Sections
< All Topics
Print

11. NAZRON KI HIFAZAT KA HUKM-E-ILAAHI

NAZRON KI HIFAZAT KA HUKM-E-ILAAHI:

 

Allah Subhaanahu Wa Ta’aala ne Kitaab-e-Azeez mein nazren bachane ka hukm diya hai jiski do (2) qismen hai:

 

  1. Sharmgaah se nazar bachana.
  2. Mahal-e-shahwat se nazar bachana.
 

Pehli qism ki misaal hai keh aik mard dusre mard ki sharmgaah se apni nazren bachae jaisa keh Rasool Allah (ﷺ) ne irshad farmaaya keh:

((لا ينظر الرجل إلى عورة الرجل ولا تنظر المرأة إلى عورة المرأة))

 

“Yani na tou mard kisi dusre mard ki sharmgaah ko dekhe aur na aurat kisi dusri aurat ki sharmgaah ko dekhe.”

[Sahih Muslim]

 

Chunancheh har aik par wajib hai keh apni satar poshi ka poora poora ehtemam kare- Aap (ﷺ) ne Hazrat Muad bin Haidah (رضي الله عنه) se farmaaya:

 

((احفظ عورتك إلا عن زوجتك أو ما ملكت يمينك))

 

“Yani apni biwiyon aur laundiyon ke siwa har aik se apni sharmgaah ki hifazat karo.”

 

Woh bayan farmaate hai keh main ne arz ki: “Ae Allah ke Rasool (ﷺ), agar hum apne saathiyon ke saath hon, tab bhi?”. Aap (ﷺ) ne irshad farmaaya:

 

(إن استطعت أن لا يزينها أحد فلا يزينها)

 

“Agar tere bas mein ho keh koi teri sharmgaah na dekh pae tou kisi ko dekhne ka mouqa na de.”

 

Phir main ne arz ki: “Agar koi akela hi ho tou kiya hukm hai?”. Aap (ﷺ) ne farmaaya:

 

“الله أحق أن يستحي منه من الناس”

 

“Aam logon ke muqabile mein Allah Ta’aala se sharm karna zyada zaruri hai.”

[Sunnan Abu Dawood: Kitaab Ul Hammam : 4017; Tirmidhi: 2794]

 

 

 

REFERENCE:
BOOK: MASAIYL-E-SATAR-O-HIJAAB
TALEEF: SHAYKH UL ISLAM IBN TAYMIYYAH(رحمه الله)
URDU TARJUMA BY: SHAYKH MAQSOOD AL HASAN FAIZI HAFIZULLAH

 

 

نظروں کی حفاظت کا حکم الہی

 

اللہ سبحانہ و تعالی نے کتاب عزیز میں نظر میں بچانے کا حکم دیا ہے جس کی دو قسمیں ہیں:

(۱) شرم گاہ سے نظر بچانا۔

(۲) محل شہوت سے نظر بچانا۔

پہلی قسم کی مثال ہے کہ ایک مرد دوسرے مرد کی شرمگاہ سے اپنی نظر بچاۓ جیسا کہ آنحضرت نئی نظم نے ارشاد فر مایا کہ:

((لا ينظر الرجل إلى عورة الرجل ولا تنظر المرأة إلى عورة المرأة))

” یعنی نہ تو مردکسی دوسرے مرد کی شرمگاہ کو دیکھے اور نہ عورت کسی دوسری عورت کی شرمگاہ کو دیکھے”

[صحیح مسلم،کتاب الطهارة، باب تحريم النظر إلى العورات: ۳۳۸]

 

چنانچہ ہرشخص پر واجب ہے کہ اپنی ستر پوشی کا پوا پورا اہتمام کرے۔

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت معاویہ بن حیدہ رضی اللہ عنہ سے سے فرمایا:

((احفظ عورتك إلا عن زوجتك أو ما ملكت يمينك))

” یعنی اپنی بیوی اور لونڈی کے سوا ہر ایک سے اپنی شرمگاہ کی حفاظت کرو ۔ 

وہ بیان فرماتے ہیں کہ میں نے عرض کیا: اے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اگر ہم اپنے ساتھیوں کے ساتھ ہوں تب بھی؟

آپ ﷺ نے ارشادفرمایا: ((إن استطعت أن لا يزينها أحد فلا يزينها)

’اگر تیرے بس میں ہو کہ کوئی تیری شرمگاہ نہ دیکھ پاۓ تو کسی کو دیکھنے کا موقع نہ دے.

 

پھر میں نے عرض کیا: اگر کوئی اکیلا ہی ہو تو کیا حکم ہے؟ آپ ﷺ نے فرمایا:

“الله أحق أن يستحي منه من الناس”

عام لوگوں کے مقابلے میں اللہ تعالی سے شرم کرنا زیادہ ضروری ہے ۔

 [سنن ابی داود]

 

 

Table of Contents