن حجر
٢٧٤/٣
٥۔المعارف ابن قتیبہ
٤٥٤
٦۔الاصابہ فی تمینیر الصحابہ

٢٧٤٠/١

٧۔تزکرةالحفاظ ذھبی
٥٧/١

 

 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر
Table of Contents