Sections
< All Topics
Print

15. Hazrat Adi bin Haatim Al Taai (رضی اللہ عنہ)

Hazrat Adi  bin Haatim Al Taai (رضی اللہ عنہ)

Yeh us waqat Emaan laey jab aam logon nay kufar ikhteyaar kiya. Inhon nay haqq pehchana jab aam logon nay iska inkaar kiya, Inhon nay wafa shi’aari ka saboot diya jabkeh aam logon nay dhoka diya aur yeh us waqat Deen ki taraf mutawajjah huey jab aam logon nay is say be-rukhi ikhteyaar ki.

Hazrat ‘Umar (رضی اللہ عنہ)

Arsa-e-Daraaz tak badi nafrat, Haqaarat, Be-rukhi-o-Be-Eitanaai mein mubtala rehnay kay b’ad bil aakhir 9 Hijri mein Arab ka aik Baadshaah Islaam say mutaasir hua. Eemaan qabool karne aur Rasool akram ﷺ ki itaa’at ikhteyaar karne ka shauq uske dil mein samaaya. Kya aapko m’aloom hai keh yeh Baadshaah kon tha?

Yeh Jaleel-ul-Qadar sahaabi Hazrat Adi  (رضی اللہ عنہ) thay jinkeh waalid Haatim taai ko sakhaawat keh silsalah mein zarb ul misal keh taur par paish kiya jata hai.


Qabeelah Tii nay Haatim Taai ki wafaat keh b’ad saltanat ki zimmah daari inkeh betay Janaab Adi  (رضی اللہ عنہ) ko sonp di, Aur pooray Qabeelah nay apni aamdan ka chauthaai hissah inkeh liye makhsoos kar dia aur inkeh hukamraan ban’ne par khushi ka izhaar kiya. Jab Rasool akram ﷺ nay a’ilaaniyah taur par Islaam ki d’awat paish ki aur Arb jauq dar jauq Halqa-e-Bagosh Islaam honay lagy, Yeh Soorat-e-Haal daikh kar Janaab Adi  (رضی اللہ عنہ) nay khatrah mahsoos kiya keh agar aam log isi tarah aap ﷺ ki d’awat say mutaassir hotay rahay to bil-aakhir humari saltanat bhi jaati rahay gi, To unhon nay Islaam ki ishaa’at ko roknay keh liye har harbah ista’maal kiya aur aap ﷺ say Bughz-o-Anaad ki intaha kar di. Aap ﷺ say adaawat ka yeh silsalah bees saal tak jaari raha. Bil-aakhir Allah subahanahu wa Ta’aala nay apnay Fazal-o-Karam say Islaam qabool karne aur Hidaayat ki raah ikhteyaar karne keh liye inhain Inshirah-e-Sadar ki azeem n’emat say nawaaz dia.


Janaab Adi  (رضی اللہ عنہ) keh Islaam qabool karne ki Na-qaabil-e-Faraamosh daastaan hum aapko unhi ki zobaani sunatay hain, Kiun keh is daastaan goi mein wahi iska Haq ada kar sakte hain.

Janaab Adi  (رضی اللہ عنہ) bayaan farmaatay hain keh:

Jab main nay Rasool Akram ﷺ kay muta’alliq suna to meray dil mein is qadar nafrat paida hui keh shayad hi kisi Arab baashindey ke dil mein is jaisi nafrat paida hui ho. Main apnay ilaaqay aur qom ka aik ba-waqaar aur mo’azziz fard tha aur Aqeedatan Nasraani tha, Aur doosray Arab baadshaahon ki tarah main bhi apni Re’aaya say inkeh maal ka Chauthaai hissa wosool karta.

Pehlay marhalah par to main nay nafrat aur haqaarat ki bina par koi parwah nah ki, Lekin jab Rasool akram ﷺ ki Shaan-o-Shaukat mein izaafah hua aur aap ﷺ keh lashkar ko sar Zameen-e-Arab mein chahaar sou futoohaat haasil honay lagin, To phir main nay apnay dil mein khatrah mahsoos kiya aur uont charaane waale apnay Ghulaam say kaha: Aaj keh b’ad Chaaq-o-Choband aur taaqatwar uont’niyaan hardam meray liye teyaar rakho, Aur aisi sudhaai hui hon keh safar mein koi takleef mahsoos nah ho. Aik din subah sawairay mera yahi ghulaam daudta hua meray paas aya aur kehnay laga: meray Aaqa!

Agar Lashkar-e-Islaam apkeh ilaaqah par yalghaar kar dey to phir aap kia karengy?

Main nay ghabraahat mein us say daryaf’t kiya kya baat hai?

Usnay kaha: Main nay aaj gharon mein jhandey lehraatay daikhay hain. Mujhay patah chala hai keh aaj Lashkar-e-Islaam nay humare ilaaqah par yalghaar kar di hai aur mutadd d gharon pay qabzah kar lia hai.

Main nay apni giraftaari ka khatrah mahsoos karte huey isay kaha: Jaldi say woh ont’niyaan meray paas lao jin ke tayyaar rakhne ka main nay tujhay hukam diya tha. Usi waqat woh uont’niyaan meray paas laai gain aur main apnay Ahl-e-Khaanah ko in par sawaar kar keh mulk Shaam ki taraf rawaanah hogaya taakeh main apnay hum mazhab Nasraaniyat keh alambardaar logon keh paas sakoonat ikhteyaar kar sakun. Hua yeh keh main is jaldbaazi aur ghabraahat mein apnay tamaam khaandaan ko is safar mein humraah nah ley saka, Lekin jab main khatarnaak aur khathan raaston say guzra to b’az afraad raastay hi mein halaak hogaey.

Is afra tafri mein meri hamsheerah Najad mein hi reh gai. Usko apnay saath na la saka, Jiska mujhay bahut ziadah dili sadmah tha, Lekin ab meray liye waapis lautnay ki bhi koi soorat nah thi. Isi gham mein Ghaltaan-o-Pareshaan kathan raaston say guzarta hua Shaam pohnch gaya. Aur wahan mustaqil sakoonat ikhteyaar kar li. Yahan Nasraaniyat ka ghalbah daikh kar mujhay dili musarrat haasil hui lekin apni hamsheerah ki judaai aur isay paish aane waale khatraat ka sadmah musalsal daaman-geer raha.


Mujhay yeh itlaa’ mili keh meray wahan say kooch kar aane kay b’ad Lashkar-e-Islaam nay humare gharon par humlah kiya aur woh pooray ilaaqah ko fatah karne kay b’ad meri behen ko deegar qaidiyon keh saath giraftaar kar keh Yasrab lay gaey hain aur inhain Masjid keh aik darwaaze keh saath mulhiqah hawalaat mein band kar diya gaya hai.

Mujhay yeh itlaa’ mili keh Nabi (ﷺ) aik roz hawalaat keh paas say guzray to meri behen pokaar uthi: Ya Rasool Allah ﷺ! mera Baap faut ho chuka hai aur mera nigraan aankhon say ujhal hai. Mujh bechaari par ahsaan kijiye Allah aap ﷺ par ahsaan karega.

Aap ﷺ nay daryaf’t farmaaya: Tera nigraan kon hai?

Usnay btaya: Mera bhai Adi bin Haatim taai.

Aap ﷺ nay farmaaya: Woh jo Allah Ta’aala aur Rasool ﷺ say Raah-e-faraar Ikhteyaar kar chukka hai.

Phir aap ﷺ chal diye aur meri behen ko isi haalat mein rehnay diya, Jab doosra din hua to meri behen nay chutkaare keh liye dobarah apni m’aroozaat paish kin. To aap ﷺ nay usay Hasb-e-Saabiq jawaab diya: jab teesray din aap ﷺ ka wahan say guzar hua to meri behen maayoosi ki wajah say khaamosh thi. To peechay say aik shakhs nay ishaarah kiya keh aaj Rahmat-e-Dou aalam ﷺ ki Khidmat-e-Aqdas mein apni m’aroozaat karo to behen ko hoslah hua aur uth kar yeh arz paish ki.

Ya Rasool Allah ﷺ! Waalid faut hogaya hai aur nigraan aankhon say ujhal hai. Mujh pay ahsaan karen Allah Ta’aala aap ﷺ par ahsaan karega.

Aap ﷺ nay farmaaya: Aaj say tu aazaad hai. To usnay arz ki: Main Sar-zameen-e-Shaam mein moqeem apnay khaandaan keh paas jana chaahti hun.

Aap ﷺ nay farmaaya: Jaldbaazi say kaam nah lo. Jab tak tujhay apni qom ka koi aisa Qaabil-e-Ai’timaad shakhs na milay jo tujhay mulk Shaam pohnchaane ki zimmah-daari qabool kare, Us waqat tak yeh safar ikhteyaar nah karna. Aur jab koi aisa shakhs mil jaaey to mujhay btana. Iskeh b’ad Rasool akram ﷺ tashreef lay gaey. To behen nay us shakhs kay muta’alliq daryaf’t kiya. Jisnay aaj isay baat karnay ka hoslah dilaaya tha to usay btaya gaya, Yeh Hazrat Ali (رضی اللہ عنہ) thay. Phir woh kuch arsah wahi moqeem rahi. Chand dinon keh b’ad Madinah Monawarrah mein aik Qaaflah aya jis mein aik musaafir humare qabeelah ka bhi tha. Usay daikh kar meri behen bahut khush hui aur isi waqat Rahmat-e-Dou aalam ﷺ ki Khidmat-e-Aqdas mein haazir ho kar arz ki: Ya Rasool Allah ﷺ! Aaj Madinah mein aik qaaflah aya hai jis mein humare qabeelay ka aik ba-ai’temaad shakhs bhi hai. Woh mujhay ba-hifaazat mulk Shaam mein apnay khaandaan tak pohncha dey ga. Az-raah-e-Karam mujhay ijaazat dijiye. To aap ﷺ nay usay libaas, uont’ni aur Zaad-e-Raah dey kar is qaaflah keh saath rawaanah kar diya. Janaab Adi  (رضی اللہ عنہ) farmaatay hain:

Iskeh b’ad humain waqtan-fa-wqatan humsherah keh muta’alliq mukhtalif khabrain pohnchti rahin, Aur hum shiddat say uski aamad ka intezaar karne lagy, Lekin humain Rasool-e-Aqdas ﷺ ki jaanib say hamsheerah keh saath Husn-e-Sulook ki jo khabrain pohnch rahi thin, Dil inhain tasleem nahi karta tha, Kyunkeh mujhay is baat ka ahsaas tha keh main nay apnay Daur-e-Hukoomat mein aap ﷺ keh saath koi acha bartaao nahi kiya tha.

Ba-khuda aik roz main apnay Ahl-e-Khaanah mein baitha kya daikhta hun keh aik urat uont’ni par baithi aahistah aahistah humari taraf aa rahi hai. Main pokaar utha yeh to Haatim ki beti m’aloom hoti hai aur haqeeqat mein bhi wahi thi. Jab woh humare paas pohnchi to ghussay say mujh par baras padi aur mujhay la-parwaah, Zaalim aur be-wafa qaraar detay huey kehnay lagi. Kya tujhay sharam nah aai keh apnay biwi bachon ko tu saath lay aaya, Aur apnay Baap ki aabru, Apni izzat ko wahin chod aaya. Teray liye doob marne ka maqaam hai.

Main nay kaha: Behen naraaz nah hon. Apni zobaan say khair keh kalmaat nikaalain, Baithen kuch aaraam to kar lain, Aap thaki hui hain. Main musalsal usay narm lehjay mein raazi karne kay liye koshaan raha. Bil-aakhir woh raazi hogai aur phir usnay apni poori daastaan mujhay sunaai. Yeh waaqe’aat bilkul us ke mutaabiq thay jo mukhtalif zaraae’ say mujhay m’aloom ho chukkay thay. Woh badi Daanish-mand, Zeerak aur muhtaat urat thi. Main nay us say Rasool akram ﷺ keh muta’alliq daryaft kiya, Aur aap ﷺ keh baare mein uski raaey m’aloom ki.

Usnay mujhay kaha: Bhai jaan! foran unsay molaaqaat karen. Agar woh Nabi hain to yaqeenan molaaqaat mein sabqat karne par aapko darjah milay ga. Agar woh baadshaah hain to unki baargaah mein aapko ruswaah nahi kiya jaeyga.


Janaab Adi  (رضی اللہ عنہ) farmaatay hain: Main nay Rakht-e-Safar baandha aur Rasool akram ﷺ say molaaqaat keh liye baghair koi zamaanat haasil kiye Madinh Monawwarah ki taraf chal pada. Albatah mujhay yeh baat m’aloom ho chuki thi keh Rasool akram ﷺ ki dili khuwaahish hai keh main kisi tarah aap ﷺ keh Zair-e-Asar aa jaon. Main aap ﷺ ki Khidmat-e-Aqdas mein haazir hua. Aap ﷺ us waqat Masjid mein tashreef farma thay. Main nay salaam kiya. Aap ﷺ nay irshaad farmaaya: Tum kon ho? Main nay arz ki: Adi bin haatim. Aap ﷺ nay khushi ka izhaar farmaaya. Mera haath pakda aur ghar ki taraf chal diye. Is doraan main nay aik Ajeeb-o-Ghareeb manzar daikha keh aik naheef, La-chaar budhiya nay aap ﷺ ka raastah rok liya. Uskeh saath aik chota sa bachah bhi tha. Usnay apni koi zarurat aap ﷺ ki khidmat mein paish ki jisay aap ﷺ nay usi waqat poora kar diya. Main nay apnay dil mein kaha:

Ba-khuda yeh baadshaah nahi hai. Phir aap ﷺ nay mera haath pakda aur aagy chal diye. Yahan tak keh hum ghar pohnch gaey. Aap ﷺ nay aik takiyah mujhay diya keh is par baith jao. Main sharmaaya aur arz ki: Huzoor aap ﷺ hi is par baithain, Lekin aap ﷺ nay mujhay hukam diya keh tujhi ko is par baithna hoga. Main aap ﷺ ka hukam maantay huey is par baith gaya aur khud Nabi akram ﷺ zameen par baith gaey, Kyun keh ghar mein iskeh ilaawah koi bhi aur cheez nah thi. Main nay apnay dil mein kaha: Allah ki qasam! Yeh kisi Baadshaah ki aadat nahi ho sakti. Phir aap ﷺ meri taraf mutawajjah huey aur farmaaya: Kya tum nasraaniyat aur La-deeniyat keh maabain mozabzab to nahi? Main nay arz ki bilkul aapka irshaad durust hai.


Phir aap ﷺ nay farmaaya: kya tum apni qom ke Maal-o-Daulat mein sy chauthaai hissah nahi letay jo keh khud teray Deen ki roshani mein teray liye halaal nahi hai. Main nay kaha: Bilkul, aap ﷺ nay durust farmaaya. Aur mujhay is baat ka yaqeen haasil hogaya keh aap ﷺ Allah Ta’aala ke sachay Rasool ﷺ hain.

Phir aap ﷺ mujh say mukhaatib huey aur irshaad farmaaya: Adi  (رضی اللہ عنہ)! Shayad tujhay Deen-e-Islaam qabool karne say Musalmaanon ki mojoodah Haalat-e-Zaar aur Ghurbat-o-Muflisi rok rahi ho. Allah ki qasam! Anqareeb aik din aisa aaey ga keh Musalmaanon mein maal itna waafir ho jaey ga keh koi shakhs tumhain sadqah qabool karne wala nahi milay ga.

Ay Adi (رضی اللہ عنہ)! Shayad tujhay is Deen ko qabool karne say Musalmaanon ki qillat aur dushmanon ki kasrat ka ahsaas rok raha ho. Allah ki qasam! Tum anqareeb suno gy keh pooray Khittah-e-Arab mein Islaami parcham lehraaey ga aur hr-soo aman ka aisa maahol hoga keh aik urat tanha apni sawaari par Qaadsiyah say rawaanah hogi aur be-khatar safar karti hui Madinah Monawwarah pohnchay gi. Douraan-e-Safar Allah Ta’aala keh siwa us ke dil mein kisi ka dar nah hoga.

Ay Adi (رضی اللہ عنہ)! Shayad tujhay is Deen ko qabool karne say yeh ahsaas rok raha ho keh aaj Hukoomat-o-Saltanat ghair-muslimon keh qabzah mein hai. Allah ki qasam! To anqareeb yeh khabar suno gy keh Sar-zameen-Baabal keh safaid mahllaat ko Musalmaanon nay fatah kar liya hai aur kisrah bin hurmuz ke khazaanon ko apnay qabzah mein lay liya hai. Main nay ta’ajjub say daryaft kiya kisrah bin hurmuz ke khazaanon par Musalmaanon ka qabzah?

Aap ﷺ nay farmaaya: Haan! Musalmaan kisrah bin hurmuz ke khazaanon par qaabiz ho jaen gay.

Janaab-e-Adi (رضی اللہ عنہ) farmaatay hain keh yeh baaten sun kar main bahut ziyadah mutaasir hua aur Kalmah-e-Shahaadat padh kar Daairah-e-Islaam mein daakhil hogaya.


Hazrat Adi (رضی اللہ عنہ) nay taweel umer paai. Aap aksar farmaaya kartay thay keh dou nishaaniyaan to poori ho chukki hain teesri abhi baaqi hai. Allah ki qasam! woh bhi poori ho kar rahay gi. Main nay Ba-chasham-e-Khud daikha keh aik urat tanha apni sawaari par Qaadsiyah say chali aur bila-Khauf-o-Khatar safar karti hui Madinah Taytibah tak pohnch gai aur main is Lashkar mein Bazaat-e-Khud mojood tha jis nay Kisrah keh khazaanon ko apnay qabzah mein liya aur main halfiyah tor par kehta hun keh teesri nishaani bhi yaqeenan poori ho kar rahay gi.


Allah subahanahu wa ta’aala nay apnay piyaare Nabi ﷺ ko sach kar dikhaya.

Teesri nishaani Hazrat Umar bin abdul aziz keh Daur-e-Khilaafat mein poori hui. Musalmaanon ke paas Maal-o-Daulat ki is qadar faraawaani hogai thi keh Zaka’t lenay wala koi Mohtaaj-o-Muflis nahi milta tha.

Bila-Shubah Rasool-e-Aqdas ﷺ nay sach farmaaya aur Janaab-e-Adi bin Haatim taai (رضی اللہ عنہ) ki qasam bhi poori hogai.


Hazrat Adi bin haatim taai (رضی اللہ عنہ) ke tafseeli Haalaat-e-Zindagi m’aloom karne kay liye darj zail kitaabon ka mutaale’ah karen:

1: Al Isabah (Tab ul Sa’aadah                                                                 4/228-922

2: Al Isiaab                                                                                                  2/505-503

3: Usd ul Ghabah                                                                                    3/392-394

4: Tahzeeb ul Tahzeeb                                                                        7/166-167

5: Taqreeb ul Tahzeeb                                                                         2/16

6: Khulasah-e-Tahzeeb-o-Tahzeeb-e-Al Kamal        263-264

7: Tajreed Asmaa-e-Al Sahaba                                                 1/405

8: Al Jam-o- Bain Rijal-e-Al Sahihain                                 1/398

9: Al Ibar                                                                                                    1/74

10: Al Tarikh ul Kabeer                                                                    4/43

11: Tarikh ul Islam Lil Zahabi                                                       3/46-48

12: Shazarat ul Zahab                                                                     1/74

13: Al Maarif                                                                                          136

14: Al Maaroon                                                                                     46 

REFERENCE:
Book: Hayat-e-Sahaba kay darakh shah pahelo.
By: Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.

حضرة عدی بن حاتم الطائی رضی اللہ عنہ

 


[یہ اس وقت ایمان لائے جب عام لوگوں نے کفر اختیار کیا۔ انہوں نے حق پہچانا جب عام لوگوں نے اس کا انکار کیا، انہوں نے وفا شعاری کا ثبوت دیا جبکہ عام لوگوں نے دھوکا دیا اور یہ اس وقت دین کی طرف متوجہ ہوئے جبکہ عام لوگوں نے اس سے بےرخی اختیار کی۔ (حضرت عمر ؓ )]

عرصہء دراز تک بڑی نفرت، حقارت، بےرخی و بےاعتنائی میں مبتلا رہنے کے بعد بلآخر 9سال ہجری میں عرب ایک بادشاہ اسلام سے متاثر ہوا۔ ایمان قبول کرنے اور رسول اکرمﷺ کی اطاعت اختیار کرنے کا شوق اس کے دل میں سمایا۔کیا آپ کو معلوم ہے کہ یہ بادشاہ کون تھا؟

یہ جلیل القدر صحابی حضرت عدی رضی اللہ عنہ تھے جن کے والد حاتم طائی کو سخاوت کے سلسلے میں ضرب المثل کے طور پر پیش کیا جاتا ہے۔


قبیلہ طی نے حاتم طائی کی وفات کے بعد سلطنت کی ذمہ داری ان کے بیٹے جناب عدی رضی اللہ عنہ کو سونپ دی، اور پورے قبیلے نے اپنی آمدن کا چوتھائی حصہ ان کے لیے مخصوص کر دیا اور ان کے حکمران بننے پر خوشی کا اظہار کیا۔ جب رسول اکرم ﷺ نے اعلانیہ طور پر اسلام کی دعوت پیش کی اور عرب جوق در جوق حلقہ بگوش اسلام ہونے لگے، یہ صورت حال دیکھ کر جناب عدی رضی اللہ عنہ نے خطرہ محسوس کیا کہ اگر عام لوگ اسی طرح آپ ﷺ کی دعوت سے متاثر ہوتے رہے تو بلآخر ہماری سلطنت بھی جاتی رہے گی، تو انہوں نے اسلام کی اشاعت کو روکنے کے لیے ہر حربہ استعمال کیا اور آپﷺ سے بغض و عناد کی انتہا کر دی۔ آپ ﷺ سے عداوت کا یہ سلسلہ بیس سال تک جاری رہا۔ بلآخر اللہ سبحانہ وتعالی ٰ نے اپنے فضل و کرم سے اسلام قبول کرنے اور ہدایت کی راہ اختیار کرنے کے لیے انہیں انشراح صدر کی عظیم نعمت سے نواز دیا۔


جناب عدی رضی اللہ عنہ کے اسلام قبول کرنے کی ناقابل فراموش داستان ہم آپ کو انہی کی زبانی سناتے ہیں، کیونکہ اس داستان گوئی میں وہی اس کا حق ادا کر سکتے ہیں۔

جناب عدی رضی اللہ عنہ بیان فرماتے ہیں کہ:
جب میں نے رسول اکرمﷺ کے متعلق سنا تو میرے دل میں اس قدر نفرت پیدا ہوئی کہ شاید ہی کسی عرب باشندے کے دل میں اس جیسی نفرت پیدا ہوئی ہو۔ میں اپنے علاقے اور قوم کا ایک باوقار اور معزز فرد تھا اور عقیدةً نصرانی تھا، اور دوسرے عرب بادشاہوں کی طرح میں بھی اپنی رعایا سے ان کے مال کا چوتھائی حصہ وصول کرتا۔
پہلے مرحلہ پر تو میں نے نفرت اور حقارت کی بنا پر کوئی پروا نہ کی، لیکن جب رسول اکرمﷺ کی شان و شوکت میں اضافہ ہوا اور آپ ﷺ کے لشکر کو سرزمین عرب میں چہار سو فتوحات حاصل ہونے لگیں، تو پھر میں نے اپنے دل میں خطرہ محسوس کیا اور اونٹ چرانے والے اپنے غلام سے کہا: “آج کے بعد چاق و چوبند اور طاقتور اونٹنیاں ہر دم میرے لیے تیار رکھو، اور ایسی سدھائی ہوئی ہوں کہ سفر میں کوئی تکلیف محسوس نہ ہو۔” ایک دن صبح سویرے میرا یہی غلام دوڑتا ہوا میرے پاس آیا اور کہنے لگا:
“میرے آقا! اگر لشکر اسلام آپ کے علاقہ پر یلغار کر دے تو پھر آپ کیا کریں گے؟”
میں نے گھبراہٹ میں اس سے دریافت کیا کیا بات ہے؟
اس نے کہا، “میں نے آج گھروں میں جھنڈے لہراتے دیکھے ہیں۔ مجھے پتہ چلا ہے کہ آج لشکر اسلام نے ہمارے علاقہ پر یلغار کر دی ہے اور متعدد گھروں پر قبضہ کر لیا ہے۔
میں نے اپنی گرفتاری کا خطرہ محسوس کرتے ہوئے اسے کہا۔ “جلدی سے وہ اونٹنیاں میرے پاس لاؤ جن کے تیار رکھنے کا میں نے تجھے حکم دیا تھا۔” اسی وقت وہ اونٹنیاں میرے پاس لائی گئیں اور میں اپنے اہل خانہ کو ان پر سوار کر کے ملک شام کی طرف روانہ ہو گیا تاکہ میں اپنے ہم مذہب نصرانیت کے علمبردار لوگوں کے پاس سکونت اختیار کر سکوں۔ ہوا یہ کہ میں اس جلدبازی اور گھبراہٹ میں اپنے تمام خاندان کو اس سفر میں ہمراہ نہ لے سکا، لیکن جب میں خطرناک اور کٹھن راستوں سے گزرا تو بعض افراد راستے ہی میں ہلاک ہو گئے۔

اس افراتفری میں میری ہمشیرہ نجد میں ہی رہ گئی۔ اس کو اپنے ساتھ نہ لا سکا، جس کا مجھے بہت زیادہ دلی صدمہ تھا، لیکن اب میرے لیے واپس لوٹنے کی بھی کوئی صورت نہ تھی۔ اسی غم میں غلطاں و پریشان کٹھن راستوں سے گزرتا ہوا شام پہنچ گیا اور وہاں مستقل سکونت اختیار کر لی۔ یہاں نصرانیت کا غلبہ دیکھ کر مجھے دلی مسرت ہوئی لیکن اپنی ہمشیرہ کی جدائی اور اسے پیش آنے والے خطرات کا صدمہ مسلسل دامن گیر رہا۔


مجھے یہ اطلاع ملی کہ میرے وہاں سے کوچ کر آنے کے بعد لشکر اسلام نے ہمارے گھروں پہ حملہ کیا اور وہ پورے علاقے کو فتح کرنے کے بعد میری بہن کو دیگر قیدیوں کے ساتھ گرفتار کر کے یثرب لے گئے ہیں اور انہیں مسجد کے ایک دروازے کے ساتھ ملحقہ حوالات میں بند کر دیا گیا ہے۔

مجھے یہ اطلاع ملی کہ نبی علیہ السلام ایک روز حوالات کے پاس سے گزرے تو میری بہن پکار اٹھی، “یا رسول اللہ ﷺ! میرا باپ فوت ہو چکا ہے اور میرا نگران آنکھوں سے اوجھل ہے۔ مجھ بیچاری پر احسان کیجئے اللہ آپ ﷺ پر احسان کرے گا۔”
آپ ﷺ نے دریافت فرمایا: “تیرا نگران کون ہے؟”
اس نے بتایا: “میرا بھائی عدی بن حاتم طائی۔”
آپ ﷺ نے فرمایا: “وہ جو اللہ اور رسول ﷺ سے راہ فرار اختیار کر چکا ہے۔ پھر آپ ﷺ چل دیئے اور میری بہن کو اسی حالت میں رہنے دیا، جب دوسرا دن ہوا تو میری بہن نے چھٹکارے کے لیے دوبارہ اپنی معروضات پیش کیں تو آپﷺ نے اسے حسب سابق جواب دیا۔ جب تیسرے دن آپ ﷺ کا وہاں سے گزر ہوا تو میری بہن مایوسی کی وجہ سے خاموش تھی۔ پیچھے سے ایک شخص نے اشارہ کیا کہ آج رحمت دوعالم ﷺ کے سامنے اپنی معروضات ہیش کرو تو بہن کو حوصلہ ہوا اور اٹھ کر یہ عرض پیش کی:
“یا رسول اللہ ﷺ! والد فوت ہو گیا ہے اور نگران آنکھوں سے اوجھل ہے۔ مجھ پر احسان کریں اللہ آپﷺ پر احسان کرے گا۔”

آپ ﷺ نے فرمایا: “آج سے تو آزاد ہے۔” تو اس نے عرض کی “میں سرزمین شام میں مقیم اپنے خاندان کے پاس جانا چاہتی ہوں۔”
آپ ﷺ نے فرمایا: “جلدبازی سے کام نہ لو۔ جب تک تجھے اپنی قوم کا کوئی ایسا قابل اعتماد شخص نہ ملے جو تجھے ملک شام پہنچانے کی ذمہ داری قبول کرے، اس وقت تک یہ سفر اختیار نہ کرنا۔ اور جب کوئی ایسا شخص مل جائے تو مجھے بتانا۔” اس کے بعد رسول اکرمﷺ تشریف لے گئے۔ تو بہن نے اس شخص کے متعلق دریافت کیا جس نے آج اسے بات کرنے کا حوصلہ دلایا تھا، تو اسے بتایا گیا، یہ حضرت علی رضی اللہ عنہ تھے۔ پھر وہ کچھ عرصہ وہیں مقیم رہی۔ چند دنوں کے بعد مدینہ منورہ میں ایک قافلہ آیا جس میں ایک مسافر ہمارے قبیلے کا بھی تھا۔ اسے دیکھ کر میری بہن بہت خوش ہوئی اور اسی وقت رحمت دوعالم ﷺ کی خدمت اقدس میں حاضر ہو کر عرض کی، یارسول اللہ ﷺ! آج مدینہ میں ایک قافلہ آیا ہے جس میں ہمارے قبیلے کا ایک بااعتماد شخص بھی ہے۔ وہ مجھے بحفاظت ملک شام میں اپنے خاندان تک پہنچا دے گا۔ ازراہ کرم مجھے اجازت دیجئے۔ تو آپ ﷺ نے اس لباس، اونٹنی اور زاد راہ دے کر اس قافلے کے ساتھ روانہ کر دیا۔ جناب عدی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں:
“اس کے بعد ہمیں وقتاً فوقتاً ہمیشہ کے متعلق خبریں پہنچتی رہی، اور ہم شدت سے اس کی آمد کا انتظار کرنے لگے، لیکن ہمیں رسول اقدس ﷺ کی جانب سے ہمشیرہ کے ساتھ حسن سلوک کی جو خبریں پہنچ رہی تھیں، دل انہیں تسلیم نہیں کرتا تھا، کیونکہ مجھے اس بات کا احساس تھا کہ میں نے اپنے دور حکومت میں آپ ﷺ کے ساتھ کوئی اچھا برتاؤ نہیں کیا تھا۔
بخدا، ایک روز میں اپنے اہل خانہ کے ساتھ بیٹھا کیا دیکھتا ہوں کہ ایک عورت اونٹنی پر بیٹھی آہستہ آہستہ ہماری طرف آ رہی ہے۔ میں پکار اٹھا یہ تو حاتم کی بیٹی معلوم ہوتی ہے۔ اور حقیقت میں بھی وہی تھی۔ جب وہ ہمارے پاس پہنچی تو غصے سے مجھ پر برس پڑی اور مجھے لاپروا، ظالم اور بےوفا قرار دے کر کہنے لگی: “کیا تجھے شرم نہ آئی کہ اپنے بیوی بچوں کو تو ساتھ لے آیا اور اپنے باپ کی آبرو، اپنی عزت کو وہیں چھوڑ آیا۔ تیرے لیے-

ڈوب مرنے کا مقام ہے۔
میں نے کہا، بہن ناراض نہ ہوں۔ اپنی زبان سے خیر کے کلمات نکالیں، بیٹھیں کچھ آرام تو کر لیں، آپ تھکی ہوئی ہیں۔ میں مسلسل اسے نرم لہجے میں راضی کرنے کے لیے کوشاں رہا۔ بلآخر وہ راضی ہو گئی اور پھر اس نے اپنی پوری داستان مجھے سنائی۔ یہ واقعات بالکل اس کے مطابق تھے جو مختلف ذرائع سے مجھے معلوم ہو چکے تھے۔ وہ بڑی دانشمند، زیرک اور محتاط عورت تھی۔ میں نے اس سے رسول اکرمﷺ کے متعلق دریافت کیا، اور آپ ﷺ کے بارے میں اس کی رائے معلوم کی۔
اس نے مجھے کہا: “بھائی جان! فوراً ان سے ملاقات کریں۔ اگر وہ نبی ہیں تو یقیناً ملاقات میں سبقت کرنے پر آپ کو درجہ ملے گا۔ اگر وہ بادشاہ ہیں تو ان کی بارگاہ میں آپ کو رسوا نہیں کیا جائے گا۔”


جناب عدی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں: “میں نے رخت سفر باندھا اور رسول اکرمﷺ سے ملاقات کے لیے بغیر کوئی ضمانت حاصل کیے مدینہ منورہ کی طرف چل پڑا۔ البتہ مجھے یہ بات معلوم ہو چکی تھی کہ رسول اکرمﷺ کی دلی خواہش ہے کہ میں کسی طرح آپ ﷺ کے زیر اثر آ جاؤں۔ میں آپ ﷺ کی خدمت اقدس میں حاضر ہوا۔ آپ ﷺ اس وقت مسجد میں تشریف فرما تھے۔ میں نے سلام کیا۔ آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا: “تم کون ہو؟” میں نے عرض کی، “عدی بن حاتم۔” آپ ﷺ نے خوشی کا اظہار فرمایا۔ میرا ہاتھ پکڑا اور گھر کی طرف چل دیئے۔ اس دوران میں نے ایک عجیب و غریب منظر دیکھا کہ ایک نحیف، لاچار بڑھیا نے آپ ﷺ کا راستہ روک لیا۔ اس کے ساتھ ایک چھوٹا سا بچہ بھی تھا۔ اس نے اپنی کوئی ضرورت آپ ﷺ کی خدمت میں پیش کی جسے آپ ﷺ نے اسی وقت پورا کر دیا۔ میں نے اپنے دل میں کہا۔ بخدا یہ بادشاہ نہیں ہے۔ پھر آپ ﷺ نے میرا ہاتھ پکڑا اور آگے چل دیئے۔ یہاں تک کہ ہم گھر پہنچ گئے۔ آپ ﷺ نے ایک تکیہ مجھے دیا کہ اس پر بیٹھ جاؤ۔ میں شرمایا اور عرض کی۔ “حضور آپ ﷺ ہی اس پر بیٹھیں، لیکن آپ ﷺ نے مجھے حکم دیا کہ تجھی کو اس پر بیٹھنا ہو گا۔ میں آپﷺ کا حکم مانتے ہوئے-

اس پر بیٹھ گیا اور خود نبی اکرم ﷺ زمین پر بیٹھ گئے، کیونکہ گھر میں اس کے علاوہ کوئی بھی اور چیز نہ تھی۔ میں نے اپنے دل میں کہا، اللہ کی قسم! یہ کسی بادشاہ کی عادت نہیں ہو سکتی۔ پھر آپ ﷺ میری طرف متوجہ ہوئے اور فرمایا: “کیا تم نصرانیت اور لادینیت کے مابین مذبذب تو نہیں؟” میں نے عرض کی “بالکل آپ کا ارشاد درست ہے۔”


پھر آپ ﷺ نے فرمایا: کیا تم اپنی قوم کے مال و دولت میں سے ایک چوتھائی حصہ نہیں لیتے جو کہ خود تیرے دین کی روشنی میں حلال نہیں ہے۔ میں نے کہا: بالکل، آپ ﷺ نے درست فرمایا۔ اور مجھے اس بات کا یقین حاصل ہو گیا کہ آپ ﷺ اللہ تعالی ٰ کے سچے رسول ﷺ ہیں۔

پھر آپ ﷺ مجھ سے مخاطب ہوئے اور ارشاد فرمایا: “عدی رضی اللہ عنہ! شاید تجھے دین اسلام قبول کرنے سے مسلمانوں کی موجودہ حالت زار اور غربت و مفلسی روک رہی ہو۔ اللہ کی قسم! عنقریب ایک دن ایسا آئے گا کہ مسلمانوں میں مال اتنا وافر ہو جائے گا کہ کوئی شخص تمہیں صدقہ قبول کرنے والا نہیں ملے گا۔

اے عدی رضی اللہ عنہ! شاید تجھے اس دین کو قبول کرنے سے مسلمانوں کی قلت اور دشمنوں کی کثرت کا احساس روک رہا ہو۔ اللہ کی قسم! تم عنقریب سنو گے کہ پورے خطہء عرب میں اسلامی پرچم لہرائے گا اور ہر سو امن کا ایسا ماحول ہو گا کہ ایک عورت تنہا اپنی سواری پر قادسیہ سے روانہ ہو گی اور بےخطر سفر کرتی ہوئی مدینہ منورہ پہنچے گی۔ دوران سفر اس کے دل میں اللہ تعالی کے سوا کسی کا ڈر نہ ہو گا۔

اے عدی رضی اللہ عنہ! شاید تجھے اس دین کو قبول کرنے سے یہ احساس روک رہا ہو کہ آج حکومت و سلطنت غیر مسلموں کے قبضہ میں ہے۔ اللہ کی قسم! تم عنقریب یہ خبر سنو گے کہ سرزمین بابل کے سفید محلات کو مسلمانوں نے فتح کر لیا ہے اور کسری ٰ بن ہرمز کے خزانوں کو اپنے قبضہ میں لے لیا ہے۔” میں نے تعجب سے دریافت کیا “کسری ٰبن ہرمز کے خزانوں پر مسلمانوں کا قبضہ؟”

آپﷺ نے فرمایا: “ہاں، مسلمان کسری ٰبن ہرمز کے خزانوں پر قابض ہو جائیں گے۔”

جناب عدی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ یہ تین باتیں سن کر میں بہت زیادہ متاثر ہوا اور کلمہء شہادت پڑھ کر دائرہء اسلام میں داخل ہو گیا۔


حضرت عدی رضی اللہ عنہ نے طویل عمر پائی۔ آپ اکثر فرمایا کرتے تھے کہ دو نشانیاں تو پوری ہو چکی ہیں تیسری ابھی باقی ہے۔ اللہ کی قسم! وہ بھی پوری ہو کر رہے گی۔ میں نے بچشم خود دیکھا کہ ایک عورت تنہا اپنی سواری پر قادسیہ سے چلی اور بلا خوف و خطر سفر کرتی ہوئی مدینہ طیبہ تک پہنچ گئی اور میں اس لشکر میں بذات خود موجود تھا جس نے کسری ٰ کے خزانوں کو اپنے قبضہ میں لیا اور میں حلفیہ طور پر کہتا ہوں کہ تیسری نشانی بھی یقیناً پوری ہو کر رہے گی۔


اللہ سبحانہ وتعالی ٰنے اپنے پیارے نبی ﷺ کو سچ کر دکھایا۔

تیسری نشانی حضرت عمر بن عبدالعزیز کے دور خلافت میں پوری ہوئی۔ مسلمانوں کے پاس مال و دولت کی اس قدر فراوانی ہو گئی تھی کہ زکوة لینے والا کوئی محتاج و مفلس نہیں ملتا تھا۔

بلاشبہ رسول اقدس ﷺ نے سچ فرمایا اور جناب عدی بن حاتم طائی رضی اللہ عنہ کی قسم بھی پوری ہو گئی۔


حضرت عدی بن حاتم طائی رضی اللہ عنہ کے تفصیلی حالات زندگی معلوم کرنے کے لیے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں۔

 

۱۔ الاصابه(طبع السعادة) ۴/ ۲۲۸۔۹۲۲
۲۔ الاستیعاب ۲/ ۵۰۲۔۵۰۳
۳۔ اسدالغابة ۳/ ۳۹۲۔۳۹۴
۴۔ تھذیب التھذیب ۷/ ۱۶۶۔۱۶۷
۵۔ تقریب التھذیب ۲/ ۱۶
۶۔خلاصة تذهيب تهذيب الكمال ۲۶۳۔۲۶۴
۷۔ تجرید اسماء الصحابه ۱/ ۴۰۵
۸۔الجماع بین رجال الصحیحین ۱/ ۳۹۸
۹۔ العبر ۱/ ۷۴
۱۰۔ التاریح الکبیر ۴/ ۴۳
۱۱۔تاریخ الاسلام للذھبی ۳/ ۴۶۔۴۷
۱۲۔ شذرات الذھب ۱/ ۷۴
۱۳۔ المعارف ۱۳۶
۱۴۔ المعرون ۴۶

 

حوالہ جات :

“حياتِ صحابہ کے درخشاں پہلو”

تا لیف: “داکتور عبدالر حمان رافت الباشا”

 

 

Table of Contents