Sections
< All Topics
Print

08. Umm ul Mumineen Juweriya Bint-e-Haris Bin Abi Zirar (رضی اللہ عنہا)

Umm ul Mumineen Juweriya Bint-e-Haris Bin Abi Zirar (رضی اللہ عنہا)

Allah ta’ala ne mujhe sirf jannati khatoon se shaadi karne ka hukm diya hai

(Farman-e-Nabwi  صلی اللہ علیہ وسلم )

 

Main ne juweriya ke ilawah koi khatoon nahi dekhi jo us se badh kar apni qaum ke liye ba-barkat sabit hui ho. Uski wajah se qaum ke sainkdon afraad qaid se azaad huye.

(Farman-e-Ayesha siddiqa رضی اللہ عنہا)


Husn-e-Akhlaaq-o-Adaab ki paikar, Naaz-o-Naimat se shahi mohlaat mein parwarish pane wali, Aqal-o-Danish aur Fahem-o-Farasat se aarasta, Fasahat-o-Balagat mein mumtaaz hasiyat ki hamil Juweriya Bint-e-Haris ko jab Umm-ul-Mumineen banne ka aizaaz hasil hua to woh apni qaum ke liye barkat ka bayes bani, Ayyiye! Is dil pazeer dastaan se apne Dil-o-Dimagh ko raushan karein.


Madina Munawwarah Islami riyaasat ka paaya takht ban chuka tha. Noor-e-Islam charon taraf zu fisha tha, Farzand-e-Islam Allah Subhan-o-Ta’ala ke naam ki sarbulandi ke liye sargaram amal thay, Jidhar ka rukh karte Fath-o-Nusrat unke qadam choomti. Banu Mustalaq aik aisa qabila tha jise apni taqat par bada ghamand tha. Us ne chand dusre qaba’il se bhi gathjod kiya hua tha. Us qabile ka sardar Haris Bin Abi Zirar tha jise apni Aqal-o-Danish aur Quwwat-e-Baazu par bada naaz tha. Yeh taqat ke nashe mein aisa makhmur tha keh kisi ko khatir mein hi nahi lata tha.Uske haan aik bachi ne janam liya jiska naam Juweriya rakha gaya. Naaz-o-Naimat ke mahol mein pal kar jawan hui to Banu khuza’a ke aik ubharte huye jawan Musafe Bin Safwan se uski shadi kar di gayi. Shab-o-Roz, Aish-o-Ishrat se guzar rahe the. Har roz Roz-e-Eid aur har shab Shab-e-Barat dikhayi de rahe the.

Banu Mustalaq ne Islami riyasat ke paaya takht Madina Munawwarah ko maliya mait karne ke liye tayyari shuru kar di. Deegar qabail se raabta karke afraadi aur baroodi quwwat mein izaafa kiya. Jab iski ittila Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) tak pohanchi to aap ne Surat-e-Haal ka jayeza lene ke liye apne jaan nisaar sahabi Buraidah Bin Husaib رضي الله عنه ko bheja takeh sahi malumat ki raushni mein mansuba bandi ki jaaye. Yeh wahan unke ilaqe mein pohanche Banu Mustalaq ke sardar Haris Bin Abi Zirar aur deegar chand sar karda afraad se mulaqat ki. Qabaili jawanon ki chehel pehel aur jangi Saaz-o-Saman ki farawaani daikhi. Unke azaim malum kiye, Har aik  ke Dil-o-Dimagh par ladai ka bhoot sawar tha.

Buraidah Bin Husaib رضي الله عنه ne wapis aa kar Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ko wahan ki Surat-e-Haal se agaah kiya. Unke khatarnaak azaim ki nishaan dahi ki, Jangi Saaz-o-Saman aur qabaili jawanon ki tayyari ki ittila di to Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) Yeh baat sun kar chaukas huye aur aap ne mujahideen ko tayyari ka hukm de diya. Daikhte hi daikhte saat sau afraad par mushtamil Lashkar-e-Islam rawaangi ke liye tayyar ho gaya. Us lashkar ki qiyadat Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ne khud ki. Is jihaadi safar mein sayyidah Ayesha Siddiqa (رضی اللہ عنہا) hamraah thin, Isi safar mein wapsi par unke gale ka haar gum hua tha, Jiski talash mein lashkar se bichhadne ki bina par munafiqeen ke hath aik baat aa gayi jise khub uchala gaya, Madina Munawwarah ke mahaul mein aik irta’ash paida hua. Musalman gham ki tasweer bane huye dikhayi diye, Khud Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) intihaayi pareshaan thay, Hatta keh Allah Ta’ala ne Hazrat Ayesha Siddiqa ki bariat mein asman se Ayaat nazil ki jinki tilawat musalman 14 sadiyon se kar rahe hai aur qayamat tak karte rahenge.

Rasool-e-Aqdas (صلی اللہ علیہ وسلم) ne Lashkar-e-Islam ki qiyadat karte huye 5 Hijri Maah-e-Shaban mein Banu Mustalaq ke aham tareen markazi maqam Muraisee par padao kiya. Yahan pani ka zakheera tha jise Banu Mustalaq peenay or deegar zaruriyat ke liye istimaal kiya karte the. Aapne use apne qabze mein le liya. Maidan-e-Jang mein paani ke maqam par qabza karna Rasool-e-Aqdas (صلی اللہ علیہ وسلم) ki jangi Hikmat-e-Amali ka aik aham tareen hissa tha.

Banu Mustalaq ke Sardar Haris Bin Abi Zirar ko Lashkar-e-Islam ki achanak amaad ka pata chala to uske ausaan khata ho gaye. Uske dil par is qadar raub taari hua keh woh thar thar kanpne laga. Deegar qabaili jawanon ne uski yeh halat daikhi to woh bhi ghabra gaye aur Chashm-e-Zadan mein wahan se apni janein bachate huye bhaag gaye. Sardar Haris Bin Abi Zirar bhi khauf zada ho kar ruposh ho gaya, Lakin qabeela Banu Mustalaq ke afraad kham thok kar maidan mein nikal aaye. Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ne unki taraf Islam qubool karne ka paigham bheja keh agar tum La‘ilaha ill‘lallah ka iqrar karte huye Daira-e-Islam mein dakhil ho jao to tumhe kuch nahi kaha jayega. Yeh sab kuch tumhari milkiyat mein rahega, tumhare Jaan-o-Maal mahfuz rahenge. Unho ney Islam qubool karne ke bajaye muqabla karne ka ailaan kar diya, Balke aik na-aqibat andaish ne teer chala diya jo aik mujahid ke jism mein paiwast ho gaya. Phir kya tha ladai bhadak uthi. Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ne mujahideen ko saf bandi ka khayal rakhte huye yakbaargi hamla karne ka hukm diya. Dushman mein se kisi aik ko bhi maidan se bhagne ki mohlat na mili. Das afraad maut ke ghaat utaar diye gaye, Aur baaqi giraftaar kar liye gaye. Juweriya Bint-e-Haris ka khawand Musafe Bin Safwan bhi Maidan-e-Jang mein qatal hua. Taqreeban 700 afraad qaid kar liye gaye. Jin mein auratain bhi shamil thin, Iske ilawah do hazar uont aur paanch hazar bakriyan bhi Maal-e-Ghaneemat ke taur par hath lage.

Madina Munawwarah pohonch kar Maal-e-Ghaneemat ko mujahideen mein taqseem kar diya gaya. Mard aur auratain ghulaam aur kaneezon ki surat mein taqseem kar diye gaye. Juweriya  Bint-e-Haris Mashhoor-o-Maroof sahabi Sabit Bin Qais Ansari ke hisse mein aayi. Hazrat Ayesha Siddiqa (رضی اللہ عنہا) farmati hain keh jab main ne Juweriya  ko daikha to uske Husn-o-Jamal aur chehre ki taro taazgi ko daikh kar dang rah gayi. Chunke usne Naaz-o-Naimat ke mahaul mein parwarish payi thi, Guftagu karne ka saleeqa use w


rsay mein mila tha. Woh mauqa pate hi Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ki khidmat mein hazir hui aur arz ki ya Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) apko malum hai keh main Sardar ki beti hun, Naaz-o-Naimat se pali hun ab halaat ki sitam zarefi ke sabab be Dast-o-Paa hun. Sunehri takht se gir kar Bistar-e-Khaak par aan padi hun. Meri azaadi ka muahada na uaqiya sone ki adaigi ki buniyad par Sabit Bin Qais Ansari ke sath kar diya gaya hai. Aap jante hain keh main itni badi raqam kaise ada kar sakti hun. Main yeh ghulami ki zindagi kyun kar guzar sakungi. Ya Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) mujh na-tawan, be-bas aur lachar par Nazar-e-Karam farmayein. Aapne uski gham mein doobi hui guftagu sun kar irshaad farmaya:

“Agar main Yeh raqam adaa karke tumhe ghulami se azad kar dun to kya mere haram mein aik azad khatoon ki surat mein aana pasand karogi?”

Yeh pesh kash uske Waham-o-Guman mein hi na thi. Apke zuban se yeh noorani kalimaat sunte hi Wufor-e-Shauq se kaha: Mujhe aur kya chahiye Ya Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) main raazi hun, Mujhe yeh pesh kash ba-khushi qubool hai. Aap ne use azad kiya aur shaadi kar li. Jab deegar mujahideen ne suna ki Juweriya Bint-e-Haris ne Umm-ul-Mumineen banne ka aizaaz hasil kar liya hai to Banu Mustalaq qabile ke tamaam ghulaam aur kaneez azaad kar diye. Is tarah Umm-ul-Mumineen Juweriya Bint-e-Haris (رضی اللہ عنہا) apni qaum ke liye barkat ka baais ban gayin. Unki wajah se tamaam ko azadi hasil hui.


Umm-ul-Mumineen Hazrat Juweriya Bint-e-Haris (رضی اللہ عنہا) ko daikhte hi Hazrat Ayesha Siddiqa (رضی اللہ عنہا) ne unki tareef kartey huye irshad farmaya:

 

کانت حلوۃ ملاحۃ

“Woh khubsurat or pari chehra thi.”

Yeh Umm-ul-Mumineen Hazrat Juweriya Bint-e-Haris (رضی اللہ عنہا) ki Faham-o-Farasat thi keh khamoshi ikhtiyar karne ki bajaye jurrat ka muzahara karte huye Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ki khidmat mein pohanch kar barjista apni pareshan haali ka izhar kar diya jis ke natije mein unhe Umm-ul-Mumineen banne ka aizaaz hasil hua aur apni qaum ke tamam afraad ko azadi dilane ka bais ban gayin. Hazrat Ayesha (رضی اللہ عنھا ) ne aik baar is Azeem-ul-Martabat khatoon ka tazkirah karte huye irshad farmaya:

 

فما راینا امراۃ اعظم برکۃ علی قومھا منھا فلقد اعتق اللہ تعالی بھا مائۃ اہل بیت من بنی المصطلق

 

“Humne koi khatoon is se badh kar apni qaum ke liye Bais-e-Barkat na daikhi. Allah Ta’ala ne uske zariye Banu Mustalaq ke sainkdon Afraad-e-Khana ko azadi aata ki.”

Haram-e-Nabwi mein dakhil hone se pehle Hazrat Juweriya ka naam Barrah tha. Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ne uska naam badal kar Juweriya rakha. Jaisa keh Umm-ul-Mumineen Hazrat Zainab Bint-e-Jahash, Umm-ul-Mumineen Mainmoona Bint-e-Haris aur Zainab Bint-e-Abu Salimah ke naam bhi Barrah hi the. Yeh naye naam Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ne rakhay. Imam Baihaqi ne apni kitaab Dalail-un-Nubuwwah mein Yeh riwaayat naqal ki hai.

 

عن ام المؤمنین جویریۃ رضی اللہ عنھا قالت رایت قبل قدوم النبی صلی اللہ علیہ وسلم بثلاث لیال کان القمر یسیر من یثرب حتی وقع فی حجری فکرہت ان لا اخبر احدا فلما سبینا رجوت الرؤیا فاعتقنی و تزوجنی

 

Umm-ul-Mumineen Hazrat Juweriya se marwi hai, farmati hain keh : “Mein ney Nabi Aqdas (صلی اللہ علیہ وسلم) ki aamad se teen raatein pehle khwab mein daikha keh chand Yasrab ki jaanib se chalta hua aaya aur meri god mein gir gaya. Mein ney yeh khwab kisi ko batana pasand nahi kiya. Jab ham giraftaar huye to mein ney khwab ke pura hone ki umeed ki to aapne mujhe azad kiya aur mere sath shaadi kar li.”

 

Allamah Zahabi apni kitab Siar-o-Aalm-al-Nubalaa mein raqamtraz hain: 

 

قالت تزوجنی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم وانا بنت عشرین سنۃ

 

“Farmati hain keh Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ne mere sath shaadi ki jabkeh meri Umar 20 saal thi.”

 

Allamah Zahabi ne apni kitab Siar-o-Aalam-al-Nubalaa mein yeh bhi likha hai:

 

کانت من اجمل النساء

 

“Juweriya  Bint-e-Haris bhut khubsurat khatoon thin.”

Kuch arse baad unka baap Haris Bin Abi Zirar apne qabile ke un tamam afraad ke sath jinhe uski beti Juweriya ke Umm-ul-Mumineen banne ke sabab azad kar diya gaya tha, Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ki khidmat mein hazir hua aur yeh sab log Daara-e-Islam mein dakhil ho gaye. Is tarah Hazrat Juweriya ko yeh dusra aizaaz  hasil hua.

Pehla aizaaz yeh tha keh unke sabab qaum ke afraad azaad huye aur dusra yeh keh Islam qubool karne ki saa’dat naseeb hui.


Umm-ul-Mumineen Hazrat Juweriya  Bint-e-Haris (رضی اللہ عنہا) aksar auqat ibadat aur Zikar-e-Ilaahi mein masroof rahtin. Unho ney apne ghar mein aik jagah ibadat ke liye makhsus kar rakhi thi. Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ne use wahan subah ke waqt Zikar-e-Ilaahi mein munhamik baithe daikha. Aap dopahar ko tashref laye to usi tarah muraqabe mein baithi thin. Aapne pucha kya subah se isi halat mein baithi ho?

Kaha: Haan ya Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم)

 

Aap ne farmaya: Kya main tujhe chand kalimat sikhlaun woh tum keh liya karo woh tumhare liye kafi honge, Woh kalimat yeh hain:

 

سُبْحَانَ اللَّهِ عَدَدَ خَلْقِهِ                                               Teen martaba

 سُبْحَانَ اللَّهِ رِضَا نَفْسِهِ                                            Teen martaba

سُبْحَانَ اللَّهِ زِنَةَ عَرْشِهِ                                              Teen martaba

 سُبْحَانَ اللَّهِ مِدَادَ كَلِمَاتِهِ                                            Teen martaba

 

Muslim Shareef aur Abu Dawud mein Hazrat Juweriya (رضی اللہ عنہا) ke hawale se marwi hai.

 

قالت اتی علی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فقال لقد قلت بعدک اربع کلمات ثلاث مرات لو وزنت بما قلت منذ الیوم لوزنتھن سُبْحَانَ اللَّهِ وَبِحَمْدِهِ عَدَدَ خَلْقِهِ وَرِضَا نَفْسِهِ وَزِنَةَ عَرْشِهِ وَمِدَادَ كَلِمَاتِهِ

 

Farmaya keh mere paas Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) tashreef laye aur irshad farmaya: Tere baad mein ney 4 kalimat teen teen martaba kahe. Agar unko tarazu mein taula jaye to jo kuch tune din bhar mein padha hai unse sawab mein bhari ho jayen aur woh yeh hain:

 

سُبْحَانَ اللَّهِ وَبِحَمْدِهِ عَدَدَ خَلْقِهِ وَرِضَا نَفْسِهِ وَزِنَةَ عَرْشِهِ وَمِدَادَ كَلِمَاتِهِ

 

Tabqaat Ibn-e-Saad mein mazkur hai keh Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ne Ghazwa-e-Khayber ke Maal-e-Ghaneemat mein se Umm-ul-Mumineen Hazrat Juweriya  Bint-e-Haris ko 80 wasak khajoor aur 20 wasak jau ataa kiye.

Rasool-e-Aqdas (صلی اللہ علیہ وسلم) ke is duniya se kooch kar jane ke baad Khalifa-e-Awwal Hazrat Abu Bakar Siddiq رضي الله عنه tamam Azwaaj-e-Mutaharrat ke akhrajat ke liye barabar raqam faraham kiya karte the. Hazrat Umar Bin Khattab رضي الله عنه ne Azwaaj-e-Mutaharrat ka wazifa 12 Hazar dirham muqarrar kar diya. Laikin Umm-ul-Mumineen Juweriya  Bint-e-Haris aur Umm-ul- Mumineen Safia Bint-e-Huyai ka wazifa 6-6 Hazar dirham muqarrar kiya gaya. Dono ne yeh wazifa lene se inkar kar diya. Hazrat Umar Bin Khattab رضي الله عنه ne kaha mein ney deegar Azwaaj-e-Mutaharrat ka do guna wazifa unki hijrat ki bina par muqarrar kiya hai. Dono ne kaha nahi aapne unke Martaba-o-Maqaam ko hum se tarjeeh dete huye aisa kiya hai.

Umm-ul-Mumineen Hazrat Ayesha (رضی اللہ عنہا) ne farmaya: Rasool-e-Aqdas (صلی اللہ علیہ وسلم) hum mein har cheez barabar taqseem kiya karte the, Yeh baat sun kar Ameer-ul-Mumineen Hazrat Umar Bin Khattab ne sab Azwaaj-e-Mutaharrat ka wazifa barabar 12 hazar dirham muqarrar kar diya.

Umm-ul-Mumineen Hazrat Juweriya Bint-e-Haris (رضی اللہ عنہا) ne 70 saal ki Umar mein 50 Hijri Maah-e-Rabiul Awwal ko Ameer Muawiya Bin Abu Sufiyan ke Daur-e-Hukumat mein wafat payi. Madina ke gowernor Marwaan Bin Hakam ne Namaz-e-Janaza padhai aur unhe Jannat-ul-Baqi mein dafan kiya gaya.

 


Umm-ul-Momimin Juweriya Bint-e- Haris (رضی اللہ عنہا) key mufassal Halat-e-Zindagi maloom karny key liy darj zail kitaboon ka mutala kijiy:

 

1: Tabaqat Ibn-e-Saad                                                                                          8/116-120
2: Al Istiaab                                                                                                                    4/251-254
3: Al Isaabah                                                                                                                   4/257
4: Al Marifah wal Tarikh                                                                                            3/322
5: Usd-ul-Ghabah                                                                                                       6/56-57
6: Mustadrak Hakim                                                                                                   4/25-28
7: Majma`-ul-Zawaid                                                                                                 9/259
8: Al Ibar                                                                                                                             1/7
9: Tahzeeb-ul-Tahzeeb                                                                                            12/407
10: Shazarat-ul-Zahab                                                                                             1/257
11: Musnad Abi Yaala                                                                                                13/33
12: Siar-o-Aalam-al-Nubalaa                                                                           2/261
13: Kanz-ul-Ummal                                                                                                   13/706
14: Sifat-ul-Safwah                                                                                                    2/49
15: Uyoon-ul-Asar                                                                                                     2/383
16: Mukhtasar Tarikh-e-Damishq                                                                   2/271
17: Dalail-ul-Nubuwwah Baihaqi                                                                      4/48
18: Aalam-ul-Nisaa                                                                                                    1/227
19: Jamharat-o-Ansaab-al-Arab                                                                    1/239
20: Tarikh-ul-Tabari                                                                                                  2/109
21: Al Kamil Libn-e-Aseer                                                                                        2/192
22: Al Seerat-ul-Halabiyyah                                                                                3/413
23: Al Raoz-ul-Unuf                                                                                                    4/268
24: Futooh-ul-Buldan                                                                                                 551
25: Ansaab-ul-Ashraf                                                                                                 1/341
26: Tarikh-ul-Khamis                                                                                                1/267
27: Tahzeeb-ul-Asmaa wal Lughat                                                                2/336
28: Al Bidayah wal Nihayah                                                                                  8/49
29: Al Wafi Bil Wafayat                                                                                            11/226
30: Al Aalam Zarkali                                                                                                 2/148
31: Noor-ul-Absar                                                                                                      47-48
32: Wafa-ul-Wafa`                                                                                                     1/314
33: Al Mawahib-ul-Ludaniyyah                                                                        2/90-91
34: Sunan Abi Dawohod                                                                                           3931
35: Sahih Muslim                                                                                                         2726
36: Fath-ul-Baari                                                                                                        4/273

 

REFERENCE:
Book: Sahabiyaat-e-Mubashiraat”
By Mahmood Ahmed Ghaznofar.

JUWAYRIYYAH BINT HARITH

The Woman who Brought the Greatest Blessing upon Her People

She was the Mother of the Believers: Juwayriyyah bint AlHarith bin Abu Dharar Al-Mustaliqiyyah. She was captured in the Battle of Al-Muraysi’ in the fifth year of hijrah. Her name originally was “Barrah” but the Prophet ﷺ changed it to Juwayriyyah. She was one of the illustrious women.

‘A’ishah related: “Juwayriyyah, daughter of Al-Harith bin Al-Mustaliq, fell to the lot of Thabit bin Qays bin Shammas, or to her cousin. She entered into an agreement to purchase her freedom. She was a very beautiful woman, most attractive to the eye.” ‘A’ishah said: “She then came to the Messenger of Allah ﷺ asking him for the purchase of her freedom. When she was standing at the door, I looked at her with disapproval. I realized that the Messenger of Allah ﷺ would look at her in the same way that I had looked. She said: Messenger of Allah, ‘I am Juwayriyyah, daughter of Al-Harith, and something has happened to me, which is not hidden from you. I have fallen to the lot of Thabit bin Qays bin Shammas, and I have entered into an agreement for the purchase of my freedom. I have come to you to seek assistance for the purchase of my freedom.’ The Messenger of Allah ﷺ said: ‘Are you inclined to that which is better?’ She asked: ‘What is that, Messenger of Allah?’ He replied: ‘ I shall pay the price of your freedom on your behalf, and I shall marry you.’ She said: ‘I shall do this.’ She (‘A’ishah) said: ‘The people then heard that the Messenger of Allah ﷺ had married Juwayriyyah. They released the captives in their possession and set them free, and said: ‘They are the relatives of the Messenger of Allah by marriage.’ One hundred families of Banu Al-Mustaliq were set free on account of her. We did not see any woman greater than Juwayriyyah who brought blessings to her people.”

When Banu Mustaliq witnessed the elevation, amnesty and honor that had been brought upon them, they all accepted Islam with a firm belief in Allah and His Messenger.

Clearly, the ultimate interest of the Prophet ﷺ was the success and spread of his call amongst men. Such impeccable wisdom and deep thought was unprecedented amongst the most acclaimed wise men. None other than the Messenger could come up with such deep thought and great wisdom which made foreheads bow to Allah who taught him what he did not know.

Ibn Hajar also mentioned (in Al-Isabah 2/160): that her father, Al-Harith came to the Prophet ﷺ and accepted Islam as well.

The Messenger Taught Her Words With Comprehensive Meaning

Juwayriyyah reported that the Prophet ﷺ left her apartment in the morning as she was busy observing her dawn prayer in her place of worship. He came back in the forenoon and she was still sitting there. The Prophet ﷺ said: You have been in the same place since I left you?She said, “Yes.” Thereupon the Prophet ﷺ said: “I recited four words three times after I left you and if these were to be weighed against what you have recited since morning these would outweigh them, and these words are:

“Subhauallah wa bilwmdihi ‘adada khalqihi wa rida’ nafsihi wa zinata ‘arshihi wa midada kalimatihi”

(Glory be to Allah and praise is due to Him to the extent of the number of His creation and to the extent of His pleasure and to the extent of the weight of His Throne and to the extent of ink used in recording words for His Praise).”‘

Her Death

After her noble soul concluded its blessed sojourn under the banner of Islam, she died in the year 50 AH. May her pure soul find rest and tranquillity in nearness of her Lord.

 

SOURCE:
https://learn-islam.org

 

 

 *ام المومنین حضرت جویریہ بنت حارث بن ابی ضرار رضی اللہ عنہا*

 
 
 
 
“اللّٰہ تعالیٰ نے مجھے صرف جنتی خاتون سے شادی کرنے کا حکم دیا ہے”(فرمانِ نبویﷺ)
 
“میں نے جویریہ کے علاوہ کوئی خاتون نہیں دیکھی جو اس سے بڑھ کر اپنی قوم کے لیے بابرکت ثابت ہوئی ہو۔ اس کی وجہ سے قوم کے سینکڑوں افراد قید سے آزاد ہوئے۔
“( فرمانِ عائشہ صدیقہ رضی اللہ )
 
 
حسنِ اخلاق وادب کی پیکر ، نازونعمت سے شاہی محلات میں پرورش پانے والی ، عقل ودانش اور فہم و فراست سے آراستہ ، فصحات و بلاغت میں ممتاز حیثیت کی حامل ، جویریہ بنت حارث رضی اللہ عنہا کو جب ام المومنین بننے کا شرف حاصل ہوا تو وہ اپنی قوم کے لیے برکت کا باعث بنیں ۔ آئیے اس دل پذیر داستان سے اپنے دل و دماغ کو روشن کریں ۔

 
 
حسنِ اخلاق وادب کی پیکر ، نازونعمت سے شاہی محلات میں پرورش پانے والی ، عقل ودانش اور فہم و فراست سے آراستہ ، فصحات و بلاغت میں ممتاز حیثیت کی حامل ، جویریہ بنت حارث رضی اللہ عنہا کو جب ام المومنین بننے کا شرف حاصل ہوا تو وہ اپنی قوم کے لیے برکت کا باعث بنیں ۔ آئیے اس دل پذیر داستان سے اپنے دل و دماغ کو روشن کریں ۔
 

 
مدینہ منورہ اسلامی ریاست کا پایہ تخت بن چکا تھا ۔ نور اسلام چاروں طرف ضوءفشاں تھا ، فرزندانِ اسلام اللّٰہ تعالیٰ کے نام کی سر بلندی کے لیے سرگرم عمل تھے ، جدھر کا رخ کرتے فتح و نصرت ان کے قدم چومتی ۔ بنو مصطلق ایک ایسا قبیلہ تھا جسے اپنی طاقت پر بڑا گھمنڈ تھا ۔ اس نے چند دوسرے قبائل سے گٹھ جوڑ کیا ہوا تھا۔ اس قبیلے کا سردار حارث بن ابی ضرار تھا اسے اپنی عقل و دانش اور قوتِ بازو پر بڑا ناز تھا ۔ یہ طاقت کے نشے میں ایسا مخمور تھا کہ کسی کو خاطر میں نہ لاتا تھا ۔ اس کے ہاں ایک بچی نے جنم لیا اسکا نام جویریہ رکھا گیا ۔ نازونعمت کے ماحول میں پل کر جوان ہوئی تو بنو خزاعہ کے ایک ابھرتے ہوئے جوان مسافع بن صفوان سے اس کی شادی کر دی گئی ۔ شب و روز عیش و عشرت سے گزر رہے تھے ،ہر روز روزِ عید اور ہر شب شبِ برات دیکھائی دے رہے تھے ۔
 
بنو مصطلق نے اسلامی ریاست کے پایہ تخت مدینہ منورہ کو ملیامیٹ کرنے کے لیے تیاری شروع کر دی ۔ دیگر قبائل سے رابطہ کر کے افرادی اور بارودی قوت میں اضافہ کیا ۔ جب اس کی اطلاع رسولِ اقدس ﷺتک پہنچی تو آپ نے صورتحال کا جائزہ لینے کے لیے اپنے جان نثار صحابی بریدہ بن حصیب رضی اللہ عنہ کو بھیجا تا کہ صحیح معلومات کی روشنی میں منصوبہ بندی کی جائے۔ یہ وہاں ان کے علاقے میں پہنچے۔ بنو مصطلق کے سردار حارث بن ابی ضرار اور دیگر چند سرکردہ افراد سے ملاقات کی۔ قبائلی جوانوں کی چہل پہل اور جنگی ساز و سامان کی فراوانی دیکھی۔ ان کے عزائم معلوم کئے۔ ہر ایک کے دل ودماغ پر لڑائی کا بھوت سوار تھا۔
 
بریدہ بن حصیب رضی اللہ عنہ نے واپس آ کر رسول اقدسﷺ کو وہاں کی صورت حال سے آگاہ کیا۔ ان کے خطرناک عزائم کی نشاندہی کی، جنگی ساز و سامان اور قبائلی جوانوں کی تیاری کی اطلاع دی تو رسول اقدسﷺ یہ باتیں سن کر چوکس ہوئے اور آپ نے مجاہدین کو تیاری کا حکم دے دیا۔ دیکھتے ہی دیکھتے سات سو افراد پر مشتمل لشکرِ اسلام روانگی کے لیے تیار ہو گیا۔ اس لشکر کی قیادت رسول اقدس ﷺنے خود کی۔ اس جہادی سفر میں سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا ہمراہ تھیں۔ اسی سفر میں واپسی پر ان کے گلے کا ہار گم ہوا تھا۔ جس کی تلاشی میں لشکر سے بچھڑنے کی بنا پر منافقین کے ہاتھ ایک بات آ گئی جسے خوب اچھالا گیا’ مدینہ منورہ کے ماحول میں ایک ارتعاش پیدا ہوا۔ مسلمان غم کی تصویر بنے ہوئے دیکھائی دیئے’ خود رسول اقدسﷺ انتہائی پریشان تھے۔ حتی کہ اللہ سبحانہ و تعالیٰ نے حضرت عائشہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کی بریت میں آسمان سے آیات نازل کیں جن کی تلاوت مسلمان چودہ صدیوں سے کر رہے ہیں اور قیامت تک کرتے رہیں گے۔
 
رسول اقدسﷺ نے لشکر اسلام کی قیادت کرتے ہوئے ۵ ہجری ماہِ شعبان میں بنو مصطلق کے اہم ترین مرکزی مقام مربع پر پڑاؤ کیا۔ یہاں پانی کا ذخیرہ تھا جسے بنو مصطلق پینے اور دیگر ضروریات کے لئے استعمال کیا کرتے تھے۔ آپ نے اسے اپنے قبضے میں لے لیا۔ میدان جنگ میں پانی کے مقام پر قبضہ کرنا رسول اقدسﷺ کی جنگی حکمت عملی کا ایک اہم ترین حصہ تھا۔
 
بنو مصطلق کے سردار حارث بن ابی ضرار کو لشکر اسلام کی اچانک آمد کا پتہ چلا تو اس کے اوسان خطا ہو گئے۔ اس کے دل پر اس قدر رعب طاری ہوا کہ وہ تھر تھر کانپنے لگا۔ دیگر قبائلی جوانوں نے اس کی یہ حالت دیکھی تو وہ بھی گھبرا گئے اور چشم زدن میں وہاں سے اپنی جانیں بچاتے ہوئے بھاگ گئے۔ سردار حارث بن ابی ضرار بھی خوف زدہ ہو کر روپوش ہو گیا۔ لیکن قبیلہ بنو مصطلق کے افراد خم ٹھونک کر میدان میں نکل آئے۔ رسول اقدسﷺ نے ان کی طرف اسلام قبول کرنے کا پیغام بھیجا کہ اگر تم لا الہ الا اللہ کا اقرار کرتے ہوئے دائرہ اسلام میں داخل ہو جاؤ تو تمہیں کچھ نہیں کہا جائے گا۔ یہ سب کچھ تمہاری ملکیت میں رہے گا۔ تمہارے جان و مال محفوظ رہیں گے۔ انہوں نے اسلام قبول کرنے کی بجائے مقابلہ کرنے کا اعلان کر دیا۔ بلکہ ایک ناعاقبت اندیش نے تیر چلا دیا جو ایک مجاہد کے جسم میں پیوست ہو گیا۔ پھر کیا تھا، لڑائی بھڑک اٹھی۔ رسول اقدسﷺ نے مجاہدین کو صف بندی کا خیال رکھتے ہوئے یکبارگی حملہ کرنے کا حکم دیا۔ دشمن میں سے کسی ایک کو بھی میدان سے بھاگنے کی مہلت نہ ملی۔ دس افراد موت کے گھاٹ اتار دیئے گئے اور باقی گرفتار کر لیے گئے۔ جویریہ بنت حارث کا خاوند مسافع بن صفوان بھی میدان جنگ میں قتل ہوا۔ تقریبا سات سو افراد قید کر لیے گئے۔ جن میں عورتیں بھی شامل تھیں، اس کے علاوہ دو ہزار اونٹ اور پانچ ہزار بکریاں بھی مالِ غنیمت کے طور پر ہاتھ لگیں۔
 
مدینہ منورہ پہنچ کر مالِ غنیمت کو مجاہدین میں تقسیم کر دیا گیا۔ مرد اور عورتیں غلام اور کنیزوں کی صورت میں تقسیم کر دیئے گئے۔ جویریہ بنت حارث مشہور و معروف صحابی ثابت بن قیس انصاری کے حصے میں آئی۔ حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ جب میں نے جویریہ کو دیکھا تو اس کے حسن و جمال اور چہرے کی تروتازگی کو دیکھ کر میں دنگ رہ گئی۔ چونکہ اس نے ناز و نعمت کے ماحول میں پرورش پائی تھی’ گفتگو کرنے کا سلیقہ اسے ورثے میں ملا تھا’ وہ موقع پاتے ہی رسول اقدسﷺ کی خدمت میں حاضر ہوئی اور عرض کی یا رسول اللہ آپ کو معلوم ہے کہ میں سردار کی بیٹی ہوں’ ناز و نعمت سے پلی ہوں’ اب حالات کی ستم ظریفی کے سبب بےدست و پا ہوں۔ سنہری تخت سے گر کر بستر خاک پر آن پڑی ہوں۔ میری آزادی کا معاہدہ نواوقیہ سونے کی ادائیگی کی بنیاد پر ثابت بن قیس انصاری کے ساتھ کر دیا گیا ہے۔ آپ جانتے ہیں کہ میں اتنی بڑی رقم کیسے ادا کر سکتی ہوں۔ میں یہ غلامی کی زندگی کیوں کر گزار سکوں گی۔یا رسول اللہﷺ مجھ ناتواں’ بےبس اور لاچار پر نظر کرم فرمائیں۔ آپ نے اس کی غم میں ڈوبی ہوئی گفتگو سن کر ارشاد فرمایا: “اگر میں یہ رقم ادا کر کے تمہیں غلامی سے آزاد کر دوں تو کیا تم میرے حرم میں ایک آزاد خاتون کی صورت میں آنا پسند کرو گی؟“ یہ پیشکش تو اس کے وہم و گمان میں ہی نہ تھی۔ آپ کی زبانِ مبارک سے یہ نورانی کلمات سنتے ہی وفور شوق سے کہا: مجھے اور کیا چاہیے یا رسول اللہﷺ میں راضی ہوں۔ مجھے یہ پیشکش بخوشی قبول ہے۔ آپ نے اسے آزاد کیا اور شادی کر لی۔ جب دیگر مجاہدین نے سنا کہ جویریہ بنت حارث نے ام المؤمنین بننے کا اعزاز حاصل کر لیا ہے تو بنو مصطلق قبیلے کے تمام غلام اور کنیزیں آزاد کر دیئے۔ اس طرح ام المومنین جویریہ بنت حارث رضی اللہ عنہا اپنی قوم کے لیے برکت کا باعث بن گئیں۔ ان کی وجہ سے تمام کو آزادی حاصل ہوئی۔

 
 ام المؤمنین حضرت جویریہ بنت حارث رضی اللہ عنہا کو دیکھتے ہی حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا نے ان کی تعریف کرتے ہوئے ارشاد فرمایا:
 
«كَانَتْ حُلْوَةٌ مَلَاحَةٌ»
 
*ترجمہ:* (وہ خوبصورت اور پری چہرہ تھی۔) یہ ام المؤمنین حضرت جویریہ بنت حارث کی فہم و فراست تھی کہ خاموشی اختیار کرنے کی بجائے جرآت کا مظاہرہ کرتے ہوئے رسول اقدسﷺ کی خدمت میں پہنچ کر برجستہ اپنی پریشان حالی کا اظہار کر دیا جس کے نتیجے میں انہیں ام المؤمنین بننے کا اعزاز حاصل ہوا اور اپنی قوم کے تمام افراد کو آزادی دلانے کا باعث بن گئیں۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے ایک بار اس عظیم المرتبت خاتون کا تذکرہ کرتے ہوئے ارشاد فرمایا:
 
 
*فما رأينَا امْرَأَةٌ أَعْظَمَ بَرَكَةً عَلَى قَوْمِهَا مِنْهَا فَلَقَدْ اعْتَقَ اللَّهُ تَعَالَى بهَا مِائَةَ أَهْلِ بَيْتٍ مِنْ بَنِي الْمُصْطَلَقِ*
 
*ترجمہ:* (ہم نے کوئی خاتون اس سے بڑھ کر اپنی قوم کے لیے باعث برکت نہ دیکھی۔ اللہ تعالیٰ نے اس کے ذریعے بنو مصطلق کے سینکڑوں افراد خانہ کو آزادی عطا کی۔)
 
حرم نبوی میں داخل ہونے سے پہلے حضرت جویریہ کا نام برۃ تھا۔ رسولِ اقدسﷺ نے اس کا نام بدل کر جویریہ رکھا۔ جیسا کہ ام المؤمنین حضرت زینب بنت جحش، ام المؤمنین میمونہ بنت حارث اور زینب بنت ام سلمہ کے نام بھی برة ہی تھے۔ یہ نئے نام رسول اقدسﷺ نے رکھے۔ امام بیہقی نے اپنی کتاب دلائل النبوۃ میں یہ روایت نقل کی ہے۔ 
 
 
 

*عَنْ أُمِّ الْمُؤْمِنِينَ جُوَيْرِيَّهِ رَضِيَ اللهُ عَنْهَا قَالَتْ: رَأَيْتُ قَبْلَ قُدُوْمِ النَّبِيِّ بِثَلَاثِ لَيَالِ كَانَ الْقَمَرُ يَسِيرُ مِنْ يَثْرِبَ حَتَّى وَقَعَ فِي حِجْرِى فَكَرِهْتُ أَنْ أَخْبَرَ أَحَدًا فَلَمَّا سَبِيْنَا رجوْتُ الرُّؤْيَا فَاعْتَقَنِي وَ تزوجنی*

 
*ترجمہ:* (ام المؤمنین جویریہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے۔ فرماتی ہیں کہ میں نے نبی اقدسﷺ کی آمد سے تین راتیں پہلے خواب میں دیکھا کہ چاند یثرب کی جانب سے چلتا ہوا آیا اور میری گود میں گر گیا۔ میں نے یہ خواب کسی کو بتانا پسند نہ کیا۔ جب ہم گرفتار ہوئے تو میں نے خواب کے پورا ہونے کی امید کی تو آپ نے مجھے آزاد کیا اور میرے ساتھ شادی کر لی۔)
 
علامہ ذہبی اپنی کتاب سیر اعلام النبلاء میں رقمطراز ہیں:
 
*قَالَتْ: تَزَوَّجَنِي رَسُوْلُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَ أَنَا بِنْتُ عِشْرِينَ سَنَة*
 
*ترجمہ:* (فرماتی ہیں کہ رسول اللہﷺ نے میرے ساتھ شادی کی جب کہ میری عمر بیس سال تھی۔)
 
علامہ ذہبی نے اپنی کتاب سیر اعلام النبلاء میں یہ بھی لکھا ہے:
 
*كَانَتْ مِنْ أَجمَلِ النِّسَاءِ*
 
*ترجمہ:* (جویریہ بنت حارث بہت خوبصورت خاتون تھی۔)
 
کچھ عرصہ بعد ان کا باپ حارث بن ابی ضرار اپنے قبیلے کے ان تمام افراد کے ساتھ جنہیں اس کی بیٹی جویریہ کے ام المؤمنین بننے کے سبب آزاد کر دیا گیا تھا’ رسول اقدسﷺ کی خدمت میں حاضر ہوا اور یہ سب لوگ دائرہ اسلام میں داخل ہو گئے۔ اس طرح حضرت جویریہ رضی اللہ عنہا کو یہ دوسرا اعزاز حاصل ہوا۔ پہلا اعزاز یہ تھا کہ ان کے سبب قوم کے افراد آزاد ہوئے اور دوسرا یہ کہ انہیں اسلام قبول کرنے کی سعادت نصیب ہوئی۔
 
 

 
ام المؤمنین حضرت جویریہ بنت حارث اکثر اوقات عبادت اور ذکر الہی میں مصروف رہتیں۔ انہوں نے اپنے گھر میں ایک جگہ عبادت کے لیے مخصوص کر رکھی تھی۔ رسول اقدسﷺ نے اسے وہاں صبح کے وقت ذکر الہی میں منہمک بیٹھے دیکھا۔ آپ دو پہر کو تشریف لائے تو وہ اسی طرح مراقبے میں بیٹھی تھی۔ آپ نے پوچھا کیا صبح سے اسی حالت میں بیٹھی ہو ؟ کہا: ہاں یا رسول اللہﷺ۔
آپ نے فرمایا: کیا میں تجھے چند کلمات سکھلاؤں وہ تم کہہ لیا کرو تمہارے لئے کافی ہوں گے۔وہ کلمات یہ ہیں۔

 
*سُبْحَانَ اللهِ عَدَدَ خَلْقِهِ* تین مرتبه
*سُبْحَانَ اللَّهِ رِضَا نَفْسِهِ* تین مرتبہ
*سُبْحَانَ اللَّهِ زِنَةَ عَرْشِهِ* تین مرتبه
*سُبْحَانَ اللَّهِ مِدَادَ كَلِمَاتِهِ* تین مرتبه
 
مسلم شریف اور ابوداؤد میں حضرت جویریہ رضی اللہ عنہا کے حوالے سے مروی ہے: *قالَتْ أَتَى عَلَى رَسُوْلُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ: لَقَدْ قُلْتُ بَعْدَكِ أَرْبَعَ كَلِمَاتٍ ثَلَاثَ مَرَّاتٍ لَوْ وُزنَتْ بِمَا قُلْتُ مُنذاليَوْمَ لَوَزَنَتُهُنَّ سُبْحَانَ اللَّهِ وَبِحَمْدِهِ عَدَدَ خَلْقِهِ وَ رِضًا نَفْسِهِ وَزِنَةَ عَرْشِهِ وَ مِدَادَ كَلِمَاتِهِ*
 
 
 
*ترجمہ:* (فرمایا: کہ میرے پاس رسول اللہﷺ تشریف لائے۔ اور ارشاد فرمایا: تیرے بعد میں نے چار کلمات تین تین مرتبہ کہے۔ اگر ان کو ترازو میں تولا جائے تو جو کچھ تو نے دن بھر میں پڑھا ہے ان سے ثواب میں بھاری ہو جائیں۔)
 
اور یہ ہیں: *سُبْحَانَ اللهِ وَبِحَمْدِهِ عَدَدَ خَلْقِهِ وَ رِضَا نَفْسِهِ وَ زِنَةَ عَرْشِهِ وَ مِدَادَ كَلِمَاتِهِ* طبقات ابن سعد میں مذکور ہے کہ رسول اقدسﷺ نے غزوہ خیبر کے مال غنیمت میں سے ام المؤمنین حضرت جویریہ بنت حارث کو ۸۰ وسق کھجور اور ۲۰ وسق جو عطا کیے۔ رسول اقدسﷺ کے اس دنیا سے کوچ کر جانے کے بعد خلیفہ اول حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ تمام ازواج مطہرات کے اخراجات کے لیے برابر رقم فراہم کیا کرتے تھے۔ حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے ازواج مطہرات کا وظیفہ ۱۲ ہزار درہم مقرر کر دیا۔ لیکن ام المؤمنین جویریہ بنت حارث اور ام المؤمنین صفیہ بنت حیی کا وظیفہ چھ چھ ہزار درہم مقرر کیا گیا۔ دونوں نے یہ وظیفہ لینے سے انکار کر دیا۔ حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے کہا میں نے دیگر ازواج مطہرات کا دو گنا وظیفہ ان کی ہجرت کی بنا پر مقرر کیا ہے۔ دونوں نے کہا نہیں آپ نے ان کے مرتبہ و مقام کو ہم سے ترجیح دیتے ہوئے ایسا کیا ہے۔
 
ام المؤمنین حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے فرمایا رسول اقدسﷺ ہم میں ہر چیز برابر تقسیم کیا کرتے تھے۔ یہ بات سن کر امیر المؤمنین حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے سب ازواج مطہرات کا وظیفہ برابر ۱۲ ہزار مقرر کر دیا۔ ام المؤمنین حضرت جویریہ بنت حارث رضی اللہ عنہا نے ستر سال کی عمر میں ۵۰ ہجری ماہ ربیع الاول کو امیر معاویہ بن ابی سفیان کے دور حکومت میں وفات پائی۔ مدینے کے گورنر مروان بن حکم نے نماز جنازہ پڑھائی اور انہیں جنت البقیع میں دفن کیا گیا۔
 

** ام المؤمنین حضرت جویریہ بنت حارث رضی اللہ عنہا کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لئے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں۔
 
 
۱- طبقات ابن سعد ۱۲۰/۱۱۶/۸
٢- الاستيعاب ٢٥١/٤-٢٥٤
٣- الاصابة ٢٥٧/٤
٤- المعرفة والتاريخ ٣٢٢/٣
ه- اسد الغابه ٥٦/٦-٥٨
٦- مستدرك حاكم ٢٥/٤-٢٨
۷- مجمع الزوائد ٢٥٩/٩
۸- العبر ۷/۱
٩- تهذيب التهذيب ٤٠٧/١٢
۱۰- شذرات الذهب ٢٥٧/١
۱۱- مسند ابی یعلی ۳۳/۱۳
۱۲- سیر اعلام النبلاء ٢٦١/٢
١٣- كنز العمال ٧٠٦/١٣
١٤ – صفة الصفوة ٤٩/٢
١٥- عيون الاثر ٣٨٣/٢
١٦- مختصر تاریخ دمشق ۲۷۱/۲
۱۷- دلائل النبوة بيهقى ٤٨/٤
۱۸- اعلام النساء ۲۲۷/۱
۱۹- جمهرة انساب العرب ٢٣٩/١
٢٠- تاريخ الطبرى ۱۰۹/۲
۲۱- الكامل لابن اثیر ١٩٢/٢
٢٢- السيرة الحلبية ۴۱۳/۳
٢٣- الروض الانف ٢٦٨/٤
٢٤- فتوح البلدان ۵۵۱
٢٥- انساب الاشراف ٣٤١/١
٢٦- تاريخ الخميس ۲۶۷/۱
۲۷- تهذيب الاسماء واللغات ٣٣٦/٢
۲۸- البدايه والنهايه ٤٩/٨
٢٩- الوافي بالوفيات ٢٢٦/١١
۳۰- الاعلام زرکلی ١٤٨/٢
٣١- نور الابصار ٤٨٠٤٧
٣٢- وفاء الوفاء ۳۱۴/۱
٣٣- المواهب اللدنيه ۲/ ۹۰۔۹۱
٣٤- سنن ابی داؤد ۳۹۳۱
٣٥- صحیح مسلم ٢٧٢٦
٣٦- فتح البارى ٢٧٣/٤ 

حواله:
“صحا بيات مبشرات”
محمود احمد غضنفر
Table of Contents