Sections
< All Topics
Print

13. Hazrat Ikrimah Bin Abi Jahal (رضی اللہ عنہ)

Hazrat Ikrimah Bin Abi Jahal (رضی اللہ عنہ)

Jald hi Ikrimah  (رضی اللہ عنہ) tumharay paas Momin aur Muhaajir ban kar aeyga, Uske Baap ko gaali na do is liye ke mayyat ko gaali denay say uskay lawahiqeen ko takleef hoti hai aur woh gaali mayyat ko nahi pohnchti ( Farmaan-e-Rasool-e-Maqbool ﷺ)

Aey Muhaajir Shehsawaar khush aamdeed.

Jis din Nabi Rrhmat ﷺ nay Rushd-o-Hidaayat par mabni Islaam ki d’awat ko logon kay saamne a’ilaaniyah tor par paish kiya us waqat Ikrimah  (رضی اللہ عنہ) bin abi jahal abhi umer ki teesri bahaar ke aakhri ayyam mein thay.

Yeh Quraish mein Hasb-o-Nasb ke ai’tibaar say sab say mo’azziz aur maali ai’tibaar say sab say ziadah tawangar thay.

Unke liye munaasib to yahi tha ke jis tarah unkay saathi S’ad bin abi waqaas (رضی اللہ عنہ) aur Mus’ab bin umair (رضی اللہ عنہ) aur Makkah Mo’azmah ke b’az gharanon ke farzandon nay Islaam qabool kiya, Isi tarah yeh bhi Musharraf ba-islaam ho jatay, Lekin unka Baap sab say badi rukaawat tha. Kya aap jaante hain keh unka Baap kon tha?

Yeh Waadi-e-Makkah ka bahut bada Zaalim-o-Jaabir, Mushrikeen-e-Arab ka qaaid, Musalmaanon ko sakh’t aziyyatain pohnchaane wala, Jiski sakh’t sazaaon ke zari’ah Ehl-e-Emaan ko aazmaaya gaya aur woh is aazmaaish mein saabit qadam niklay aur is zaalim kay Makr-o-Faraib ke zari’ah Ehl-e-Yaqeen ki sadaaqat ko jaancha gaya aur woh Haqq-o-Sadaaqat ke m’ayaar par poora utray aur bil-aakhir Abu jahal ke naam say mash’hoor hua. Yeh to hai unke baap ka mukhtasr t’aaruf. Lekin jahan tak Hazrat Ikrimah  (رضی اللہ عنہ) ka ta’alluq hai yeh bilashubah Quraish ke bahut badey leader aur Qaabil-e-Rashk shehsawaar thay.


Janaab Ikrimah   (رضی اللہ عنہ) nay shuru’ mein to apnay Baap ke Naqsh-e-Qadam par chalte huey Hazrat Muhammad ﷺ ki dushmani apnay dil mein bitha li aur aap ﷺ ke saath shadeed adaawat say paish aey, Aap ﷺ ke Sahaabah ko tarah tarah ki takaaleef say do chaar kiya, Islaam aur Musalmaanon par aisay aisay mazaalim dhaaey ke jinhain daikh kar unkay Baap Abu jahal ko dili musarrat haasil hui. Jab unke Baap Abu jahal nay Ghazwah-e-Badar mein Mushrikeen ki qayaadat ki to usnay Laat-o-Uzza’a ki qasam kha kar kaha main us waqat tak Makkah waapis nahi jaon ga jab tak ke Muhammad ko is Maidaan mein shikast nah dey dun. Maqaam-e-Badar mein usnay padaao kiya. Musalsal teen din tak yahan unt zibah karta aur sharaab peeta raha aur Raqs-o-Suroor ki mehfil jamti rahi.

Jab Abu jahal nay Ma’arraka-e-Badar mein Mushrikeen ki qayaadat ki to iska beta Ikrimah (رضی اللہ عنہ) iska Dast-o-Baazu bana hua tha, Lekin us din Laat-o-Uzza’a Abu jahal ke kuch kaam nah aey, Is liye ke woh kisi ki pokaar ko suntay hi nahi.

Laat-o-Uzza’a nay uski kuch madad nah ki is liye ke woh har ai’tibaar say Aajiz-o-Bebas thay. Yeh Maidaan-e-Badar mein buri tarah qatal ho kar gira. Iskay betay Ikrimah (رضی اللہ عنہ) nay apni aankhon say daikha ke Musalmaanon ke naizay iska khoon pi rahay hain. Aur apnay Baap ke munh say nikalnay waali andohnaak cheekh apnay kaanon say suni.


Janaab Ikrimah   (رضی اللہ عنہ) Sardaar-e-Quraish ki laash ko Maidaan-e-Badar mein hi chod kar Makkah mein dafan karne kay liye apnay humraah na laa sake. Musalmaanon nay doosray Mushrikeen ki laashon ke saath uski laash ko bhi Takeeb kunwain mein phaink diya, Aur uper say rait daal di.


Us din say Ikrimah bin abi jahal ka Islaam ke saath aik doosra Tarz-e-Amal shuru’ hua. Pehle to Islaam ke khilaaf apnay Baap ki himaayat ki wajah say adaawat thi aur ab Baap ka intaqaam lenay ke liye dushmani apnay Nuqta-e-Urooj par pohnch chuki thi.

Us waqat say Ikrimah aur deegar woh tamaam log jinke Baap Ma’arka-e-Badar mein qatal ho chukkay thay, Mushrikeen ke seenon mein adaawat ki aag jalane lagy aur Maqtooleen ke wursaa’ ke dilon mein intaqaam ki aag ka sho’lah bhadkaane lagy. Yahan tak Ma’arka-e-uhad barpa hua.

Ikrimah bin abi jahal uhad ki jaanib chal niklay. Apni biwi Umm-e-Hakeem ko bhi saath lay lia taake woh saffon ke peechay khadi ho kar deegar Maqtooleen ki waaris uraton ke humraah aik saath dhoal baja kar nau Jawaanaan-e-Quraish ko ladai ke liye bar-anggikhtah karen, Taake inhain is haalat mein daikh kar Quraish ke shehsawaar jam kar ladain aur maidaan say Raah-e-Faraar ikhteyaar na kar saken.

Quraish nay shehsawaaron ki daaen jaanib Khaalid bin waleed aur baaen jaanib Ikrimah bin jahal ko muta’ayan kar diya. Ghazwa-e-Uhad mein in donon shehsawaaron nay aik toofaan barpa kar diya jis say Quraish ka pallah bhaari hogaya aur Mushrikeen ko is din badi kaamyaabi haasil hui. Yeh Soorat-e-Haal daikh kar Abu sufyaan nay kaha. Aaj hum nay Ghazwa-e-Badar ka badlah lay liya hai.


Aur Ghazwa-e-Khandak mein Mushrikeen nay kaii roz tak Madinah Monawwarah ka mohaasirah kiye rakha. Aakhir kaar Ikrimah bin abi jahal ka Paimaanah-e-Sabar labraiz hogaya. Unhon nay khandak mein aik tang si jagah daikhi to apnay ghodey ko aidh lagai aur woh sarpat dauda aur yakdam khandak ko uboor kar gaya aur inke peechay chand aur shehsawaar bhi khandak uboor kar gaey. In mein say Amar bin Abdoo d’aamiri ka to kaam tamaam hogaya aur Ikrimah bin abi jahal jaan bacha kar bhaag nikalne mein kaamyaab hogaya.


Fatah-e-Makkah ke din Quraish nay khiyaal kiya ke aaj Muhammad ﷺ aur aap ﷺ ke saathiyon ka moqaablah nahi kiya jaa sakta, To unhon nay yeh faislah kiya ke Lashkar-e-Islaam ka raastah na roka jaey taake woh baghair kisi mozaahimat ke Makkah mein daakhil hojaey. Is faislay ka inhain yeh faidah hua ke Rasool Allah ﷺ nay Lashkar-e-Islaam ke sipah salaaron ko yeh hukam dey diya ke woh Ahl-e-Makkah mein say usi ke saath ladaai karen jo in say nabard aazma ho.


Ikrimah bin abi jahal aur inke humraah aik Jama’at Quraish ki shairaazah bandi ke liye niklay taake Musalmaanon ke Lashkar-e-Jarraar ka raastah rokain, Lekin Hazrat Khaalid bin waleed (رضی اللہ عنہ) nay aik chotey say ma’arkah mein inhain shikast dey di. In mein say chand aik to qatal kar diye gaey aur kuch bhaag nikalne mein kaamyaab hogaey. In bhaagnay waalon mein Ikrimah bin abi jahal bhi thay.


Is raoz Ikrimah ko bahut nidaamat mehsoos hui. Makkah fatah ho jaane kay b’ad ab to inka yahan rehna mahaal tha.

Agarcheh Rasool Allah ﷺ  nay apnay moqaablah mein aane waale Quraish kay liye aam mo’aafi ka a’ilaan kar diya tha, Lekin in mein chand ashkhaas aisay bhi thay jinka naam lay kar Aap ﷺ nay yeh hukam saadir farmaaya keh agar yeh K’abah kay pardon mein bhi chuppay hon to inhain qatal kar diya jaey. In afraad ki fahrist mein Ikrimah bin abi jahal ka naam bhi tha, Is liye woh chuppkay say khisak gaya aur Yaman ka rukh kiya kyunke yahan isay koi jaae panaah nazar na aati thi.


Is moqa’ par Ikrimah bin abi jahal ki biwi Umm-e-Hakeem aur Hind bin Utbah aur inke himraah das deegar khawateen bhi Rasool Allah ﷺ kay ghar ki taraf rawanah huin taake aap ﷺ kay Dast-e-Mobarak par bai’at. Jab yeh Aap ﷺ ki Khidmat-e-Aqdas mein haazir huin to us waqat aap ﷺ ke paas ap ﷺ ki do biwiyan, Beti Hazrat Fatimah aur Bannu Abdul Muttlib ki chand khawateen maujood thin. Hind nay baat shuru’ ki aur woh us waqat niqaab udhey huey thi. Kehnay lagi:

Ya Rasool Allah ﷺ! Us khuda ka shukar hai jisne apnay pasandeedah Deen ko ghaalib kar diya. Main Qaraabat daari ki bina par aap ﷺ say rehem ki apeal karti hun aur main Sidq-e-Dil say Islaam qabool karti hun. Phir apnay chehray say niqaab hata kar goya hui Ya Rasool Allah ﷺ main Hind bint Utbah hun.

Rasool Allah ﷺ nay farmaaya: Khush aamdeed.

Phir usnay kaha: Ya Rasool Allah ﷺ aaj say pehlay aap ﷺ kay ghar say badh kar Rooy-e-Zameen par koi aisa ghar na tha jiski Tazleel-o-Ruswaai mujhay mahboob tar ho. Aur aaj aap ﷺ kay ghar say badh kar Rooy-e-Zameen par koi aisa ghar nahi jiski izzat mujhay mahboob tar ho.

Rasool Allah ﷺ nay yeh sun kar farmaaya: keh Allah Ta’aala teray pakeezah Khayaalaat-o-Ahsaasaat mein aur ziadah barkat ata farmaaey. Phir Ikrimah bin abi jahal ki biwi khadi hui. Usnay Islaam qabool kiya, Aur arz ki: Ya Rasool Allah ﷺ! Ikrimah is dar say Yaman bhaag gaya hai ke kahin aap ﷺ isay qatal na kar dain. Azraah-e-Karam usay panaah dey dain. Allah Ta’aala aap ﷺ par karam kare ga.

Nabi (علیہ السلام) nay irshaad farmaaya: Aaj say woh panaah mein hai.

Woh uski talaash mein usi waqat chal nikli. Aik Roomi ghulaam bhi uskay hamraah tha raastay mein ghulaam ki niyat mein fitoor paida hogaya Aur woh is par dauray daalne laga, Lekin yeh usay umeed dilaati rahi aur taalti rahi, Yahan tak ke aik Arab qabeelah kay paas pohnch gai. Unsay madad talab ki to unhon nay usay rasson say baandh diya. Yeh musalsal apni raah par chalti gai, Yahan tak ke Ilaaqa-e-Tahaamah kay Saahil-e-Samandar par Ikrimah say jaa mili aur woh aik Musalmaan Mallaah say yeh keh raha tha ke usay kashti mein sawaar kar ke paar laga dey.

Mallaah usay keh raha tha ke apni niyat khaalis kar lo to tujhay paar laga dun ga.

Ikrimah  nay us say kaha keh main apni niyat kesay khaalis karun.

Mallaah bola tum kaho.

اَشٗھَدُ اَن لاَ اِلٰہَ اِلاَّ اللہ ُوَاَنّ َمُحَمَّدً رَّسُوٗلُ اللہ

“Main gawaahi deta hun keh Allah ke siwa koi M’abood-e-Haqeeqi nahi aur bilashubah Muhammad ﷺ Allah ke Rasool hain”

Ikrimah  nay kaha: isi kalmah ki wajah say to main Makkah say bhaaga hun.

Woh donon yeh guftagu kar rahay thay ke Umm-e-Hakeem wahan Ikrimah  ke paas pohnch gai aur kehnay lagi: Meray chacha ke betay! Main aapke paas logon mein sab say Afzal, Sab say badh kar Naik aur behtar Hasti ke paas say ai hun. Y’ani Hazrat Muhammad bin Abdullah ﷺ ke paas say.

Main nay tumhare liye aap ﷺ say panaah talab ki to aap ﷺ nay kamala shafqat say panaah dey di. Ab apnay apko halaakat mein nah daaliye.

Usnay kaha: Kya tum nay khud baat ki hai?

Farmaaya: Haan main nay khud baat ki to aap ﷺ nay aapko panaah dey di. Woh musalsal yaqeen aur it’menaan dilaati rahi, Yahan tak ke Ikrimah uske humraah laut aey. Raastay mein usay apnay Roomi ghulaam ka waaqe’ah btaya to yeh suntay hi pehlay wahan pohnchay jahan isay baandh rakha tha, Islaam qabool karne say pehlay usay qatal kar diya.

Raastah mein aik jagah padaao kiya, Ikrimah nay apni biwi say khulwat ka iraadah kiya to usne badi sakhti say inkaar kar diya aur kaha. Main Musalmaan hun aur tu Mushrik hai. Usay bada t’ajjub hua aur kehnay laga. Meray aur teray darmeyaan bahut badi khalij paida hogai hai.

Jab Ikrimah (رضی اللہ عنہ) Makkah Mo’azmah kay qareeb pohnchay to Rasool Allah ﷺ nay apnay Sahaabah say irshaad farmaaya :”Anqareeb Ikrimah bin abi jahal tumhare paas Momin aur Muhaajir ban kar aey ga. Uske Baap ko gaali nah do is liye keh mayyat ko gaali denay say uske lawahiqeen ko takleef hoti hai aur woh gaali mayyat ko nahi pohnchti “

Thodi dair b’ad Ikrimah (رضی اللہ عنہ) aur inki biwi Rasool Allah ﷺ ki Khidmat-e-Aqdas mein pohnch gaey. Jab Nabi ﷺ nay inhain daikha to bahut khush huey. Khushi k aalam mein inki tarf lapkay. Phir jab Rasool Allah ﷺ baith gaey to Janaab Ikrimah aap ﷺ ke samne ba-adab khaday rahay. Arz ki : Ya Rasool Allah! Umm-e-Hakeem nay mujhay btaya hai ke aap ﷺ nay mujhay panaah dey di hai.

Nabi ﷺ nay farmaaya: Yeh sach kehti hai. Tujhay panaah haasil hai.

Janaab-e-Ikrimah nay daryaf’t kiya? Ya Rasool Allah ﷺ aap kis baat ki d’awat detay hain.

Aap ﷺ nay irshaad farmaaya: Main tumhain is baat ki taraf d’awat deta hun ke tum gawaahi do: Allah kay siwa koi m’abood haqeeqi nahi aur main Allah ka bandah aur Rasool hun. Namaaz qaaim karo. Zaka’t ada karo. Ramzaan kay rozay rakho. Yahan tak ke Aap ﷺ nay Islaam ke tamaam Arkaan shumaar kar diye.

Janaab Ikrimah nay kaha: Yaqeenan aap ﷺ nay Haq ki baat ki taraf d’awat di hai aur Khair-o-Bhalaai ka hukam dia hai. Phir iske b’ad yeh kehnay lagy. Allah ki qasam! aap ﷺ yeh d’awat paish karne say pehlay bhi hum sab say ziadah sachay aur saalih insaan thay.

Phir apna haath aagy badhaya aur kaha: Main iqraar karta hun ke Allah ke siwa koi ‘ibaadat ke laaiq nahi aur aap ﷺ bila shubah uske sachay Rasool hain. Phir arz ki: Ya Rasool Allah mujhay chand kalmaat sikhlaa dijiye jo main padhta rahun.

Ap ﷺ nay farmaaya: Tum yeh kalmaat padha karo.

اَشٗھَدُ اَن لاَ اِلٰہَ اِلاَّ اللہ ُوَاَن َّمُحَمَّدًا عَبٗدُہُ وَرَسُوٗلُہُ

“Main gawaahi deta hun ke Allah kay siwa koi m’abood haqeeqi nahi aur Muhammad ﷺ uske bandah aur Rasool hain.”

Janaab Ikrimah (رضی اللہ عنہ) nay daryaf’t kiya ke iske b’ad kya kahun?

Rasool Allah ﷺ nay irshaad farmaaya: Tum yeh kaho keh Main Allah Ta’aala aur Hazireen-e-Majlis ko gawaah bana kar iqraar karta hun Main Musalmaan Mujaahid aur Muhaajir hun.

Hazrat Ikrimah (رضی اللہ عنہ) nay Basmeem-e-Qalb yeh iqraar kiya. Is moqa’ pay Rasool Allah ﷺ nay irshaad farmaaya: Agar aaj tum mujh say koi aisi cheez maango gy jo main nay kisi ko di ho to woh main tumhain zarur dunga. Hazrat Ikrimah (رضی اللہ عنہ) nay kaha: Ya Rasool Allah ﷺ mujhay har woh adaawat ma’aaf kar dain jo main nay aap ﷺ say ki aur us moqaablah ki ma’aafi dain jo Zamaana-e-Jahaalat mein ap ﷺ say kiya aur har woh baat ma’aaf kar dain jo aap ﷺ ke saamne ya ghair haazri mein aap ﷺ ke khilaaf ki. Yeh sun kar Rasool Allah ﷺ nay Dua’a di :

Ellahi: Isay har woh adaawat ma’aaf kar dey jo isnay mujh say ki:

Aur is raastay ki har aik laghazish ko ma’aaf kar dey jis mein yeh teray Islaam kay Noor ko bhujaane kay liye chala.

Ellahi: Meray saamne ya meri ghair haaziri mein jo yeh meri izzat kay darpay hua iski yeh laghzish bhi ma’aaf kar dey.

Hazrat Ikrimah (رضی اللہ عنہ) ka chehrah khushi say timtima utha aur yeh kaha: Ya Rasool Allah ﷺ Allah ki qasam! Allah ki raah say rokne kay liye jo kuch main kharch kiya karta tha is say dugna ziadah ab Raah-e-Khuda mein kharch kar dunga. Aur jo main nay Allah ki raah say logon ko roknay kay liye ladaaiyan ladin ab main Allah ki raah mein dugna ziadah ladaaiyan ladun ga.


Us din say Maidaan-e-Jang ka yeh bahadur shehsawaar, Bahut bada ibaadat-guzaar, Shab zindah-daar aur Masaajid mein kasrat say Allah ki kitaab ko Tilaawat karne wala ban gaya. Inki haalat yeh thi ke Qur’an Majeed apnay chehray par rakhtay aur kehtay: Meray Rab ki kitaab, Meray Rab ki kitaab, Meray Rab ka kalaam aur phir Khashi’at-e-Ilahi say rona shuru’ kar detay.


Hazrat Ikrimah (رضی اللہ عنہ) nay Rasool Akram ﷺ say kiya gaya w’adah poora kar dikhaya. Is tarah ke jis Ma’arkah mein bhi Musalmaan daakhil huey Hazrat Ikrimah (رضی اللہ عنہ) bhi Islaam laane kay b’ad is mein shareek huey. Jis Mahaaz kay liye bhi niklay aap is mein Sar-e-Fahrist rahay.

Ghazwa-e-Yarmook mein to Hazrat Ikrimah (رضی اللہ عنہ) ladaai ki taraf is tarah mutawajah huey jis tarah koi piyaasa garam tareen din mein thandey paani ki taraf lapakta hai. Jab is ma’arkah mein Musalmaanon par Dushman ki taraf say shadeed dabao padha to Hazrat Ikrimah (رضی اللہ عنہ) apnay ghodhey say neechay utar aey aur apni Talwaar ki niyaam toad di aur Roomiyon ki saffon mein ghusa kar be-jigri say ladna shuru’ kar diya. Yeh manzar daikh kar Khaalid bin waleed (رضی اللہ عنہ) jaldi say aagy badhey aur farmaaya: Ikrimah (رضی اللہ عنہ) is tarah nah karo tumhara yahan qatal ho jana Musalmaanon ko bahut giraan guzray ga. To unhon nay farmaaya.

Khaalid (رضی اللہ عنہ) aap peechay hat jaen. Aap nay to pehlay Eemaan la kar Rasool Allah ﷺ ki rifaaqat haasil kar li. Main aur mera Baap tamaam logon say badh kar Rasool Allah ﷺ ke mukhaalif rahay. Mujhay chod dijiye taake main aaj apnay gunaahon ka kaffaarah dey lun. Phir kaha: bhala yeh kesay ho sakta hai keh bahut say maqaamaat par main nay Rasool Allah ﷺ kay khilaaf ladaai ladi ho aur aaj Roomiyon say peeth phair kar bhaag jaon. Yeh hargiz nahi ho sakta.

Phir Musalmaanon mein yeh a’ilaan kiya: Aaj maut par kon ba’it kare ga? To aapke chacha Haaris bin hishaam aur zaraar bin azwar ke ilaawah chaar sou Musalmaanon nay aapke haath par ba’it ki.

Hazrat khaalid bin waleed (رضی اللہ عنہ) ke khaimah ki aad mein zaur daar ladaai ladi aur aapki jaanib say behtareen difaa’ kiya. Jab ma’arka-e-Yarmook mein Musalmaanon ko azeem fatah haasil ho chukki to Sar-Zameen-e-Yarmook mein teen Mujaahid leitey huey thay jinhain zakhmon nay nidhaal kar diya tha.

Yeh Haaris bin hishaam, Iyaash bin rabi’ah aur Ikrimah bin abi jahal thay.

Haaris nay peenay kay liye paani maanga jab unki khidmat mein paani paish kiya gaya to Hazrat Ikrimah (رضی اللہ عنہ) nay paani ki taraf daikha to Hazrat Haaris (رضی اللہ عنہ) nay kaha ke pehlay unhain pila do jab paani unke qareeb laya gaya to Hazrat Iyaash (رضی اللہ عنہ) ke paas laya gaya to unki rooh Qafs-e-Unsari say parwaaz kar chukki thi. Jab paani pehlay dou saathiyon ke paas laya gaya to woh bhi Allah ko piyaare ho chukkay thay. Allah in sab pay raazi ho gaya aur inhain Hoz-e-Kousar say paani pilaaey ga jiske peenay say unhain kabhi piyaas nah lagy gi, Aur unhain Jannat-ul-Firdous ke sabzah zaar mein jagah ata farmaaey jis mein yeh humeshah khush haal rahain.


Hazrat Ikrimah   (رضی اللہ عنہ) ke tafseeli Halaat-e-Zindagi m’aloom karne ke liye darj zail kitaabon ka mutale’ah Karen:

1: Al Isaabah Mutarjim                                                                     5640

2: Tahzzeb ul Asmaa                                                                           1/338

3: Khulasat ul Tahzeeb                                                                         228

4: Zail ul Mizyal                                                                                      45

5: Tarikh ul Aslam Allamah Zahabi                                                   1/380

6: Raghbat ul Awwal                                                                         7/224

REFERENCE:
Book: Hayat-e-Sahaba kay darakh shah pahelo.
By: Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.

حضرت عکرمہ بن ابی جہل

 

حضرت عکرمہ بن ابی جہل ( جلد ہی عکرمہ تمہارے پاس مومن اور مہاجر بن کر آئے گا، اس کے باپ کو گالی نہ دو، اس لیے کہ میت کو گالی دینے سے اس کے لواحقین کو تکلیف ہوتی ہے۔ اور وہ گالی میت کو نہیں پہنچتی۔(فرمان رسول مقبول صلی اللہ علیہ وسلم)

اے مہاجر شاہسوار خوش آمدید۔
جس دن نبی رحمت ﷺ رشد و ہدایت پر مبنی اسلام کی دعوت کو لوگوں کے سامنے اعلانیہ طور پر پیش کیا اس وقت عکرمہ بن ابی جہل اللہ عنہا ابھی اپنی عمر کی تیسری بہار کے ایام میں تھے۔
یہ قریش میں حسب و نسب کے اعتبار سے سب سے معزز اور مالی اعتبار سے سب سے زیادہ تونگر تھے۔
ان کے لئے مناسب تو یہی ہے کہ جس طرح ان کے ساتھی سعد بن ابی وقاص اور مصعب بن عمیر رضی اللہ تعالی عنہ اور مکہ معظمہ کے بعض گھرانوں کے فرزندوں نے اسلام قبول کیا، اسی طرح یہ بھی مشرف بہ اسلام ہو جاتے، لیکن ان کا باپ سب سے بڑی رکاوٹ تھا۔ کیا آپ جانتے ہیں کہ ان کا باپ کون تھا؟
یہ وادی مکہ کا بہت بڑا ظالم و جابر،مشرکین عرب کا قائد،مسلمانوں کو سخت اذیتیں پہنچانے والا،اس کی سخت سزاؤں کے ذریعے اہل ایمان کو کو آزمایا گیا اور وہ اس آزمائش میں ثابت قدم نکلے اور اس ظالم کے مکر و فریب کے ذریعے اہل یقین کی صداقت کو جانچا گیا اور وہ حق و صداقت کے معیار پر پورے اترے اور بلا آخر یہ ابو جہل کے نام سے مشہور ہوا۔یہ تو ہے ان کے باپ کا مختصر تعارف۔حضرت عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہا کا تعلق ہے یہ بلاشبہ قریش کے بہت بڑے لیڈر اور قابل رشک شہسوار تھے ۔


جناب عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ نے شروع میں تو اپنے باپ کے نقش قدم پر چلتے ہوئے حضرت محمد ﷺ کی دشمنی اپنے دل میں بٹھا لی اور آپ ﷺ کے ساتھ شدید عداوت سے پیش آئے، آپ ﷺ کے صحابہ کو طرح طرح کی تکالیف سے دو چار کیا،
اسلام اور مسلمانوں پر ایسے مظالم ڈھائے کہ جنہیں دیکھ کر ان کے باپ ابو جہل کو بھی مسرت حاصل ہوئی۔جب ان کے باپ ابو جہل میں غزوہ بدر میں مشرکین کی قیادت کی تو اس نے لات و عزیٰ کی قسم کھا کر کہا میں اس وقت تک واپس نہیں جاؤں گا تک جب تک کہ محمد کو اس میدان میں شکست نہ دے دو۔ مقام بدر میں اس نے پراؤ کیا۔ مسلسل تین دن تک یہاں اونٹ ذبح کرتا اور شراب پیتا رہا اور رقص و سرور کی محفل جمتی رہی۔

جب ابوجہل نیم معرکہ بدر میں مشرکین کی قیادت کی تو اس کا بیٹا عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ اس کا دست و بازو بنا ہوا تھا، لیکن اس دن لات و عزیٰ ابوجہل کے کچھ کام نہ آئے، اس لیے کہ وہ کسی کی پکار کو سنتے ہی نہیں۔

لات و عزیٰ نے اس کی کچھ مدد نہ کی اس لیے وہ ہر اعتبار سے عاجز و بے بس تھے۔ یہ میدان بدر میں بری طرح قتل ہو کر گرا۔اس کے بیٹے عکرمہ رضی اللہ تعالی اپنی آنکھوں سے دیکھا کہ مسلمانوں کے نیزے اس کا خون پی رہے ہیں۔ اور آپ کے منہ سے نکلنے والی اندوہناک چینخ اپنے کانوں سے سنی۔


جناب عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ سردار قریش کی لاش کو میدان بدر میں ہی چھوڑ کر مکہ واپس آ گئے۔ شکست نے انہیں اس قدر عاجز و پسپا کر دیا کہ اپنے باپ کی لاش کو بھی مکہ میں دفن کرنے کے لیے اپنے ہمراہ نہ لا سکے۔ مسلمانوں نےدوسرے مشرکین کی لاشوں کے ساتھ اس کی لاش کو بھی تکیب کنوئیں میں پھینک دیا، اوپر سے ریت ڈال دی۔


اس دن سے عکرمہ ابن ابی جہل کا اسلام کے ساتھ ایک دوسرا طرز عمل شروع ہوا۔پہلے تو اسلام کے خلاف اپنے باپ کی حمایت کی وجہ سے عداوت تھی اور اب باپ کا انتقام لینے کے لیے دشمنی اپنے نقظہ عروج پر پہنچ چکی تھی۔

 

اس وقت سے عکرمہ اور دیگر وہ تمام لوگ جن کے باپ معرکہ بدر میں قتل ہو چکے تھے، مشرکین کے سینوں میں عداوت کی آگ جلانے لگے اور مقتولین کے ورثا کے دلوں میں انتقام کی آگ کا شعلہ بھڑکانے لگے یہاں تک کے معرکہ احد برپا ہوا۔

عکرمہ بن ابی جہل احد کی جانب چل نکلے۔ اپنی بیوی ام حکیم کو بھی ساتھ لے لیا تا کہ وہ صفوں کے پیچھے کھڑی ہو کر دیگر مقتولین کی وارث عورتوں کے ہمراہ ایک ساتھ ڈھول بجا کر نوجوانان کشش کو لڑائی کے لئے برانگیختہ کریں، تاکہ انہیں اس حالت میں دیکھ کر قریش کے شاہ سوات جم کر لڑیں اور میدان سے راہ فرار اختیار نہ کر سکیں۔

قریش کے شہسواروں کے دائیں جانب خالد بن ولید اور بائیں جانب عکرمہ بن ابی جہل کو متعین کر دیا۔غزوہ احد میں ان دونوں شہسواروں نے ایک طوفان برپا کردیا جس سے قریش کا پلا بھاری ہو گیا اور مشرکین کو اس دن بڑی کامیابی حاصل ہوئی۔یہ صورتحال دیکھ کر ابوسفیان نے کہا:

“آج ہم نے غزوہ بدر کا بدلہ لے لیا ہے۔”


اور غزوہ خندق میں مشرکین نے کئی روز تک مدینہ منورہ کا محاصرہ کیے رکھا۔آخرکار عکرمہ بن ابی جہل کا پیمانہٓ صبر لبریز ہوگیا۔انہوں نے خندق میں ایک تنگ سی جگہ دیکھی تو اپنے گھوڑے کو ایڑ لگائی اور سرپٹ دوڑا اور یکدم خندق کو عبور کر گیا اور ان کے پیچھے چند اور شہسوار بھی خندق عبور کر گئے۔ان میں سے عمرو بن عبدود عامری کا تو کام تمام ہو گیا اور عکرمہ بن ابی جہل جان بچا کر بھاگ نکلنے میں کامیاب ہوگیا۔


فتح مکہ کے دن قریش نے خیال کیا کہ آج محمد ﷺ اور آپ ﷺ کے ساتھیوں کا مقابلہ نہیں کیا جاسکتا،تو انہوں نے یہ فیصلہ کیا کہ لشکر اسلام کا راستہ نہ روکا جائے تاکہ وہ بغیر کسی مزاحمت کے مکہ میں داخل ہو جائے۔اس فیصلے کا انہیں یہ فائدہ ہوا کہ رسول اللہﷺ نے لشکر اسلام کے سپہ سالاروں کو یہ حکم دے دیا کہ وہ اہل مکہ میں اسی کے ساتھ لڑائی کریں جو ان سے نبرد آزما ہو۔


عکرمہ بن ابی جہل اور ان کے ہمراہ ایک جماعت قریش کی شیرازہ بندی کے لیے نکلے تاکہ مسلمانوں کے لشکر جرار کا راستہ روکیں، لیکن حضرت خالد بن ولید رضی اللہ تعالی عنہ نے ایک چھوٹے سے معرکہ میں انہیں شکست دے دی۔ ان میں سے چند ایک تو قتل کر دیئے گئے اور کچھ بھاگ نکلنے میں کامیاب ہوگئے۔ان بھاگ نکلنے والوں میں عکرمہ بن ابی جہل بھی تھے۔


اس روز عکرمہ کو بہت ندامت محسوس ہوئی۔مکہ فتح ہو جانے کے بعد اب تو ان کا یہاں رہنا محال تھا۔
اگرچہ رسول اللہ ﷺ نے اپنے مقابلے میں آنے والے قریش کے لیے عام معافی کا اعلان کر دیا تھا،لیکن ان میں چند اشخاص ایسے بھی تھے جن کا نام لے کر آپ ﷺ نے یہ حکم صادر فرمایا، کہ اگر یہ کعبہ کے پردوں میں بھی چھپے ہوں تو انہیں قتل کر دیا جائے۔ ان افراد کی فہرست میں عکرمہ بن ابی جہل کا نام بھی تھا، اس لیے وہ چپکے سے کھسک گیا اور یمن کا رخ کیا کیونکہ یہاں اسے کوئی جائے بنا نظر نہ آتی تھی۔


اس موقع پر عکرمہ بن ابی جہل کی بیوی ام حکیم اور ہند بنت عتبہ اور ان کے ہمراہ دس دیگر خواتین بھی رسول اللہ ﷺ کے گھر کی طرف روانہ ہوئیں تا کہ آپ کے دست مبارک پر بیعت کریں۔ جب یہ آپ ﷺ کی خدمت اقدس میں حاضر ہوئیں تو اس وقت آپ ﷺ کے پاس آپ ﷺ کی دو بیویاں، بیٹی حضرت فاطمہ اور بنو عبدالمطلب کی کی چند خواتین موجود تھیں۔ ہند نے بات شروع کی اور وہ اس وقت نقاب اوڑھے ہوئے تھی۔
کہنے لگی:
یارسول اللہ ﷺ ! اس خدا کا شکر ہے جس نے اپنے پسندیدہ دین کو غالب کر دیا۔میں قرابت داری کی بنا پر آپ ﷺ سے رحم کی اپیل کرتی ہوں اور میں صدق دل سے اسلام قبول کرتی ہوں۔ پھر اپنے چہرے سے نقاب ہٹا کر گویا ہوئی یا رسول اللہ ﷺ میں ہند بنت عتبہ ہوں۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: خوش آمدید پھر اس نے کہا: یا رسول اللہ ﷺ آج سے پہلے آپ ﷺ کے در سے برقرار روئے زمین پر کوئی ایسا گرنا تھا جس کی تذلیل و رسوائی مجھے محبوب تر ہو۔ اور آج آپ ﷺ کے گھر سے بڑھ کر روئے زمین پر کوئی ایسا گھر نہیں جس کی عزت مجھے محبوب تر ہو۔
رسول اللہ ﷺ نے یہ سن کر فرمایا:
“اللہ تعالی تیری پاکیزہ خیالات و احساسات میں اور زیادہ برکت عطا فرمائے۔”
پھر عکرمہ بن ابی جہل کی بیوی کھڑی ہوئی۔ اس نے اسلام قبول کیا،عرض کی، یا رسول اللہ ﷺ !
“اکرم اس ڈر سے یمن بھاگ گیا ہے کہ کہیں آپ ﷺ اسے قتل نہ کر دیں۔ ازارہ کرم اسے پناہ دے دی اللہ تعالی آپ ﷺ پر کرم کرے گا۔”
نبی ﷺ نے ارشاد فرمایا!
” آج سے وہ پناہ میں ہے۔”
وہ اس کی تلاش میں اسی وقت چل نکلی۔ایک رومی غلام بھی اس کے ہمراہ تھا، راستے میں غلام کی نیت میں فتور پیدا ہو گیا اور وہ اس پر ڈورے ڈالنے لگا، لیکن یہ اسے امید دلاتی رہی اور ٹالتی رہی،یہاں تک کہ ایک عرب قبیلہ کے پاس پہنچ گئی۔ان سے مدد طلب کی تو انہوں نے رسوں سے باندھ دیا۔ یہ مسلسل اپنی راہ پر چلتی گی، یہاں تک کہ علاقہ تہامہ کے ساحل سمندر پر عکرمہ سے جا ملی اور وہ ایک مسلمان ملاح سے یہ کہہ رہا تھا کہ اسے کشتی میں سوار کر کے پار لگا دے۔
“ملاح اسے کہہ رہا تھا کہ اپنی نیت خالص کر لوں تو تجھے پار لگا دوں گا۔”
عکرمہ نے اس سے کہا کہ، “اپنی نیت کیسے خالص کروں۔”
ملاح بولا تم کہو:

أَشْهَدُ أَنَّ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ وَأَنَّ مُحَمَّدٌ رَّسُولُ الله

“میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود حقیقی نہیں اور بلاشبہ محمد ﷺ اللہ کے رسول ہیں۔”
عکرمہ نے کہا اسی کلمہ کی وجہ سے تو میں مکہ سے بھاگا ہوں۔
وہ دونوں یہ گفتگو کر رہے تھے کہ ام حکیم وہاں عکرمہ کے پاس پہنچ گئی اور کہنے لگی۔
“میرے چچا کے بیٹے! میں آپ کے پاس لوگوں میں سب سے افضل، سب سے بڑھ کر

نیک اور بہتر ہستی کے پاس سے آئی ہوں۔ یعنی حضرت محمد بن عبد اللہ ﷺ کے پاس سے”

میں نے تمہارے لئے آپ ﷺ سے پناہ طلب کی تو آپ ﷺ نے کمال شفقت سے پناہ دے دی۔ اب اپنے آپ کو ہلاکت میں نہ ڈالئے۔
اس نے کہا: “کیا تم نے خود بات کی ہے؟”
فرمایا:” ہاں میں نے خود بات کی تو آپ ﷺ نے آپ کو پناہ دے دی۔”
وہ مسلسل یقین اور اطمینان دلاتی رہی، یہاں تک کہ عکرمہ اس کے ہمراہ لوٹ آئے۔ راستے میں اسے اپنے روی غلام کا واقعہ بتایا تو یہ سنتے ہی پہلے وہاں پہنچے جہاں اسے باندھ رکھا تھا۔ اسلام قبول کرنے سے پہلے اسے قتل کر دیا۔

راستہ میں ایک جگہ پڑاؤ کیا، عکرمہ نے اپنی بیوی سے خلوت کا ارادہ کیا تو اس نے بڑی سختی سے انکار کردیا اور کہا۔ “میں مسلمان ہوں اور تو مشرک ہے۔”
اسے بڑا تعجب ہوا اور کہنے لگا “میرے اور تیرے درمیان تو بہت بڑی خلیج پیدا ہو گئی ہے۔”
جب عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ
مکہ معظمہ کے قریب پہنچے تو رسول اللہ ﷺ نے اپنے صحابہ سے ارشاد فرمایا:
“عنقریب عکرمہ بن ابی جہل تمہارے پاس مؤمن اور مہاجر بن کر آئے گا۔ اس کے باپ کو گالی نہ دو اس لئے کہ میت کو گالی دینے سے اس کے لواحقین کو تکلیف ہوتی ہے اور وہ گالی میت کو نہیں پہنچتی”
تھوڑی ہی دیر بعد عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ اور ان کی بیوی رسول اللہ ﷺ کی خدمت اقدس میں پہنچ گئے۔ جب نبی ﷺ نے انہیں دیکھا تو بہت خوش ہوئے۔ خوشی کے عالم میں ان کی طرف لپکے۔ پھر جب رسول اللہ ﷺ بیٹھ گئے تو جناب عکرمہ آپ ﷺ کے سامنے با ادب کھڑے رہے۔ عرض کی:
” یا رسول اللہ ﷺ ! ام حکیم نے مجھے بتایا ہے کہ آپ نے مجھے پناہ دے دی ہے۔”
نبی ﷺ نے فرمایا: “یہ سچ کہتی ہے۔ تجھے پناہ حاصل ہے۔”
جناب عکرمہ نے دریافت کیا:
” یا رسول ﷺ آپ کس بات کی دعوت دیتے ہیں؟”

آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا:
” میں تمہیں اس بات کی طرف دعوت دیتا ہوں کہ تم گواہی دو: “اللہ کے سوا کوئی معبود حقیقی نہیں اور میں اللہ کا بندہ اور رسول ہوں۔ نماز قائم کرو۔ زکوۃ ادا کرو۔ رمضان کے روزے رکھو۔”
یہاں تک کہ آپ ﷺ نے اسلام کے تمام ارکان شمار کر دیے۔

جناب عکرمہ نے کہا: یقیناً آپ ﷺ حق بات کی طرف دعوت دی ہے اور خیر و بھلائی کا حکم دیا ہے۔ پھر اس کے بعد یہ کہنے لگے۔
” اللہ کی قسم! آپ سلام یہ دعوت پیش کرنے سے پہلے بھی ہم میں سب سے زیادہ سچے اور صالح انسان تھے۔”
پھر اپنا ہاتھ آگے بڑھایا اور کہا: “میں اقرار کرتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی عبادت کے لائق نہیں اور آپ ﷺ بلاشبہ اس کے سچے رسول ہیں۔”
پھر عرض کی: “یا رسول اللہ ﷺ مجھے چند کلمات سکھلا دیجئے جو میں پڑھتا رہوں۔”

آپ ﷺ نے فرمایا: تم یہ کلمات پڑھا کرو۔
اَشْهَدُ اَنَّ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ وَأَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُهُ وَرَسُوْلُهُ
” میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود حقیقی نہیں اور محمد مالی ام اس کے بندہ اور رسول ہیں۔”

جناب مکرمہ بیٹھ نے دریافت کیا!
“کہ اس کے بعد کیا کہوں۔” رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا: “تم یہ کہو، کہ میں اللہ تعالیٰ اور حاضرین مجلس کو گواہ بنا کر اقرار کرتا ہوں میں مسلمان مجاہد اور مہاجر ہوں۔”

حضرت عکرمہ میں اللہ نے بصمیم قلب یہ اقرار کیا۔ اس موقع پر رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا:
” اگر آج تم مجھ سے کوئی ایسی چیز مانگو گے جو میں نے کسی کو دی ہو تو وہ میں تمہیں ضرور دوں گا۔”
حضرت عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ نے کہا:
“یا رسول اللہ ﷺ مجھے ہر وہ عداوت معاف کردیں جو میں نے آپ ﷺ سے کی اور اس مقابلے کی معافی دیں جو زمانہ جہالت میں آپ ﷺ سے کیا اور ہر وہ بات معاف کردیں جو آپ ﷺ کے سامنے یا غیر حاضری میں آپ ﷺ کے خلاف کی۔”
یہ سن کر رسول اللّہ ﷺ نے دعا کی:
” الہیٰ اسے ہر وہ عداوت معاف کردے جو اس نے مجھ سے کی۔”

اور اس راستے کی ہر ایک لغزش کو معاف کر دے جس میں یہ تیرے اسلام کے نور کو بجھانے کیلئے چلا۔”

” الہیٰ! میرے سامنے یا میری غیر حاضری میں جو یہ میری عزت کے درپے ہوا اس کی یہ لغزش بھی معاف کر دے۔”


حضرت عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ کا چہرہ خوشی سے تمتا اٹھا اور یہ کہا:
” یا رسول اللہ ﷺ اللہ کی قسم ! اللہ کی راہ سے روکنے کے لئے جو کچھ میں خرچ کیا کرتا تھا اس سے دو گنا زیادہ اب راہ خدا میں خرچ کیا کرونگا۔ اور جو میں نے اللہ کی راہ سے لوگوں کو روکنے کے لئے لڑائیاں لڑیں اب میں اللہ کی راہ میں دو گنا زیادہ لڑائیاں لڑوں گا۔”

اس دن سے میدان جنگ کا یہ بہادر شہوار ،بہت بڑا عبادت گزار، شب زنده دار اور مساجد میں کثرت سے اللہ کی کتاب کو تلاوت کرنے والا بن گیا۔ ان کی حالت یہ تھی کہ قرآن مجید اپنے چہرے پر رکھتے اور کہتے: میرے رب کی کتاب، میرے رب کی کتاب، میرے رب کا کلام اور پھر خشیت الہی سے رونا شروع کر دیتے۔


حضرت عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ نے رسول اکرم ﷺ سے کیا گیا وعدہ پورا کر دکھایا۔ اس طرح کہ جس معرکہ میں بھی مسلمان داخل ہوئے حضرت عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ بھی اسلام لانے کے بعد اس میں شریک ہوئے۔ جس محاذ کے لئے بھی نکلے آپ اس میں سر فہرست رہے۔
غزوہٓ یرموک میں تو حضرت عکرمہ میں یہ لڑائی کی طرف اس طرح متوجہ ہوئے جس طرح کوئی پیاسا گرم ترین دن میں ٹھنڈے پانی کی طرف لپکتا ہے۔ جب اس معرکہ میں مسلمانوں پر دشمن کی طرف سے شدید دباؤ پڑا تو حضرت عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ اپنے گھوڑے سے نیچے اتر آئے اور اپنی تلوار کی نیام توڑ دی اور رومیوں کی صفوں میں گھس کر بے جگری سے لڑنا شروع کر دیا۔ یہ منظر دیکھ کر خالد بن ولید رضی اللہ تعالی عنہ جلدی سے آگے بڑھے اور فرمایا:
“عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ اس طرح نہ کرو تمہارا یہاں قتل ہو جانا مسلمانوں کو بہت گراں گزرے گا۔”
تو انہوں نے فرمایا۔

“خالد رضی اللہ تعالی عنہ آپ پیچھے ہٹ جائیں۔ آپ نے تو پہلے ایمان لاکر رسول اللہ ﷺ کی رفاقت حاصل کرلی۔ میں اور میرا باپ تمام لوگوں سے بڑھ کر رسول اللہ ﷺ کے مخالف رہے۔ مجھے چھوڑ دیجئے تاکہ میں آج اپنے گناہوں کا کفارہ دے لوں۔” پھر کہا:
” بھلا یہ کیسے ہو سکتا ہے کہ بہت سے مقامات پر میں نے رسول اللہ ﷺ کے خلاف لڑائی لڑی ہو اور آج رومیوں سے پیٹھ پھیر کر بھاگ جاؤں۔ یہ ہر گز نہیں ہو سکتا۔ “

پھر مسلمانوں میں یہ اعلان کیا: “آج موت پر کون بیعت کرے گا؟”
تو آپ کے چچا حارث بن ہشام اور ضرار بن ازور کے علاوہ چار سو مسلمانوں نے آپ کے ہاتھ پر بیعت کی۔

حضرت خالد بن ولید رضی اللہ تعالی عنہ کے خیمہ کی آڑ میں زور دار لڑائی لڑی اور آپ کی جانب سے بہترین دفاع کیا۔ جب معرکۂ یرموک میں مسلمانوں کو عظیم فتح حاصل ہو چکی تو سرزمین یرموک میں تین مجاہد لیٹے ہوئے تھے جنہیں زخموں نے نڈھال کر دیا تھا۔
یہ حارث بن ہشام ، عیاش بن ابی ربیعہ اور عکرمہ بن ابی جہل تھے۔

حارث نے پینے کے لئے پانی مانگا جب ان کی خدمت میں پانی پیش کیا گیا تو حضرت عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ نے پانی کی طرف دیکھا تو حضرت حارث رضی اللہ تعالی عنہ بھی نے کہا کہ پہلے انہیں پلا دو ،جب پانی ان کے قریب لایا گیا تو حضرت عیاش رضی اللہ تعالی عنہ نے ان کی طرف دیکھا تو حضرت عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ نے کہا پہلے انہیں پلا دو جب پانی حضرت عیاش میں اللہ کے پاس لایا گیا تو ان کی روح قفس عنصری سے پرواز کر چکی تھی۔ جب پانی پہلے دونوں ساتھیوں کے پاس لایا گیا تو وہ بھی اللہ کو پیارے ہو چکے تھے۔ اللہ ان سب پہ راضی ہو گیا اور انہیں حوض کوثر سے پانی پلائے گا جس کے پینے سے انہیں کبھی پیاس نہ لگے گی، اور انہیں جنت الفردوس کے سبزہ زار میں جگہ عطا فرمائے جس میں یہ ہمیشہ خوشحال رہیں۔


حضرت عکرمہ رضی اللہ تعالی عنہ کے تفصیلی حالات زندگی معلوم کرنے کے لئے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں۔
۱۔ الاصابه مترجم ۵۶۴۰
٢۔تھذیب الاسماء ٣٣٨/١
٣۔ خلاصة التهذيب: ٢٢٨
۴۔ ذیل المذیل ۴۵
۵۔ تاریخ الاسلام علامہ ذھبی: ۳۸۰/۱
۶۔رغبة الاول: ۲۲۴/۷

 

حوالہ جات :

“حياتِ صحابہ کے درخشاں پہلو”

تا لیف: “داکتور عبدالر حمان رافت الباشا”

 

 

Table of Contents