Sections
< All Topics
Print

25. LOGON SE MULAQAAT KI SUNNATEIN [Sunnahs when Meeting People]

LOGON SE MULAQAAT KI SUNNATEIN

 
1. Salaam karna :

 

Allah ke Rasool (ﷺ) se sawaal kiya gaya: ke islaam mein konsi haalat behter hai?
Toh farmaya: khana khilana aur har shakhs ko salaam kahna, chaahe aap usko jaante hon yaa na jaantay hoon.

[Bukhari: 12,Muslim: 169]

 

Ek aadmi Nabi (ﷺ) ke paas aaya. usne kaha :
“Assalaamu Alaykum” Aap(ﷺ)ne uska jawaab diya,woh baithh gaya. Nabi (ﷺ) kaha (10) nekiyan mileen.
Phir doosra aaya usne kaha “Assalaamu Alaykum wa rahmatullahi wa barkatuh” Aap (ﷺ) ne uska jawaab diya. woh baitth gaya. Aap ne farmaya: (20) nekiyan mileen.
Phir aur ek aaya aur kahaa “Assalaamu Alaykum wa rahmatullahi wa barkatuh” Aap (ﷺ) ne uske salaam ka jawaab diya. woh baitth gaya Aapne farmaya: (30) nekiyan mileen.

[Abu Dawood: 5195, Tirmizi: 2689]

 

Sochne ka lamha: Zara hum sochen!

 

Ke woh hazraat jo salaam ke kalimaat bhi mukammal nahin kartay, kitna hi sawaab zaaye’ karchuke hain. Agar woh poore kalamaat kahen to kam az kam 30 nekiyaan toh milengi. Jab ke ek neki ka sawaab dus gunah milta hai. Is tarah majmoo’yi nekiyon ki ta’daad (300) banti hai, aur mumkin hai us se bhi ziyadah nekiyaan haasil karnay ka moqa’ mil jaaye.

Toh mere pyaare bhayi! Koshish yeh karen ke apni zubaan ko poora salaam lena ka aadi banayen taake uski barkaat aur uske ajre azeem se mahroomi na ho aur yeh salaam ke mawaqe’ umooman masjid mein jaate waqt jo log masjid mein baithhe hotay hain unko salaam kahna, aur un se alaahidgi ke waqt, ghar mein daakhil hote aur nikalte waqt salaam kahne mein kitna ajr milega aur mere bhayi yeh baat bhi yaad rakhkhen!

Masnoon hai ke jab bhi aap kisi se alaahidah hone lagen toh use mukammal kalimaat ke saath salaam kahen jaisa ke hadeese paak mein hai :
Jab koyi majlis mein aaye toh salaam kahe! Isi tarah jab woh uthne ka eradah kare toh salaam kahe pahli martabah ka doosre ki nisbat ziyadah haqq nahin rakhta.

 

[Abu Dawood: 5208, Tirmizi: 2706]

 

Yeh masjid mein aane jaane, ghar mein aane aur jaane mein salaam par muhaafizat karna taqreeban din raat mein (20) martabah sunnat par amal ka moqa’ mil jata hai. Aur kabhi kisi se raaste mein milne se aur telephone par baat kartay waqt aur uske elaawah bhi bahut se salaam kahne ke mawaqe’ muyassar aasakte hain jin ko zaaye’ karna sawaab se mahroomi hai.

 

2. Khandah peshaani se milna: Nabi (ﷺ) ne farmaya:

 

Kisi neki ko haqeer na samjho agar cheh tum apne bhayi ko hanste chehre se hi kyun na milo.

[Muslim: 6857]
 
3. Musafah karna :

 

Nabi akram (ﷺ) ne farmaya :
Koyi bhi do musalmaan aapas mein musafah kartay huye milen toh unke alaahidah hone se pahle unke gunah ma’aaf kar diye jaate hain.

[Dawood: 5212, Tirmizi: 2727,Maja: 3703]

 

Imaam Nawawi(رحمه الله)farmaate hain ke musafah karna har mulaqaat ke waqt mustahab hai.

Aye pyaare bhayi: Koshish karen: ke jab aap kisi se milen salaam kahen toh muskuraate chehre se musafah kartay huye milen. Isi tarah ek hi waqt mein teen sunnatein jama’ ho jayengi.

 

4. Achchhi baat karna :

 

Allah Rabbul izzat ka irshaad hai :

Aur mere bandon se kah dijiye ke woh bahut hi achchi baat munh se nikala karen, kyun ke shaytaan aapas mein fasaad daalata hai. Be shak shaitaan insaan ka khula dushman hai.

[Surah Isra: 53]

 

Aur Nabi akram (ﷺ) ne farmaya : Achchi baat karna sadqah hai.

[Bukhari: 2989, Muslim: 2382]

 

 
Achchi baat karna :

 

Is mein zikr bhi hai, du’a bhi, salaam bhi, ta’reef bhi, khush akhlaaqi aur insaan ki aadat wa kirdaar ki misaal aur izhaar bhi hai.

Achchhi baat karnay se insaan par jadu jaisi kaifiyat taari ho jaati hai. uska dil mutma’in hota hai aur woh khush rahta hai.

Achchhi baat karnay se ma’loom hota hai ke insaan ka dil roshan hai, rushdo hidaayat waala hai.

Aye mere dost! Kitna hi achchha ho? Ke hum apni zindagi subah se shaam tak achchi baat kartay guzaaren taake tamaam ahle khanah bade chhote, apnay aur paraaye bachche aur boodhe, dost ahbaab, rishte daar, padosi, khaadim wa ghairah gharz yeh ke jis se muaamlah karna ho us se achchhi baat kartay huye waastah pade. Sunne waala bhi achchhi baat kare. Aur hum bhi achchhi baat karna apni aadat banaa len.

 

REFERENCE:
BOOK: “Din aur Raat mein Hazar se bhi ziyadah Sunnatein”
TALEEF: Fazilatus Shaykh Khalid Al-Husaynaan.
URDU TARJUMA BY: Dr. Hafiz Mohammad Ishaaq Zahed.

Sunnahs when Meeting People

 

1. Salutation: (Salaam)

 

The Prophet (Peace be upon him) was asked: Which type of Islam is the best?

and he (Peace be upon him) answered: To feed people and salute the people you know or don’t know.

[Narrated by Al Bukhari and Imam Muslim]

 
A man approached the Prophet (Peace be upon him) and saluted him saying -Assalam Alaikum (peace upon you),
The Prophet (Peace be upon him) returned the salutation and after the man sat down, the Prophet said:
That was ten;
Then another man came and said Assalam Alaikum wa rahmatullah (peace and mercy of Allah upon you)
The Prophet (Peace be upon him) said:
That was twenty;
Then a third man came and said Assalam Alaikum wa rhamatullah wa barakatuhu (peace and mercy and blessings of Allah upon you)
The Prophet (Peace be upon him) said:
That was thirty.

[Narrated by Abu Dawood and recommended by At Tirmidhi]

Look how much reward the first two wasted because they didn’t say the whole Islamic salutation to get the complete reward of thirty good deeds. And as a good deed it is at least considered ten; the sum would
have been three hundred good deeds and might be more. As salutation take place many times a day; you should train yourself to utter the full Islamic salutation to get that great reward.

 

2. Smiling:

 

The Prophet (Peace be upon him) said:
Do not despise any good deed;
even meeting your brother with just a smile.

[Narrated by Imam Muslim]

 

3. Shaking hands:

 

Our Prophet (Peace be upon him) said:
 
Whenever two Muslims meet shaking the hands of each other, Allah would forgive them before their departure.

[Narrated by Abu Dawood, Al Tirmidhi and Ibn Majah]

An Nawawi said:
You should know that it is preferred to shake hands in every time they meet. So dears, try to shake hands with whoever you salute with a smiley face; thus you will be applying three sunnahs at once.

 

4. Allah says: And say to My bondmen (that) they say that which is fairest, (i.e., which is kindest) (for) surely Ash-Shaytan (The all-vicious, i.e., the Devil) incites (discord) between them. Surely Ash-Shaytan has been an evident enemy to man.

[Al Israa: 53]

 

And the Prophet (Peace be upon him) said: Kind words are charity.

[Narrated by Al Bukhari and Imam Muslim]

 

Kind words include:

 

Ath-thikr (remembrance of Allah), du›aa, salutation, rightful complementation, good manners, virtues and good deeds.
 
· Kind words are magical as they win others’ hearts.
 
· Kind words are proofs how enlightened the heart of the believer is.
 
So you should embrace your whole life with kind words; your spouse, children, neighbors, friends, servants and everyone you deal with needs kind words.

 

REFERENCE:
BOOK: “1000 SUNNAH PER DAY & NIGHT”

لوگوں سے میل ملاقات کی سنتیں

 

1.  سلام کہنا:

 

٭ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سوال کیا گیا کہ اسلام میں کونسا عمل سب سے بہتر ہے؟تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

’’یہ کہ تو کھانا کھلائے اور ہر جاننے اور نہ جاننے والے کو سلام کہے۔‘‘

[بخاری،مسلم]

 

٭ ’’ایک آدمی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس حاضر ہوا اور اس نے کہا:السلام علیکم۔توآپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کا جواب دیا،پھر وہ بیٹھ گیا۔آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:اس کیلئے دس نیکیاں ہیں۔پھر ایک اور آدمی آیا اور اس نے کہا:السلام علیکم ورحمۃ اللّٰه۔تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کا جواب دیا پھر وہ بھی بیٹھ گیا۔آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:اس کیلئے بیس نیکیاں ہیں۔پھر ایک اور آدمی آیااور اس نے کہا:السلام علیکم ورحمۃ اللّٰه وبرکاتہ۔توآپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کا جواب دیاپھر وہ بھی بیٹھ گیا۔آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:اس کیلئے تیس نیکیاں ہیں۔‘‘

[ابو داؤد،ترمذی:حسن]

 

غور فرمائیں،اللہ آپ کی حفاظت فرمائے ! جو شخص پورا سلام نہیں کہتا وہ کتنا زیادہ اجر ضائع کر بیٹھتا ہے۔اگر وہ پورا سلام(السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ)کہے تو اسے تیس نیکیاں ملتی ہیں اور ایک نیکی دس نیکیوں کے برابر ہوتی ہے۔گویا ایک مرتبہ پورا سلام کہنے سے ۳۰۰ نیکیوں کا ثواب ملتا ہے اور اگر اللہ چاہے تو اس سے بھی زیادہ عطا کرسکتا ہے۔لہذا اپنی زبان کو پورا سلام کہنے کا عادی بنائیں تاکہ اتنا بڑا اجروثواب حاصل ہو سکے۔

اور مسلمان دن اور رات میں کئی مرتبہ سلام کہتا ہے،جب مسجدمیں داخل ہو تو متعدد نمازیوں کو سلام کہنے کا موقعہ ملتا ہے،اسی طرح جب ان سے جدا ہوتب بھی انھیں سلام کہے،اسی طرح گھر میں آتے ہوئے اور پھر باہر جاتے ہوئے بھی سلام کہے۔ان تمام موقعوں پر اگرپورا سلام کہا جائے تو آپ اندازہ کرسکتے ہیں کہ کتنا زیادہ ثواب صرف اسی سلام کے ذریعے حاصل کیا جا سکتا ہے !!
اور یہ بات نہ بھولیں کہ جس طرح ملاقات کے وقت سلام کہنا مسنون ہے اسی طرح جدائی کے وقت بھی پورا سلام کہنا سنت ہے۔

ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے:

 

’’ تم میں سے کوئی شخص جب کسی مجلس میں جائے تو سلام کہے اور جب وہاں سے جانا چاہے تو بھی سلام کہے کیونکہ ملاقات جدائی سے زیادہ سلام کاحق نہیں رکھتی۔‘‘

 

[ابو داؤد،ترمذی]

 

انسان اگر ہر نماز کے وقت سلام کا اہتمام کرے تو وہ دن اور رات میں بیس مرتبہ سلام کہہ سکتا ہے۔پانچ مرتبہ گھر سے جاتے ہوئے،پانچ مرتبہ مسجد میں داخل ہوتے ہوئے،پانچ مرتبہ مسجد سے نکلتے ہوئے اور پانچ مرتبہ گھر میں داخل ہوتے ہوئے۔جبکہ چوبیس گھنٹوں میں انسان کو کئی اور مقاصد کیلئے بھی گھر سے باہر جانا اور واپس آنا پڑتا ہے اور کئی لوگوں سے ہمکلام ہونے کا بھی موقعہ ملتا ہے اور کئی اور احباب سے فون پر بھی اس کا رابطہ ہوتا ہے توایسے تمام مواقع پر پورا سلام کہہ کر وہ بہت زیادہ نیکیاں کما سکتا ہے۔

 

2.  چہرے پر مسکراہٹ لانا:ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے:

 

’’ نیکی کے کسی کام کو حقیر مت سمجھو،خواہ تم اپنے بھائی کو مسکراتے ہوئے چہرے کے ساتھ ہی ملو۔‘‘

 

[مسلم]

 

3. مصافحہ کرنا:ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے:

 

’’ دو مسلمان ملاقات کے وقت جب مصافحہ کرتے ہیں تو جدا ہونے سے پہلے ہی ان کے گناہ معاف کردئے جاتے ہیں۔‘‘

 

[ابو داؤد،ترمذی،ابن ماجہ]

 

امام نووی رحمہ اللہ کہتے ہیں کہ ہر ملاقات کے وقت مصافحہ کرنا مستحب ہے۔تو جب بھی کسی مسلمان سے آپ کی ملاقات ہو آپ درج بالا تین سنتوں پر عمل کرکے بہت زیادہ ثواب حاصل کرسکتے ہیں۔

 

4 اچھی بات کرنا:فرمان الٰہی ہے:

 

﴿وَقُلْ لِّعِبَادِیْ یَقُوْلُوا الَّتِیْ ھِیَ اَحْسَنُ اِنَّ الشَّیْطٰنَ یَنْزَغُ بَیْنَھُمْ اِنَّ الشَّیْطٰنَ کَانَ لِلْاِنْسَانِ عَدُوًّا مُّبِیْنًا﴾

 

’’ اور میرے بندوں سے کہہ دیجئے کہ وہ بہت ہی اچھی بات منہ سے نکالا کریں،کیونکہ شیطان آپس میں فساد ڈلواتا ہے۔بے شک شیطان انسان کا کھلا دشمن ہے۔‘‘

[الإسراء:۵۳]

 

اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے:
’’ اچھی بات کرنا صدقہ ہے۔‘‘

[بخاری،مسلم]

 

٭ اچھی بات میں ذکرکرنا،دعا کرنا،سلام کہنا،برحق تعریف کرنا،نیکی کا حکم دینا،سچ بولنااور نصیحت کرنا وغیرہ سب شامل ہیں۔
٭ اچھی بات انسان پر جادو جیسا عمل کرتی ہے اور اسے راحت واطمینان پہنچاتی ہے۔
٭ اچھی بات اِس کی دلیل ہوتی ہے کہ اس انسان کا دل نورِ ایمان اور ہدایت سے بھرا ہوا ہے۔

 

لہذا ہر انسان کو چاہیے کہ وہ اچھی بات کو اپنی زندگی کا اوڑھنا بچھونا بنائے۔اپنی بیوی،اپنی اولاد،اپنے پڑوسی،اپنے دوست،اپنے ماتحت ملازمین اور الغرض ان تمام لوگوں کے ساتھ اچھی بات کو معمول بنائے جن کے ساتھ اس کا دن اور رات میں کئی مرتبہ میل ملاپ ہوتا ہے۔

 

ريفرينس:
“دن اور رات ميں ۱۰۰۰ سے زياده سنتيں”
تاليف: “الشيخ خالد الحسينان”
اردو ترجمعه: “ڈاکٹر حافظ محمد اسحاق زاهد”
Table of Contents