Sections
< All Topics
Print

25. Hazrat Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ

Hazrat Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ

Usama ka baap Rasool-e-Akaram (ﷺ) ko teray baap se ziyaada azeez thaa aur isi tarhaan Usama bhi App (ﷺ) ko tujh se ziyada thaa.
Farooq-e-Azam ka apne betay se khitaab.

Hijrat se saat saal pehlay Makkah Muazzama main Rasool-e-Akram (ﷺ)  aur Aap ke Sahaaba رضی اللہ عنہم Quraish ke haathon Zulm-o-Sitam ka nishanaa bantay hain. Tableeghi maidaan main musalsal Aap par Hazan-o-Malaal, Gham-o-Andoh aur Masaaib-o-Aalaam ke pahad toot’te hain, Isi talaatum khaiz daur main Aap ki Hayaat-e-Tayyiba main aik khushi ki lehar daudti hai, Kisi ne Aap ko khushkhabri sunaai ke Umm-e-Aiman ke ghar Allah ne beta a’taa kiya hai, Yeh khabar sun kar Aap ke Roo-e-Anwar par be intahaa khushi ke aasaar dikhaai dainay lagey, Kiya aap ko ma’aloom hai yeh khush bakhat nomoulood kon hai? jis ki wiladat se Rasool Allah (ﷺ)  ko is qadar khushi hui?

“Yeh noumolood Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ thay “

Sahaaba karaam رضی اللہ عنہم main se kisi ko Rasool-e-Akram (ﷺ) ki is be intahaa khushi par ta’ajjub nah huwa kiyunkeh sab hi is noumolood ke waalidain ka Huzoor (ﷺ) ke sath qareebi t’alluq jantay thay, Usama ki walidaa Barkat naami aik Habshi urat thi, Jo Umm-e-Aiman ke naam se mashoor hui aur Rasool-e-Akram (ﷺ) ki waalida Maajida ki kaneez bhi reh chuki thi, Unhein yeh sharf bhi haasil huwa ke jab Huzoor  (ﷺ) ki waalida Maajida ka intqaal huwa to unhon ne An-Hazrat (ﷺ)  ko apni goud main le liya aur Aap ki nighedasht ki, Aap aksar farmaayaa karte thay ke Umm-e-Aiman meri maan ki manind hai, Aur yeh mere ahal bait main se hai.

Yeh to hai is khush naseeb noumolood ki walidaa mohtarma ka ta’aruf, raha is ka baap to woh Mehboob-e-Khuda (ﷺ) Hazrat Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ hai, Nuzool-e-Qura’an-,e-Majeed se pehlay Aap ne usay apna beta qaraar diya tha, Hazar-o-Safar main unhein Aap ke sath rehne ka sharf haasil huwa. Ilaawa azeen raaz daan-e-Rasool (ﷺ)  honay ki sa’adat bhi un ke hissay main aai.

Hazrat Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ ki wilaadat par sabhi musalman itnay khush hue ke kabhi kisi ki wiladat par itnay khush nahi hue thay, Is liye ke jis cheez se Nabi-e-Akram (ﷺ) ko khushi haasil hoti Sahaaba karaam رضی اللہ عنہم ke liye bhi woh khushi ka baa’is banti.

Sahaaba karaam رضی اللہ عنہم Usama ko laqab Hibb-ul-Nabi day diya, Unhon ne is noumolood ko yeh laqab dainay main kisi mubalighe se kaam nahi liya tha, Haqeeqatan Rasool-e- Akram (ﷺ) ko un se itna piyaar tha ke sab musalmaan is pay rashk kinaan thay.

Hazrat Usama رضی اللہ عنہ Huzoor (ﷺ)  ke nawasay Hazrat Hassan Bin Fatimat-ul-Zahra’a ke hum umar thay, Hazrat Hassan رضی اللہ عنہ to  apne naana  (ﷺ) ki  tarhaan Haseen-o-Jameel thay lekin Usama apni Habshi waalida Umm-e-Aiman ki manind siyah rang aur chiptay naak walay thay, Lekin Rasool-e-Akram (ﷺ) in dono se yaksaan piyaar karte thay.

Shafqat bharay andaaz main Usama رضی اللہ عنہ ko aik raan par bithaa letay aur Hassan رضی اللہ عنہ ko doosri raan par,  Kabhi dono ko apne seenay se lagatay aur yeh du’aa karte.

Ilaahi! main in dono bachon se muhabbat karta hoon, To bhi inhein apna mahboob banaa le.

Gharz ye kah Usama رضی اللہ عنہ ke sath An-Hazrat (ﷺ) ko bohat piyar tha, Aik dafa’a Usama رضی اللہ عنہ darwazay ki dehleez par larkharaa kar gir pade, Jis se peshaani par zakham aaya aur khoon behnay laga, Nabi-e-Akram (ﷺ) ne Hazrat A’isha رضی اللہ عنہا ko ishaara kiya ke is ka khoon saaf kar dein, Lekin Sadiqa-e-Kaaiynaat kisi masrufiyat ki wajah se is taraf fori tawajah nah day sakein, Nabi (ﷺ) ne khood apne Dast-e-Mubarak se us ka khoon saaf kiya. khoon saaf kiya.


Jis tarhaan bachpan main Hazrat Usama رضی اللہ عنہ se Aap ne piyaar kiya isi tarhaan jawaani main bhi un ke sir par shafqat ka haath rakha.

Aik dafa’a ka zikar hai ke aik Quraishi sardaar Hakeem Bin Hazaam ne aik qeemti  libaas Rasool-e-Akram (ﷺ) ki  khidmat main Bator-e-Tohfaa paish kiya, Jisay us ne Yaman se pachaas (50) dinaar main khareeda tha aur yeh libaas Shah-e-Yaman ke liye Bator-e-Khaas taiyaar kiya gaya tha, Aap (ﷺ) ne yeh tohfaa lainay se inkaar kar diya, Kiyunkeh Hakeem Bin Hizaam un dinon mushriq tha, Al-bataa Aap ne us se woh libaas qeematan khareed liya, Yeh behtareen libaas Aap ne sirf aik martaba jumme’y ke roz pehnaa, Phir Hazrat Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ ko ataa kar diya aur woh yeh libaas pehan kar Subah-o-Shaam Shadaan-o-Farhaan apne Muhajir-o-Ansaar noujawaan saathiyon ke paas aaya karte thay.


Jab Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ jawaan hue to umdah aadaat aur aalaa ikhlaaq se mutasif thay, is ke ilaawaa had darja ke zaheen, Bahadur, Danishmand, Pakdaaman, Naram khoo aur parhaiz gaar thay, In ausaaf hamidaa ki bina par woh logon ki nigaah main pasandeeda shakhsiyat qaraar diye gaye, Ghazwah-e-Uhad main Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ apne hum Umar bachon ke hamrah Maidaan-e-Jihaad ki taraf niklay. Un main ba’az ko to jihaad ke liye qubool kar liya gaya aur ba’az ko bohat choti umar ki bina par Shaamil-e-Jihaad nah kiya gaya. Un main Usaama Bin Zaid رضی اللہ عنہ bhi thay, Jab yeh wapis lautay to Zaar-o-Qitaar ro rahe thay kiyunkeh unhein Rasool-e-Akram (ﷺ) ke jhanday talay Raah-e-Khuda main jjhaad karne ka mauq’aa nahi diya gaya tha.


Ghazwah khandaq main Hazrat Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ apne hum umar noujawanon ke hamrah maidaan ki taraf niklay to apne panjon ke bal unchay ho kar kehnay lagey ke kahin aaj bhi no umri ki bina par jihaad main shareek honay se mahroom nah kar diye jaaien, Un ki yeh haalat dekh kar Nabi-e-Akram (ﷺ) bohat khush hue aur unhein jihaad main shareek honay ki ijazat day di, Jab Hazrat Usama ne Raah-e-Khuda main jihaad ke liye talwaar uthaai, Us waqt un ki umar sirf pandrah (15) baras thi.


Ghazwah Hunain main jab musalmaan shikast se do chaar hue to is naazuk tareen moqa’y par Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ,  Hazrat Abbas رضی اللہ عنہ,  Abbu Suifyan Bin Haris رضی اللہ عنہ aur deegar chay (6) Sahaaba-e-Kiraam رضی اللہ عنہم Maidaan-e-Kaar zaar main saabit qadam rahay, Is chotay se  bahadur jhattay ki bina par Rasool-e-Akram (ﷺ) ke liye yeh aasani peda hui ke Allah ne shikast ko fatah main badal diya aur bhagnay walay musalmanoon ko hazeemat se bachaa liya.


Jung-e-Mouta main Hazrat Usama رضی اللہ عنہ ne apne baap Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ ki qaiyaadat main jihaad kiya, Us waqt un ki umar atthaara (18) saal se bhi kam thi, Apni aankhon se apne baap ki shahaadat ka manzar dekha, Lekin hosla nah haara, Balkeh Hazrat Jaffar Bin Abi Taalib رضی اللہ عنہ ki qaiyaadat main kufar se nabard aazma rahay, Yahan tak ke yeh sipah salaar bhi Allah ko piyare ho gaye. Phir Abdullah Bin Rawahaa رضی اللہ عنہ ne Lashkar-e-Islaam ki qaiyaadat sambhali, Lekin thodi hi der ba’ad yeh bhi shaheed ho gaye to Hazrat Khalid Bin Waleed رضی اللہ عنہ ke jhanday talay kufar se nabard aazmai ka ma’uqa aaya. Jb unhon ne aisi jungi Hikmat-e-Amli ikhtiyaar ki ke jis se yeh….. Lashkar-e-Islaam ko Room ke mazboot aahinee panje se chudanay main kamiyaab ho gaye.


Hazrat Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ apne shaheed baap ke Jasad-e-Khaaki ko Sarzameen-e-Shaam main Allah ke supurd kar ke un hi ke taiz raftaar ghoday par sawaar ho kar Madinah Tayyiba puhanche.


11 hijri ko Rasool-e-Akram (ﷺ) ne Roomiyon se jung karne ke liye lashkar islam ki tayyaari ka hukum sadir farmaayaa aur is lashkar main Hazrat Abu bakar رضی اللہ عنہ, Hazrat Umar رضی اللہ عنہ, Hazrat Sa’ad Bin Abi Waqas رضی اللہ عنہ aur Hazrat Abu Ubaidah Bin Jarah رضی اللہ عنہ jaisay Jaleel-ul-Qadar sahaaba mojood thay. Huzoor (ﷺ) ne is lashkar ka Ameer Hazrat Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ ko muqarrar kiya. Jab keh un ki ‘mar  abhi sirf bees (20) saal thi, Unhein hukum diya ke ilaaqa balqa’a aur qila’a Daar-e-Room ko apne paon talay rond dalain, Jo ke Bilaad-e-Room ke Gazah naami shehar ke qareeb waqae’y hai.Yeh lashkar abhi tayyaari main masroof tha ke Rasool-e-Akram (ﷺ) bemaar ho gaye, Jab marz ne shiddat ikhtiyaar ki to lashkar is Soorat-e-Haal ko dekh kar rawanaa huwa.

Hazrat Usama رضی اللہ عنہ farmaatay hain:

Jab Nabi-e-Akram (ﷺ) par bemaari ka shadeed hamlaa huwa to main aur mere chand saathi timaar daari ke liye Aap ki khidmat main haazir hue, Bemaari ki shiddat ki bina par Aap bilkul khamosh thay, Aap apna haath upar uthatay phir usay mujh par rakh dete main samajh gaya ke Aap mere haq main dua’a kar rahay hain.


Thodi hi der ba’ad Habib-e-Kibriyaa (ﷺ)  Allah ko piyare ho gaye, Ab Hazrat Abu Bakar رضی اللہ عنہ ko khalifaa muntakhib kiya gaya. Tamaam Sahaabah رضی اللہ عنہم ne Aap ke haath par baie’yt ki. Aap ne khalifaa muntakhib hotay hi sab se pehla kaam yeh kiya ke Hazrat Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ ki qaiyaadat main Lashkar-e-Islaam ko is mission par rawanaa kiya jis ka hukum Rasool-e-Akram (ﷺ) ne apni zindagi main diya tha, Lekin Ansaar main se chand Sahaaba رضی اللہ عنہم ki yeh raaye thi ke lashkar ki rawaangi main kuch taakheer kar di jaye to behtar hoga, Unhon ne Hazrat Umar Bin Khattaab رضی اللہ عنہ se kahaa ke woh is silsilay main Hazrat Abu Bakar رضی اللہ عنہ se baat karein aur saath hi yeh mahswaraa diya ke agar Hazrat Abu Bakar lashkar ki fori rawaangi par musir hon to hamari taraf se unhein yeh paighaam pouncha dein ke hamaara Ameer kisi aisay shakhs ko banayaa jaye jo Usama رضی اللہ عنہ se ziyadaa umar raseedah aur tajurbaah kaar ho, Hazrat Abu Bakar Saddiq رضی اللہ عنہ ne  Hazrat Umar رضی اللہ عنہ ki zubaani Ansaar ka yeh paighaam suna to ghazab-naak ho gaye aur ghusse ki haalat main Farooq-e- Azam رضی اللہ عنہ se farmayaa:

“Ae Ibn-e-Khattaab! Kitney afsos ki baat hai, Rasool Allah (ﷺ)  ne to Usama رضی اللہ عنہ ko Ameer-e-Lashkar banayaa aur tum mujhe mahswara detay ho ke main usay ma’zool kar doon, Allah ki qasam! Yeh kabhi nahi ho saktaa. Jab Hazrat Umar Farooq رضی اللہ عنہ logon ke paas wapis lautay to unhon dariyaft kiya ke Khalifat-ul-Muslimeen ne kiya jawaab diya?

Hazrat Umar رضی اللہ عنہ ne farmaaya: Tumhen tumhari maaein gum payein, Jaldi se apne mission par chal niklo, Main ne aaj tumhari wajah se Khalifa-e-Rasool (ﷺ)  ko naraaz kiya.


Jab yeh lashkar apne noujawaan qaaid ke Zair-e-Kamaan rawanaa huwa to Khalifa-e-Rasool sayyiduna Abu Bakar رضی اللہ عنہ unhein alwida’a kehnay ke liye thodi door tak paidal sath chalay jab keh Hazrat Usama رضی اللہ عنہ ghoday par sawaar thay. Hazrat Usama رضی اللہ عنہ ne kahaa:

Ae Khalifa-e-Rasool (ﷺ)! Ba-Khudaiyaa, Aap bhi ghoday par sawaar ho jaaein warna main ghoday se utartaa hoon. Siddiq-e-Akbar رضی اللہ عنہ ne irshaad farmayaa:

Ba-khudaa! Nah to Aap neechay utrain ge aur nah main sawaar hon ga....

Phir farmaayaa: Kiya mere liye yeh aizaaz nahi ke kuch arsay ke liye apne paon Allah ki raah main gubhaar aalood kar doon?

Hazrat Usama ko dua’aein day kar jihaad par rawana kiya aur kaha:

Rasool Allah (ﷺ) ne tumhen jo wasiyat ki hai is ke mutaabiq sir Garam-e-Amal rehnaa, Phir sargoshi ke andaaz main farmayaa:

Agar Hazrat Umar رضی اللہ عنہ ko meri mua’winat ke liye mere paas rehne dein to behtar ho ga.

Hazrat Usama رضی اللہ عنہ ne Aap ki raaye se ittafaq kiya aur Hazrat Umar رضی اللہ عنہ ko wahein rehne diya.


Hazrat Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ lashkar ko le kar chal pade aur is mission ki kaamyabi ke liye har woh koshish ki jis ka Rasool Allah (ﷺ) ne hukum diya tha, Pahlay marhalay par Lashkar-e-Islaam ne Sarzameen-e-Falasteen main Balqa’a aur qila’a Daar-e-Room ko fatah kiya, Musalmanoon ke dilon se Room ki saltanat ka roa’b dabdaba khatam kar diya.

Diyaar-e-Shaam, Misar aur shumaali Africa ko fatah kar ke Bahar-e-Zulmaat tak islaami saltanat ka jhandaa lehraa diya, Hazrat Usama رضی اللہ عنہ is muhim ko sir kar ke badi Shaan-o-Shaukat se apne Waalid-e-Giraami ke taiz raftaar ghoday par sawaar hue aur kaseer miqdaar main Maal-e-Ghanemat ke saath Bakhair-o-Aafiyat lautay, Yahan tak keh yeh baat logon main mashhoor ho gayi ke hazrat Usama رضی اللہ عنہ ke lashkar se badh kar aaj tak koi lashkar itni kasrat se Maal-e- Ghaneemat nahi layaa.


Joon joon waqat guzarta gaya musalmanoon ke dilon main Hazrat Usama رضی اللہ عنہ ki Qadar-o-Manzilat badhti gayi aur yeh Izzat-o-Waqar aur Azmat-o-Shaan Rasool-e-Akram (ﷺ) ke sath wafadaari ke nateejay main Aap ko muyassar aayi.

Farooq-e-Azam رضی اللہ عنہ ne apne Daur-e-Khilaafat main Hazrat Usama رضی اللہ عنہ ke liye apne betay se ziyadaa wazifaa muqarrar kiya to betay ne araz ki: Abba jaan! Aap ne Usama ke liye chaar hazaar (4000) aur mere liye teen hazaar (3000) darham wazifa muqarrar kiya hai. Haalaankeh  is ke baap ko woh fazeelat haasil nah thi jo Aap ko haasil hai aur Usama رضی اللہ عنہ ko woh muqaam haasil nahi jo mera hai. Betay ki yeh baat sun kar Farooq-e-Azam رضی اللہ عنہ ne irshaad farmaayaa:

Betay! Afsos, tujhe ilm nahi. Suno is ka baap tairay baap se ziyada Rasool-e-Akram (ﷺ) ko aziz tha aur yeh khud bhi An-Hazrat (ﷺ) ko tujh se ziyada piyaraa tha.

Yeh jawaab sun kar Hazrat Abdullah Bin Umar رضی اللہ عنہ khaamosh ho gaye aur isi wazifaa par raazi ho gaye, Jo un ke liye muqarrar kiya gaya tha, Hazrat Umar Bin Khitaab رضی اللہ عنہ jab bhi Hazrat Usama رضی اللہ عنہ se mlitay to khushi se pukaar uthte: Khush aamdeed mera sardaar aa gaya, Jab koi un se is walehaanaa andaaz par ta’ajjub karta to farmataay:

Tumhen ma’aloom nahi aik moqa’y par Rasool-e-Akram (ﷺ)  ne Usama رضی اللہ عنہ ko mera ameer banaya tha.


In qudsi nufoos par Allah rahmat ki barkhaa barsaaye, Bila-shubaa Rasool-e-Akram (ﷺ) ke Sahaaba-e-Kiraam main yeh insaaniyat ke Aala-o-Akmal aur afzal muqaam par faaiz thay, Tareekh ne kabhi un jaisay qudsi insaanon ko nahi dekha.


Hazrat Usama Bin Zaid رضی اللہ عنہ ke mufassal Halaat-e-Zindagi ma’aloom karne ke liye darj zail kitaabon ka mutali’aa karein:

1: Al Isaabah                                                                                    1/46

2: Al Istiaab                                                                                      3/34-36

3: Taqreeb ul Tahzeeb                                                                1/53

4: Tarikh-e-Islam Zahabi                                                        3/370-373

5: Al Tabaqat ul Kubraa                                                            4/61-74

6: Al Ibar                                                                                                1/95

7: Min Abtalina Allazina Sanaoo Al Tarikh                     33-39

8: Qadat-o-Fath-e-Al Sham w Misar                               33/51

9: Al Islam w Marajioho                                                               281-282 

REFERENCE:
Book: Hayat-e-Sahaba kay darakh shah pahelo.
By: Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.

حضرة اسامه بن زید رضی اللہ عنہ

 

اسامہ رضی اللہ عنہ کا باپ رسولﷺ کو تیرے باپ سے زیادہ عزیز تھا اور اسی طرح اسامہ بھی آپﷺ کو تجھ سے زیادہ عزیز تھا۔

(فاروق اعظم رضی اللہ عنہ کا اپنے بیٹے سے خطاب)

 

ہجرت سے سات سال پہلے مکہ معظمہ میں رسول اکرمﷺ اور آپ کے صحابہ بھی رضی اللہ عنہم قریش کے ہاتھوں ظلم و ستم کا نشانہ بنتے ہیں۔ تبلیغی میدان میں مسلسل آپ پر حزن و ملال، غم واندوہ اور مصائب و آلام کے پہاڑ ٹوٹتے ہیں، اسی تلاطم خیز دور میں آپ کی حیات طیبہ میں ایک خوشی کی لہر دوڑتی ہے، کسی نے آپ کو خوشخبری سنائی کہ ام ایمن کے گھر اللہ نے بیٹا عطا کیا ہے، یہ خبر سن کر آپ کے روئے انور پر بے انتہا خوشی کے آثار دکھائی دینے لگے، کیا آپ کو معلوم ہے یہ خوش بخت نومولود کون ہے؟ جس کی ولادت سے رسول اللہﷺ کو اس قدر خوشی ہوئی۔

“یہ نومولود اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ تھے۔”

صحابہ کرام رضی اللہ عنہم میں سے کسی کو رسول اکرمﷺ کی اس بے انتہا خوشی پر تعجب نہ ہوا کیونکہ سبھی اس نومولود کے والدین کا حضورﷺ کے ساتھ قریبی تعلق جانتے تھے’ اُسامہ کی والدہ برکت نامی ایک حبشی عورت تھی، جو ام ایمن کے نام سے مشہور ہوئی اور رسول اکرمﷺ کی والدہ ماجدہ کی کنیز بھی رہ چکی تھی، انہیں یہ شرف بھی حاصل ہوا کہ جب حضورﷺ کی والدہ ماجدہ کا انتقال ہوا تو انہوں نے آنحضرتﷺ کو اپنی گود میں لے لیا اور آپ کی نگہداشت کی، آپ اکثر فرمایا کرتے تھے کہ ام ایمن میری ماں کی مانند ہے’
اور یہ میرے اہل بیت میں سے ہے۔

یہ تو ہے اس خوش نصیب نومولود کی والدہ محترمہ کا تعارف’ رہا اس کا باپ تو وہ محبوب خداﷺ حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ ہے، نزول قرآن مجید سے پہلے آپ نے اسے

اپنا بیٹا قرار دیا تھا، حضر و سفر میں انہیں آپ کے ساتھ رہنے کا شرف حاصل ہوا۔ علاوہ ازیں راز دان رسولﷺ ہونے کی سعادت بھی ان کے حصے میں آئی۔

حضرت اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ کی ولادت پر بھی مسلمان اتنے خوش ہوئے کہ کبھی کسی کی ولادت پر اتنے خوش نہیں ہوئے تھے، اس لئے کہ جس چیز سے نبی اکرمﷺ کو خوشی حاصل ہوتی صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے لئے بھی وہ خوشی کا باعث بنتی۔

صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اسامہ کو لقب حِب النبی دے دیا، انہوں نے اس نومولود کو یہ لقب دینے میں کسی مبالغے سے کام نہیں لیا تھا، حقیقتاً رسول اکرمﷺ کو ان سے اتنا پیار تھا کہ سب مسلمان اس پہ رشک کناں تھے۔

حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ حضورﷺ کے نواسے حضرت حسن بن فاطمتہ الزہراء کے ہم عمر تھے، حضرت حسن رضی اللہ عنہ اپنے ناناﷺ کی طرح حسین و جمیل تھے لیکن اُسامہ اپنی حبشی والدہ ام ایمن کی مانند سیاہ رنگ اور چپٹے ناک والے تھے، لیکن رسول اکرمﷺ ان دونوں سے یکساں پیار کرتے تھے۔ شفقت بھرے انداز میں اسامہ رضی اللہ عنہ کو ایک ران پر بٹھا لیتے اور حسن رضی اللہ عنہ کو دوسری ران پر’ کبھی دونوں کو اپنے سینے سے لگاتے اور یہ دعا کرتے۔

الہی! میں ان دونوں بچوں سے محبت کرتا ہوں، تو بھی انہیں اپنا محبوب بنا لے۔

غرضیکہ اسامہ رضی اللہ عنہ کے ساتھ آنحضرتﷺ کو بہت پیار تھا، ایک دفعہ اسامہ رضی اللہ عنہ دروازے کی دہلیز پر لڑکھڑا کر گر پڑے، جس سے پیشانی پر زخم آیا اور خون بہنے لگا’ نبی اکرمﷺ نے حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کو اشارہ کیا کہ اس کا خون صاف کر دیں، لیکن صدیقہ کائنات کسی مصروفیت کی وجہ سے اس طرف فوری توجہ نہ دے سکیں، نبیﷺ نے خود اپنے دست مبارک سے اس کا خون صاف کیا۔


جس طرح بچپن میں حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ سے آپ نے پیار کیا اسی طرح جوانی میں بھی ان کے سر پر شفقت کا ہاتھ رکھا۔

ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ ایک قریشی سردار حکیم بن حزام نے ایک قیمتی لباس رسول ا اکرمﷺ کی خدمت میں بطور تحفہ پیش کیا’ جسے اس نے یمن سے پچاس دینار میں خریدا تھا اور یہ لباس شاہ یمن کے لئے بطور خاص تیار کیا گیا تھا، آپﷺ نے یہ تحفہ لینے سے انکار کر دیا، کیونکہ حکیم بن حزام ان دنوں مشرک تھا’ البتہ آپ نے اس سے وہ لباس قیمتاً خرید لیا’ یہ بہترین لباس آپ نے صرف ایک مرتبہ جمعے کے روز پہنا، پھر حضرت اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ کو عطا کر دیا اور وہ یہ لباس پہن کر صبح و شام شاداں و فرحاں اپنے مہاجر و انصار نوجوان ساتھیوں کے پاس آیا کرتے تھے۔


جب أسامہ بن زید رضی اللہ عنہ جوان ہوئے تو عمدہ عادات اور اعلیٰ اخلاق سے متصف تھے، اس کے علاوہ حد درجہ کے ذہین، بہادر، دانشمند، پاکدامن، نرم خو اور پرہیز گار تھے’ ان اوصاف حمیدہ کی بنا پر وہ لوگوں کی نگاہ میں پسندیدہ شخصیت قرار دیئے گئے، غزوۂ احد میں اُسامہ بن زید رضی اللہ عنہ اپنے ہم عمر بچوں کے ہمراہ میدان جہاد کی طرف نکلے۔ ان میں بعض کو تو جہاد کے لئے قبول کر لیا گیا اور بعض کو بہت چھوٹی عمر کی بنا پر شامل جہاد نہ کیا گیا۔ ان میں اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ بھی تھے، جب یہ واپس لوٹے تو زارو قطار رو رہے تھے کیونکہ انہیں رسول اکرمﷺ کے جھنڈے تلے راہ خدا میں جہاد کرنے کا موقع نہیں دیا گیا تھا۔


غزوہ خندق میں حضرت اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ اپنے ہم عمر نوجوانوں کے ہمراہ میدان کی طرف نکلے تو اپنے پنجوں کے بل اونچے ہو کر کہنے لگے کہ کہیں آج بھی نو عمری کی بنا پر جہاد میں شریک ہونے سے محروم نہ کر دیئے جائیں، ان کی یہ حالت دیکھ کر نبی اکرمﷺ بہت خوش ہوئے اور انہیں جہاد میں شریک ہونے کی اجازت دے دی’ جب حضرت اسامہ نے راہ خدا میں جہاد کے لئے تلوار اٹھائی، اس وقت ان کی عمر صرف پندرہ برس تھی۔


غزوہ حنین میں جب مسلمان شکست سے دوچار ہوئے تو اس نازک ترین موقعے پر أسامہ بن زید رضی اللہ عنہ، حضرت عباس رضی اللہ عنہ، ابو سفیان بن حارث رضی اللہ عنہ اور دیگر چھ صحابہ

کرام رضی اللہ عنہم میدان کار زار میں ثابت قدم رہے، اس چھوٹے سے بہادر حبھے کی بنا پر رسول اکرمﷺ کے لئے یہ آسانی پیدا ہوئی کہ اللہ نے شکست کو فتح میں بدل دیا اور بھاگنے والے مسلمانوں کو ہزیمت سے بچا لیا۔


جنگ موتہ میں حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ نے اپنے باپ زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کی قیادت میں جہاد کیا، اس وقت ان کی عمر اٹھارہ سال سے بھی کم تھی، اپنی آنکھوں سے اپنے باپ کی شہادت کا منظر دیکھا لیکن حوصلہ نہ ہارا بلکہ حضرت جعفر بن ابی طالب رضی اللہ عنہ کی قیادت میں کفار سے نبرد آزما رہے، یہاں تک کہ یہ سپہ سالار بھی اللہ کو پیارے ہو گئے۔ پھر عبد اللہ بن رواحہ رضی اللہ عنہ نے لشکر اسلام کی قیادت سنبھالی، لیکن تھوڑی ہی دیر بعد یہ بھی شہید ہو گئے تو حضرت خالد بن ولید رضی اللہ عنہ کے جھنڈے تلے کفار سے نبرد آزمائی کا موقع آیا۔ انہوں نے ایسی جنگی حکمت عملی اختیار کی کہ جس سے یہ۔۔۔۔ لشکر اسلام کو روم کے مضبوط آہنی پنجے سے چھڑانے میں کامیاب ہو گئے۔


حضرت اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ اپنے شہید باپ کے جسد خاکی کو سرزمین شام میں اللہ کے سپرد کر کے ان ہی کے تیز رفتار گھوڑے پر سوار ہو کر مدینہ طیبہ پہنچے۔


11ھ ہجری کو رسول اکرمﷺ نے رومیوں سے جنگ کرنے کے لئے لشکر اسلام کی تیاری کا حکم صادر فرمایا اور اس لشکر میں حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ، حضرت عمر رضی اللہ عنہ، حضرت سعد بن ابی وقاص رضی اللہ عنہ اور حضرت ابو عبید بن جراح رضی اللہ عنہ جیسے جلیل القدر صحابہ رضی اللہ عنہم موجود تھے۔ حضورﷺ نے اس لشکر کا امیر حضرت اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ کو مقرر کیا۔ جبکہ ان کی عمر ابھی صرف بیس سال تھی، انہیں حکم دیا کہ علاقہ بلقاء اور قلعہ دار روم کو اپنے پاؤں تلے روند ڈالیں، جو کہ بلاد روم کے غزہ نامی شہر کے قریب واقع ہے۔ یہ لو ہے۔ یہ لشکر ابھی تیاری میں مصروف تھا کہ رسول اکرمﷺ بیمار ہو گئے، جب مرض نے شدت اختیار کی تو لشکر اس صورت حال کو دیکھ کر روانہ ہوا۔

حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں:

جب نبی اکرمﷺ پر بیماری کا شدید حملہ ہوا تو میں اور میرے چند ساتھی تیمار داری کے لئے آپ کی خدمت میں حاضر ہوئے، بیماری کی شدت کی بنا پر آپ بالکل خاموش تھے، آپ اپنا ہاتھ اوپر اٹھاتے پھر اسے مجھ پر رکھ دیتے’ میں سمجھ گیا کہ آپ میرے حق میں دعا کر رہے ہیں۔


تھوڑی ہی دیر بعد حبیب کبریاﷺ اللہ کو پیارے ہو گئے’ اب حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ کو خلیفہ منتخب کیا گیا۔ تمام صحابہ رضی اللہ عنہم نے آپ کے ہاتھ پر بیعت کی۔ آپ نے خلیفہ منتخب ہوتے ہی سب سے پہلا کام یہ کیا کہ حضرت اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ کی قیادت میں لشکر اسلام کو اس مشن پر روانہ کیا جس کا حکم رسول اکرمﷺ نے اپنی زندگی میں دیا تھا، لیکن انصار میں سے چند صحابہ رضی اللہ عنہم کی یہ رائے تھی کہ لشکر کی روانگی میں کچھ تاخیر کر دی جائے تو بہتر ہو گا’ انہوں نے حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ سے کہا کہ وہ اس سلسلے میں حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ سے بات کریں اور ساتھ ہی یہ مشورہ دیا کہ اگر حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ لشکر کی فوری روانگی پر مصر ہوں تو ہماری طرف سے انہیں یہ پیغام پہنچا دیں کہ ہمارا امیر کسی ایسے شخص کو بنایا جائے جو اسامہ رضی اللہ عنہ سے زیادہ عمر رسیدہ اور تجربہ کار ہو، حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی زبانی انصار کا یہ پیغام سنا تو غضبناک ہو گئے اور غصے کی حالت میں فاروق اعظم رضی اللہ عنہ سے فرمایا:

اے ابن خطاب! کتنے افسوس کی بات ہے، رسول اللہﷺ نے تو اسامہ رضی اللہ عنہ کو امیر لشکر بنایا اور تم مجھے مشورہ دیتے ہو کہ میں اسے معزول کر دوں۔ اللہ کی قسم! یہ کبھی نہیں ہو سکتا۔ جب حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ لوگوں کے پاس واپس لوٹے تو انہوں دریافت کیا کہ خلیفتہ المسلمین نے کیا جواب دیا؟

حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا: تمہیں تمہاری مائیں گم پائیں، جلدی سے اپنے مشن پر چل نکلو، میں نے آج تمہاری وجہ سے خلیفہ رسولﷺ کو ناراض کیا۔


جب یہ لشکر اپنے نوجوان قائد کے زیر کمان روانہ ہوا تو خلیفہ رسول سیدنا ابو بکر رضی اللہ عنہ انہیں الوداع کہنے کے لئے تھوڑی دور تک پیدل ساتھ چلے جبکہ حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ گھوڑے پر سوار تھے۔ حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ نے کہا:

اے خلیفہ رسولﷺ: بخدایا’ تو آپ بھی گھوڑے پر سوار ہو جائیں ورنہ میں گھوڑے سے اترتا ہوں۔ صدیق اکبر رضی اللہ عنہ نے ارشاد فرمایا:
بخدا! نہ تو آپ نیچے اتریں گے اور نہ میں سوار ہوں گا۔۔۔
پھر فرمایا: کیا میرے لئے یہ اعزاز نہیں کہ کچھ عرصے کے لئے اپنے پاؤں اللہ کی راہ میں غبار آلود کر دوں؟

حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ کو دعائیں دے کر جہاد پر روانہ کیا اور کہا:
رسول اللہﷺ نے تمہیں جو وصیت کی ہے اس کے مطابق سرگرم عمل رہنا، پھر سرگوشی کے انداز میں فرمایا:
اگر حضرت عمر رضی اللہ عنہ کو میری معاونت کے لئے میرے پاس رہنے دیں تو بہتر ہو گا۔
حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ نے آپ کی رائے سے اتفاق کیا اور حضرت عمر رضی اللہ عنہ کو وہیں رہنے دیا۔


حضرت اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ لشکر کو لے کر چل پڑے اور اس مشن کی کامیابی کے لئے ہر وہ کوشش کی جس کا رسول اللہﷺ نے حکم دیا تھا، پہلے مرحلے پر لشکر اسلام نے سرزمین فلسطین میں بلقاء اور قلعہ دار روم کو فتح کیا، مسلمانوں کے دلوں سے روم کی سلطنت کا رعب و دبدبہ ختم کر دیا۔

دیار شام، مصر اور شمالی افریقہ کو فتح کر کے بحر ظلمات تک اسلامی سلطنت کا جھنڈا لہرا دیا، حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ اس مہم کو سر کر کے بڑی شان و شوکت سے اپنے والد گرامی کے تیز رفتار گھوڑے پر سوار ہوئے اور کثیر مقدار میں مال غنیمت کے ساتھ بخیر و عافیت لوٹے’ یہاں تک کہ یہ بات لوگوں میں مشہور ہو گئی کہ حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ کے لشکر سے بڑھ کر آج تک


کوئی لشکر اتنی کثرت سے مال غنیمت نہیں لایا۔

جوں جوں وقت گزرتا گیا مسلمانوں کے دلوں میں حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ کی قدر و منزلت بڑھتی گئی اور یہ عزت و وقار اور عظمت و شان رسول اکرمﷺ کے ساتھ وفاداری کے نتیجے میں آپکو میسر آئی۔

فاروق اعظم رضی اللہ عنہ نے اپنے دور خلافت میں حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ کے لئے اپنے بیٹے سے زیادہ وظیفہ مقرر کیا تو بیٹے نے عرض کی: ابا جان! آپ نے اسامہ کے لئے چار ہزار اور
میرے لئے تین ہزار درہم وظیفہ مقرر کیا ہے۔ حالانکہ اس کے باپ کو وہ فضیلت حاصل نہ تھی جو آپ کو حاصل ہے اور اسامہ رضی اللہ عنہ کو وہ مقام حاصل نہیں جو میرا ہے۔ بیٹے کی یہ بات سن کر فاروق اعظم رضی اللہ عنہ نے ارشاد فرمایا:

بیٹے! افسوس تجھے علم نہیں۔ سنو اس کا باپ تیرے باپ سے زیادہ رسول اکرمﷺ کو عزیز تھا اور یہ خود بھی آنحضرتﷺ کو تجھ سے زیادہ پیارا تھا۔

یہ جواب سن کر حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ خاموش ہو گئے اور اسی وظیفہ پر راضی ہو گئے، جو ان کے لئے مقرر کیا گیا تھا، حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ جب بھی حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ سے ملتے تو خوشی سے پکار اٹھتے: خوش آمدید میرا سردار آ گیا’ جب کوئی ان سے اس والہانہ انداز پر تعجب کرتا تو فرماتے، تمہیں معلوم نہیں ایک موقعے پر رسول اکرمﷺ نے اُسامہ رضی اللہ عنہ کو میرا امیر بنایا تھا۔


ان قدسی نفوس پر اللہ رحمت کی برکھا برسائے، بلاشبہ رسول اکرمﷺ کے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم انسانیت کے اعلیٰ و اکمل اور افضل مقام پر فائز تھے، تاریخ نے کبھی ان جیسے قدسی انسانوں کو نہیں دیکھا۔


حضرت اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لئے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں۔

 

۱۔ الاصابه ۱/ ۴۶
۲۔ الاستيعاب ۱/ ۳۴۔۳۶
٣- تقريب التهذيب ۱/ ۵۳
۴۔ تاریخ اسلام ذهبی ۲/ ۳۷۰۔۳۷۲
ه- الطبقات الكبرى ۴/ ۶۱۔۷۲
۶۔ العبر ۱/ ۹۵
۷۔ من ابطالنا الذين صنعوا التاريخ ۳۳۔۳۹
۸۔ قادة فتح الشام و مصر ۳۳/۔ ۵۱
۹۔ الاسلام و مراجعه ۲۸۱۔۲۸۲

 

حوالہ جات :

“حياتِ صحابہ کے درخشاں پہلو”

تا لیف: “داکتور عبدالر حمان رافت الباشا”

 

 

Table of Contents