Sections
< All Topics
Print

30. Hazrat Ahnaf Bin Qais (رحمہ اللہ) ; QABEELAH BANU TAMEEM KAY SARDAAR

HAZRAT AHNAF BIN QAIS رحمہ اللہ

               QABEELAH BANU TAMEEM KAY SARDAAR

Ahnaf bin Qais Izzat-o-Sharf aur sardaari ke uss Aala-o-Arafia maqam par fayez hain keh unhein iqtadaar koi fayeda deta hai aur na hi ghosha nasheeni koi nuqsan pohchaati hai.

(Ziyaad Bin Umayyah)

Damishq mein mausam bahaar apnay poore joban par tha, Sar Sabz-o-Shadaab ghanay baghaat kay darakht lehlehatay huye aapas mein athkeliyaan kar rahay thay. Tarotazah phoolon se fizaa mehak rahi thi, Ameer ul Momineen Muawiyah Bin Abu Sufiyaan kay Shaahi mehal mein aanay walay mehmaanonn kay istaqbaal ki tayaariyan ho rahi thi, Darbaar sajaa dia gaya.

Ameer Muawiyah ki behan Umme Hukam parday ki oat mein khadi ho gai taake majlis mein bayaan honay wali Ahadees-e-Rasool (علیہ السلام) ki sam’aat kar sakein aur Ahle Majlis ki baahami guftagu kay dauraan pesh kiye janay walay nadir waqiy’aat, Umdah ash’aar aur Hikmat-o-Danai ki baatein sun sakein, Yeh choonke badi danish mand, Buland himmat aur Zood-o-Faham khatoon thi usay iss baat ka bakhoobi ilm tha kay iss ka bhai logon ko darbaar mein in kay Martabah-o-Maqaam kay mutaabiq baithnay ka hukm dega.


Lekin Umme Hukam ne dekha keh iss ka bhai sab se pehaly aik aise Shakhs ka istaqbaal kar raha hai jo bazaahir mamooli sa maloom hota hai, Umme Hukam ne suna keh us ka bhai mehmaan se keh raha hai keh Jang-e-Siffeen mein aik martabah main ne Aap ko dekha keh aap Ali Bin Abi Taalib رضي الله عنه ki Safhon mein shamil hain, Yeh manzar meray liye sohaan rooh sabit hua, Bhai ki yeh baat suntay hi mehmaan ne kaha:

Allah ki qasam Aye Muawiyah woh dil jis mein teray khilaaf nafrat ki asraat thay woh aaj bhi humaray seenon mein dhadak rahay hain.

Woh talwaarein jo hum ne aap kay khilaaf lehraai thi aaj bhi humaray haathon mein hain, Agar tum ladai ki taraf aik inch badhoge to hum aik baalasht badhenge, Agar tum ladai ki taraf chaloge to hum us ki taraf daudenge.

Allah ki qasam hum aaj aap se koi atiya yaa tahaif wasool karnay ka iradah nahi rakhtay aur naa hi humaray dilon mein teray Zulm-o-Sitam ka koi zarrah barabar khauf hai.

Hum to mehez islaah ahwaal, Ittehaad-o-Ittefaaq aur apas mein bhai chaaray ki fizaa paidah karnay kay liye aap kay paas aaye hain.

Yeh kadwi kasaili baatein intahayi tursh rawi kay sath is ne ki aur badbadata hua darbaar se baahir nikal gaya. Yeh manzar dekh kar Umme Hukam se raha na gaya us ne thoda sa parda sarkaaya taake woh us shakhs ko dekh sakein jo Ameer ul Momineen kay samnay eent ka jawqab patthar se de raha hai aur aik ki do sunaa raha hai. Kya dekhti hain kay aik thignay qad, Kamzor jisam, Chote sar, Tedhi thorhi, Dhansi hui aankhain, Andar ki taraf muday huye paaon wala aik aisa shakhs hai keh jis kay jisam kay har aik jod mein koi na koi zahiri aib zaroor hai. Ume Hukam ne apnay bhai ki taraf dekhtay huye kaha:

Ameer ul Momineen yeh kaun hai jo Khalifah ko is kay ghar mein daant pilaa raha hai aur jali kati suna raha hai? Ameer Muawiyah ne thandi aah bhari aur farmaaya:

Yeh woh shakhs hai kay jab yeh ghazabnaak hota hai to is kay sath Banu Tameem kay aik laakh afraad baghair sochay samjhay ghussy se laal peelay ho jatay hain, Unhain yeh pata hi nahi hota keh yeh shakhs naraz kyun hua hai ?

Yeh Banu Tameem ka sardaar Ahnaf Bin Qais hai. Yeh Sar zameen Arab ka jigar goshah aur pay dar pay fatoohaat hasil karnay wala jarri bahadur hai.

Aiyye Ahnaf Bin Qais ki Dastaan-e-Hayat ka aaghaz kartay hain.


Hijrat se teen saal pehlay Qais Bin Muawiyah Saadi kay haan aik ladka paidah hua jis ka naam Zuhhaak rakha gaya us kay dono paaon andar ki jaanib tedhay thay jis ki wajah se log usay Ahnaf kay naam se pukarnay lagaye phir yeh laqab un kay asli naam par ghaalib aa gaya.

Ahnaf ka Walid Qais apni Qaum Banu Tameem mein kisi a’alaa rutbay par fayez nahi tha aur naa hi kisi bohot kam darjay par balkay yeh mutawast darjay ka aik baa waqaar aadmi tha, Ahnaf ki padaish najar kay maghrabi jaanib aik basti mein hui abhi yeh chalnay kay qaabil bhi nahi hua tha keh us ka baap qatal ho gaya.

Unfawaan-e-Shabaab mein hi is kay dil ko islaam ki ziyaapashiyon ne munawwar kar diya.

Rasool-e-Aqdas ne apni wafaat se chand saal pehlay apnay Sahaabah رضي الله عنهم mein se aik muballigh ko Ahnaf Bin Qais ki qaum kay samnay islaam ki daawat pesh karnay kay liye bheja is mubaligh ne qaum ko emaan qabool karnay ki daawat di is kay Samnay islaam ki khoobiyaan bayaan ki qaum khamosh tamashai bani rahi aur hazereen aik doosray ko dekhnay lage. Ahnaf bhi wahaan maujood tha usnay jurrat ka muzaahira kartay huye kaha meri qaum yeh main kaya dekh raha hun tum aik qadam aage barhtay ho aur doosray hi qadam Peechay hattay nazar aatay ho. Allah ki qasam aaj tak hum ne is ki zabaan se khair kay kalimaat hi sunay hain.

Hidaayat kay muballigh ki baat mano Duniya-o-Aakhirat mein kaamyabi hasil kar logay?

Thodi hi der baad woh sab log dayerah Islaam mein daakhil ho gaye aur yeh naujawan Ahnaf bhi daman ghair islaam ho gaya.

Islaam qabool karnay kay baad Banu Tameem kay buzurg Rasool-e-Aqdas ﷺ ki ziyaarat kay liye Madeenah Munawarrah gaye lekin Ahnaf Bin Qais no umri ki wajah se is noorani wafad mein shaamil na ho sakaa, is tarah Rasool-e-Aqdas (ﷺ) ka Sahaabi honay ka sharaf to hasil na kar sakaa Albatta aap ki khushnoodi, Razaa aur duaa ki sa’adat hasil karnay se mehroom na raha.

Ahnaf Bin Qais bayaan kartay keh main Sayyedna Umar Bin Khattaab رضي الله عنه kay daur khilaafat mein aik roz Baitullah ka tawaaf kar raha tha aik shakhs jis kay sath meri pehlay se jaan pehchaan thi.

Usnay mera hath pakda aur kaha:

Kya main aap ko khushkhabri sunaaon?

Main ne kaha kyun nahi sunao!

Usnay bataya kya aap ko yaad hai keh jis din Rasoolullah (ﷺ) ne mujhe aap ki qaum ki taraf muballigh banaa kar bheja main qaum ko Allah ka deen qabool karnay ki daawat denay laga log tazabzub ka shikaar thay kya tumhe yaad hai keh tum ne qaum se kya baatein ki thi?

Maine kahaa mujhe sab baatein yaad hain.

Usnay kaha main ne wapis jaa kar Nabi Akram (ﷺ) ki khidmat mein teraa tazkirah kiya aur teri sab baatein Aap ki khidmat mein pesh ki.

Aap ne sun kar irshad Farmaya:

Ilahi Ahnaf Bin Qais ko bakhsh day

Ahnaf Bin Qais kehtay hain keh qayamat kay din bakhshish ki ummeed sab aamaal se zyadah mujhe is duaa ki binah par hogi jo Rasool-e-Aqdas (ﷺ) ne meray liye ki thi. Bilaashubah yeh meray liye Dunia-o-Maafiha se badi daulat hai.

Jab Rasool-e-Akram (ﷺ) Allah ko pyare ho gaye aur  Musaylmah kazzaab jhooti nabuwwat ka dawa kartay huye kham thonk kar maidan mein aa gaya kuch log isse mutaasar ho kar murtad ho gaye, Aik roz Ahnaf Bin Qais apnay chacha Mutashammis kay humrah Musaylmah se mulaaqat karnay kay liye gaye yeh is waqt mein alhad jawaan tha, Jab dono mulaaqat karnay kay baad is kay ghar se niklay chacha ne mujh se puchaa Ahnaf is shakhs kay baray mein tumhara kya khayaal hai?

Maine ne barjistah jawaab diya: Jhootaa, Makkaar, Chalbaaz, Daghabaaz, Allah Ta’alaa aur Aa’mat ul Naas ka mujrim hai mujhe yeh shaitaan ka chela aur khabisul nafss dikhai diya. Yeh talkh tabsarah sun kar chachaa ne muskaratay huye kaha:

Agar main Musaylmah ko teri yeh baatein bata dun kya teray dil mein koi khatrah mehsoos nahi hoga?

Ahnaf ne kahaa batao batao main bhi is kay samnay aap ko qasam day kar puchoonga, Keh kya tum bhi Musaylmah kazzaab kay baray mein wahi khayalaat nahi rakhtay jo khayalaat meray hain. Is tarah chacha aur bhatijaa Islaam par pukhta yaqeen rakhtay huye aur Musaylmah ko mazaq kartay huye apni raah chal diye.


Ahnaf Bin Qais ka nau umri mein hi azam-e-Rasikh aur yaqeen muhakkam aur pukhtaa moqaf ikhtiyaar kar lenay se shaayd aap angusht badnaan ho jaayen aur aap ko yeh andaaz Ajeeb-o-Ghareeb lagay, Lekin aap ka ta’ajub us waqt khatam ho jayega aur Dehshat-o-Hairani jati rahegi jab aap Banu Tameem kay is ubhartay huye nojawaan ko pehchaan lenge keh yeh Zakawaat-o-Zahaanat, Fataanat, Saraf nigaahi aur pakeezgi. Fitrat mein yagaana rozgaar hai aur bachpan se apni qaum kay mashaaikh kay sath baitha karta tha inki Majlis mein haaziri deta aur in ke ijtamaa’t mein shareek hota nez apni qaum kay hukmaraan aur danishwaroon kay samnay zaanuay talammuz tay karta.

Aik roz is ne apnay baray mein kaha keh hum Qais Bin Aa’sim Munqari ki majlis mein baar baar hazri diya kartay thay taake hum in se Ilm-o-Burdbaari ka dars lein ulama ki Majlis mein baar baar shareek hotay taakeh un se ilm haasil karin.

Un se dariyaaft kiya gaya aap kay ustaaz ki barabari kis darjhay ki thi?

Unhon ne bataaya kay mainay aik roz unhain dekha keh aap ghar kay sehan mein kamar aur ghutnon ko panka baandh kar baithay hain aur apni qaum kay chand afraad se mahw guftagu hain, Main ne salaam kiya aur baith gaya. Thodi hi dair guzri thi kay hum ne Shor-o-Gul sunaa hum ne dekhaa kay aap kay paas aik shakhs ko laaya gaya jis kay dono hath peeth picahy bandhay huye thay aur doosri ek laash hai. Us ko bataaya gaya keh yeh teray bhai ka beta hai aur is ne teray falaan betay ko qatal kar dia hai aur hum isay pakar kar aap kay paas laaye hain.

Bakhudaa aap ne yeh sun kar naa hi apna panka kholaa aur naa hi Silsalah-e-Kalaam munqate kiya.

Phir aap ne qaatil bhatijay ki taraf dekha aur farmaaya:

Meray bhai kay betay ne to apnay chachaa kay betay ko qatal kar diya hai aur apnay hath se Qat’a rehmi ki hai aur apnay hi teer ka waar apnay oopar hi kar diya hai.

Phir aap ne apnay doosray betay se kaha betay apnay chachazaad bhai kay haath khol do phir iski waalidah ko so untaniyaan deet kay taur par pesh karo, Woh bechaari mazloom hai, Dil giraftah hai, Ghamzadah aur pareshaan haal hai.


Hazrat Ahnaf Bin Qais رحمہ اللہ ne Jaleelul Qadar Sahaba Karaam رضي الله عنهم se taleem hasil ki aur in mein sar-e-fehrist Hazrat Farooq-e-Aazam رضي الله عنه hain aap ki Majalis mein yeh haazir huye aap kay Mawa’az-e-Hasnah sunay, Aap kay faisaloon aur ahkamaat ko yaad kiya yeh madarsah umriyah kay Zaheen-o-Fateen aur honahaar shagird thay in parapnay Nabghah rozgaar ustaaz ki geheri chaap thi aik martabah in se Puchaa gaya aap ki tabiyat mein yeh waqaar aur Hikmat-o-Danai kay aasaar kaise paidah huye?

Farmaaya: Darj zail baaton se jo main ne Hazrat Umar Bin Khattaab  رضي الله عنه ki zabaan mubaarak se sunein.

Aap ne farmaaya:

Jis ne mazaaq kiya woh is ki wajah se zaleel hua.

Jis mein koi cheez zyadah payi jati hai woh isi kay hawalay se maa’shray mein Ma’roof-o-Mashhoor ho jata hai.

Jo zyada bolta hai woh laghzishain karta.

Jo zyadah laghzishain karay us mein haya kam ho jati hai.

Jis mein haya kam ho jaye us mein taqwaa kam ho jata hai.

Aur jis mein taqwaa kam ho jaye us ka dil marr jata hai.


Ahnaf Bin Qais رحمه الله apni qaum ka sardaar ban gaya halankeh wohh Hasab-o-Nasab ikhtiyar se in par foqiyat rakhta tha.

Aur naa hi Maa baap kay hawalay se in par koi foqiyat rakhta tha.

Puchnay waalon ne in se raaz ki baat puchi kisi aik ne dariyaaft kiya aye Abu Bahr qaum kis qisam kay shakhs ko apna sardaar banati hai?

Farmaaya jis mein chaar khoobiyaan hon. Woh kisi rukaawat kay baghair apni qaum ka sardaar ban jata hai aap ne dariyaft kiya woh khoobiyaan kaun si hain?

1: Jis ka deen qadam qadam par us se rokta tokta naa ho.

2: Jis ka Hasab-o-Nasab uski hifazat karta ho.

3: Jis ki Aqal-o-Danish uski rehnumayi karti ho.

4: Jis ki hayaa usey buray kaamon se rokti ho.


Ahnaf Bin Qais sar zameen-e-Arab kay in maa’roof-o-Mashhoor Haleem ul tabe’ logon ki fahrist mein shamil ho gaye jin ka tazkirah zarab ul misal kay taur par kiya jata tha.

In ki burdbaari ka waqiyah bhi sun lein.

Aik martabah Umar Bin Ahtasiham ne kisi Shakhs ko baraangeekhtah kiya keh woh unhain galiyaan day jis se unki hawaiyaan urr jaauein, Lekin Hazrat Ahnaf Bin Qais galiyaan sun kar bilkul khaamosh rahay, Jab gaali denay walay ne dekha keh yeh shakhs khaamosh hai aur bilkul koi jawaab hi nahi day raha to woh angootha munh mein lay kar usay katnay laga aur kehne laga:

Hayee afsos Khuda ki qasam is ne mujhe koi jawaab is liye nahi diya keh is kay nazdeek to aik tinkay kay barabar bhi meri haisiyat nahi. Hayee main ne yeh kya kiya?


Aik dafaa ka waqiya hai keh Hazrat Ahnaf Bin Qais رحمہ اللہ Basarah shehar kay baahir akelay jaa rahay thay aik shakhs achaanak un kay samnay aaya aur us ns tabarr tor galiyaan bakni shuru kar di aur lagataar jali kati sunane laga aap galiyaan sun kar bemazah honay kay bajaaye khaamoshi se nigaahen jhukaaye huye chalay jaa rahay thay.

Jab dono logon kay qadray qareeb pohnchay to achaanak is shakhs ki taraf dekhtay huye farmaanay lage jo galiyaan baqi rehti hain woh bhi day lo jo Taan-o-Tashneea kay teer tumhari tarkash mein hain woh bhi chala do abhi mauqaa hai pyare warna zarraa aage barhay meri qaum ne teri yeh baatein sun li to log teri chamri udher dengay.

Hilm-o-Burdbadi kay ilaawa Hazrat Ahnaf Bin Qais رحمہ اللہ ibaadat guzaar, Kasrat se rozay rakhnay walay, Raat ko lambaa qiyam karnay aur logon se beniyaazi ka muzahirah karnay walay thay.

Jab raat apni tareeki kay par chahaar soo phelaa deti to apnaa charaagh raushan kartay aur apnay qareeb rakh kar mehraab mein kharay ho kar namaz shuru kar detay yeh beemar ki tarah aahain bhartay aur yeh amal mehez Allah kay azaab kay dar aur uski naraazgi kay khauf ki wajah se hota.

Jab unhain mehsoos hota keh un se koi gunah sarzard ho gaya hai yaa koi unka aib zaahir ho gaya hai apni ungali charagh ki lau kay qareeb kartay aur apnay aap ko mukhatib kar kay kehtay Ahnaf zara tum is aag ki shiddat aur tamaazat ko mehsoos to karo.

Tunay is jurm ka aakhir irtikaab kyun kiya?

Ahnaf tum par afsos hai agar tu charagh kay is chotay se shol’ay ki tamaazat ko bardasht nahi kar sakta is ki haraarat ko Sabar-o-Tahammul se seh nahi sakta to kal qayamat kay din jahannum kay shoa’lon ko kaise bardasht kar sakay ga?

Ilahi agar tu mujhe bakhsh day to tera yeh karam hai. Aur agar tu mujhe azaab mein mubtala kar day to waqayi main is sazaa ka mustahiq hun.

Allah Hazrat Ahnaf Bin Qais par razi ho gaya aur Allah ne usay bhi razi kar dia.

Woh bilashubah zamanay ki bahaar tha aur logon mein Gohar-e-Nayaab tha.

Farooq-e-Aazam رضي الله عنه ki khilaafat ka ibtadai daur hai? Banu Tameem kay bahaadur, Tajarbah kaar jungaju tez raftaar phurteelay khoobsurat ghodon par baithay tez, Katdaar aur chamkeeli talwaarein kandhon par latkaaye huye ilaqa Ahsaa aur Najad mein waqe’ Basrah chaoni ki jaanib kooch karnay kay liye tayyaar khaday hain taakeh wahaan azeem general Utbah Bin Ghazwaan رضي الله عنه ki qiyaadat mein Irani fauj se ladnay walay lashkar mein shaamil ho kar Jihad Fee Sabeel Allah mein shirkat ki saa’dat hasil kar sakein in mein jawaan Raa’na Ahnaf Bin Qais bhi tha.


Aik roz qaid lashkar Hazart Utbah Bin Ghazhwaan رضي الله عنه ko Ameer ul Momineen Hazrat Umar Bin Khattaab رضي الله عنه ka khat mila jis mein yeh hukm diya gaya tha keh woh apnay lashkar se das aise naik dil Sahaab laaye, Jarri bahaadur aur jangi aazmaish mein pooray utarnay walay mujaahid muntakhib kar kay meray paas bhejein taakeh main in se lashkar kay halaat maloom kar sakoon aur in se tasalli bakhsh mashwarah lay sakoon.

Hazrat Utbah Bin Ghazhwaan رضي الله عنه ne hukam ki tameel kartay huye das umdah, Behtar aur Qaabil-e-Rashk afraad muntakhib kiye aur unhain Madeenah Munawwarah Ameer ul Momineen ki khidmat mein rawana kar diya jin mein Hazrat Ahnaf Bin Qais رحمہ اللہ bhi shaamil thay.


Wafad Ameer ul Momineen ki khidmat mein haazir hua, Aap ne usey khush aamdeed kaha: Apnay paas bithaaya in ki Awaam un Naas ki zarooriyaat kay baray mein dariyaaft kiya.

Arbaab wafad chokas huye aur kehnay lagay:

Ameer ul Momineen jahaan tak Awaam un Naas ka ta’alluq hai aap in kay sarbarah hain hum to apnay baray mein aap se baat karengay.

Phir is kay baad har aik ne apnay mutaalbaat Ameer ul Momineen ki khidmat mein pesh kiye.

Ahnaf Bin Qais ne Sab kay baad baat ki kyun kay woh sab se kam umar tha.

Unhon ne Allah ki Hamd-o-Sanaa kay baad farmaaya:

Ameer ul Momineen jis lashkar Islaam ne Misar par chadhaai ki, woh wahaan ki sar Sabaz-o-Shadaab zameen aur firaun kay a’ali shaan bangalon par qaabiz ho gaya.

Aur jo log sar zameen shaam mein farokash huye woh A’ish-o-Ishrat kay sath shahaan room kay mehlaat mein zindagi basar karnay lagay.

Aur jin logon ne Iran ka rukh kiya woh meethay pani kay dariyaaon, sar Sabz-o-Shadaab baghaat aur shahaan Iran kay aali shaan mehllaat se lutf andoz honay lage.

Lekin hmaari qaum jis ne Basrah mein padaao kiya unhon ne seem tahoor ki mari hui zameen par deray dalay, Naa kabhi wahaan ki matti khushk hoti hai aur naa hi wahaan kabhi koi sabzah ugtaa hai, Is kay aik taraf namkeen samandar thaathein marta hai aur doosri taraf bay Aab-o-Giyah sehraa ka aik taweel silsalah hai. Ameer ul Momineen aap ki khidmat mein meri yeh modbanah guzaarish hai, In logon kay nuksaan ki talaafi ki jaaye, In ki zindagi khushgawaar banaai jaaye, Basrah kay governer ko aap yeh hukam dain keh woh in kay liye aik neher khoday jis kay meethay pani se yeh log mustafaiz hon, Apnay jaanwaron ko pani pilaaein aur is se kheti baadi bhi karein. Jis se in kay halaat theek ho jaaein gay. Wahaan rehaish pazeer tamaam khandaanon ki halat sanwar jaayegi is tarah ashiyah kay narkh bhi kam ho jaaein gay. Is se inhain Jihad fee Sabeelillah ki taiyaari mein madad milaegi Ameer ul Momineen Hazrat Umar Bin Khattaab  رضي الله عنه ne is nojawaan ko rashk bhari nigaah se dekhtay huye wafad se kaha: Kya tum ne bhi aisi umdah guftagu ki bakhuda yeh qaum ka sardaar dikhai deta hai.

Phir Ameer ul Momineen ne wafad kay arkaan ko tahaif se nawazaa aur jab Ahnaf Bin Qais ko tahaif pesh kiye gaye to unhon ne baray Adab-o-Ahtaram se arz kiya: Ameer ul Momineen hum Laqq-o-Daqq sehrah ko khoon paseena aik kar kay aboor kartay huye aap kay paas mehez inamaat tahaif wasool karnay kay liye haazir nahi huye. Mujhe in tahaif se koi dilchaspi nahi mujhe to sirf apni qaum ki zaboon haali ki fikar daman geer hai.

Agar aap is ki mushkil hal kar dain to bass yehi kafi hai meray liye, Yehi sab se bada tohfah hai yeh baat sun kar Ameer ul Momineen ko aur zyadah ta’ajjub hua yeh ladka Ahl-e-Basrah ka sardaar hai.

Jab Majlis barkhaast hui, Arkaan-e-Wafad apni apni sawaariyon ki jaanib janay kay liye taiyaar huye taakeh wahaan raat basar karein. Ameer ul Momineen ne tamaam afraad kay thelon ka baghaur jayezah liya, Aap ne aik thelaa dekha keh bohot umdah kapday ka aik pehlu thelay se baahir latkaa hua tha aap ne pucha:

Yeh kis ka hai?

Ahnaf Bin Qais ne Kaha Ameer ul Momineen yeh mera hai.

Hazrat Umar ne pucha yeh kitnay mein khareeda hai?

Ahnaf Bin Qais ne Kaha aath dirham mein.

Hazrat Umar رضي الله عنه ne yeh sun kar baday hi naram lehjay mein irshad farmaaya kaya aap kay liye aik chaadar kafi na thi. Aur yeh doosri chaadar khareednay mein jo raqam tum ne kharch ki is se apnay doosray musalmaan bhai ki madad kar saktay thay.

Phir farmaaya: Apnay maal mein se itna kharch kiya karo jitna tumharay liye behtar ho.

Zaid maal ka masraf munaasib makaam par kiya karo. Is se khushhaali aayegi aur tumari ijtamaai zindagi mein bahaar aa jaayegi.

Hazrat Ahnaf Bin Qais ne yeh naseehat aamooz baatein sun kar nigaahain jhukaa li aur koi baat na ki.


Ameer ul Momineen ne wafad ko wapis Basrah rawaana honay ka hukam saadir farmaaya lekin Ahnaf Bin Qais ko aik saal kay liye apnay paas rok liya.

Ameer ul Momineen Hazrat Umar Bin Khattaab رضي الله عنه ki zarf nigaahi ne yeh jaanch liya tha keh Tameemi nojawaan mein bala ki zahaanat Qaabil-e-Rashk Quwwat-e-Bayaan, Azmat-e-Nafs, Buland himmati aur qudrati salahiyaton ka bepanah zakheerah paya jata hai aap kay dil mein yeh rughbat paidah hui kay is nojawaan ki tarbiyat inki nigrani mein ho. Jaleelul Qadar Sahaaba-e-Kiraam se tarbiyat hasil karay in ki sohbat mein deen ka ilm hasil karay.

Ameer ul Momineen yeh chahtay thay keh is nojawaan ko hukoomati ikhtiyaraat denay se pehlay khoob achi tarah taiyaar kar lia jaaye.

Farooq-e-Azam رضي الله عنه Muslim mu’ashray kay zaheen aur Faseeh ul bayaan afraad kay baray mein apnay dil mein zyadah andeshah mehsoos kiya kartay thay. Aap farmaaya kartay thay jab aise afraad durust ho jatay hain to duniya ko Khair-o-Bhalai se bhar detay hain aur jab in mein fasad paidah ho jata hai to in ki zahaanat logon kay liye wabaal ban jati hai. Ab aik saal mukammal ho gaya to Hazrat Umar رضي الله عنه ne Ahnaf Bin Qais se kaha:

Main ne har zaaviye se tumhain achi tarah aazmayaa mujhe aap mein Khair-o-Bhalai hi dikhai di. Maine tumharay zaahir ko acha dekha aur main chahtaa hun keh tera baatin bhi zaahir ki tarah ho jaaye phir usay ma’arkay mein shamooliyat kay liye Iran rawaana kiya aur commander Abu Moosa Asha’ri رضي الله عنه kay naam diya jis mein yeh tehreer tha.

Ahnaf Bin Qais ko apnay qareeb rakhna is se mashwarah letay rehna aur is ki baaton ko ghaur se sunna.


Ahnaf Bin Qais sarzameen Faaris kay Sharq-o-Garab mein sar garam amal Lashkar-e-Islaam kay jhanday talay masroof jihad ho gaye Jurrat-o-Burdbaari ki dastaanein raqam ki din ba din unka neezah buland honay laga aur sitarah chamaknay laga. Unhone apni qaum Banu Tameem kay shana ba shana dushman kay sath nabard aazmai mein apni jaddojehed ki intaha kar di, In kay haathon Allah Ta’ala ne tastar sheher fatah kar dia jo taaj kesarwi ka qeemati moti tasawwur kiya jata tha aur Hurmazaan giraftaar hua.


Hurmazaan aik bahadur, Nidar aur tajarbah kaar Irani fauj ka commander tha aur yeh Ghairat-o-Haamiyat mein deegar umrah se badh kar taaqat war aur Aazam-e-Rasikh mein sab se badh kar tez aur jangi daaon pech mein sab se badh kar chalbaaz tha.

Lashkar islaam ki kamyaabiyon ne Aksar-o-Beshtar usay sulah par majboor kiya lekin jab Usay apni kamyaabi ka mamooli sa ahsaas bhi hota to yeh fauran masaalehti mo’aahidah tod deta.

Jab lashkar-e-Islaam ne Tastar sheher ko gheray mein lay liya, Hurmazaan aik mehfooz qilay mein panah gazeen ho kar kehnay laga:

Meray paas sau teer hain jab tak yeh teer meray hath mein hain tum mujh tak nahi pahunch saktay. Tum jantay ho keh main aik tajarbah kaar teer andaz hun mera nishana khata nahi jata tum mujhe us waqt tak giraftaar karnay mein kamyaab nahi ho saktay jab tak main tumharay sau aadmi zakhmi ya mout kay ghaat naa utaar dun.

Mujaahideen ne uski baatein sun kar kaha tum chahte kya ho? Usnay kaha main tumharay Khalifah Umar Bin Khattaab رضي الله عنه kay hukam kay mutaabiq apni satah se neechay utarnay kay liye taiyaar hun woh jo bhi meray sath salook karna chaahain mujhe manzoor hai.

Mujaahideen ne kaha theek hai apka mutalbah humein manzoor hai yeh sun kar Hurmazaan nay teeron bhari tarkish zameen par phenk di aur gardan jhukaaye qilay se neechay utar aaya. Mujahideen ne usay giraftaar kar lia aur usay chand bahaduron ki nigraani mein Madeenay rawana kar dia jin ka sarbarah khadim Rasool (علیہ السلام) Hazrat Anas Bin Malik رضي الله عنه aur madarsatah Umariyyah kay shagird Hazrat Ahnaf Bin Qais ko muqarrar kiya gaya.


Mujaahideen ka wafad Hurmazaan ko liye Ameer ul Momineen ko fatah ki naveed sunanay Madinay ki jaanib raawana hua.

Baitul maal mein jama karanay kay liye un kay paas Maal-e-Ghanimat ka panchwaan hissah bhi tha.

Jab Madeenah Munawwarah kay qareeb pohchay to Hurmazaan ko uski asli halat mein taiyaar kiya.

Usay qeemati resham kay kapday pehna diye gaye jin par sonay kay dhaagon se gulkaari ki gayi thi us kay sarpar aik aisa taaj rakh dia jis par moti joharaat juday huye thay, Kandhay par aik aisi qeemati aur khubsoorat chadi latka di gai jis par moti, Yaqoot, Heeray aur joharaat juday huye thay.

Jab yeh wafad usay lay kar Madeenah mein dakhil hua to bachay aur boodhay jama ho gaye. Aur woh sab qaidi ka libaas dekh kar angusht badnadaan ho gaye.


Wafad kay afraad Hurmazaan ko lay kar Hazrat Umar رضي الله عنه kay ghar gaye aap wahaan maujood naa thay aap kay baray mein pucha to inhain yeh bataaya gaya keh doosray wafad ko milnay kay liye Masjid tashreef lay gaye hai.

Yeh Masjid ki taraf gaye dekha keh aap wahaan bhi maujood nahi, Ameer ul Momineen ki talaash mein jitni dair ho rahi thi logon ka jamghatah badh raha tha.

Un ki hairat ki us waqt koi inteha naa rahi jab chand kheltay huye masoom bachhon ne un se kaha:

Aap ka kya haal hai?

Aap badi preshani se kabhi idhar kabhi udhar aa jaa rahay hain kya aap log kaheen Ameer ul Momineen ko talaash to nahi kar rahay?

Kaha haan!

Bachhon ne bataaya keh wohh Masjid ki daayein jaanib se darakht talay apni chaadar rakhay soye hain.

Hazrat Umar رضي الله عنه koofay se aaye huye wafad ki mulaaqat kay liye ghar se niklay aap ne chaadar odh rakhi thi, Jab wafad mulaaqat kar kay wapis chala gaya aap ne chaadar utari apnay sar talay rakhi aur so gaye.

Wafad Hurmazaan ko lay kar Masjid ki daayein taraf chadhay jab dekha keh Khalifat ul Muslimeen so rahay hain to khamoshi se aap kay paas baith gaye aur apnay qaidi ko bhi waahan qareeb hi bitha liya.


Hurmazaan Arabi nahi janta tha usay yeh Khwaab-o-Khayaal hi nahi tha keh samnay sonay wala shakhs Ameer ul Momineen Umar Bin Khattaab  رضي الله عنه hai. Albatta usne yeh baat sun rakhi thi keh Hazrat Umar bilkul sada zindagi basar kartay hain dunia ki Zaib-o-Zeenat se kinara kash hain.

Lekin yeh to us kay Waham-o-Gumaan mein bhi nahi tha keh Fateh room aur shahaan Iran ki Shaan-o-Shaukat ko khaaq mein mila denay wala Masjid kay aik konay mein baghair koi hifaazati iqdamaat kiye huye zameen par hi aaram ki neend so raha hoga.

Jab us ne qaum ko khamosh ba adab baithay huye dekha to us ne khayaal kiya keh kaya yeh namaz ki taiyari kar rahay hain aur Khalifa ki aamad kay muntazir hain lekin Ahnaf Bin Qais logon ko khamosh rehnay ka ishara day rahay hain bahami guftagu ki bhinbinaahat khatam karnay ka keh rahay hain. Keh is tarha khalifay ki aankh khul jaye aur aaram mein khalal paida hoga, Aik saal un ki sohbat mein rehtay huye unhain is baat ka ilm tha keh Hazrat Umar raat ko bohot kam sotay hain.

Raat bhar ko ya mehrab mein khaday Allah ki ibaadat mein masroof rehtay hain ya riayaa kay halaat Maloom karnay bhes badal kar Madinay ki galiyon mein gasht kartay hain yaa musalmanon kay gharon ki chokidaari karnay kay liye chakkar lagatay hain. Ahnaf Bin Qais kay baar baar mana karnay aur logon ko baar baar ishara karnay se Hurmazaan qadray chokanna hua us ne Mugheerah Bin shobah se pucha woh Farsi jantay thay.

Yeh sonay wala shakhs kaun hai?

Hazrat Mugheerah رضي الله عنه ne usay bataaya keh yeh Ameer ul Momineen Hazrat Umar Bin Khattaab  رضي الله عنه hain. Yeh sun kar Hurmazaan dehshat zadah ho kar kehnay laga kya yeh Umar hain in ka darban kahan hai?

Hazrat Mugheerah رضي الله عنه ne bataaya keh unka koi chokidaar ya darbaan nahi hai!

Hurmazaan ne kaha isay to Nabi hona chahiye.

Hazrat Mugheerah رضي الله عنه ne farmaaya: Yeh anbiyaah kay Naqsh-e-Qadam par chalte hain. Hazrat Muhammad (ﷺ) par nabuwwat ka silsala khatam ho chuka hai. Aap kay baad koi Nabi nahi aaye gaa.

Logon ki tadad mein izafah ho gaya aawazein buland honay lagi. Hazrat Umar bedaar ho gaye uth kar baithay logon ki taraf hairan ho kar dekha Irani general ko dekha, Suraj ki raushni mein is kay sar par chamakta damakta hua taaj dekha aur us kay hath mein aisi chadi dekhi jo nigahoon ko khairah kar rhi thi usay ghaur se dekha aur farmaaya kya yeh Hurmazaan hai?

Ahnaf رحمہ اللہ ne Kaha Ameer ul Momineen bilkul yeh Hurmazaan hi hai. Hazrat Umar ne is kay libaas par sonay, Chandi moti, Yaqoot aur resham ka judaao dekha.

Phir aap ne uss se munh phertay huye اعوذباللہ من النار kaha keh main jahannum ki aag se Allah kay hazoor panah mangtaa hun.

واستعین به علی الدنیا Aur duniyaavi umoor mein Allah ki madad ka talabgaar hun.

Allah ka shukar hai keh jis ne usay aur us kay peero kaaron ko Islaam kay aage jhuka diya phir farmaaya:

Muslamanon deen ko mazbooti se thaam lo.

Aur apnay Nabi Kareem kay Naqash-e-Qadam par chalo.

Tumhain duniya kaheen cheer phaad kar naa rakh day yeh duniya badi dhokay baaz hai.

Jab Ameer ul Momineen guftagu se faarigh huye to Hazrat Ahnaf Bin Qais ne aap ko fatah ki khushkhabri sunaai aur is Jang mein Allah Ta’alaa kay Fazal-o-Karam ki binah par milnay walay Maal-e-Ghaneemat ki ittala’a detay huye arz kiya:

Ameer ul Momineen Hurmazaan ne khud giraftari pesh ki hai aur us ka mutalbah yeh hai keh aap jo hukam saadir farmayenge woh bilaa choon charaan usay manzoor hoga aap is silsalay mein us kay sath baat kar lain aap ne farmaaya jab tak tum is par faakhranah libas jis par sonay chandi ka judaao kiya gaya hai utar nahi detay, Main is se baat nahi karunga yeh takabbur aur nakhwat ka muzahirah mujhe qata’a pasand nahi.

Unhon ne us ka sara zewar aur taaj utaar dia aur chadi us kay hath se lay li aur khurdarah libaas pehna dia.

Phir Hazrat Umar رضي الله عنه nay us ki taraf dekha aur irshad farmaaya:

Arey Hurmazaan ghaddar, Bad ehdi aur bewafaai ki halaakat aur Allah kay hukam kay behtar anjaam ko tum kis andaaz mein dekhtay ho?

Haramzaan ne pispaai ka aiteraaf kartay huye kaha:

Aye Umar hum aur tum zamanah jaahiliyat mein aik jaise thay, Allah naa humaray sath tha aur naa tumharay sath, Lihazaa us daur mein hum ne tum par ghalbah paa lia, Phir jab tum ne Islaam qabool kar lia Allah ne tumhara sath dia aur tum hum par ghalib aa gaye, Yeh baat sun kar Hazrat Umar رضي الله عنه ne farmaaya tumharay hum par ghaalib aanay ki aik wajah yeh thi jo tum ne bayaan ki aur aik doosri wajah yeh thi us waqt tumhari safhoon mein ittehaad tha ijtmaiyyat payi jati thi aur hum mukhtalif safhoon mein batay huye thay.

Phir us ki taraf tarsh rawi se dekha aur talkh lehjay mein kaha:

Aye Haramzaan baar baar humaray sath bad ehedi paimaan shikni aur bewafaai ka tumharay paas kya ma’aqool uzar ya bahana hai?

Hurmazaan ne kaha keh andeshah hai keh aap mujhe qatal kar dein gay.

Hazrat Umar رضي الله عنه ne farmaaya: Koi harj nahi aap mahfooz hain yahaan tak keh aap mujhe haqeeqat waq’i se aagah kar dein gay.

Jab Hurmazaan ne Hazrat Umar رضي الله عنه kay munh se yeh baat suni to qadray khauf jata raha.

Us ne kaha mujhe pyaas lagi hai. Hazrat Umar ne hukm diya keh isay pani pilaao.

Us kay liye pani aik ganday pyaale mein laaya gaya.

Us ne pyale ko ghaur se dekha aur kaha: Main pyaas se mar to saktaa hun lekin is jaise bartan mein pani peena meray bas mein nahi.

Hazrat Umar رضي الله عنه ne hukm dia aise bartan mein pani laao jo isay pasand ho.

Jab us ne bartan ko pakda to us ka hath kampanay laga.

Hazrat Umar رضي الله عنه ne pucha kya hua?

Us ne kaha main darta hun keh pani ka ghoont meray galay se neechay nahi utray ga aur mujhe qatal kar diya jaaye ga.

Hazrat Umar رضي الله عنه: Aaram se pani piyo, pani peenay kay dauraan tujhe qatal nahi kiya jaaye ga.

Lekin is kay bawjood Hurmazaan kay hath se bartan neechay gir gaya aur pani zameen par bikhar gaya.

Hazrat Umar رضي الله عنه ne irshad farmaayaa is kay liye aur pani laao, Is kay liye qatal aur pyaas ko ikathaa naa karo.

Hurmazaan ne kaha mujhe pani ki koi talab nahi rahi.

Main amaan chahtaa hun khudara mujhe qatal naa kiya jaaye. Hazrat Umar رضي الله عنه ne farmaaya main to tujhe nahi chodunga meray nazdeek teri saza qatal hai.

Hurmazaan ne kaha keh aap ne to mujhe amaan day di hai Hazrat Umar رضي الله عنه ne farmaaya keh tu jhoot bolta hai!

Hazrat Anas Bin Malik رضي الله عنه ne kaha:

Ameer ul Momineen yeh sach kehta hai aap isay amaan day chukay hain.

Hazrat Umar رضي الله عنه ne farmaaya: Aye Anas bade afsos ki baat hai bhala main teray bhai Barah Bin Malik kay qaatil ko amaan day sakta hun? Sad haif yeh aik Jaleelul qadar Sahabi Majzah bin Soor ka bhi qaatil hai.

Hazrat Anas ne kaha jab tak tum meri baat ka jawaab nahi day letay tumhain kuch nahi kaha jayega.

Aur aap ne yeh bhi kaha tha keh jab tak tum pani nahi pee letay tumhain kuch nahi kaha jayega.

Hazrat Ahnaf Bin Qais ne Hazrat Anas Bin Malik kay bayaan ki tayeed ki.

Hazireen ne bhi iqraar kiya keh Ameer ul Momineen Hurmazaan ko amaan day chukay hain.

Hazrat Umar رضي الله عنه ne Hurmazaan ki taraf ghazabnaak andaaz mein dekha aur farmaaya tu ne mujhe dhokha dia hai.

Khuda ki qasam main sirf kisi musalman kay haq mein dhokha khana bardaasht kar sakta hun.

Yeh baat sun kar Hurmazaan ne Islaam qabool kar liya.

Hazrat Umar رضي الله عنه ne us ki dil joyi kay liye do hazar dirham ata kiye.


Iraniyon ki baar baar mua’ahidah shikni, Mauqa miltay hi lashkar-e-Islaam par un ka palatna, Jhapatna Hazrat Umar رضي الله عنه kay liye qalaq, Iztaraab aur bechaini ka bayes bana hua tha, Is wafad kay arkaan ko Hazrat Umar ne ikathaa kiya jo Hurmazaan ko lay kar aaye thay un se kaha:

Kya musalman zamiyon ko takleef detay hain aur un se bura salook kartay hain, Un par Zulam-o-Sitam kartay hain?

Wafad mein shaamil tamaam ahbaab ne kaha:

Ameer ul Momineen bakhuda humein maloom nahi keh kisi ne un kay sath bad salooki rawa rakhi ho yaa in se koi bad ehedi ki ho yaa unhain kisi mua’ahiday mein dhokha diya ho.

Hazrat Umar رضي الله عنه ne kaha to phir jab bhi unhain fursat milti hai koi mauqa un kay hath lagta hai to yeh tum par hamlah aawar kyun ho jatay hain halaankeh tumharay aur in kay darmiyaan aman ka moa’ahidah tay paa chuka hota hai?

Wafad ne jo jawaab dia is se Hazrat Umar رضي الله عنه ki tasalli na hui.

Is mauqa par Hazrat Ahnaf Bin Qais رحمہ اللہ khaday huye aur arz ki:

Ameer ul Momineen Ijazat ho to main aap ko haqeeqat hal batata hun.

Aap ne farmaaya haan bataiye aap ki kya ma’loomaat hain?

Ameer ul Momineen aap ne humein sarzameen Iran par mukammal aazadi kay sath hukoomat karnay se rok rakha hai, Aap ne humein hukam diya hai keh hum apnay qabzay mein unki zameenein aur sheher to rakhain lekin Shah-e-Iran zindah hai, Mulk badastoor qayem hai. Woh hum se baar baar fursat miltay hi ladtay is liye hain taakeh humaray qabzay se apni zameen aur ghar baagzaar kara lein, Jab bhi humaray sath mua’ahidah karnay walay ko koi imdad baham pohchata hai yaa madad ki aawaz deta hai yaa Inhain Kamyaabi-o-Kamraani ki ummeed dikhaai deti hai Yeh is se mil kar Humaray muqabalay mein kham thonk kar aa jaatay hain. Ameer ul Momineen aik mulk mein do badshah aik sath nahi reh saktay yeh fitrat kay khilaaf hai, Laazmi aik apnay hareef ko mulk se nikalay ga. Agar aap humein is mulk mein aazadanah iqdamaat day dein yahaan tak keh hum Shah Iran ki hukoomat ka khatmah kar dein, Is se irani ri’ayaa ki ummeedein khatam ho jaayengi, Un ka Josh-o-Jazbah jataa rahay ga. Humara raasta saaf ho jayega aur har qisam ki shorish dab jayegi.

Hazrat Umar رضي الله عنه chand minute kay liye gehri soch mein pad gaye, Phir aap ne sar uthayaa aur irshad farmaaya:

Ahnaf ne bilkul darust tajziyah kiya hai aaj meray samnay sahi ma’ano mein yeh raaz khula hai keh Irani qaum baar baar ehed shikni ka muzahirah kyun karti hai.

Hazrat Ahnaf Bin Qais (رحمہ اللہ) kay is baseerat afroz tazkareh ne tareekh ka rukh mod dia.


Hazrat Ahnaf Bin Qais (رضي الله عنه) kay mufassal Halaat-e-Zindagi ka muta’ala karnay kay liye darjzail kitaabon ka muta’ala karain:

1: Tabaqat Ibn-e-Saad                                                                         7/93
2: Tabaqat Khalifah bin Khayyat                                                  page: 1555
3: Al Maarif Ibn-e-Qutaiba                                                                page: 423
4:  Akhbar-e-Asfhan                                                                              1//224
5: Tahzeeb Ibn-e-Asakir                                                                     7/10
6: Al Bidayah wal Nihaya                                                                   8/332
7: Tarikh ul Islam Zahabi                                                                   3/129
8: Usd ul Ghaba                                                                                        1/55
9: Shazarat ul Zahab                                                                           1/78
10: Al Nujoom ul Zahirah                                                                  1/174
11: Al Ibar                                                                                                      1/80
12: Al Isabah                                                                                                429

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

حضرت احنف بن قیس رضى الله عنه قبیلہ بنو تمیم کے سردار

 

(احنف بن قیس عزت،شرف اور سرداری کے اس اعلی وارفع مقام پر فاٸز ہیں کہ انہیں اقتدار کوٸ فاٸدہ دیتا ہے اور نہ ہی گوشہ نشینی کوٸ نقصان پہنچاتی ہے. )

(زیاد بن امیہ)

 

دمشق میں موسم بہار اپنے جوبن پر تھا سر سبز و شاداب گھنے باغات کے درخت لہلاتے ہوۓ آپس میں اٹھکلیاں کر رہے تھے.
تروتازہ پھولوں سے فضا مہک رہی تھی امیرالمٶمنین معاویہ بن ابو سفیان کے شاہی محل میں آنے والے مہمانوں کے استقبال کی تیاریاں ہو رہی تھیں دربار سجا دیا گیا امیر معاویہ کی بہن ام حکم پردے کی اوٹ میں ہو گٸ تاکہ مجلس میں بیان ہونے والی احادیث رسول علیہ السلام کی سماعت کر سکے اور اہل مجلس کی باہمی گفتگو کے دوران پیش کۓ جانے والے نادر واقعات، عمدہ اشعار اور حکمت و دانائی کی باتیں سن سکے، یہ چونکہ بڑی دانشمند، بلند ہمت اور زود فہم خاتون تھی اسے اس بات کا بخوبی علم تھا کہ اس کا بھاٸ لوگوں کو دربار میں ان کے مرتبہ ومقام کے مطابق بیٹھنے کا حکم دے گا.

سب سے پہلے صحابہ کرام، پھر تابعین اور ان کے بعد درجہ بدرجہ اہل علم اور اہل حسب و نسب افراد کو بٹھایا جاٸیگا.

 


لیکن ام حکم نے دیکھا کہ اسکا بھاٸ سب سے پہلے ایک ایسے شخص کا استقبال کر رہا ہے جو بظاہر معمولی سا معلوم ہوتا ہے ام حکم نے سنا اس کا بھاٸ مہمان سے کہہ رہا ہے کہ جنگ صفین میں ایک مرتبہ میں نے آپ کو دیکھا کہ آپ علی بن ابی طالب رضى الله عنه کی صفوں میں شامل ہیں یہ منظر میرے لۓ سوہان روح ثابت ہوا.

بھاٸ کی یہ بات سنتے ہی مہمان نے کہا:

الله کی قسم اے معاویہ وہ دل جس میں تیرے خلاف نفرت کی اثرات تھے وہ آج بھی ہمارے سینوں میں دھڑک رہے ہیں.

وہ تلواریں جو ہم نے آپ کے خلاف لہراٸ تھیں آج بھی ہمارے ہاتھوں میں ہیں اگر تم لڑاٸ کی طرف ایک انچ بڑھو گے تو ہم ایک بالشت بڑھیں گے اگر تم لڑاٸ کی طرف چلو گے ہم اس کی طرف دوڑیں گے.

الله کی قسم ہم آج آپ سے کوٸ عطیہ یا تحاٸف وصول کرنے کا ارادہ نہیں رکھتے اور نہ ہی ہمارے دلوں میں تیرے ظلم و ستم کا کوٸ ذرہ برابر خوف ہے.

 ہم تو محض اصلاح احوال، اتحاد و اتفاق اور آپس میں بھاٸ چارے کی فضا پیدا کرنے کے لۓ آپ کے پاس آۓ ہیں.

یہ کڑوی کسیلی باتیں انتہاٸ ترش روٸ کے ساتھ اس نے کیں اور بڑبڑاتا ہوا دربار سے باہر نکل گیا، یہ منظر دیکھ کر ام حکم سے نہ رہا گیا اس نے تھوڑا سا پردہ سرکایا تاکہ وہ اس شخص کو دیکھ سکے جو امیرالمٶمنین کے سامنے اینٹ کا جواب پتھر سے دے رہا ہے اور ایک کی دو سنا رہا ہے کیا دیکھتی ہیں کہ ایک ٹھگنے قد، کمزور جسم، چھوٹے سر، ٹیڑھی ٹھوڑی، دھنسی ہوٸ آنکھیں، اندر کی طرف مڑے ہوۓ پاٶں والا ایک ایسا شخص ہے کہ جس کے جسم کے ہر ایک جوڑ میں کوٸ نہ کوٸ ظاہری عیب ضرور ہے.

ام حکم نے اپنے بھاٸ کی طرف دیکھتے ہوۓ کہا:

امیرالمٶمنین یہ کون ہے جو خلیفہ کو اس کے گھر میں ڈانٹ پلا رہا ہے اور جلی کٹی سنا رہا ہے.

امیر معاویہ نے ٹھنڈی آہ بھرتے ہوۓ فرمایا:

یہ وہ شخص ہے کہ جب یہ غضبناک ہوتا ہے تو اس کے ساتھ بنو تمیم کے ایک لاکھ افراد بغیر سوچے سمجھے غصے سے لال پیلے ہو جاتے ہیں انہیں یہ پتہ ہی نہیں ہوتا کہ یہ شخص ناراض کیوں ہوا ہے؟
یہ بنو تمیم کا سردار احنف بن قیس ہے.

یہ سرزمین عرب کا جگر گوشہ اور پے در پے فتوحات حاصل کرنے والا جری بہادر ہے.

آٸیے احنف بن قیس کی داستان حیات کا آغاز کرتے ہیں.



ہجرت سے تین سال پہلے قیس بن معاویہ سعدی کے ہاں ایک لڑکا پیدا ہوا جس کا نام ضحاک رکھا گیا اس کے دونوں پاٶں اندر کی جانب ٹیڑھے تھے جس کی وجہ سے لوگ اسے احنف کے نام سے پکارنے لگے پھر یہ لقب ان کے اصلی نام پر غالب آگیا.

احنف کا والد قیس اپنی قوم بنی تمیم میں کسی اعلی رتبے پر فاٸز نہیں تھا اور نہ ہی کسی بہت کم درجے پر بلکہ یہ متوسط درجے کا ایک باوقار آدمی تھا، احنف کی پیدائش نجد کے مغربی جانب ایک بستی میں ہوٸ ابھی یہ چلنے کے قابل بھی نہیں ہوا تھا کہ اس کا باپ قتل ہو گیا.

عنفوان شباب میں ہی اس کے دل کو اسلام کی ضیا پاشیوں نے منور کر دیا.

رسول اقدس نے اپنی وفات سے چند سال پہلے اپنے صحابہ رضى الله عنه میں سے ایک مبلّغ کو احنف بن قیس کی قوم کے سامنے اسلام کی دعوت پیش کرنے کے لۓ بھیجا اس مبلغ نے قوم کو ایمان قبول کرنے کی دعوت دی اس کے سامنے اسلام کی خوبیاں بیان کیں قوم خاموش تماشائی بنی رہی اور حاضرین ایک دوسرے کو دیکھنے لگے، احنف بھی وہاں موجود تھا اس نے جرات کا مظاہرہ کرتے ہوۓ کہا:

میری قوم یہ میں کیا دیکھ رہا ہوں تم ایک قدم آگے بڑھاتے ہو اور دوسرے ہی قدم پیچھے ہٹتے نظر آتے ہو.

الله کی قسم یہ تمہارے پاس آنے والا خیر و برکت کا پیغام لے کر آیا ہے.

تمہیں اچھے اخلاق اپنانے کی تلقین کرتا ہے اور ناجائز کاموں سے روکتا ہے.

الله کی قسم آج تک ہم نے اس کی زبان سے خیر کے کلمات ہی سنے ہیں.

ہدایت کے مبلغ کی بات مانو دنیا و آخرت میں کامیابی حاصل کر لو گے.

تھوڑی ہی دیر بعد وہ سب لوگ داٸرہ اسلام میں داخل ہوگۓ اور یہ نوجوان احنف بھی دامنگیر اسلام ہوگیا.

اسلام قبول کرنے کے بعد بنو تمیم کے بزرگ رسول اقدس (ﷺ) کی زیارت کے لۓ مدینہ منورہ گۓ لیکن احنف بن قیس نو عمری کی وجہ سے اس نورانی وفد میں شامل نہ ہوسکا، اس طرح رسول اقدس (ﷺ) کا صحابی ہونے کا شرف تو حاصل نہ کرسکا البتہ آپ کی خوشنودی، رضا اور دعا کی سعادت حاصل کرنے سے محروم نہ رہا.

احنف بن قیس بیان کرتے ہیں کہ میں سیدنا عمر بن خطاب رضى الله عنه کے دور خلافت میں ایک روز بیت اللہ کا طواف کر رہا تھا، ایک شخص جس کے ساتھ میری پہلے سے جان پہچان تھی.

اس نے میرا ہاتھ پکڑا اور کہا:

کیا میں آج آپ کو خوش خبری سناٶں؟
میں نے کہا:

کیوں نہیں سناٶ!.

اس نے بتایا کیا آپ کو یاد ہے کہ جس دن رسول الله (ﷺ) نے مجھے آپ کی قوم کی طرف مبلّغ بنا کر بھیجا میں قوم کو اللہ کا دین قبول کرنے کی دعوت دینے لگا لوگ تذبذب کا شکار تھے کیا تجھے یاد ہے کہ تم نے قوم سے کیا باتیں کی تھیں؟
میں نے کہا:

ہیں مجھے سب باتیں یاد ہیں.

اس نے کہا:

میں نے واپس جا کر نبی اکرم (ﷺ) کی خدمت میں  تیرا تزکرہ کیا تھا اور تیری سب باتیں آپ کی خدمت میں پیش کیں.

آپ نے سن کر ارشاد فرمایا:

الٰہی احنف بن قیس کو بخش دے
احنف بن قیس کہتے ہیں کہ قیامت کے دن بخشش کی امید سب اعمال سے زیادہ مجھے اس دعا کی بنا پر ہوگی جو رسول اقدس (ﷺ) نے میرے لۓ کی تھی.

بلاشبہ یہ میرے لۓ دنیاومافیھا سے بڑی دولت ہے.

جب رسول اکرم(ﷺ) اللہ کو پیارے ہوگۓ اور مسلیمہ  کذاب جھوٹی نبوت کا دعوی کرتے ہوۓ خم ٹھونک کر میدان میں آگیا کچھ لوگ اس سے متاثر ہوکر مرتد ہو گۓ ایک روز احنف بن قیس اپنے چچا متشمس کے ہمراہ مسیلمہ سے ملاقات کرنے کے لۓ گۓ یہ اس وقت میں الھڑ جوان تھا جب دونوں ملاقات کرنے کے بعد اس کے گھر سے نکلے چچا نے مجھ سے پوچھا:

احنف اس شخص کے بارے میں تمہارا کیا خیال ہے؟.
میں نے برجستہ جواب دیا:

جھوٹا مکار چالباز، دغاباز، اللہ تعالی اور عامتہ الناس کا مجرم ہے مجھے یہ شیطان کا چیلہ اور خبیث النفس دیکھاٸ دیا.

یہ تلخ تبصرہ سن کر چچا نے مسکراتے ہوئے کہا:

اگر میں مسیلمہ کو تیری یہ باتیں بتا دوں کیا تیرے دل میں کوٸ خطرہ محسوس نہیں ہوگا؟
احنف نے کہا :

بتاٶ بتاٶ میں بھی اس کے سامنے آپ کو قسم دے کر پوچھوں گا کہ کیا تم بھی مسیلمہ کذاب کے بارے میں وہی خیالات نہیں رکھتے جو خیالات میرے ہیں.

اس طرح چچا اور بھتیجا اسلام پر پختہ یقین رکھتے ہوۓ اور مسیلمہ کو مذاق کرتے ہوۓ اپنی راہ چل دیۓ.

   


احنف بن قیس کا نوعمری میں ہی عزم راسخ اور یقین محکم اور پختہ موقف اختیار کر لینے سے آپ انگشت بدنداں ہو جاٸیں اور آپ کو یہ انداز عجیب و غریب لگے، لیکن آپ کا تعجب اس وقت ختم ہو جاۓ گا اور دھشت و حیرانگی جاتی رہے گی جب آپ بنو تمیم کے اس ابھرتے ہوۓ نوجوان کو پہچان لیں گے کہ یہ ذکاوت ذہانت ژرف نگاہی اور پاکیزگی فطرت میں یگانہ روزگار ہے اور بچپن سے اپنی قوم کے مشاٸخ کے ساتھ بیٹھا کرتا تھا انکی مجالس میں حاضری دیتا ان کے اجتماعات میں شریک ہوتا نیز اپنی قوم کے حکماء اور دانشوروں کے سامنے زانوۓ تلمذ طے کرتا.

 ایک روز اس نے اپنے بارے میں کہا:

کہ ہم قیس بن عاصم منقرمی کی مجلس میں بار بار حاضری دیا کرتے تھے تاکہ ہم ان سے حکم و بردباری کا درس لیں علماء کی مجلس میں بار بار شریک ہوتے تاکہ ان سے علم حاصل کریں.

ان سے دریافت کیا گیا آپ کے استاذ کی بردباری کس درجے کی تھی؟

انہوں نے بتایا کہ میں نے ایک روز انہیں دیکھا کہ آپ گھر کے صحن میں کمر اور گٹھنوں کو پٹکا باندھ کر بیٹھے ہیں اور اپنی قوم کے چند افراد سے محو گفتگو ہیں میں نے سلام کیا اور بیٹھ گیا.

تھوڑی ہی دیر گزری تھی کہ ہم نے شور و غل سنا ہم نے دیکھا کہ آپ کے پاس ایک شخص کو لایا گیا جس کے دونوں ہاتھ پیٹھ پیچھے بندھے ہوۓ تھے اور دوسری ایک لاش ہے.

اس کو بتایا گیا کہ یہ تیرے بھاٸ کا بیٹا ہے اور اس نے تیرے فلاں بیٹے کو قتل کر دیا ہے اور ہم اسے پکڑ کر آپ کے پاس لاۓ ہیں.

بخدا آپ نے یہ سن کر نہ ہی اپنا پٹکا کھولا اور نہ ہی سلسلہ کلام منقطع کیا.

پھر آپ نے اپنے قاتل بھتیجے کی طرف دیکھا اور فرمایا:

میرے بھاٸ کے بیٹے تو نے اپنے چچا کے بیٹے کو قتل کر دیا ہے اور اپنے ہاتھ سے قطع رحمی کی ہے اور اپنے ہی تیر کا وار اپنے اوپر ہی کردیا ہے.

پھر آپ نے اپنے دوسرے بیٹے سے کہا:

بیٹے اپنے چچا زاد بھاٸ کے ہاتھ کھول دو پھر اس کی والدہ کو سو اونٹنیاں دیت کے طور پر پیش کرو، وہ بیچاری مظلوم ہے دل گرفتہ ہے، غمزدہ اور پریشان حال ہے.



حضرت احنف بن قیس (رضہ ) نے جلیل القدر صحابہ کرام ( رضہ) سے تعلیم حاصل کی اور ان میں سر فہرست حضرت فاروق اعظم رضى الله عنه ہیں آپ کی مجالس میں یہ حاضر ہوۓ آپ کے مواعظ حسنہ سنے، آپ کے فیصلوں اور احکامات کو یاد کیا یہ مدرسہ عمریہ کے ذھین و فطین اور ہونہار شاگرد تھے ان پر اپنے نابغہ روزگار استاذ کی گہری چھاپ تھی ایک مرتبہ ان سے پوچھا گیا آپ کی طبیعت میں یہ وقار اور حکمت و دانائی کے آثار کیسے پیدا ہوۓ؟
فرمایا:

درج ذیل باتوں میں جو میں نے حضرت عمر بن خطاب رضى الله عنه کی زبان مبارک سے سنیں،
آپ نے فرمایا:

جس نے مزاق کیا وہ اس کی وجہ سے ذلیل ہوا

جس میں کوٸ چیز زیادہ پاٸ جاتی ہے وہ اسی کے حوالے سے معاشرے میں معروف و مشہور ہو جاتا ہے.

جو زیادہ بولتا ہے وہ لغزشیں کرتا ہے

جو زیادہ لغزشیں کرے اس میں حیاء کم ہو جاتی ہے.

جس میں حیاء کم ہو جاۓ اس میں تقوی کم ہو جاتا ہے

اور جس میں تقوی کم ہو جاۓ اس کا دل مر جاتا ہے.


 

احنف بن قیس رحمہ اللہ اپنی قوم کا سردار بن گیاحالانکہ وہ حسب و نسب کے اعتبار سے ان پر فوقیت نہیں رکھتا تھا.

اور نہ ہی ماں باپ کے حوالے سے ان پر کوٸ فوقیت رکھتا تھا.

 پوچھنے والوں نے ان سے راز کی بات پوچھی:

 کسی ایک نے دریافت کیا:

 اے ابو بحر قوم کس قسم کے شخص کو اپنا سردار بناتی ہے؟

فرمایا:

جس میں چار خوبیاں ہوں.

وہ کسی رکاوٹ کے بغیر اپنی قوم کا سردار بن جاتا ہے آپ نے دریافت کیا:

وہ خوبیاں کون سی ہیں؟


١۔جس کا دین قدم قدم پر اسے روکتا ٹوکتا ہو.

٢۔ جس کا حسب و نسب اس کی حفاظت کرتا ہو.

٣۔جس کی عقل و دانش اس کی راھنماٸ کرتی ہو.

٤۔جس کی حیاء اسے برے کاموں سے روکتی ہو.


احنف بن قیس سرزمین عرب کے ان معروف و مشہور حلیم الطبع لوگوں کی فہرست میں شامل ہو گۓ جن کا تزکرہ ضرب المثل کے طور پر کیا جاتا تھا.

ان کی بردباری کا واقعہ بھی سن لیں.

ایک مرتبہ عمرو بن اھتم نے کسی شخص کو برانگیختہ کیا کہ وہ انہیں گالیاں دے جس سے ان کی ہواٸیاں اڑ جاٸیں لیکن حضرت احنف بن قیس گالیاں سن کر بالکل خاموش رہے جب گالی دینے والے نے دیکھا کہ یہ شخص خاموش ہے اور بالکل کوٸ جواب ہی نہیں دے رہا تو وہ انگوٹھا منہ میں لے کر اسے کاٹنے لگا اور کہنے لگا.
ہاۓ افسوس ! خدا کی قسم اس نے مجھے کوٸ جواب اس لۓ نہیں دیا کہ اس کے نزدیک تو ایک تنکے کے برابر بھی میری حیثیت نہیں.

ہاۓ میں نے یہ کیا کیا؟


ایک دفعہ کا واقعہ ہے کہ حضرت احنف بن قیس رضى الله عنه بصرہ شہر کے باہر اکیلے چلے جا رہے تھے ایک شخص اچانک ان کے سامنے آیا اور اس نے تابڑ توڑ گالیاں بکنا شروع کر دیں. اور لگا تار جلی کٹی سنانے لگا آپ گالیاں سن کر بے مزا ہونے کی بجاۓ خاموشی سے نگاہیں جھکاۓ ہوۓ چلے جا رہے ہیں.

جب دونوں لوگوں کے قدرے قریب پہنچے تو اچانک اس شخص کی طرف دیکھتے ہوۓ فرمانے لگے جو گالیاں باقی رہتی ہیں وہ بھی دے لو جو طعن و تشنیع کے تیر تمہاری ترکش میں ہیں وہ بھی چلا دو ابھی موقعہ ہے پیارے ورنہ ذرا آگے بڑھے اور میری قوم نے تیری یہ باتیں سن لیں تو لوگ تیری چمڑی ادھیڑ دیں گے.

علم و بردباری کے علاوہ حضرت احنف بن قیس رضى الله عنه عبادت گزار، کثرت سے روزے رکھنے والے، رات کو لمبا قیام کرنے والے اور لوگوں سے بے نیازی کا مظاہرہ کرنے والے تھے.

جب رات اپنی تاریکی کے پر چہار سو پھیلا دیتی تو اپنا چراغ روشن کرتے اور اپنے قریب رکھ کر محراب میں کھڑے ہو کر نماز شروع کر دیتے یہ بیمار کی طرح آہیں بھرتے اور یہ عمل محض اللہ کے عذاب کے ڈر اور اس کی ناراضگی کے خوف کی وجہ سے ہوتا.

جب انہیں محسوس ہوتا کہ ان سے کوٸ گناہ سرزد ہوگیا ہے یا کوٸ ان کا عیب ظاہر ہو گیا ہے تو اپنی انگلی چراغ کی لو کی قریب کرتے اور اپنے آپ کو مخاطب کرکے کہتے احنف ذرا تم اس آگ کی شدت اور تمازت کو محسو س تو کرو.

تونے اس جرم کا آخر ارتکا ب کیوں کیا؟
احنف تجھ پر افسوس ہے اگر تو چراغ کے اس چھو ٹے سے شعلے کی تمازت کو برداشت نہیں کر سکتا اس کی حرارت کو صبر و تحمل سے سہ نہیں سکتا تو کل قیامت کے دن جہنم کے شعلوں کو کیسے برداشت کر سکے گا؟
الٰہی اگر تو مجھے بخش دے تو تیرا یہ کرم ہے؟ اور اگر تو مجھے عذاب میں مبتلا کردے تو واقعی میں اس سزا کا مستحق ہوں.

اللہ حضرت احنف بن قیس پر راضی ہو گیا اور اللہ نے اسے بھی راضی کر دیا.

وہ بلاشبہ زمانے کی بہار تھا اور لوگوں میں گو ہر نایاب تھا. فاروق اعظم رضى الله عنه کی خلافت کا ابتدائی دور ہے.

 بنو تمیم کے بہادر، تجربہ کار جنگجو تیز رفتار پھر تیلے خوبصورت گھوڑوں پر بیٹھے ، تیز کاٹ دار اور چمکیلی تلواریں کندھوں پر لٹکاۓ ہوۓ علاقہ احساء اور نجد میں واقع بصرہ چھاؤنی کی جانب کوچ کرنے کے لئے تیار کھڑے ہیں تاکہ وہاں عظیم جرنیل عتبہ بن غزوان رضى الله عنه کی قیادت میں ایرانی فوج سے لڑنے والے لشکر میں شامل ہو کر جہادفی سبیل اللہ میں شرکت کی سعادت حاصل کر سکیں ان میں جوان رعنا احنف بن قیس بھی تھا.


ایک روز قائد لشکر حضرت عتبہ بن غزوان رضى الله عنه کو امیرالمومنین حضرت عمر بن رضى الله عنه کا خط ملا جس میں یہ حکم دیا گیا تھا کہ وہ اپنے لشکر سے دس ایسے نیک دل صاحب راۓ ، جری بہادر اور جنگی آزمائش میں پورے اترنے والے مجاھد منتخب کر کے میرے پاس بھیجیں تا کہ میں ان سے لشکر کے حالات معلوم کر سکوں اور ان سے تسلی بخش مشورہ لے سکوں.

حضرت عتبہ بن غزوان رضى الله عنه نے حکم کی تعمیل کرتے ہوئے دس عمدہ، بہتر اور قابل رشک افراد منتخب کئے اور انہیں مدینہ منورہ امیر المومنین کی خدمت میں روانہ کر دیا جن میں حضرت احنف بن قیس رضى الله عنه بھی شامل تھے.

 


وفد امیرامٶمنین کی خدمت میں حاضر ہوا آپ نے اسے خوش آمدید کہا:

اپنے پاس بٹھایا ان کی اور عوام الناس کی ضروریات کے بارے میں دریافت کیا.

ارباب وفد چوکس ہوۓ اور کہنے لگے.

امیرالمٶمنین جہاں تک عوام الناس کا تعلق ہے آپ ان کے سربراہ ہیں ہم تو اپنے بارے میں آپ سے بات کریں گے.

پھر اس کے بعد ہر ایک نے اپنے مطالبات امیرالمٶمنین کی خدمت میں پیش کۓ .

احنف بن قیس نے سب کے بعد بات کی کیونکہ وہ سب سے کم عمر تھا.

انہوں نے اللہ کی حمدوثنا کے بعد فرمایا:

امیرالمٶمنین جس لشکر اسلام نے مصر پر چڑھائی کی وہ وہاں کی سرسبز و شاداب زمین اور فرعون کے عالی شان بنگلوں پر قابض ہو گیا.

اور جو لوگ سرزمین شام میں فروکش ہوۓ وہ عیش و عشرت کے ساتھ شاہان روم کے محلات میں زندگی بسر کرنے لگے.

اور جن لوگوں نے ایران کا رخ کیا وہ میٹھے پانی کے دریاٶں، سرسبز و شاداب باغات اور شاہان ایران کے عالی شان محلات سے لطف اندوز ہونے لگے. لیکن ہماری قوم جس نے بصرہ میں پڑاؤ کیا انہوں نے سیم تھور کی ماری ہوئی زمین پر ڈیرے ڈالے نہ کبھی وہاں کی مٹی خشک ہوتی ہے اور نہ ہی وہاں
کبھی کوئی سزا اگتا ہے اس کے ایک طرف نمکین سمندر ٹھاٹھیں مارتا ہے اور دوسری طرف بے آب و گیا صحرا کا ایک طویل سلسلہ ہے امیر المومنین
آپ کی خدمت میں میری یہ مئودبانہ گذارش ہے ان لوگوں کے نقصان کی تلافی کی جائے ان کی زندگی خوشگوار بنائی جائے بصرے کے گورنر کو آپ یہ حکم دیں کہ وہ ان کے لئے ایک نہر کھودے جس کے میٹھے پانی سے یہ لوگ مستفیض ہوں اپنے جانوروں کو پانی پلائیں اور اس سے کھیتی باڑی بھی کریں.

 جس سے ان کے حالات ٹھیک ہو جائیں گے. وہاں رہائش پذیر تمام خاندانوں کی حالت سنور جائے گی اس طرح اشیاء کے نرخ بھی کم ہو جائیں گے اس سے انہیں جھاد فی سبیل اللہ کی تیاری میں مدد ملے گی امیر المومنین حضرت عمر بن رضى الله عنه نے اس نوجوان کو رشک بھری نگاہ سے دیکھتے ہوۓ وفد سے کہا:
 کیا تم نے بھی ایسی عمدہ گفتگو کی بخدا یہ قوم کا سردار دیکھائی دیتا ہے.
پھر امیرالمئومنین نے وفد کے ارکان کو تحائف سے نوازا اور جب احنف بن قیس کو تحائف پیش کئے گئے تو انہوں نے بڑے ادب و احترام سے عرض کیا امیرالمومنین ہم لق و دق صحرا کو خون پسینہ ایک کر کے عبور کرتے ہوئے آپ کے پاس محض انعامات اور تحائف وصول
کرنے کے لئے حاضر نہیں ہوئے مجھے ان تحائف سے کوئی دلچسپی نہیں مجھے
تو صرف اپنی قوم کی زبوں حالی کی فکر دامن گیر ہے.

اگر آپ اس کی مشکل حل کردیں تو بس یہی کافی ہے میرے لۓ یہی سب سے بڑا تحفہ ہے یہ بات سن کر امیرالمٶمنین کو اور زیادہ تعجب ہوا یہ لڑکا اہل بصرہ کا سردار ہے.

جب مجلس برخاست ہوٸ ارکان وفد اپنی اپنی سواریوں کی جانب جانے کے لۓ تیار ہوۓ تاکہ وہاں رات بسر کر یں امیرالمٶمنین نے تمام افراد کے تھیلوں کا بغور جاٸزہ لیا آپ نے ایک تھیلا دیکھا کہ بہت عمدہ کپڑے کا ایک پہلو تھیلے سے باہر لٹکا ہوا تھا آپ نے پوچھا:

یہ کس کا ہے؟
احنف بن قیس نے کہا: امیرالمٶمنین یہ میرا ہے؟
حضرت عمر نے پوچھا: یہ کتنے میں خریدا ہے؟
احنف بن قیس نے کہا: آٹھ درہم میں
حضرت عمر رضى الله عنه نے یہ سن کر بڑے ہی نرم لہجے میں ارشاد فرمایا: کیا آپ کے لۓ ایک چادر کافی نہ تھی. اور یہ دوسری چادر خریدنے میں جو رقم تم نے خرچ کی اس سے اپنے دوسرے مسلمان بھاٸ کی مدد کرسکتے تھے.

پھر فرمایا:

اپنے مال میں میں سے اتنا خرچ کیا کرو جتنا تمہارے لۓ بہتر ہو. زاٸد مال کا مصرف مناسب مقام پر کیا کرو. اس سے خوشحالی آۓ گی. اور تمہاری اجتماعی زندگی میں بہار آجاۓ گی.
حضرت احنف بن قیس نے یہ نصیحت آموز باتیں سن کر نگاہیں جھکا لیں اور کوٸ بات نہ کی.


امیرالمٶمنین نے وفد کو واپس بصرہ روانہ ہونے کا حکم صادر فرمایا:
لیکن احنف بن قیس کو ایک سال کے لۓ اپنے پاس روک لیا. امیرالمٶمنین حضرت عمر بن خطاب رضى الله عنه کی ژرف نگاہی نے یہ جانچ لیا کہ تمیمی نوجوان میں بلا کی ذھانت قابل رشک قوت بیان، عظمت نفس، بلند ہمتی اور قدرتی صلاحیتوں کا بے پناہ ذخیرہ پایا جاتا ہے آپ کے دل میں یہ رغبت پیدا ہوٸ کہ اس نوجوان کی تربیت انکی نگرانی میں ہو جلیل القدر صحابہ کرام سے تربیت حاصل کرے، ان کی صحبت میں دین کا علم حاصل کرے.

امیرالمٶمنین یہ چاہتے تھے کہ اس نوجوان کو حکومتی اختیارات دینے سے پہلے خوب اچھی طرح تیار کر لیا جاۓ.
فاروق اعظم رضى الله عنه مسلم معاشرے کے ذہین اور فصیح البیان افراد کے بارے میں اپنے دل میں زیادہ اندیشہ محسوس کیا کرتے تھے.
آپ فرمایا:
کرتے تھے جب ایسے افراد درست ہو جاتے ہیں تو دنیا کو خیرو بھلائی سے بھر دیتے ہیں اور جب ان میں فساد پیدا ہوجاتا ہے تو ان کی ذہانت لوگوں کے لۓ وبال بن جاتی ہے.
جب ایک سال مکمل ہو گیا تو حضرت عمر رضى الله عنه نے احنف بن قیس سے کہا:

جھکا لیں اور کوٸ بات نہ کی.


امیرالمٶمنین نے وفد کو واپس بصرہ روانہ ہونے کا حکم صادر فرمایا:
لیکن احنف بن قیس کو ایک سال کے لۓ اپنے پاس روک لیا. امیرالمٶمنین حضرت عمر بن خطاب رضى الله عنه کی ژرف نگاہی نے یہ جانچ لیا کہ تمیمی نوجوان میں بلا کی ذھانت قابل رشک قوت بیان، عظمت نفس، بلند ہمتی اور قدرتی صلاحیتوں کا بے پناہ ذخیرہ پایا جاتا ہے آپ کے دل میں یہ رغبت پیدا ہوٸ کہ اس نوجوان کی تربیت انکی نگرانی میں ہو جلیل القدر صحابہ کرام سے تربیت حاصل کرے، ان کی صحبت میں دین کا علم حاصل کرے.

امیرالمٶمنین یہ چاہتے تھے کہ اس نوجوان کو حکومتی اختیارات دینے سے پہلے خوب اچھی طرح تیار کر لیا جاۓ.
فاروق اعظم رضى الله عنه مسلم معاشرے کے ذہین اور فصیح البیان افراد کے بارے میں اپنے دل میں زیادہ اندیشہ محسوس کیا کرتے تھے.
آپ فرمایا:
کرتے تھے جب ایسے افراد درست ہو جاتے ہیں تو دنیا کو خیرو بھلائی سے بھر دیتے ہیں اور جب ان میں فساد پیدا ہوجاتا ہے تو ان کی ذہانت لوگوں کے لۓ وبال بن جاتی ہے.
جب ایک سال مکمل ہو گیا تو حضرت عمر رضى الله عنه نے احنف بن قیس سے کہا:

میں نے ہر زاوۓ سے تمہیں اچھی طرح آزمایا مجھے آپ میں خیر و بھلائی ہی دیکھائی دی.
 میں نے تمہارے ظاہر کو اچھا دیکھا اور میں چاہتا ہو کہ تیرا باطن بھی ظاہر کی طرح ہو جاۓ پھر اسے معرکے میں شمولیت کے لئے
ایران روانہ کیا اور کمنڈر ابو موسی اشعری رضى الله عنه کے نام خط دیا جس میں یہ
يہ تحریر تھا احنف بن قیس کر اپنے قریب رکھنا اس سے مشورہ لیتے رہنا اور اس کی باتوں کو غور سے سننا.


احنف بن قیس سر زمین فارس کے شرق و غرب میں سرگرم عمل لشکر اسلام کے جھنڈے تلے مصروف جھاد ہو گئے جرات و بہادری کی داستانیں رقم کیں دن بدن ان کا نیزا بلند ہونے لگا اور ستارہ چمکنے لگا انہوں
نے اپنی قوم بنو تمیم کے شانہ بشانہ دشمن کے ساتھ نبرد آزمائی میں اپنی جدوجہد کی انتہا کر دی ان کے ہاتھوں اللہ تعالی نے تستر شہر فتح کر دیا جو تاج کیسروی کا قیمتی موتی تصور کیا جاتا تھا اور ھرمزان گرفتار ہوا.

     


هرمزان ایک بہادر، نڈر اور تجربہ کار ایرانی فوج کا کمانڈر تھا اور یہ غیرت و حمیت میں دیگر امراء سے بڑھ کر طاقت ور عزم رائخ میں سب سے بڑھ کر تیز اور جنگی داؤ پیچ میں سب سے بڑھ کر چالباز تھا.

لشکر اسلام کی کامیابیوں نے اکثر و بیشتر اسے صلح پر مجبور کیا لیکن جب اسے اپنی کامیابی کا معمولی سا احساس بھی ہو تا تو یہ فورا مصالحتی معاهده توڑ دیتا. جب لشکر اسلام نے ستتر شہر کو گھیرے میں لے لیا ہرمزان ایک محفوظ قلعے میں پناہ گزیں ہو کر کہنے لگا. میرے پاس سو تیر ہیں جب تک یہ تیر میرے ہاتھ میں میں تم مجھ تک نہیں پہنچ سکتے. تم جانتے ہو کہ میں ایک تجربہ کار تیر انداز ہوں میرا نشانہ خطا نہیں جاتا تم مجھے اس وقت تک گرفتار کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکتے جب تک میں تمہارے سو آدمی زخمی یا موت کے گھاٹ نہ اتار دوں. مجاھد ین نے اس کی باتیں سن کر کہا:
 تم چاہتے کیا ہو ؟ اس نے کہا:
میں تمہارے خلیفہ عمر بن خطاب رضى الله عنه کے حکم کے مطابق اپنی سطح سے
نیچے اترنے کے لئے تیار ہوں وہ جو بھی میرے ساتھ سلوک کرنا چاہیں مجھے منظور ہے.
مجاہدین نے کہا: ٹھیک ہے آپ کا مطالبہ ہمیں منظور ہے یہ سن کر ہرمزاں نے تیروں بھری ترکش زمین بر پھینک دی اور گردن جھکاۓ قلعے سے نیچے اتر آیا، مجاہدین نے اسے گرفتار لیا اور اسے چند بہادروں کی نگرانی
میں مدینے روانہ کر دیا جن کا سربراہ خادم رسول علیہ السلام حضرت انس بن
مالک رضى الله عنه اور مدرستہ عمریہ کے شاگرد حضرت احنف بن قیس کو مقررکیا گیا.

   


مجاہدین کا وفد ہرمزان کو لۓ امیرالمٶمنین کو فتح کی نوید سنانے مدینے کی جانب روانہ ہوا. بیت المال میں جمع کرانے کے لۓ ان کے پاس مال غنیمت کا پانچواں حصہ بھی تھا
جب مدینہ منورہ کے قریب پہنچے تو ہرمزان کو اس کی اصلی حیثیت میں تیار کیا.
اسے قیمتی ریشمی کپڑے پہنا دیۓ گۓ جن پر سونے کے دھاگوں سے گل کاری کی گٸ تھی اس کے سر پر ایک ایسا تاج رکھ دیا جس پر موتی جواھرات جڑے ہوۓ تھے، کندھے پر ایک ایسی قیمتی اور خوبصورت چھڑی لٹکا دی گٸ جس پر موتی، یاقوت ،ہیرے، اور جواھرات جڑے ہوۓ تھے. جب یہ وفد اسے لے کر مدینہ میں داخل ہوا تو بچے اوربوڑھے جمع ہو گۓ. اور وہ سب قیدی کا لباس دیکھ کر انگشت بدنداں ہو گۓ.


وفد کے افراد ہرمزان کو لے کر حضرت عمر رضى الله عنه کے گھر گۓ آپ وہاں موجود نہ تھے آپ کے بارے میں پوچھا:
تو انہیں یہ بتایا گیا کہ دوسرے وفد کو ملنے کے لۓ مسجد تشریف لے گۓ ہیں.

یہ مسجد کی طرف گۓ دیکھا کہ آپ وہاں بھی موجود نہیں، امیرامٶمنین کی تلاش میں جتنی دیر ہو رہی تھی لوگوں کا جمگھٹا بڑھ رہا تھا. ان کی حیرت کی اس وقت کوٸ انتہا نہ رہی جب چند کھیلتے ہوۓ معصوم بچوں نے ان سے کہا:
آپ کا کیا حال ہے؟ آپ بڑی پریشانی سے کبھی ادھر کبھی ادھر آجا رہے ہیں کیا آپ لوگ کہیں امیرالمٶمنین کو تلاش تو نہیں کر رہے؟ کہا:
ہاں!
بچوں نے بتایا کہ وہ مسجد کی داٸیں جانب سے درخت تلے اپنی چادر رکھے سوۓ ہیں.
حضرت عمر رضى الله عنه کوفے سے آۓ ہوۓ وفد کی ملاقات کے لۓ گھر سے نکلے آپ نے چادر اوڑھ رکھی تھی، جب وفد ملاقات کرکے واپس چلا گیا آپ نے چادر اتاری اپنے سر تلے رکھی اور سو گۓ.

وفد ہرمزان کو لے کر مسجد کی داٸیں طرف چڑھا جب دیکھا کہ خلیفة المسلمین سو رہے ہیں تو خاموشی سے آپ کے پاس بیٹھ گۓ اور اپنے قیدی کو بھی وہاں قریب ہی بٹھا لیا.


ہرمزان عربی نہیں جانتا تھا اسے یہ خواب و خیال ہی نہیں تھا کہ سامنے سونے والا شخص امیرالمٶمنین عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ ہے.

البتہ اس نے یہ بات سن رکھی تھی کہ حضرت عمر بالکل سادہ زندگی بسر کرتے ہیں دنیا کی زیب و زینت سے کنارہ کش ہیں. لیکن یہ تو اس کے وہم و گمان میں بھی نہیں تھا کہ فاتح روم اور شاہان ایران کی شان و شوکت کو خاک میں ملا دینے والا مسجد کے ایک کونے میں بغیر کوٸ حفاظتی اقدامات کۓ ہوۓ زمین پر ہی آرام کی نیند سورہا ہوگا. جب اس نے قوم کو خاموش باادب بیٹھے ہوۓ دیکھا تو اس نے خیال کیا کہ کیا یہ نماز کی تیاری کر رہے ہیں اور خلیفہ کی آمد کے منتظر ہیں لیکن احنف بن قیس لوگوں کو خاموش رہنے کا اشارہ دے رہے ہیں باہمی گفتگو کی بنبناہٹ ختم کرنے کا کہ رہے ہیں. کہ اس طرح خلیفے کی آنکھ کھل جاۓ اور آرام میں خلل پیدا ہوگا، ایک سال انکی صحبت میں رہتے ہوۓ انہیں اس بات کا علم تھا کہ حضرت عمر رات کو بہت کم سوتے ہیں.

رات بھر کو یا محراب میں کھڑے اللہ کی عبادت میں مصروف رہتے ہیں یا رعایا کے حالات معلوم کرنے بھیس بدل کر مدینے کی گلیوں میں گشت کرتے ہیں یا مسلمانوں کے گھروں کی چوکیداری کرنے کے لیۓ چکر لگاتے ہیں.
احنف بن قیس کے بار بار منع کرنے کے اور لوگوں کو بار بار اشارہ کرنے سے ہرمزان چوکنا ہوا اس نے مغیرہ بن شعبہ سے پوچھا:
وہ فارسی جانتے تھے.
یہ سونے والا شخص کون ہے؟

حضرت مغیرہ (رضہ) نے اسے بتایا کہ یہ امیرالمٶمنین حضرت عمر بن خطاب رضى الله عنه ہیں.

یہ سن کر ہرمزان دھشت زدہ ہو کر کہنے لگا کیا یہ عمر ہیں ان کا دربان کہاں ہے؟
حضرت مغیرہ رضى الله عنه نے بتایا کہ انکا کوٸ چوکیدار یا دربان نہیں ہے!
ہرمزان نے کہا:
اسے تو نبی ہونا چاہیۓ.
حضرت مغیرہ رضى الله عنه نے فرمایا:
یہ انبیاء کے نقش قدم پر چلتے ہیں حضرت محمد (ﷺ) پر نبوت کا سلسلہ ختم ہو چکا ہے.
آپ کے بعد کوٸ نبی نہیں آۓ گا.
لوگوں کی تعداد میں اضافہ ہو گیا آوازیں بلند ہونے لگیں. حضرت عمر بیدار ہوگۓ اٹھ کر بیٹھے لوگوں کی طرف حیران ہو کر دیکھا ایرانی جرنیل کو دیکھا، سورج کی روشنی میں اس کے سر پر چمکتا دمکتا ہوا تاج دیکھا اور اس کے ہاتھ میں ایسی چھڑی دیکھی جو نگاہوں کو خیرہ کر رہی تھی اسے غور سے دیکھا اور فرمایا:
کیا یہ ہرمزان ہے؟
احنف رضى الله عنه نے کہا:
امیرالمٶمنین بالکل یہ ہرمزان ہی ہے حضرت عمر نے اس کے لباس پر سونے، چاندی موتی، یاقوت اور ریشم کا جڑاؤ دیکھا. پھر آپ نے اس سے منہ پھیرتے ہوۓ اعوذ باللہ من النار کہا: میں جہنم کی آگ سے اللہ کے حضور پناہ مانگتا ہوں.
واستعین بہ علی الدنیا اور دنیاوی امور میں اللہ کی مدد

 

 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر

             

Table of Contents