Sections
< All Topics
Print

50. Hazrat Salmah bin Qais Asha’ji (رضی اللہ عنہ)

Hazrat Salmah bin Qais Asha’ji رضی اللہ عنہ

Farooq-e-Azam ne raat bhar Madinah ki galiyo main pehra diya taakeh log itminaan se jee bhar ke so saken.

Aap pehray ke douraan poori raat galiyo baazaaron main chakkar lagaatay rahay aur sath sath bahaadur Sahaba رضی اللہ عنہم ke mutaliq sochte rahay keh un main se Iran ke maghribi soobay Ahwaz ko fatah karne ke liye Lashkar-e-Islam ka sipah salaar kis ko banaaya jaye…. .

Sochte sochte un ki Nazar-e-Intikhab Hazrat Salmah bin Qais رضی اللہ عنہ par padi to khushi se uchhal pady aur farmaanay lagay aa….haa Kya kehnay! Main aik munaasib sipah salaar ke intikhaab main kamyaab ho gaya hoon.

Jab subah hui to aap ne hazrat Salmah bin Qais Asha’ji ko bulaa bheja. Jab woh aap ki khidmat main haazir hue to aap ne irshaad farmaaya:

Salmah! Main ne aap ko Ahwaz ki muhim par rawaana honay waalay lashkar ka sipah salaar muqarrar kya hai. Banam-e-Khuda! Apni kamaan main Lashkar-e-Islam ko le kar rawaana ho jao, Munkireen-e-Khuda se jung karna, Jab tum dushman ke saamnay jaao, Pehlay inhen islam ki da’wat do, Agar woh islam qubool kar len aur apne gharon main baithna pasand karen. Aur tumahray sath jihaad main shareek nah hon to un se sirf zakaat wusool karna, Ba’een soorat Maal-e-Ghanimat main un ka koi hissa nahi ho ga. Agar woh tumhaaray sath shareek jihaad ho jaayen to phir woh Maal-e-Ghanimat main baraabar ke hissay daar hon ge. Agar woh islaam qubool karne se inkaar kar den to un se bahar soorat tax wusool karna aur dushman se un ki hifaazat karna aur unhen aisi takleef nah dena jisay woh bardaasht nah kar saken. Agar woh tax dainay se inkaar kar den to phir un se jung karna. Allah tumhari madad kare ga. Agar woh ladai ke douraan qilah band ho jaayen aur tum se mutaalba karen keh hum Allah-o-Rasool ke hukam par hathyaar daalnay ke liye tayyar hain to un ki yeh tajweez manzoor nah karna kyunkeh tumhein ilm nahi ke Allah-o-Rasool ﷺ ke hukam se un ki moraad kya hai?

Agar woh tum se mutaalaba karen keh hum Allah-o-Rasool  ﷺ ke zimmay par sarngoon hotay hain to tum un ki yeh tajweez bhi nah man’na is main bhi koi Makar-o-Faraib posheeda nah ho albatta agar woh tumaahray saamnay aa kar hathiyaar daal den to phir un par talwaar nah chalaana.

Jab tum ladai main kamyaab ho jaao to had se tajaawaz nah karna, Nah hi ghadar karna, Nah dushman ke naak kaan kaatna, Aur nah hi kisi bachay ko qatal karna.

Hazrat Salmah رضی اللہ عنہ ne Ameer ul Momineen Farooq-e-Azam ki nasihat amooz baatein sun kar un par amal karne ka iqraar kya.

Hazrat Umar رضی اللہ عنہ ne unhen badi garam joshi se al widaa’ kya aur un ke liye Kamyaabi-o-Kamraani ki dua ki.

Hazrat Salmah bin Qais رضی اللہ عنہ ko is bhaari zimmah daari ka poori tarhan andaza tha. Jo Ameer ul Momineen Farooq-e-Azam رضی اللہ عنہ  ne un ke kaandhon par daali thi, Is liye keh Iran ka subah Ahwaz dushwaar guzaar pahaadi ilaaqa tha aur Basrah aur Iran ke darmiyaan sarhad par waqay tha aur yahan aik bahaadur aur jangju qoum Kurd aabad thi. Musalmanon ke liye usay fatah karne ke ilaawa koi charah car baaqi nah tha kyunkeh Basrah main aabad Musalmanon ko Iranio ke hamlon se isi soorat main bachaaya jaa sakta tha ke Ahwaz par mukammal Musalmanon ka qabzah ho.


Hazrat Salmah bin Qais رضی اللہ عنہ Lashkar-e-Islam ko le kar rawaana ho gaye abhi woh Sarzamaen-e-Ahwaz main daakhil hue hi thay keh unhen na msa’ad halaat ka saamna karna pada. Lashkar Ahwaz ke chtil pahaadon par baa-mushkil chadhne laga aur is ke nashebi ilaaqon main galay sade paani ke johrrhon se Kabeeda-e-Khaatir ho kar guzarnay par majboor hua.

Raastay main niklnay waalay zahreelay azdhon aur bichyon ko tehas nehas karte hue musalsal aagay badhta gaya.

Is dushwaar guzaar raastay main sipah salaar Hazrat Salmah bin Qais رضی اللہ عنہ ki hosla afzaai Lashkar-e-Islam ko haasil thi jis ki wajah takleef, Raahat aur Huzan-o-Malaal Farhat-o-Shaadmani main tabdeel ho gaya tha. Waqfay waqfay se woh apne lashkar ko Pand -o-Nasaih se bhi nawaazte jis se un ke hlslay buland tar hotay jaatay.

Raat ka samaa Qurani aayaat ki itar beez fizaon se mehak uthta, Raat bhar tamaam mujahideen Quran-e-Majeed ki zia paashion se apne seenon ko nunawar karte aur is ke Laal-o-Jawaahir se apne daaman ko bhartay rehtay. Jis ki wajah se takleef ko bhi bhool chuke thay.


Hazrat Salmah bin Qais رضی اللہ عنہ ne Ameer ul Momineen Hazrat Farooq-e-Azam رضی اللہ عنہ ke hukam ke mutaabiq Bashindgaan-e-Ahwaz ko sab se pehlay Daaira-e-Islaam main daakhil honay ki da’wat di, Lekin unhon ne saaf inkaar kar diya. Phir unhen tax ki adaaigi ka hukam diya unhon ne Takabbur-o-Nukhuwwat ka muzaahara karte hue tax dainay se bhi inkaar kar diya.

Ab mujahideen ke liye ladai ke siwa koi Chara-e-Car baaqi nah raha lihaza woh Allah ka naam le kar Maidan-e-Car-e-Zaar main utar aaye.


Dekhte hi dekhte Maidan-e-Car-e-zZar garam hua aur ladai ke sholay bhadak utthay. Dono foujon ne bahaduri ke aisay johar dikhlaaye jin ki jungi tareekh main bohat kam misaal millti hai. Phir thodi hi der main mujahideen ko Ailaa-e-Kalimaht-ul-llah ke liye Fatah-o-Nusrat naseeb hui aur mushrikeen ko zillat aamaiz shikast se do chaar hona pada.


Jab ladai apne mantaqi nateejay ko pohnch gayi aur sipaahi salaar Hazrat Salmah bin Qais رضی اللہ عنہ apne lashkar main Maal-e-Ghanimat taqseem karne lagey, To unhen aik bohat qeemti aur umdah haar nazar aaya. Un ke dil main yeh khwahish peda hui keh yeh haar Ameer ul Momineen ki khidmat main Bator-e-Tuhfa bhaij diya jaaye. To lashkar se kaha: Yeh Haar agar tumhaaray darmiyaan taqseem kar diya jaaye to is se tumhaara kya banay ga. Agar tum Ba-taiyab-e-Khaatir ijaazat do to main yeh haar Ameer ul Momineen ko Bator-e-Tuhfa bhaij dun.

Sab ne bayak zubaan kaha: Haan, Zaroor bhaij dijiye, Aap ka yeh faisla bohat munaasib hai!

Aap ne woh Haar choti si sandooqchi main band kya aur apni qoum ke aik aadmi ko bulaa kar hukam diya keh tum aur tumhaara ghulaam abhi Madinah rawaana ho jao, Pahlay Ameer ul Momineen ko fatah ki khushkhabri dena aur us ke baad yeh Haar un ki khidmat main paish karna.

Us shakhs ke saath Madinah-e-Munawara main Ameer ul Momineen Umar bin Khattab رضی اللہ عنہ ki jaanib se jo salook Kia gaya,Woh har Musalman ke liye baa’is ibrat hai.

Ham yeh waqea aap ko us ki zubaani sunaate hain. Qabeela Ashja’ ka woh shakhs bayaan karta hai keh main aur mera ghulaam Basrah ki taraf rawaana hue. Wahan pohnch kar hum ne safar ke liye do sawaaryian khareedain. Us ke liye ijaazat aur sarmaaya hamain hazrat Salmah bin Qais رضی اللہ عنہ ne inaayat kya tha. Ham ne Zaad-e-Raah un par laada aur Madinah ki taraf rawaana ho gaye.

Jab ham wahan pohnche to main ne Ameer ul Momineen ko talaash kya woh aik jagah par apne Aasa par take lagaye Musalmanoon ko khilaaye jaane waalay khaanay ki nigraani kar rahay thay. Aap apne ghulam Yarfa ko farmaa ray hai thay.

Aey Yarfa! In logon ke saamnay mazeed gosht rakho…..

Aey Yarfa! In logon ke saamnay mazeed roti rakho.

Aey Yarfa! In logon ke bartano main aur ziyaada shorba daalo.

Jab main un ke paas aaya to aap ne mujhe irshaad farmaya: Betho! Main wahein aam logon ke sath baith gaya. Mere saamnay khaana rakha gaya. Main ne khana khaaya.

Jab log khaanay se faarigh ho gaye to aap ne irshaad farmaya: Aey Yarfa! Dastarkhawan utha lo phir aap chal diye aur main aap ke peechay ho liya .

Jab aap ghar main daakhil ho gaye to main ne andar aanay ki ijaazat talab ki aap ne kamaal shafqat se ijaazat inaayat farma di. Aap baalon ki buni hui aik chataai par baith gaye. Do aisay takiyon ke sath take lagaaye hue thay jo khajoor ke pattoun se bharay hue thay un main se aik takiya meri taraf khiska diya aur main us par baith gaya. Aap ke peechay parda latka hua tha. Aap ne parday ki taraf dekha aur apni biwi se irshaad farmaya:

Aey Umm-e-Kulsoom! Hamain khana dijiye…..

Mere dil main khayaal aaya keh Ameer ul Momineen ne apne liye koi khaas khaana tayyar karwaaya ho ga. Biwi ne tail main tali hui aik roti jis par saalan ki jagah namak rakha hua tha aap ko pakda di.

Phir aap ne meri taraf dekha aur irshaad farmaya:

Aao khaana khaao main ne Tameel-e-Hukam ke tor par chand aik luqmay liye. Aap ne khaana khaaya. Aap ke khaanay ka andaaz aisa dilruba tha keh main ne kabhi kisi ko is umdah andaaz main kahatay hue nahi dekha.

Phir aap ne farmaaya: Hamain paani pilaao to aap ki khidmat main sattu ka bhara huas aik piyalaa paish kar diya gaya. Aap ne farmaaya: Pehlay is mehmaan ko pilaao. Main ne piyalaa pakda aur thoday se sattu nosh kiye. Main ne mahsoos kya keh jo sattu main ne apne liye tayyar kurwaaye hain woh is se kahin behtar aur umdah hain.

Phir aap ne piyalaa pakda aur sattu nosh farmaay.  Aur yeh dua parhi:

الْحمد لله الذی ۤأطْعمنا وأشْبعنا وسقانا فارْوانا

 

“Shukar hai us Allah ka jis ne hamain khilaaya aur sair kya aur pilaaya aur sairaab kya”.

Us ke baad main ne arz kya:

Ameer ul Momineen! Main aik khat le kar aap ki khidmat main haazir hua hoon.

Aap ne daryaaft kya: Kahan se?

Main ne arz kya: Salmah bin Qais رضی اللہ عنہ ki jaanib se.

Aap ne farmaaya: Salmah ban Qais aur us ke qaasid ko main khush aamdeed kehta hoon. Lashkar-e-Islam ke mutaliq kuch betaaye…..

Main ne arz kya: Ameer ul Momineen! Aap ki tamanna ke mutaabiq Lashkar-e-Islam ko Allah Ta’alaa ne Fatah-o-Nusrat se hamkinaar kya. Main ne is jung main paish aanay waalay waqeat tafseel ke sath aap ki khidmat main paish kiye. Aap ne tafseelaat sun kar irshaad farmaya:

Allah ka shukar hai us ne hum par be intahaa apna Fazl-o-Karam farmaaya!

Phir aap ne irshaad farmaaya:

kya tumhaara Basrah se guzar hua?

Main ne arz kya: Haan ya Ameer ul Momineen!

Aap ne poocha: Musalmanoon ka kya haal hai?

 Main ne bataaya: Aalhamdu lillah kheriyat se hain.

Aap ne daryaaft kya:

Bazaar main Ashya-e-Sarf ke narkh kaisay hain?

Main ne bataya: Cheezen bohat sasti hain.

Aap ne poocha gosht ka kya bhao hai?

Gosht Arbon ki marghoob ghiza hai jab tak gosht nah milay inhen tasalli nahi hoti.

Main ne bataaya : Gosht to waafar miqdaar main dastiyaab hai.

Phir aap ne us sandooqchi ki taraf dekha jo mere haath main pakdi hui thi, Aap ne poocha: Yeh tairay haath main kya hai?

Main ne arz kya: Jab hamain Allah Ta’alaa ne dushman par ghalba day diya to ham ne Maal-e-Ghanimat jama’ kya. Salmah bin Qais رضی اللہ عنہ ne yeh Haar dekha to lashkar se kaha: Agar yeh Haar tum main taqseem kar diya jaaye to kisi ka kuch nahi banay ga. Agar tum Ba-taiyab-e-Khatir mujhe ijaazat do to main yeh haar Ameer ul Momineen ki khidmat main Bator-e-Tuhfa bhaij dun.

Sab ne kaha: Haan zaroor bhejiye. Ham khush hain. Yeh keh kar main ne sandooqchi aap ki khidmat main paish kar di, Jab aap ne usay dekha aur aap ki nazar surkh zard aur sabz rang ke chamakate hue nageenon par padi to ghusse se aag bagula ho gaye. Aur sandooqchi ko zameen par zor se paink diya to woh moti daayen baaen bikhar gaye. Khawateen-e-Khaana ne samjha keh main un motiyon ko chun’nay ka iradah rakhta hoon woh Soorat-e-Haal dekh kar parday ki taraf ho gayeen.

Phir Farooq-e-Azam ne mujhe hukam diya keh inhen ikhatta karo.

Aur apne ghulaam Yarfa ko hukam diya keh jab yeh moti ikatthay karne lagay to is ki peeth par koday maaro. Main moti ikatthay karne laga aur aap ka ghulaam Yarfa mujhe maarnay laga. Phir aap ne farmaaya: Kambakht khaday ho jaao.

Main ne kaanptay hoye Arz kia:

Hazoor! Mujhe sawaari inaayat farmaa dain.

Aap ke ghulaam ne meri sawaari bhi cheen li hai.

Farooq-e-Azam ne apne ghulaam se irshaad farmaya:

Aey Yarfa! Isay aur is ke ghulam ko bait ul Maal se do sawaaryian day do.

Phir aap ne mujhe hukam diya keh tumhaara safar khatam ho jaye to yeh kisi zaroorat mand musalmaan ko day dena. Main ne arz kya: Ameer ul Momineen! Main aap ke hukam ki taa’meel karoon ga.

Phir aap ne meri taraf ghazabnaak andaaz main dekha aur irshaad farmaya:

Allah ki qasam! Agar yeh Haar lashkar main taqseem nah kya to main teri aur sipah salaar ki haddi pasli aik kar dun ga.

Main ne wahan se apni sawaari ko sarpat dodhaaya aur jitni bhi jaldi mumkin ho sakta tha Hazrat Salmah bin Qais رضی اللہ عنہ ke paas pohncha aur haanptay hue main ne kaha:

Aey Salmah! Agar tum meri aur apni jaan ki kher chahtay ho to abhi yeh Haar lashkar main taqseem kar do. Aur paish aanay waala poora waqiea main ne unhen suna diya! Aap ne wahein usi majlis main woh haar mujahideen main baraabar taqseem kar diya.


Hazrat Salmah bin Qais رضی اللہ عنہ kay mufassal Halaat-e-Zindagi maaloom karnay kay liye darjzail kitaabon ka mutaall’a karain:

1: Al Isaabah                                                                                           2/7

2: Al Istiaab                                                                                            2/89

3: Usd ul Ghabah                                                                                  2/432

4: Tahzeeb ul Tahzeeb                                                                        4/154

5: Mujam-ul-Buldan                                                                            1/284

6: Hayat ul Sahaabha                                                                          1/341

7: Qadat-o-Fath-e-Faris

 

REFERENCE:
Book: Hayat-e-Sahaba kay darakh shah pahelo.
By: Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.

حضرت سلمہ بن قیس اشجعی رضی اللہ عنہ

 

فاروق اعظم رضی اللہ عنہ نے رات بھر مدینہ کی گلیوں میں پہرہ دیا تاکہ لوگ اطمینان سے جی بھر کے سو سکیں۔

آپ پہرے کے دوران پوری رات گلیوں، بازاروں میں چکر لگاتے رہے اور ساتھ ساتھ بہادر صحابہ رضی اللہ عنہم کے متعلق سوچتے رہے کہ ان میں سے ایران کے مغربی صوبے اہواز کو فتح کرنے کے لئے لشکر اسلام کا سپہ سالار کس کو بنایا جائے…

سوچتے سوچتے ان کی نظر انتخاب حضرت سلمہ بن قیس رضی اللہ عنہ پر پڑی تو خوشی سے اچھل پڑے اور فرمانے لگے آ ۔۔۔۔۔۔۔ ہا کیا کہنے! میں ایک مناسب سپہ سالار کے انتخاب میں کامیاب ہو گیا ہوں۔

جب صبح ہوئی تو آپ نے حضرت سلمہ بن قیس اشجعی رضی اللہ عنہ کو بلا بھیجا۔ جب وہ آپ کی خدمت میں حاضر ہوئے تو آپ نے ارشاد فرمایا:

سلمہ! میں نے آپ کو اہواز کی مہم پر روانہ ہونے والے لشکر کا سپہ سالار مقرر کیا ہے۔ بنام خدا! اپنی کمان میں لشکر اسلام کو لے کر روانہ ہو جاؤ، منکرین خدا سے جنگ کرنا جب تم دشمن کے سامنے جاؤ، پہلے انہیں اسلام کی دعوت دو اگر وہ اسلام قبول کر لیں اور اپنے گھروں میں بیٹھنا پسند کریں۔ اور تمہارے ساتھ جہاد میں شریک نہ ہوں تو ان سے صرف زکوۃ وصول کرنا، بایں صورت مال غنیمت میں ان کا کوئی حصہ نہیں ہو گا۔ اگر وہ تمہارے ساتھ شریک جہاد ہو جائیں تو پھر وہ مال غنیمت میں برابر کے حصے دار ہوں گے۔ اگر وہ اسلام قبول کرنے سے انکار کر دیں تو ان سے بہر صورت ٹیکس وصول کرنا اور د شمن سے ان کی حفاظت کرنا اور انہیں ایسی تکلیف نہ دیتا جسے وہ برداشت نہ کر سکیں۔ اگر وہ ٹیکس دینے سے انکار کر دیں تو پھر ان سے جنگ کرنا۔ اللہ تمہاری مدد کرے گا۔ اگر وہ لڑائی کے دوران قلعہ بند ہو جائیں اور تم سے مطالبہ کریں کہ ہم اللہ ورسولﷺ کے حکم پر ہتھیار ڈالنے کے لئے تیار ہیں تو ان کی یہ تجویز منظور نہ کرنا کیونکہ تمہیں علم نہیں کہ الله و رسولﷺ کے حکم سے ان کی مراد کیا ہے؟

اگر وہ تم سے مطالبہ کریں کہ ہم اللہ ورسولﷺ کے ذمے پر سرنگوں ہوتے ہیں تو تم ان کی یہ تجویز بھی نہ ماننا اس میں بھی کوئی مکرو فریب پوشیدہ نہ ہو’ البتہ اگر وہ تمہارے سامنے آ کر ہتھیار ڈال دیں تو پھر ان پر تلوار نہ چلانا۔

جب تم لڑائی میں کامیاب ہو جاؤ تو حد سے تجاوز نہ کرنا، نہ ہی غدر کرنا، نہ دشمن کے ناک کان کاٹنا اور نہ ہی کسی بچے کو قتل کرنا۔

حضرت سلمہ رضی اللہ عنہ نے امیر المومنین فاروق اعظم رضی اللہ عنہ کی نصیحت آموز باتیں سن کر ان پر عمل کرنے کا اقرار کیا۔

حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے انہیں بڑی گرم جوشی سے الوداع کیا اور ان کے لئے کامیابی و کامرانی کی دعا کی۔

حضرت سلمہ بن قیس رضی اللہ عنہ کو اس بھاری ذمہ داری کا پوری طرح اندازہ تھا۔ جو امیر المؤمنين فاروق اعظم رضی اللہ عنہ نے ان کے کندھوں پر ڈالی تھی، اس لئے کہ ایران کا صوبہ اہواز دشوار گزار پہاڑی علاقہ تھا اور بصرہ اور ایران کے درمیان سرحد پر واقع تھا اور یہاں ایک بہادر اور جنگجو قوم کرد آباد تھی۔ مسلمانوں کے لئے اسے فتح کرنے کے علاوہ کوئی چارہ کار باقی نہ تھا’ کیونکہ بصرہ میں آباد مسلمانوں کو ایرانیوں کے حملوں سے اسی صورت میں بچایا جا سکتا تھا کہ اہواز پر مکمل مسلمانوں کا قبضہ ہو۔


حضرت سلمہ بن قیس رضی اللہ عنہ لشکر اسلام کو لے کر روانہ ہو گئے ابھی وہ سرزمین اہواز میں داخل ہوئے ہی تھے کہ انہیں نامساعد حالات کا سامنا کرنا پڑا۔ لشکر اہواز کے چٹیل پہاڑوں پر بمشکل چڑھنے لگا اور اس کے نشیبی علاقوں میں گلے سڑے پانی کے جوہڑوں سے کبیدہ خاطر ہو کر گزرنے پر مجبور ہوا۔ راستے میں نکلنے والے زہریلے اژدھوں اور بچھوؤں کو تہس نہس کرتے ہوئے مسلسل آگے بڑھتا گیا۔

اس دشوار گزار راستے میں سپہ سالار حضرت سلمہ بن قیس رضی اللہ عنہ کی حوصلہ افزائی لشکر اسلام کو حاصل تھی جس کی وجہ تکلیف، راحت اور حزن و ملال فرحت و شادمانی میں تبدیل ہو گیا تھا۔ وقفے وقفے سے وہ اپنے لشکر کو پند و نصائح سے بھی نوازتے جس سے ان کے حوصلے بلند تر ہوتے جاتے۔

رات کا سماں قرآنی آیات کی عطر بیز فضاؤں سے مہک اٹھتا’ رات بھر تمام مجاہدین قرآن مجید کی ضیاء پاشیوں سے اپنے سینوں کو منور کرتے اور اس کے لعل و جواہر سے اپنے دامن کو بھرتے رہے۔ جس کی وجہ سے تکلیف کو بھی بھول چکے تھے۔


حضرت سلمہ بن قیس رضی اللہ عنہ نے امیر المؤمنین حضرت فاروق اعظم رضی اللہ عنہ کے حکم کے مطابق باشندگان اہواز کو سب سے پہلے دائرہ اسلام میں داخل ہونے کی دعوت دی، لیکن انہوں نے صاف انکار کر دیا۔ پھر انہیں ٹیکس کی ادائیگی کا حکم دیا انہوں نے تکبر و نخوت کا مظاہرہ کرتے ہوئے ٹیکس دینے سے بھی انکار کر دیا۔

اب مجاہدین کے لئے لڑائی کے سوا کوئی چارہ کار باقی نہ رہا، لہذا وہ اللہ کا نام لے کر میدان کار زار میں اتر آئے۔


دیکھتے ہی دیکھتے میدان کار زار گرم ہوا اور لڑائی کے شعلے بھڑک اٹھے۔ دونوں فوجوں نے بہادری کے ایسے جوہر دکھلائے جن کی جنگی تاریخ میں بہت کم مثال ملتی ہے۔ پھر تھوڑی ہی دیر میں مجاہدین کو اعلائے کلمتہ اللہ کے لئے فتح و نصرت نصیب ہوئی اور مشرکین کو ذلت آمیز شکست سے دوچار ہونا پڑا۔


جب لڑائی اپنے منطقی نتیجے کو پہنچ گئی اور سپہ سالار حضرت سلمہ بن قیس رضی اللہ عنہ اپنے لشکر میں مال غنیمت تقسیم کرنے لگے’ تو انہیں ایک بہت قیمتی اور عمدہ ہار نظر آیا۔ ان کے دل میں یہ خواہش پیدا ہوئی کہ یہ ہار امیر المؤمنین کی خدمت میں بطور تحفہ بھیج دیا جائے۔ تو لشکر سے کہا: یہ ہار اگر تمہارے درمیان تقسیم کر دیا جائے تو اس سے تمہارا کیا بنے گا۔ اگر تم بطیب خاطر اجازت دو تو میں یہ ہار امیر المؤمنین کو بطور تحفہ بھیج دوں۔

سب نے بیک زبان کہا: ہاں، ضرور بھیج دیجئے، آپ کا یہ فیصلہ بہت مناسب ہے!
آپ نے وہ ہار چھوٹی سی صندوقچی میں بند کیا اور اپنی قوم کے ایک آدمی کو بلا کر حکم دیا کہ تم اور تمہارا غلام ابھی مدینہ روانہ ہو جاؤ، پہلے امیر المؤمنین کو فتح کی خوشخبری دینا اور اس کے بعد یہ ہار ان کی خدمت میں پیش کرنا۔

اس شخص کے ساتھ مدینہ منورہ میں امیر المؤمنین عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ کی جانب سے جو سلوک کیا گیا، وہ ہر مسلمان کے لئے باعث عبرت ہے۔

ہم یہ واقعہ آپ کو اسی کی زبانی سناتے ہیں۔ قبیلہ اشجع کا وہ شخص بیان کرتا ہے کہ میں اور میرا غلام بصرہ کی طرف روانہ ہوئے۔ وہاں پہنچ کر ہم نے سفر کے لئے دو سواریاں خریدیں۔ اس کے لئے اجازت اور سرمایہ ہمیں حضرت سلمہ بن قیس نے عنایت کیا تھا۔
ہم نے زاد راہ ان پر لادا اور مدینہ کی طرف روانہ ہو گئے۔

جب ہم وہاں پہنچے تو میں نے امیر المؤمنین کو تلاش کیا’ وہ ایک جگہ پر اپنے عصا پر ٹیک لگائے مسلمانوں کو کھلائے جانے والے کھانے کی نگرانی کر رہے تھے۔ آپ اپنے غلام یرفاء کو فرما رہے تھے۔

اے یرفاء! ان لوگوں کے سامنے مزید گوشت رکھو….
اے یرفاء! ان لوگوں کے سامنے مزید روٹی رکھو۔
اے یرفاء! ان لوگوں کے برتنوں میں اور زیادہ شوربا ڈالو۔

جب میں ان کے پاس آیا تو آپ نے مجھے ارشاد فرمایا: بیٹھو! میں وہیں عام لوگوں کے ساتھ بیٹھ گیا۔ میرے سامنے کھانا رکھا گیا۔ میں نے کھانا کھایا۔

جب لوگ کھانے سے فارغ ہو گئے، تو آپ نے ارشاد فرمایا: اے یرفاء! دسترخوان اٹھا لو پھر آپ چل دیئے اور میں آپ کے پیچھے ہو لیا۔

جب آپ گھر میں داخل ہو گئے تو میں نے اندر آنے کی اجازت طلب کی آپ نے کمال شفقت سے اجازت عنایت فرما دی۔ آپ بالوں کی بنی ہوئی ایک چٹائی پر بیٹھ گئے۔ دو ایسے تکیوں کے ساتھ ٹیک لگائے ہوئے تھے جو کھجور کے پتوں سے بھرے ہوئے تھے ان میں سے ایک تکیہ میری طرف کھسکا دیا اور میں اس پر بیٹھ گیا۔ آپ کے پیچھے پردہ لٹکا ہوا تھا۔ آپ نے پردے کی طرف دیکھا اور اپنی بیوی سے ارشاد فرمایا:

اے ام کلثوم! ہمیں کھانا دیجئے۔

میرے دل میں خیال آیا کہ امیر المؤمنین نے اپنے لئے کوئی خاص کھانا تیار کروایا ہو گا۔ بیوی نے تیل میں تلی ہوئی ایک روٹی جس پر سالن کی جگہ نمک رکھا ہوا تھا آپ کو پکڑا دی۔

پھر آپ نے میری طرف دیکھا اور ارشاد فرمایا:

آؤ کھانا کھاؤ میں نے تعمیل حکم کے طور پر چند ایک لقمے لئے۔ آپ نے کھانا کھایا۔ آپ کے کھانے کا انداز ایسا دلربا تھا کہ میں نے کبھی کسی کو اس عمدہ انداز میں کھاتے ہوئے نہیں دیکھا۔

پھر آپ نے فرمایا: ہمیں پانی پلاؤ’ تو آپ کی خدمت میں ستو کا بھرا ہوا ایک پیالہ پیش کر دیا گیا۔ آپ نے فرمایا: پہلے اس مہمان کو پلاؤ۔ میں نے پیالہ پکڑا اور تھوڑے سے ستو نوش کئے۔ میں نے محسوس کیا کہ جو ستو میں نے اپنے لئے تیار کروائے ہیں وہ اس سے کہیں بہتر اور عمدہ ہیں۔

پھر آپ نے پیالہ پکڑا اور ستو نوش فرمائے۔ اور یہ دعا پڑھی: الْحَمْدُ لِلَّهِ الَّذِي أَطْعَمَنَا وَاشْبَعْنَا وَسَقَانَا فَارْوَانَا
شکر ہے اس اللہ کا جس نے ہمیں کھلایا اور سیر کیا اور پلایا اور سیراب کیا۔

اس کے بعد میں نے عرض کیا:

امیر المؤمنین! میں ایک خط لے کر آپ کی خدمت میں حاضر ہوا ہوں۔
آپ نے دریافت کیا: کہاں سے؟
میں نے عرض کیا: سلمہ بن قیس رضی اللہ عنہ کی جانب ہے۔

آپ نے فرمایا: سلمہ بن قیس رضی اللہ عنہ اور اس کے قاصد کو میں خوش آمدید کہتا ہوں۔ لشکر اسلام کے متعلق کچھ بتائیے…

میں نے عرض کیا: امیر المؤمنین! آپ کی تمنا کے مطابق لشکر اسلام کو اللہ تعالیٰ نے فتح و نصرت سے ہمکنار کیا… میں نے اس جنگ میں پیش آنے والے واقعات تفصیل کے ساتھ آپ کی خدمت میں پیش کئے۔ آپ نے تفصیلات سن کر ارشاد فرمایا:

اللہ کا شکر ہے اس نے ہم پر بے انتہا اپنا فضل و کرم فرمایا!

پھر آپ نے ارشاد فرمایا:

کیا تمہارا بصرہ سے گذر ہوا؟

میں نے عرض کیا: ہاں یا امیر المؤمنین!

آپ نے پوچھا: مسلمانوں کا کیا حال ہے؟

میں نے بتایا: الحمد للہ خیریت سے ہیں۔

آپ نے دریافت کیا:

بازار میں اشیائے صرف کے نرخ کیسے ہیں؟

میں نے بتایا: چیزیں بہت سستی ہیں۔

آپ نے پوچھا: گوشت کا کیا بھاؤ ہے؟

گوشت عربوں کی مرغوب غذا ہے جب تک گوشت نہ ملے انہیں تسلی نہیں ہوتی۔ میں نے بتایا: گوشت تو وافر مقدار میں دستیاب ہے۔

پھر آپ نے اس صندوقچی کی طرف دیکھا جو میرے ہاتھ میں پکڑی ہوئی تھی، آپ نے پوچھا: یہ تیرے ہاتھ میں کیا ہے؟

میں نے عرض کیا: جب ہمیں اللہ تعالیٰ نے دشمن پر غلبہ دے دیا تو ہم نے مال غنیمت جمع کیا۔ سلمہ بن قیس رضی اللہ عنہ نے یہ ہار دیکھا تو لشکر سے کہا: اگر یہ ہار تم میں تقسیم کر دیا جائے تو کسی کا کچھ نہیں بنے گا۔ اگر تم بطیب خاطر مجھے اجازت دو تو میں یہ ہار امیرالمؤمنین کی خدمت میں بطور تحفہ بھیج دوں۔

سب نے کہا: ہاں ضرور بھیجئے۔ ہم خوش ہیں۔ یہ کہہ کر میں نے صندوقچی آپ کی خدمت میں پیش کر دی، جب آپ نے اسے دیکھا اور آپ کی نظر سرخ’ زرد اور سبز رنگ کے چمکتے ہوئے نگینوں پر پڑی تو غصے سے آگ بگولا ہو گئے۔ اور صندوقچی کو زمین پر زور سے پٹخ دیا تو وہ موتی دائیں بائیں بکھر گئے۔ خواتین خانہ نے سمجھا کہ میں ان موتیوں کو چننے کا ارادہ رکھتا ہوں وہ صورت حال دیکھ کر پردے کی طرف ہو گئیں۔

پھر فاروق اعظم رضی اللہ عنہ نے مجھے حکم دیا کہ انہیں اکٹھا کرو۔

اور اپنے غلام یرفاء کو حکم دیا کہ جب یہ موتی اکٹھے کرنے لگے تو اس کی پیٹھ پر کوڑے مارو۔ میں موتی اکٹھے کرنے لگا اور آپ کا غلام یرفاء مجھے مارنے لگا۔ پھر آپ نے فرمایا: کمبخت کھڑے ہو جاؤ۔

میں نے کانپتے ہوئے عرض کیا:

حضور! مجھے سواری عنایت فرما دیں۔

آپ کے غلام نے میری سواری بھی چھین لی ہے۔

فاروق اعظم رضی اللہ عنہ نے اپنے غلام سے ارشاد فرمایا:

اے یرفاء! اسے اور اس کے غلام کو بیت المال سے دو سواریاں دے دو۔

پھر آپ نے مجھے حکم دیا کہ تمہارا سفر ختم ہو جائے تو یہ کسی ضرورت مند مسلمان کو دے دینا۔ میں نے عرض کیا: امیر المؤمنین! میں آپ کے حکم کی تعمیل کروں گا۔

پھر آپ نے میری طرف غضبناک انداز میں دیکھا اور ارشاد فرمایا:

اللہ کی قسم! اگر یہ ہار لشکر میں تقسیم نہ کیا تو میں تیری اور سپہ سالار کی ہڈی پسلی ایک کر دوں گا۔

میں نے وہاں سے اپنی سواری کو سرپٹ دوڑایا اور جتنی بھی جلدی ممکن ہو سکتا تھا، حضرت سلمہ بن قیس رضی اللہ عنہ کے پاس پہنچا اور ہانپتے ہوئے میں نے کہا:

اے سلمہ! اگر تم میری اور اپنی جان کی خیر چاہتے ہو تو ابھی یہ ہار لشکر میں تقسیم کر دو۔ اور پیش آنے والا پورا واقعہ میں نے انہیں سنا دیا! آپ نے وہیں اسی مجلس میں وہ ہار مجاہدین میں برابر تقسیم کر دیا۔


حضرت سلمہ بن قیس رضی اللہ عنہ کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لئے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں۔

 

۱۔ الاصابة ۲/ ۷
٢- الاستيعاب ۲/ ۸۹
۳۔ اسد الغابه ۲/ ۴۳۲
۴- تهذيب التهذيب ۱۵۴/۴
ه۔ معجم البلدان ۱/ ۲۸۴
۶- حياة الصحابة ۳۴۱/۱
۷۔ قادة فتح فارس

 

حوالہ جات :
“حياتِ صحابہ کے درخشاں پہلو”
تا لیف: “داکتور عبدالر حمان رافت الباشا”

 

 

Table of Contents