Sections
< All Topics
Print

26. Hazrat Saeed bin zaid (رضی اللہ عنہ)

Hazrat saeed bin zaid (رضی اللہ عنہ)

Ellahi! Agar tu ne mujhe is Khair-o-Barkat se mahroom rakha howa hai mere betay Saeed ko is Khair-o-Barkat se mahroom naa rakhna.
Hazrat Saeed ke waalid ki arzoo.

Zaid bin Amar bin Nufail logon se alag thalag kuch faaslay par khaday Quresh ko eid ki khusihyan manate hue dekh rahay thay, Unhon ne dekha ke Quresh ke nojawan besh qeemat reshmi amame bandhay aur qeemti yamni libaas zaib tan kiye baday tumtudaq se idhar udhar phir rahay hain, Urton aur bachon ne bhi nihayat deedaa zaib libaas pehna hwa hai, Unhon ne yeh manzar bhi dekha ke kuch log janwaron ko Nehla dhula kar buton ke huzoor zibah karne ke liye le jarahay hain.

Woh yeh heran kun manazair dekh kar kabey ki deewar ke sath take laga kar farmanay lagey:

Ae khandan Quresh! Aik bakri jisay Allah ta’ala ne peda kiya aasman se us ke liye barish nazil ki, Jis ka pani pi kar woh sairaab hui, Zameen main se us ke liye ghaas ugai jisay kha kar is ne apna pait bhara, Phir tum us bakri ko ghair Allah ke naam par zibah karte ho, Mere khayaal main yeh bohat badi jahalat ki baat hai. Yeh alfaaz suntay hi un ke chacha Farooq-e-Azam رضی اللہ عنہ ke waalid Khattaab ghusse se biphar utthay. Aao dekha nah tao un ke chehray par aik znatay daar thapad raseed kar diya aur phir kaha:

Tu tabah ho jaye, Ham kitni der se teri yeh fuzool baatein sun rahay hain? Lekin ab sabr ka paimanaa labraiz ho chuka hai. Aur sath hi apni qoum ke chand sir phiron ko barangekhta kiya, Unhon ne Hazrat Zaid رضی اللہ عنہ par hamla kar diya aur is qadar takleef pohanchai ke unhen Makkah Muazzama se nikal jane par majboor kar diya, Unhon ne Hira pahad ke daman main jaa kar panah li, Khattaab ne chand nojawanon ko is kaam ke liye tayyar kiya ke Zaid رضی اللہ عنہ dobarah Makay main daakhil nah ho sakay, Lekin yeh chori chupay kabhi kabhar Makkah Muazzama main aa jate.

Aik roz Quresh se aankh bacha kar hazrat Zaid رضی اللہ عنہ Makkah Muazzama main daakhil hue aur wahan un ki mulaqaat Warqa Bin Nofal, AbduAllah Bin Jahash, Usman Bin Haris aur huzoor (ﷺ)ki phophi Amima Bint Abdul-ul-Mutlib se hui, Aur yeh log aapas main is qisam ki baatein kar rahay thay keh mojooda daur main Quresh gumraahi ke athah samandar main ghark ho chuke hain.

Un ki guftagu sun kar Hazrat Zaid رضی اللہ عنہ ne kaha: “Ba Khuda, Aap jantay hain keh aap ki qoum gumraah ho chuki hai, Deen-e-Ibrahim علیہ السلامse munharif ho gayi hai. kam az kam aap to sahih deen ikhtiyar karne walay ban jayen, isi main aap ki nijaat hai.”

Un main se chaar shakhs yahood-o-nAsara ke ulama ki talaash main nikal khaDay hue taakeh Deen-e-Ibraahimi ko sahih soorat main haasil kar saken.

Warqa Bin Nofal ne esaiyat qubool karli, Abdullah Bin Jahash aur Usmaan Bin Haris kisi nateejay par nah pahonch sakay, Lekin janab Zaid Bin Amar Bin Nufeel ki ajeeb daastaan hai, Ham yeh dilchasp kahani aap ko un ki hi zabani sunaate hain, Hazrat Zaid farmatay hain:

Main ne Yahoodiyat-o-Nasraniyat ki tehqeeq shuru kar di, Lekin main un dono mazahab se mutmain nah ho saka phir main ne Deen-e-Ibrahim علیہ السلام ki talaash main duniya ka kona kona chaan mara, Bil akhir isi justujoo main Mulak-e-Shaam pouncha, Mujhe kisi ne bataya keh yahan aik Rahib rehta hai jo bohat bara aalaim hai, Main is se mila aur apni daastaan sunai.

Us ne mujh se kaha:

Mere khayaal main aap Deen-e-Ibrahim علیہ السلام ki talaash main hain.

Main ne kaha: Main isi talaash main hon.

Woh kehnay laga: Aap aik aisay deen ki talaash main hain jo apni asal soorat main kahin bhi nahi paaya jata, Aap apne shehar Makkah-e-Muazzama tashreef le jayen, Wahan Allah ta’ala aik Nabi ma’aboos farmaen ge. Jo Deen-e-Ibraahimi ki tajdeed kere ga agar woh aap ko mil jaye to is ka daman thaam lena.

Hazrat Zaid رضی اللہ عنہ Nabi Akram (ﷺ) ki talaash main usi waqat Makkah-e-Muazzama wapis lout aaye, Zaid رضی اللہ عنہ abhi rastay hi main thay aur Makkah Mua’zzama nah pahonch paye thay keh un ko rastay main chand badawiyon  ne qatal kar diya.

Is tarhan unhen yeh mauqa hi nah mil saka ke Rasool Aqdas (ﷺ) ki ziyarat ka surma apni aankhon main daal saken, Jab aap zindagi ke aakhri saans le rahay thay achanak apni nigah aasman ki taraf uthai aur yeh dua ki: Ellahi! Agar tu ne mujhe Deedar-e-Nabi (ﷺ) jaisi naimat se mahroom rakha hai to mere betay Saeed ko is khair-o-Barket se mahroom nah rakhna.


Allah ta’ala ne Hazrat Zaid رضی اللہ عنہ ki dua ko Sharf-e-Qabooliyat bakhsha, Rasool (ﷺ) ne jab logon ke samnay islam ki dawat paish ki to Hazrat Saeed Bin Zaid  رضی اللہ عنہ ko yeh Sharf haasil huwa ke aap un khush naseeboon main se thay jo pehlay marhalay main Allah ta’ala ki wahdaniyat aur Nabi akram (ﷺ) ki risalat par imaan laaye.

Yeh koi achanbhay ki baat nah thi, Is liye ke Hazrat Saeed رضی اللہ عنہ ne aisay gharane main parwarish payi thi jo shuru hi se Quresh ki jahalat aur gumraahi se mutnaffir tha aur yeh aik aisay baap ki goad main parwan chadhey thay jis ne apni poori zindagi haq ki talaash main guzaar di thi, Jab woh faut hue to us waqt bhi haq ki talaash main sargardan thay.

Hazrat Saeed tanhaa musalman nahi hue balkeh un ke sath un ki biwi Fatima Bint Khattaab yani Farooq-e-Azam ki behan ne bhi islam qubool kar liya tha, Is Qureshi nojawan ne islam qubool karne ke ba’ad apne khandan ke hathon bohat takleifein uthayen, Lekin Quresh inhen haq se munharif nah kar sakay, Balkeh miyan biwi ne mushtarka jaddo jahed se Quresh ki bhaari bhar kam shakhsiyat ko un se cheen liya. Yani yeh dono Hazrat Umar bin Khattaab رضی اللہ عنہ ke islaam qubool karne ka baais baney.


Hazrat Saeed رضی اللہ عنہ ne Khidmat-e- Islam ke liye apni jawani khapaadi, Qubool-e- Islam ke waqat un ki umar bees  saal se ziyada nah thi, Ghazwah-e-Baddar ke ilawa tammaam ma’rkon main Rasool Akram (ﷺ) ke sath rahey, Ghazwah-e-Baddar se ghair haazir honay ki wajah yeh thi ke inhen Anhazrat (ﷺ)  ne aik khaas muhim par bheja tha.

Kisraa  ka takhat cheennay aur qaisar ki saltanat ko tehass nehass karne main woh musalmanoon ke shareek car rahey aur har markay main karhaye numayan sir injaam diye, Sab se badh kar bahaduri ke johar ghazwah yarmok main dikhlaye, Ham yeh herat angaiz waqia inhein ki zubani qaryein ko sunaate hain.

Hazrat Saeed رضی اللہ عنہ farmatey hain:

Ghazwah-e-Yarmok main mujahideen ki ta’daad taqreeban chobees hazaar thi aur romeon ki fouj aik laakh bees hazaar afraad par mushtamil thi, Woh hamari taraf baday Jah-o-Jalal aur tumturaq se badhatey chalay aa rahey thay, Yun maloom hota jaisay koi pahad hamari taraf chala aa raha hai, Lashkar ke agay baday baday pop aur paadri saleeb uthaye baawaaz buland wird karte hue chal rahay thay poooray lashkar ki aawaaz bijli ki tarhaan goonj rahi thi, Jab musalmanoon ne inhen is haalat main dekha to un ki kasrat aur Jah-o-Jalal se khauf zada ho gaye.

Is naazuk marhalay par Hazrat Ubaida Bin Jarrah bhi رضی اللہ عنہ josh aur jazbey se musalmanoon ko jihaad ke liye ubhaarte hue irshad Rabbani sunaate hain.

اِنْ تَنْصُرُوا اللّٰهَ يَنْصُرْكُمْ وَيُثَبِّتْ اَقْدَامَكُمْ

Agar tum Allah ki madad karo ge to woh tumhari madad kere ga aur tumahray qadam jamma dey ga.

Allah ke Bandoo! Sabar karo bilashuba sabar hi kufar se nijaat Rab Ta’ala ki khushnoodi aur Aar-o- Nang ko zaail karne ka baais hai.

Suno! Apne naizy durust kar lo aur chupaye rakho, Khamoshi ikhtiyar karlo dilon ko Yaad-e-Ilaahi  se sarshar karo yahan tak ke main tumhen yakdam hamlay ka hukum dun.

Hazrat Saeed رضی اللہ عنہ farmatay hain:

“Mujahideen ki safoon main se eik shakhs agay badha aur is ne Abu Ubaida se kaha: Main ne azm kiya hai ke main abhi apna farz injaam day dun. (Aur Raah-e-Haq main shaheed ho jaoon) Kia aap koi Rasool Allah (ﷺ)  ko pegham dena chahtay hain?”

Hazrat Abu Ubaida رضی اللہ عنہ ne farmaya: Haan! Rasool Allah (ﷺ)  ko mera aur tamaam musalmanoon ka salaam kehna aur yeh araz karna:

Hazrat Saeed رضی اللہ عنہ farmatay hain:

Main ne us shakhs ki baat suni aur usay dekha ke woh isi waqat apni talwaar niayam se nikalta hai aur Dushmnaan-e-Khudaa se nabard aazma honay ke liye dour padta hai, Us ke baad main ne shast  lagai, Apna ghutnaa baandha, Naizah sambhalaa aur dushman ke is shehsawaar ko nishana banaya jis ne sab se pehlay Lashkar-e-Islaam ki taraf paish qadmi ki thi, Phir main Jazba –e-Jhaad se sarshar ho kar dushman par toot pada aur Allah Ta’ala ne mere dil se dushman ka khauf bilkul nikaal diya. Sab mujahideen kham thonk kar dushman ke muqablay main aa khade hue aur us waqt tak un se Barsar-e-Pekaar rahay, Jab tak Fatah-o-Nusrat ne musalmanoon ke qadam nah choom liye.


Is ke baad Hazrat Saeed Bin Zaid رضی اللہ عنہ ko Fatah-e-Damishq main shareek honay ka aizaz haasil huwa. Jab Bashindgaan-e-Damishq ne musalmanoon ki ita’at qubool kar li to Hazrat Abu Ubaida Bin Jarrah main رضی اللہ عنہ ne aap ko Damishq ka governor bana diya, Aap pehlay musalman hain jinhein Damishq ka governor ban’nay ka aizaz haasil huwa.


Banu ummiya  ke Dour-e-Hukoomat main hazrat Saeed Bin Zaid bhi رضی اللہ عنہ ko aik aisa haadsaa paish aaya jo bahut muddat tak Bashindgaan-e-Yasrabb ka Mauzo-e-Guftagu bana raha.

Woh waqiya yeh tha ke Urwa Bint  Owais ne yeh ilzaam aaid kiya keh Hazrat Saeed Bin Zaid رضی اللہ عنہ ne apne ikhtiyaraat se faidaa uthatay hue meri kuch zameen ghasab kar ke apni zameen main shaamil kar li hai, Woh jahan jati har shakhs ke samnay is ka tazkara karti aur apni mazlomiyat ka dhandhora pitti, Bil akhir us ne Madinaah-e-Tayyiba ke governor Marwan Bin Hakam ki adalat main hazrat Saeed Bin Zaid رضی اللہ عنہ ke khilaaf daawa daair kar diya, Marwan ne Hazrat Saeed رضی اللہ عنہ se is silsilay main baat karne ke liye un ke paas aik wafad bheja. Hazrat Saeed par yeh baat bohat giraan guzri, Aap afsurdagi ke aalam main farmanay lagey:

“Yeh sab log mere mutaliq kiya khiyaal karte hon ge keh main ne is urat ki zameen hathiya kar bohat bara zulm kiya hai? Main bhala is ghinaone jurm ka kaisay irtikaab kar sakta hon, Jabkeh mainy Rasool-e-Akram  (ﷺ) ka yeh irshaad suna hai.

“Jis ne kisi ki aik balisht zameen bhi najaaiz tor se apne qabzay main li, Qayamat ke din saton zaminon ka taoq us ke galay main dala jaye ga”

Is ke baad darbaar Ilahi main arz pardaar hue:

“Ilahi! To jaanta hai keh main be gunaah hon, Main ny is urat par koi zulm nahi kya.

Ilahi! To jaanta hai keh woh jhooti hai, Aur usay is ke jhoot ki yeh sazaa day ke andhaa kar ke is kunwein main gira jis se logon ke samnay yeh baat wazih ho jaye keh main ne is urat par koi zulm nahi kya hai. Thoday hi arsay baad Waadi-e-Ateeq main zabardast selaab aaya, Aisa selaab pehlay kabhi nah aaya tha, Is selaab se woh had bandi wazih ho gayi jo dono ke darmiyaan baais nazaa thi, Musalmanoon par yeh baat wazih ho gayi keh hazrat Saeed  رضی اللہ عنہ sachay hain, Is ke aik mah baad woh aurat andhi ho gayi, Aik din woh apni zameen main chal phir rahi thi ke achaanak kunwein main gir kar halaak ho gayi.

Hazrat Abdullah Bin Umar رضی اللہ عنہ farmatay hain:

Hum bachpan main yeh baat suna karte thay keh eik shakhs ghusse ki haalat main dosray ko kehta:

Tujhe Allah isi tarhan andhaa kere jis terhan Urwaa naami urat ko andha kya tha.”

Yeh koi ta’ajjub khaiz baat nahi.

Raasool Allah  (ﷺ) ka irshaad graami hai:

“Mazloom ki aah say bacho, Kiyunkeh mazloom aur Allah Ta’alaa kay darmiyaan koi pardaa haail nahi hota.”

Bhalaa aisa kiyun nah hota jab kay  mazloom Hazrat Saeed رضی اللہ عنہ jaisi woh azeem shakhsiyat thi jo keh un Khushnaseeb das (10) Sahabaa رضی اللہ عنہم main say hein jinhain zindagi main jannat ki bashaarat day di gai thi.


Hazrat Saeed Bin Zaid رضی اللہ عنہ kay mufassal  Haalaat-e- Zindagi ma’aloom karney ke liye darj zail kitaabon ka mu’talia karen:

1: Tabaq Ibn-e-Saad                                                                            3/275

2: Tahzeeb Ibn ul Asaakir                                                                    6/127

3: Sifat ul Safwah                                                                                   1/141

4: Hilyat ul Awliyaa                                                                               1/95

5: Al Riyaaz ul Nazarah                                                                        2/302

REFERENCE:
Book: Hayat-e-Sahaba kay darakh shah pahelo.
By: Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.

حضرت سعید بن زید رضی اللہ عنہ

 

الہی! اگر تو نے مجھے اس خیر و برکت سے محروم رکھا ھوا ھے میرے بیٹے سعيد رضی اللہ عنہ کو اس خیر و برکت سے محروم نہ رکھنا۔

(حضرت سعید کے والد کی آرزو)

 

زید بن عمرو بن نفیل لوگوں سے الگ تھلگ کچھ فاصلے پر کھڑے قریش کو عید کی خوشیاں مناتے ہوئے دیکھ رہے تھے، انہوں نے دیکھا کہ قریش کے نوجوان بیش قیمت ریشمی عمامے باندھے اور قیمتی یمنی لباس زیب تن کئے بڑے طمطراق سے ادھر ادھر پھر رہے ہیں، عورتوں اور بچوں نے بھی نہایت دیدہ زیب لباس پہنا ہوا ہے، انہوں نے یہ منظر بھی دیکھا کہ کچھ لوگ جانوروں کو نہلا دھلا کر بتوں کے حضور ذبح کرنے کے لئے لے جا رہے ہیں۔

وہ یہ حیران کن مناظر دیکھ کر کعبے کی دیوار کے ساتھ ٹیک لگا کر فرمانے لگے:
اے خاندان قریش! ایک بکری جسے اللہ تعالیٰ نے پیدا کیا، آسمان سے اس کے لئے بارش نازل کی، جس کا پانی پی کر وہ سیراب وہ سیراب ہوئی، زمین میں سے اس کے لئے گھاس اگائی’ جسے کھا کر اس نے اپنا پیٹ بھرا، پھر تم اس بکری کو غیر اللہ کے نام پر ذبح کرتے ہو، میرے خیال میں یہ بہت بڑی جہالت کی بات ہے۔ یہ الفاظ سنتے ہی ان کے چچا فاروق اعظم رضی اللہ عنہ کے والد خطاب غصے سے بھپر اٹھے۔ آؤ دیکھا نہ تاؤ’ ان کے چہرے پر ایک زناٹے دار تھپڑ رسید کر دیا، اور پھر کہا:

تو تباہ ہو جائے، ہم کتنی دیر سے تیری یہ فضول باتیں سن رہے ہیں؟ لیکن اب صبر کا پیمانہ لبریز ہو چکا ہے۔ اور ساتھ ہی اپنی قوم کے چند سر پھروں کو برانگیختہ کیا، انہوں نے حضرت زید رضی اللہ عنہ پر حملہ کر دیا اور اس قدر تکلیف پہنچائی کہ انہیں مکہ معظمہ سے نکل جانے پر مجبور کر دیا، انہوں نے حرا پہاڑ کے دامن میں جا کر پناہ لی، خطاب نے چند نوجوانوں

کو اس کام کے لئے تیار کیا کہ زید رضی اللہ عنہ دوبارہ مکے میں داخل نہ ہو سکے، لیکن یہ چوری چھپے کبھی کبھار مکہ معظمہ میں آ جاتے۔

ایک روز قریش سے آنکھ بچا کر حضرت زید رضی اللہ عنہ مکہ معظمہ میں داخل ہوئے اور وہاں ان کی ملاقات ورقہ بن نوفل، عبداللہ بن جحش، عثمان بن حارث اور حضورﷺ کی پھوپھی امیمہ بنت عبد المطلب سے ہوئی، اور یہ لوگ آپس میں اس قسم کی باتیں کر رہے تھے کہ موجودہ دور میں قریش گمراہی کے اتھاہ سمندر میں غرق ہو چکے ہیں۔

ان کی گفتگو سن کر حضرت زید رضی اللہ عنہ نے کہا: بخدا’ آپ جانتے ہیں کہ آپ کی قوم گمراہ ہو چکی ہے، دین ابراہیم علیہ السلام سے منحرف ہو گئی ہے۔ کم از کم آپ تو صحیح دین اختیار کرنے والے بن جائیں، اسی میں آپ کی نجات ہے۔

ان میں سے چار شخص یہود و نصاری کے علماء کی تلاش میں نکل کھڑے ہوئے تاکہ دین ابراہیمی کو صحیح صورت میں حاصل کر سکیں۔

ورقہ بن نوفل نے عیسائیت قبول کر لی، عبداللہ بن جحش اور عثمان بن حارث کسی نتیجے پر نہ پہنچ سکے، لیکن جناب زید بن عمرو بن نفیل کی عجیب داستان ہے، ہم یہ دلچسپ کہانی آپ کو ان کی ہی زبانی سناتے ہیں، حضرت زید فرماتے ہیں۔

میں نے یہودیت و نصرانیت کی تحقیق شروع کر دی، لیکن میں ان دونوں مذاہب سے مطمئن نہ ہو سکا، پھر میں نے دین ابراہیم علیہ السلام کی تلاش میں دنیا کا کونہ کونہ چھان مارا’ بالآخر اسی جستجو میں ملک شام پہنچا’ مجھے کسی نے بتایا کہ یہاں ایک راہب رہتا ہے جو بہت بڑا عالم ہے، میں اس سے ملا اور اپنی داستان سنائی۔

اس نے مجھ سے کہا:
میرے خیال میں آپ دین ابراہیم علیہ السلام کی تلاش میں ہیں۔
میں نے کہا’ میں اسی تلاش میں ہوں۔
وہ کہنے لگا’ آپ ایک ایسے دین کی تلاش میں ہیں جو اپنی اصل صورت میں کہیں بھی نہیں پایا جاتا، آپ اپنے شہر مکہ معظمہ تشریف لے جائیں، وہاں اللہ تعالیٰ ایک نبی معبوث فرمائیں گے۔ جو دین ابراہیمی کی تجدید کرے گا، اگر وہ آپ کو مل جائے تو اس کا دامن تھام لینا۔
حضرت زید رضی اللہ عنہ نبی اکرمﷺ کی تلاش میں اسی وقت مکہ معظمہ واپس لوٹ آئے’ زید رضی اللہ عنہ ابھی راستے ہی میں تھے اور مکہ معظمہ نہ پہنچ پائے تھے کہ ان کو راستے میں چند بدویوں نے قتل کر دیا۔

اس طرح انہیں یہ موقع ہی نہ مل سکا کہ رسول اقدسﷺ کی زیارت کا سرمہ اپنی آنکھوں میں ڈال سکیں، جب آپ زندگی کے آخری سانس لے رہے تھے’ اچانک اپنی نگاہ آسمان کی طرف اٹھائی اور یہ دعا کی “الہی! اگر تو نے مجھے دیدار نبیﷺ جیسی نعمت سے محروم رکھا ہے تو میرے بیٹے سعید کو اس خیر و برکت سے محروم نہ رکھنا۔”


اللہ تعالیٰ نے حضرت زید رضی اللہ عنہ کی دعا کو شرف قبولیت بخشا’ رسول اللہﷺ نے جب لوگوں کے سامنے اسلام کی دعوت پیش کی تو حضرت سعید بن زید رضی اللہ عنہ کو یہ شرف حاصل ہوا کہ آپ ان خوش نصیبوں میں سے تھے جو پہلے مرحلے میں اللہ تعالی کی وحدانیت اور نبی اکرمﷺ کی رسالت پر ایمان لائے۔

یہ کوئی اچنبھے کی بات نہ تھی، اس لئے کہ حضرت سعید رضی اللہ عنہ نے ایسے گھرانے میں پرورش پائی تھی’ جو شروع ہی سے قریش کی جہالت اور گمراہی سے متنفر تھا اور یہ ایک ایسے باپ کی گود میں پروان چڑھے تھے جس نے اپنی پوری زندگی حق کی تلاش میں گزار دی تھی، جب وہ فوت ہوئے تو اس وقت بھی حق کی تلاش میں سرگرداں تھے۔

حضرت سعید تنہا مسلمان نہیں ہوئے بلکہ ان کے ساتھ ان کی بیوی فاطمہ بنت خطاب یعنی فاروق اعظم کی بہن نے بھی اسلام قبول کر لیا تھا، اس قریشی نوجوان نے اسلام قبول کرنے کے بعد اپنے خاندان کے ہاتھوں بہت تکلیفیں اٹھائیں، لیکن قریش انہیں حق سے منحرف نہ کر سکے، بلکہ میاں بیوی نے مشترکہ جدو جہد سے قریش کی بھاری بھرکم شخصیت کو ان سے چھین لیا۔ یعنی یہ دونوں حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ کے اسلام قبول کرنے کا باعث بنے۔


حضرت سعید رضی اللہ عنہ نے خدمت اسلام کے لئے اپنی جوانی کھپا دی، قبول اسلام کے وقت ان کی عمر بیس سال سے زیادہ نہ تھی، غزوہ بدر کے علاوہ تمام معرکوں میں رسول اکرمﷺ کے ساتھ رہے’ غزوہ بدر سے غیر حاضر ہونے کی وجہ یہ تھی کہ انہیں آنحضرتﷺ نے ایک خاص مہم پر بھیجا تھا۔

کسری کا تخت چھیننے اور قیصر کی سلطنت کو تہس نہس کرنے میں وہ مسلمانوں کے شریک کار رہے اور ہر معرکے میں کارہائے نمایاں سر انجام دیئے، سب سے بڑھ کر بہادری کے جوہر غزوۂ یرموک میں دکھلائے، ہم یہ حیرت انگیز واقعہ انہیں کی زبانی قارئین کو سناتے ہیں۔

حضرت سعید رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں۔
غزوہ یرموک میں مجاہدین کی تعداد تقریباً چوبیس ہزار تھی اور رومیوں کی فوج ایک لاکھ بیس ہزار افراد پر مشتمل تھی، وہ ہماری طرف بڑے جاہ و جلال اور طمطراق سے بڑھتے چلے آ رہے تھے’ یوں معلوم ہوتا جیسے کوئی پہاڑ ہماری طرف چلا آ رہا ہے، لشکر کے آگے بڑے بڑے پوپ اور پادری صلیب اٹھائے بآواز بلند ورد کرتے ہوئے چل رہے تھے’ پورے لشکر کی آواز بجلی کی طرح گونج رہی تھی، جب مسلمانوں نے انہیں اس حالت میں دیکھا تو ان کی کثرت اور جاہ و جلال سے خوف زدہ ہو گئے۔

اس نازک مرحلے پر حضرت عبیدہ بن جراح رضی اللہ عنہ جوش اور جذبے سے مسلمانوں کو جہاد کے لئے ابھارتے ہوئے ارشاد ربانی سناتے ہیں۔

*إِن تَنصُرُو اللَّهَ يَنْصُرُكُمْ وَ يُثَبِّتْ أَقْدَامَكُمْ*
” اگر تم اللہ کی مدد کرو گے تو وہ تمہاری مدد کرے گا اور تمہارے قدم جما دے گا۔”

اللہ کے بندو! صبر کرو بلاشبہ صبر ہی کفر سے نجات’ رب تعالی کی خوشنودی اور عار و ننگ کو زائل کرنے کا باعث ہے۔

سنو! اپنے نیزے درست کر لو اور چھپائے رکھو، خاموشی اختیار کر لو، دلوں کو یاد الہی سے سرشار کرو یہاں تک کہ میں تمہیں یکدم حملے کا حکم دوں۔

حضرت سعید رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں۔
مجاہدین کی صفوں میں سے ایک شخص آگے بڑھا اور اس نے ابو عبیدہ سے کہا’ میں نے عزم کیا ہے کہ میں ابھی اپنا فرض انجام دے دوں۔ (اور راہ حق میں شہید ہو جاؤں)
کیا آپ کوئی رسول اللہﷺ کو پیغام دینا چاہتے ہیں؟
حضرت ابو عبیدہ رضی اللہ عنہ نے فرمایا: ہاں! رسول اللهﷺ کو میرا اور تمام مسلمانوں کا سلام کہنا اور یہ عرض کرنا۔

حضرت سعید رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں۔
میں نے اس شخص کی بات سنی اور اسے دیکھا کہ وہ اسی وقت اپنی تلوار نیام سے نکالتا ہے اور دشمنان خدا سے نبرد آزما ہونے کے لئے دوڑ پڑتا ہے، اس کے بعد میں نے شت لگائی’ اپنا گھٹنا باندھا، نیزہ سنبھالا اور دشمن کے اس شہسوار کو نشانہ بنایا جس نے سب سے پہلے لشکر اسلام کی طرف پیش قدمی کی تھی، پھر میں جذبہ جہاد سے سرشار ہو کر دشمن پر ٹوٹ پڑا اور اللہ تعالیٰ نے میرے دل سے دشمن کا خوف بالکل نکال دیا۔ سب مجاہدین خم ٹھونک کر دشمن کے مقابلے میں آ کھڑے ہوئے اور اس وقت تک ان سے برسر پیکار رہے، جب تک فتح و نصرت نے مسلمانوں کے قدم نہ چوم لئے۔


اس کے بعد حضرت سعید بن زید رضی اللہ عنہ کو فتح دمشق میں شریک ہونے کا اعزاز حاصل ہوا۔ جب باشندگان دمشق نے مسلمانوں کی اطاعت قبول کر لی تو حضرت ابو عبیدہ بن جراح رضی اللہ عنہ نے آپ کو دمشق کا گورنر بنا دیا آپ پہلے مسلمان ہیں جنہیں دمشق کا گورنر بنا دیا’ آپ پہلے مسلمان ہیں جنہیں دمشق کا گورنر بننے کا اعزاز حاصل ہوا۔


بنوامیہ کے دور حکومت میں حضرت سعید بن زید رضی اللہ عنہ کو ایک ایسا حادثہ پیش آیا’ جو بہت مدت تک باشندگان یثرب کا موضوع گفتگو بنا رہا۔

وہ واقعہ یہ تھا کہ اروی بنت اویس نے یہ الزام عائد کیا کہ حضرت سعید بن زید رضی اللہ عنہ نے اپنے اختیارات سے فائدہ اٹھاتے ہوئے میری کچھ زمین غصب کر کے اپنی زمین میں

شامل کر لی ہے، وہ جہاں جاتی ہر شخص کے سامنے اس کا تذکرہ کرتی اور اپنی مظلومیت کا ڈھنڈورا پیٹتی، بالآخر اس نے مدینہ طیبہ کے گورنر مروان بن حکم کی عدالت میں حضرت سعید بن زید رضی اللہ عنہ کے خلاف دعوی دائر کر دیا، مروان نے حضرت سعید رضی اللہ عنہ سے اس سلسلے میں بات کرنے کے لئے ان کے پاس ایک وفد بھیجا۔ حضرت سعید پر یہ بات بہت گراں گزری، آپ افسردگی کے عالم میں فرمانے لگے۔

یہ سب لوگ میرے متعلق کیا خیال کرتے ہوں گے کہ میں نے اس عورت کی زمین ہتھیا کر بہت بڑا ظلم کیا ہے؟ میں بھلا اس گھناؤنے جرم کا کیسے ارتکاب کر سکتا ہوں’ جبکہ میں نے رسول اکرمﷺ کا یہ ارشاد سنا ہے۔

“جس نے کسی کی ایک بالشت زمین بھی ناجائز طور سے اپنے قبضے میں لی، قیامت کے دن ساتوں زمینوں کا طوق اس کے گلے میں ڈالا جائے گا۔”

اس کے بعد دربار الہی میں عرض پردار ہوئے:

الہی! تو جانتا ہے کہ میں بےگنا ہوں، میں نے اس عورت پر کوئی ظلم نہیں کیا۔
الہی! تو جانتا ہے کو وہ جھوٹی ہے، اور اسے اس کے جھوٹ کی یہ سزا دے کہ اندھا کر کے اس کنوئیں میں گرا جس سے لوگوں کے سامنے یہ بات واضح ہو جائے کہ میں نے اس عورت پر کوئی ظلم نہیں کیا ہے۔ تھوڑے ہی عرصے بعد وادی عتیق میں زبردست سیلاب آیا’ ایسا سیلاب پہلے کبھی نہ آیا تھا’ اس سیلاب سے وہ حد بندی واضح ہو گئی جو دونوں کے درمیان باعث نزاع تھی، مسلمانوں پر یہ بات واضح ہو گئی کہ حضرت سعید رضی اللہ عنہ سچے ہیں، اس کے ایک ماہ بعد وہ عورت اندھی ہو گئی، ایک دن وہ اپنی زمین میں چل پھر رہی تھی کہ اچانک کنوئیں میں گر کر ہلاک ہو گئی۔

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں۔
ہم بچپن میں یہ بات سنا کرتے تھے کہ ایک شخص غصے کی حالت میں دوسرے کو کہتا۔
“تجھے اللہ اسی طرح اندھا کرے جس طرح اروی نامی عورت کو اندھا کیا تھا”
یہ کوئی تعجب خیز بات نہیں۔
رسول اللہﷺ کا ارشاد گرامی ہے۔

 

“مظلوم کی آہ سے بچو’ کیونکہ مظلوم اور اللہ تعالی کے درمیان کوئی پردہ حائل نہیں ہوتا”

بھلا ایسا کیوں نہ ہوتا جبکہ مظلوم حضرت سعید بن زید رضی اللہ عنہ جیسی وہ عظیم شخصیت تھی جو کہ ان خوش نصیب دس صحابہ رضی اللہ عنہم میں سے ہیں جنہیں زندگی میں جنت کی بشارت دے دی گئی تھی۔


حضرت سعید بن زید رضی اللہ عنہ کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لئے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں۔

 

 

۱۔ طبقات ابن سعد ۳/ ۲۷۵
۲- تهذیب ابن عساکر ۶/ ۱۲۷
۳- صفته الصفوة ۱۴۱/۱
۴۔ حلية الأولياء ۱/ ۹۵
٥- الرياض النضرة ٣٠٢/٢

 

حوالہ جات :

“حياتِ صحابہ کے درخشاں پہلو”

تا لیف: “داکتور عبدالر حمان رافت الباشا”

 

 

Table of Contents