Sections
< All Topics
Print

12. DIN AUR RAAT KAY NAWAFIL [The Supererogatory Prayers to be performed per Day and Night]

DIN RAAT KE NAWAAFIL

 

1. Sunnate Muakkidah: “Jo Musalmaan Allah ke liye, farz namaazon ke elawah rozanah baarah (12) raka’aten nafil namaaz ada karta hai,Allah us ke liye jannat mein in ghor bana dete hain”.

[Muslim: 1693]

 

Aur Woh Baarah Raka’aten Yeh Hain:

 

  • Namaaz-e-Fajr 2 
  • Namaaz-e-Zuhar mein farz se pehle 2 aur farz kay B’ad  4 (Mokammal 6)
  • Namaaz-e-Maghrib  2
  • Namaaz-e-isha  2

     

Pyaare bhayi:

Agar aap jannat mein ghar chaahte hain? Toh Nabi (ﷺ) ki is naseehat par hameshgi karlo aur farzon ke elaawah mazkoorah baarah (12) rak’at ada kartay raho, Inshaa Allah jannat mein ghar tayyaar hoga.

[Muslim]

 

2. Namaaz-e-Zuhaa:

 

Yeh ek namaaz 360 (teen so saatth) sadqaat ke barabar hai. Is liye ki ek insaan ke jism mein 360 jod hain aur haddi apnay jod se ne’amat ka shukraana adaa karnay ke liye sadqah ki taalib hoti hai. Aur yeh zuhaa ki do rak’at ada kar dena saare jism ke jodon ke sadqah ke barabar hai.

Faaidah:

In do raka’at ka faaidah Sayyadna Abu Zar (رضي الله عنه)Allah Ke Rasool (ﷺ) se bayaan kartay hain ki unhon ne farmaya:

Tumhaare har ek ke liye laazim hai ki jism ke har jod ke badle sadqah kare, har tasbeeh sadqah hai, neki ka hukm sadqah hai, buraayi se mana’ karna sadqah hai, toh do rak’at namaaz-e-zuha ada kar dena in sab se kifaayat kar jaaye ga.

[Muslim: 1704]

 

Abu Hurairah (رضي الله عنه) farmaate hain:

Mere mehboob ne mujhe wasiyyat farmaayi:

Har maah teen roze rakhnay ki. Do raka’at zuha ada karnay ki aur Sone se pehle witr padh lene ki.

[Muslim: 1705]

 

Zuhaa Ki Namaaz Ka Waqt:

Sooraj tuloo’ honay ke 15 minute ba’d se Namaaz-e Zuhar se 15 minute pehle tak. Us ke ada karnay ka afzal waqt wah hai jab sooraj ki garmi shiddat ikhtiyaar karle. Is ki ta’daad: kam az kam 2 raka’at aur ziyadah se ziyadah 8 rak’at aur agar is se ziyadah bhi hotoh mana’ nahin.

 

3. Asr Ki Sunnat:

 

Pyaare Rasool (ﷺ) ka farmaan hai: Allah ta’aala us par raham farmaaye jisnay asr se pahle 4 raka’at ada keen.

[Abu Dawood: 1271, Tirmizi: 430]

 

4. Maghrib Ki Sunnat:

 

Pyaare Rasool (ﷺ) ka farmaan hai: Ke maghrib se pahle namaaz padhliya karo! Doosri martabah bhi yahi farmaya, phir teesri martabah farmaya: Jis ka dil chaahe (padh le, na chaahe na padhe)

[Bukhari: 1183]

 

5. Isha Ki Sunnat:

 

Pyaare Rasool (ﷺ) ka farmaan hai:

Har do azaanon (ya’ni azzaan aur iqaamat) ke darmiyaan namaaz hai. Har do azaanon ke darmiyaan namaaz hai. Har do azaanon ke darmiyaan namaaz hai. Teesri martabah farmaya: Jis ka jee chaahe (Azaan aur iqaamat ke darmiyaan 2 raka’t padh le aur na chaahe na padhe.)

[Bukhari: 624]

 

NAWAFIL KI ADAI GHAR MEIN:

 

1. Allah ke Rasool (ﷺ) ka farmaan hai:

 

Be shak aadmi ki behter namaaz woh hai jo ghar mein ada kare magar farz namaaz.

[Bukhari: 6113]

 

Is sunnat ko namaaze zuha, tahyyatul Masjid aur sunnate muakkidah waghairah ada karnay se din raat mein kitni da’fa apnaya jaa sakta hai. Har nafil namaaz ka ghar mein ada karnay ki aadat apna li jaaye toh sawaab bhi milega. Aur sunnat ki pairvi bhi hogi.
In nawafil ko ghar mein ada karnay ka faayidah yeh hai ke :

a) Insaan riya kaari se bachta hai, ekhlaas aata hai aur mukammal taur par ibaadat mein khushu’ wa khuzu’ naseeb hota hai.

b) Ghar mein Allah Subhahu wa ta’aala ki rahmat ke nuzool aur shaytaan ko bhagaane ka sabab banta hai.

c) Nawaafil ghar mein ada karnay se usi tarah sawaab ziyadah haasil karnay ka moqa’ muyassar aata hai, jaise farz namaaz masjid mein ada karnay ka.

 

REFERENCE:
BOOK: “Din aur Raat mein Hazar se bhi ziyadah Sunnatein”
TALEEF: Fazilatus Shaykh Khalid Al-Husaynaan.
URDU TARJUMA BY: Dr. Hafiz Mohammad Ishaaq Zahed.

 

The Supererogatory Prayers to be performed per Day and Night

 
1. The arranged Sunnahs, He (Peace be upon him) said:

 

In no way does a Muslim slave pray to Allah twelve rak’as (units of prayer) per day, except (that)
Allah builds a house for him in paradise, or (that) a house is built for him in paradise.

[Narrated by Muslim]

 

These are as follows:

Four rak’as before Asr (noon) prayer and two after it, two rak’as after Al-Maghreb (sunset) prayer, two rak’as after Al-Isha’ (evening) prayer and two rak’as before Al-Fajr (dawn)prayer.

 

My beloved brother:
Don’t you yearn for a house in paradise?
Preserve this Prophetic advice and pray twelve rak’as other than the obligatory prayers

 

2.  Ad-Duha (forenoon) prayer:

 

It is equal to [360] sadaqas (charitable deeds). Since, man’s body consists of [360] bones, therefore, each bone of them needs a sadaqa daily to be a sort of thanks (to Allah) for this blessing. Instead of all of this, two rak’as in the forenoon are sufficient.

Its’ two fruits:

As reported in the authentic narrations of Muslim, who quoted Abu-Dhar as saying that the Prophet (Peace be upon him) said:

Every morning, there becomes a sadaqa for every joint in anyone of you. Every glorification is a sadaqa, commanding beneficence is a sadaqa, forbidding malfeasance is a sadaqa and instead of this, two rak’as performed in the forenoon are sufficient.

 
Abu-Huraira(may Allah be pleased with him) was quoted as saying:

 

My fellow (Peace be upon him) enjoined me concerning fasting three days every month, the two rak’as of Ad-Duha and performing Al-Witr prayer before I go to bed). Agreed upon.

Its time:

It starts 15 minutes (quarter of an hour) after sunrise, until quarter of an hour before Athuhr (noon) prayer.

 

The best time to perform it:
When the heat of the sun intensifies.

Its number:
Its minimum number is two rak’as.
Its maximum (number):
Eight rak’as and it has been said that there is no limit for its maximum.

 

3. The Sunnah of Al-Asr (afternoon) prayer:

 

He (Peace be upon him) said:
May Allah have mercy on this who performs four rak’as
before Al-Asr (afternoon) prayer.

[Narrated by Abu-Dawoud and At Tirmidhi]

 

4. The Sunnah of Al-Maghreb (sunset) prayer:

 

He (Peace be upon him) said:
Perform prayer before Al-Maghreb, in the third time he
said: for this who wants.

[Narrated by Al-Bukhari]

 

5. The Sunnah of Al-Isha’ (evening) prayer:

 

He (Peace be upon him) said:
Between every two athans (calls to prayer) there is a prayer; between every two athans (calls to prayer) there is a prayer, between every two athans (calls to prayer) there is a prayer, in the third he said:
for this who wants). Agreed upon.

 

An-Nawawi said:
The meaning of the two athans: the athan (call to prayer) and Al-Iqamah (the call to start performing prayer)

 

 

REFERENCE:
BOOK: “1000 SUNNAH PER DAY & NGHT”

دن اور رات کی نفل نمازیں:

 

 

1.  فرائض سے پہلے اور بعد کی سنتیں:

 

ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے:

’’ کوئی بھی مسلمان بندہ جو ہر دن بارہ رکعات نمازِ نفل اللہ کی رضا کیلئے پڑھتا رہے تو اللہ تعالیٰ اس کیلئے جنت میں ایک گھر بنا دیتا ہے۔‘‘

[مسلم]

 

اور یہ بارہ رکعات درج ذیل ہیں:

 

چار ظہر سے پہلے اور دو اس کے بعد،دو مغرب کے بعد،دو عشاء کے بعداور دو فجر سے پہلے۔

میرے مسلمان بھائی ! کیا آپ کو جنت کا گھر پسند نہیں؟اگر ہے تو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی مذکورہ وصیت پر عمل کریں اور دن اور رات میں بارہ رکعات نماز نفل پڑھا کریں۔

 

2. چاشت کی نماز:

 

اِس نماز کا ایک بہت بڑا فائدہ یہ ہے کہ یہ(۳۶۰)صدقوں کے برابر ہوتی ہے۔جیسا کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشادگرامی ہے کہ ’’ تم میں سے ہر شخص کے ہر جوڑ پر ہر دن صدقہ کرنا ضروری ہے،”

لہذا ہرسبحان اللّٰه صدقہ ہے،ہر الحمد للّٰه صدقہ ہے،ہر لا إلہ إلا اللّٰه صدقہ ہے،ہراللّٰه اکبر صدقہ ہے،نیکی کا ہرحکم صدقہ ہوتا ہے اور برائی سے روکنا صدقہ ہے۔اور اس سب سے چاشت کی دو رکعات کافی ہو جاتی ہیں۔‘‘

[مسلم]

 

یہ بات معلوم ہے کہ انسان کے جسم میں ۳۶۰ جوڑ ہوتے ہیں تو ہر جوڑ کی طرف سے ہر روز کم از کم ایک صدقہ شکرانہ کے طور پرکرنا ضروری ہوتا ہے اور مذکورہ حدیث کے مطابق اگر چاشت کی دو رکعات ادا کر لی جائیں تو ۳۶۰ جوڑوں کی طرف سے صدقہ ادا ہوجاتا ہے۔

 

اور حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ:

 

’’ مجھے میرے خلیل صلی اللہ علیہ وسلم نے تین باتوں کی وصیت فرمائی تھی:ایک یہ کہ میں ہر ماہ میں تین روزے رکھوں اور دوسری یہ کہ چاشت کی دو رکعات پڑھوں اور تیسری یہ کہ وترسونے سے پہلے پڑھا کروں۔‘‘

[بخاری ومسلم]

 

چاشت کا وقت طلوعِ شمس کے پندرہ منٹ بعد شروع ہوتا ہے اور اذانِ ظہر سے تقریبا پندرہ منٹ پہلے تک جاری رہتا ہے۔اور اس کا افضل وقت وہ ہے جب سورج کی حرارت تیز ہو۔اور اس کی کم از کم رکعات دو اور زیادہ سے زیادہ آٹھ ہیں۔

 
3. عصر سے پہلے چار رکعات:

 

ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے:’’اس شخص پر اللہ کی رحمت ہو جو عصر سے پہلے چار رکعات پڑھے۔‘‘

[ابو داؤد،ترمذی]

 

4. مغرب سے پہلے دو رکعات:

 

ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے:’’مغرب سے پہلے نماز پڑھا کرو۔‘‘ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تین بار فرمایا اور تیسری بار اس کے ساتھ یہ بھی فرمایا:’’جس کا جی چاہے۔‘‘

[بخاری]

 

5. عشاء سے پہلے دو رکعات:

 

ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے:
’’ ہر دو اذانوں کے درمیان نماز ہوتی ہے۔‘‘آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تین بار فرمایااور تیسری مرتبہ اس کے ساتھ یہ بھی فرمایا:’’جس کا جی چاہے۔‘‘

[بخاری،مسلم]

 

امام نووی رحمہ اللہ کا کہنا ہے کہ دو اذانوں سے مراد اذان اور اقامت ہے۔

 

نوافل کی ادائیگی گھر میں:

 

٭ ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے:
’’بندے کی بہترین نماز وہ ہے جسے وہ گھر میں ادا کرے،سوائے فرض نماز کے۔‘‘

 

[بخاری،مسلم]

 

٭ نیز فرمایا:

 

’’ کسی شخص کی ایک ایسی نفل نماز جسے وہ اُس جگہ پر ادا کرے جہاں اسے لوگ نہ دیکھ سکتے ہوں اُن ۲۵ نمازوں کے برابر ہوتی ہے جنھیں وہ لوگوں کے سامنے ادا کرے۔‘‘

[ابو یعلی۔البانی نے اسے صحیح کہاہے)

 

٭ اسی طرح آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے:

’’انسان جو نماز گھر میں ادا کرے اس کی فضیلت لوگوں کے سامنے پڑھی گئی نماز پر ایسے ہوتی ہے جیسے فرض نماز کو نفل پر۔‘‘

[طبرانی۔البانی نے اسے حسن کہا ہے]

 

مذکورہ بالا احادیث کی بنا پر نفل نمازوں کو گھر میں پڑھنا چاہیے،چاہے وہ فرائض کی سنتیں ہوں یاچاشت کی نماز ہویا نمازِ وتر ہویا کوئی اور نفل نماز ہو،تاکہ زیادہ سے زیادہ ثواب حاصل ہو سکے۔

 

گھر میں نوافل کی ادائیگی سے درج ذیل فوائد حاصل ہوتے ہیں:

 

٭ اس سے نماز میں خشوع زیادہ ہوتا ہے اور انسان ریا کاری سے دور رہتا ہے۔
٭ گھر میں نماز پڑھنے سے گھر سے شیطان نکل جاتا ہے اور اس میں اللہ کی رحمت کا نزول ہوتا ہے۔

٭ نوافل کو گھر میں ادا کرنے سے ان کا ثواب کئی گنا بڑھ جاتا ہے،جیسا کہ فرض نماز کا ثواب مسجد میں ادا کرنے سے کئی گنا زیادہ ہو جاتا ہے۔

 

 

ريفرينس:
“دن اور رات ميں ۱۰۰۰ سے زياده سنتيں”
تاليف: “الشيخ خالد الحسينان”
اردو ترجمعه: “ڈاکٹر حافظ محمد اسحاق زاهد”

Table of Contents