Sections
< All Topics
Print

15. NAZAR KI HIFAZAT KE FAWAID:

NAZAR KI HIFAZAT KE FAWAID:

 

Jin suraton ko dekhna haram hai jaise aurat aur khubsurat nabaligh larka wagherah un se nazar pher lene se teen barhe ahm fawaid hasil hote hain:

 
  1. Imaan ki chaashni aur lazzat, Jo Allah ke waaste chhori hui is behuda lazzat se bohat hi sheereen aur behtar hai.

Chunancheh Allah ke Rasool (ﷺ) ka farmaan hai:

من تركَ شيئًا للهِ ، عوَّضهُ اللهُ خيرًا منه

 

“Jo shakhs koi cheez sirf Allah ke liye chhor deta hai tou Allah Ta’aala us ke badle us se behtar cheez ata farmaata hai.”

 

 
  1. Dusra faida yeh hai keh is se dil mein noor aur farasat paida hoti hain- Qaum-e-loot ke muta’alliq irshad-e-Baari Ta’aala:
 
لَعَمۡرُکَ اِنَّہُمۡ لَفِیۡ سَکۡرَتِہِمۡ یَعۡمَہُوۡنَ ﴿۷۲

 

“Teri jaan ki qasm yeh log apne nashe mein madhosh hain.”

[Surah Hijr: 15:72]

 

Maloom hua keh mazkurah baala suraton se lagao, aql ke andar fasaad, kotah nazri aur dil ki madhoshi balkeh junoon ka sabab ban jata hai- Isiliye Allah Ta’aala ne aankhon ko bacha kar rakhne waali ayaat ke ba’ad Ayat-e-Noor ka zikr farmaaya hai:

 

ٱللَّهُ نُورُ ٱلسَّمَٰوَٰتِ وَٱلْأَرْضِ ۚ

 

“Allah Ta’aala zameen o asmaan ka noor hai.”

[SURAH NOOR:24: 35]

 

Shah bin Shujah al karmaani (1) ki farasat aur doorbeeni kabhi ghalati nahi karti thi. Woh farmaate the: “Jisne apne zahir ko sunnat ki pairvi se sajaya, batin par hamesha pardah daari rakhi, apni nazar ko hamesha haram se mehfooz rakha , nafs ko shahwat se bachae rakha, uske baad aik panchi cheez ka zikr farmaaya ghaliban akl e halal hai tou iski farasat e nazar kabhi ghalati nahi karsakti.”

Aur Allah Ta’aala ka dastur hai keh woh bande ko uske jins e aml se badla deta hai jo shakhs apni nazar par pehra daari rakhta hai- Allah Ta’aala uski noor-e-baseerat ko aur jila deta hai, ilm o ma’arifat ka darwaza uspar khol deta hai aur is qism ki aur bohat si cheezen jinka ta’alluq qalbi baseerat se hota hai bande ko hasil ho jaati hain.

  1. Teesra Faida: Nazar ko fawahish se mehfooz rakhne ka teesra faida, dil ki quwwat, saabit qadmi, pukhta azmi aur dilairi ka husool hai. Aise bande ko Allah Ta’aala quwwat-e-daleel ke sath sath baseerat bhi ata farmaata hai, Chunancheh khwahishat-e-nafs ko pachhar dene waale bande ke saye se shaitaan bhi bhaagta hai- Jabkeh jo aseer e hawas ho, uske andar zillat e nafs, buzdili aur khissat wa ihaanat jaisi kamzoriyan pai jaati hain jinhen Allah Ta’aala ne apne nafarmaanon ke liye saza bana rakha hai.

Yeh Dastur-e-Rabb e Zuljalal hai keh Us ne izzat Apne ita’at guzar bandon ke liye aur Zillat o khawari apne nafarmaanon ke liye likh rakhi hai- Irshad-e-Baari Ta’aala:

 

یَقُوۡلُوۡنَ  لَئِنۡ  رَّجَعۡنَاۤ  اِلَی  الۡمَدِیۡنَۃِ لَیُخۡرِجَنَّ الۡاَعَزُّ  مِنۡہَا الۡاَذَلَّ ؕ وَ لِلّٰہِ الۡعِزَّۃُ  وَ لِرَسُوۡلِہٖ وَ لِلۡمُؤۡمِنِیۡنَ

 

“Yeh munafiqeen kehte hain keh hum Madinah wapis pohanch jaen tou jo izzat waala hai woh zaleel ko wahan se bahir kare ga- Halankeh izzat tou Allah, Us ke Rasool (ﷺ) aur Momineen ke liye hai.”

[Surah Munafiqoon: 63:08]

 

Dusri jagah irshad farmaaya:

 

وَ لَا تَہِنُوۡا وَ لَا تَحۡزَنُوۡا وَ اَنۡتُمُ الۡاَعۡلَوۡنَ  اِنۡ  کُنۡتُمۡ مُّؤۡمِنِیۡنَ ﴿۱۳۹

 

“Dil shikastah na ho gham na karo agar tum monin ho tou tum hi ghalib raho ge.”

[Surah Aal e Imraan: 02:139]

 

Isiliye ulema ka kehna hai keh log badshahon ke darwaze par izzat talaash karte hain halakeh woh sirf Allah ki ata’at mein hai. Hasan Basri (رحمه الله) farmaate hain keh  agarcheh umda sadhae hue ghore unhen tezi se le urain aur apni taapon ke saath unhen le kar aage barhen lekin zillat aur ruswae unki gardanon par sawar rahe gi- Allah Ta’aala ka yeh atal faisla hai keh woh Apne nafarmaanon ko ruswa kare ga, Jisne Allah Ta’aala ki ita’at ki, Allah Ta’aala ne us ita’at waale kaam mein us se dosti ki aur jisne Us ki nafarmaani ki tou us se baqadr e ma’asiyat dushmani ki.

 

Aur Dua-e-Qunoot mein warid hai:

إنه لَا يَذِلُّ مَنْ وَالَيْتَ، وَلَا يَعِزُّ مَنْ عَادَيْتَ 

 

“Jiski Ae Allah, Tu ne sar parasti ki woh ruswa nahi hosakta aur jis se Tu ne dushmani ki woh izzat nahi pa sakta.”

 

Aur burai ke dildada jo apni nazar neechi nahi rakhte aur apni sharmgaahon ki hifazat nahi karte Allah Tabarak wa Ta’aala ne in ausaaf-e-hameedah ke bar aks bemaariyon se mousuf kiya hai, yani masti main mubtala andhe pan ka shikar, jahil, be aql, gumraah, bughz o hasad mein ghere hue aur baseerat se mehrum, mazeed baraan unhen khabees, fasiq, hadd se tajawuz karne waala, apne uppar zyadati karne waala, mufsid-o-mujrim, burai ka shikar, aur fahashi mein mubtila wagherah qarar diya hai- Chunancheh Qaum-e-lut ke muta’alliq  irshad hai:

 

ؕ بَلۡ  اَنۡتُمۡ  قَوۡمٌ  تَجۡہَلُوۡنَ ﴿۵۵

 

“Tum log parle darje ke jahil ho.” 

[Surah Namal: 27:55]

 

Is ayat-e-mubarakah mein unhen jahil kaha gaya hai- unhi se muta’alliq aik aur jagah irshad hai:

 

لَعَمۡرُکَ اِنَّہُمۡ لَفِیۡ سَکۡرَتِہِمۡ یَعۡمَہُوۡنَ ﴿۷۲

 

“Teri umr ki qasm woh log apne nashe mein madhosh hai.”

[Surah Hijr: 15:72]

 

Aik aur jagah irshad hai:

 

ؕ اَلَـیۡسَ مِنۡکُمۡ  رَجُلٌ  رَّشِیۡدٌ ﴿۷۸

 

“Kiya tum meim aik bhi naik chalan nahi hai.”

[Surah Hud: 11:78]

 

Aik aur jagah irshad hai:

 

 فَطَمَسۡنَاۤ اَعۡیُنَہُمۡ

 

“”Tou Hum ne unki aankhen benoor kardeen.”

[Surah Qamar: 54:37]

 

Aik aur jagah irshad hai:

 

ؕ بَلۡ  اَنۡتُمۡ  قَوۡمٌ  مُّسۡرِفُوۡنَ ﴿۸۱

 

“Tum log hadd se tajawuz karne waale ho.”

[Surah A’raaf: 07:81]

 

Aik aur jagah irshad hai:

 

فَانۡظُرۡ  کَیۡفَ کَانَ عَاقِبَۃُ  الۡمُجۡرِمِیۡنَ ﴿٪۸۴

 

“Phir dekho mujrimon ka anjaam kaisa hua.”

[Surah A’raaf: 07:84]

 

Neez irshad hai:

 

اِنَّہُمۡ کَانُوۡا قَوۡمَ سَوۡءٍ فٰسِقِیۡنَ ﴿ۙ۷۴

 

“Woh log bohat hi bure aur nafarmaan the.” 

[Surah Anbiya: 21:74]

 

Neez irshad farmaaya:

 

اَئِنَّکُمۡ لَتَاۡتُوۡنَ الرِّجَالَ وَ تَقۡطَعُوۡنَ السَّبِیۡلَ   ۬ ۙ وَ تَاۡتُوۡنَ فِیۡ نَادِیۡکُمُ الۡمُنۡکَرَ ؕ

 

“Kiya tumlog shahwat raani ke liye auraton ko chhor kar mardon ke paas jaate ho, rah zani karte ho aur apni majlison mein bura kaam karte ho.”

[Surah ‘Ankaboot: 29:29]

 

Isi surat main aage farmaaya keh:

 

انۡصُرۡنِیۡ عَلَی الۡقَوۡمِ الۡمُفۡسِدِیۡنَ ﴿۳۰﴾٪       

 

“Ae mere Rab! Shareer logon ke muqabile mein meri madad farmaa.”

Aur aage farmaaya:

 

بِمَا کَانُوۡا یَفۡسُقُوۡنَ ﴿۳۴

 

“Yani unki nafarmaani ki padaash mein un ke upar asmaan se aafat utaari gai.”

[Surah ‘Ankaboot: 29:34]

 

Aur irshad hua:

 

مُّسَوَّمَۃً  عِنۡدَ رَبِّکَ  لِلۡمُسۡرِفِیۡنَ ﴿۳۴

 

“Hadd se guzarne waalon ke liye woh pathar tere Rab ki tarf se nishaan zadah the.”

[Surah Zariyaat: 51: 34]

 

Balkeh kabhi aisa bhi hota hain keh nazar baazi aur launde baazi shirk tak pohancha deti hai- Jaise keh Irshad-e-Baari Ta’aala hai:

 

وَ مِنَ النَّاسِ مَنۡ یَّتَّخِذُ مِنۡ دُوۡنِ اللّٰہِ اَنۡدَادًا یُّحِبُّوۡنَہُمۡ کَحُبِّ اللّٰہِ ؕ

 

“Aur kuchh log aise bhi hain jo Allah ke siva Us ka hamsar aur mad e muqabil bana lete hain aur unse aisi mohabbat karte hain jaise keh Allah se mohabbat karni chahye.” 

[Surah Baqarah: 02:165]

 

Isiliye suraton ka ishq usi waqt paida hota hai jab dil main Allah ki mohabbat aur imaan kamzor parh jae- Chunancheh Allah Ta’aala ne aisi walihana mohabbat ka zikr Qur’an-e-Azeez main ya tou azeez e misr ki mushrikah ke muta’alliq ya Lut (علیہ السلام) ki mushrik qaum ke muta’alliq kiya hai- Yeh haqeeqat hai keh ashiq apne ma’shuq ka ghulam, is ke ishare par naachne waala aur dil se us ka aseer hojata hai.

Wallahu a’lam.

 
(1) (Aap ki kuniyat Abul Foras hai. Shahi khandan se ta’alluq rakhte the- lekin tamam duniyavi ne’maten ko chhor kar tan man se zuhd ke raste par lag gae- 270 hijri ke baad aap ki waffat hui.

[Hulyatul awliya: 10/238]
REFERENCE:
BOOK: MASAIYL-E-SATAR-O-HIJAAB
TALEEF: SHAYKH UL ISLAM IBN TAYMIYYAH(رحمه الله)
URDU TARJUMA BY: SHAYKH MAQSOOD AL HASAN FAIZI HAFIZULLAH

 

 

نظر کی حفاظت کے فوائد:

جن صورتوں کا دیکھنا حرام ہے جیسے عورت اور خوبصورت نا بالغ لڑکا وغیرہ ان سے نظر پھیر لینے سے تین بڑے اہم فائدے حاصل ہوتے ہیں:

  1. ایمان کی چاشنی اور لذت، جواللہ کے واسطے چھوڑی ہوئی اس بیہودہ لذت سےبہت ہی شیر یں اور بہتر ہے۔ 

چنانچہ اللہ کے رسول ﷺ کا ارشاد ہے:

((من ترك شيئا لله عوضه الله خيرا منه)

” جو شخص کوئی چیز صرف اللہ کے لیے چھوڑ دیتا ہے تو اللہ تعالی اس کے بدلے اس سے بہتر چیز عطافرماتا ہے ۔‘‘

[صحیح) مسند احمد: ٢٣٠٧٤؛ ایک صحابی سے مروی ہے کہ اللہ کے رسول ما نے ارشادفرمایا:
(رائك لن تدع شيئا لله عز وجل إلا بذلك الله به ما هو خير لك»
“اگر تم کوئی چیز صرف اللہ رب العزت کے لیے چھوڑ دو گے تو اللہ اس کے بدلے اس سے بہتر چیز تمہیں عطا کرے گا]

2.  دوسرا فائدہ یہ ہے کہ اس سے دل میں نوراورفراست پیدا ہوتی ہے۔ قوم لوط کے متعلق ارشاد باری تعالی ہے:

لَعَمۡرُکَ اِنَّہُمۡ لَفِیۡ سَکۡرَتِہِمۡ یَعۡمَہُوۡنَ ﴿۷۲﴾

 ’’ تیری جان کی قسم می لوگ اپنے نشے میں مدہوش ہیں ۔”

[الحجر: ۷۲۔]

معلوم ہوا کہ مذکورہ بالا صورتوں سے لگاؤ عقل کے اندرفساد،کوتاہ نظری اور دل وغیرہ کی مدہوشی بلکہ جنون کا سبب بن جا تا ہے۔ اس لیے اللہ تعالی نے آنکھوں کو بچا کر رکھنے والی آیت کے بعد آیت نور کا ذکرفرمایا ہے:
( الله نور السموات والأرض)

’’اللہ تعالی زمین و آسمان کا نور ہے ۔‘‘

شاہ بن شجاع الکرمانی[1] کی فراست اور دور بینی کبھی غلطی نہیں کرتی تھی وہ فرماتے تھے :جس نے اپنے ظاہر کو سنت کی پیروی سے سجایا ، باطن پر ہمیشہ پہرہ داری رکھی ، اپنی نظر کو حرام سے محفوظ رکھا نفس کو شہوات سے بچائے رکھا، اس کے بعد ایک پانچو یں چیز کا ذکر فر ما یا غالباً اکل حلال ہے تو اس کی فراست نظر بھی غلطی نہیں کر سکتی ۔ 

اور اللہ تعالی کا دستور ہے کہ وہ بندے کو اس کے جنس عمل سے بدلہ دیتا ہے جو شخص اپنی نظر پر پہرہ داری رکھتا ہے ۔ اللہ تعالی اس کی نور بصیرت کو اور جلا دیتا ہے علم ومعرفت کا دروازہ اس پر کھول دیتا ہے اور اس قسم کی اور بہت سی چیزیں جن کا تعلق قلبی بصیرت سے ہوتا ہے بندے کو حاصل ہوجاتی ہیں ۔

3. نظر کوفواحش سے محفوظ رکھنے کا تیسرا فائد ہ ، دل کی قوت ، ثابت قدمی ، پختہ عزمی اور دلیری کا حصول ہے، ایسے بندے کو اللہ تعالی قوت دلیل کے ساتھ ساتھ بصیرت بھی عطافرماتا ہے، چنانچہ خواہشات نفس کو پچھاڑ دینے والے بندے کے ساۓ سے شیطان بھی بھاگتا ہے ۔ جبکہ وہ شخص جو اسیر ہوسں ہو ، اس کے اندر ذلت نفس ، بزدلی اور خست و اہانت جیسی کمزوریاں پائی جاتی ہیں جنہیں اللہ تبارک و تعالی نے اپنے نافرمانوں کے لیے سزا بنارکھا ہے۔

 

یہ دستور رب ذوالجلال ہے کہ اس نے عزت اپنے اطاعت گزار بندوں کے لیے اور ذلت وخواری اپنے نافرمانوں کے لیے لکھ رکھی ہے ۔ ارشاد باری تعالی ہے

(یَقُوۡلُوۡنَ لَئِنۡ رَّجَعۡنَاۤ اِلَی الۡمَدِیۡنَۃِ لَیُخۡرِجَنَّ الۡاَعَزُّ مِنۡہَا الۡاَذَلَّ ؕ وَ لِلّٰہِ الۡعِزَّۃُ وَ لِرَسُوۡلِہٖ وَ لِلۡمُؤۡمِنِیۡنَ ﴿۸﴾)

 ’’یہ منافق کہتے ہیں کہ ہم مدینہ واپس پہنچ جائیں تو جو عزت والا ہے وہ ذلیل کو وہاں سے باہر کرے گا۔ حالانکہ عزت تو اللہ ، اس کے رسول صل اللہ علیہ السلام اور مومنین کے لیے ہے ۔”

[63/ المنافقون: ٨]

دوسری جگہ ارشاد ہے:

وَ لَا تَہِنُوۡا وَ لَا تَحۡزَنُوۡا وَ اَنۡتُمُ الۡاَعۡلَوۡنَ اِنۡ کُنۡتُمۡ مُّؤۡمِنِیۡنَ ﴿۱۳۹)

۔
’دل شکستہ نہ ہوغم نہ کرو اگر تم مومن ہو تو تم ہی غالب رہو گے۔

[۳/آل عمران: ۱۳۹]

 اس لیے علماء کا کہنا ہے کہ لوگ بادشاہوں کے دروازے پرعزت تلاش کرتے ہیں حالانکہ وہ صرف اللہ کی اطاعت میں ہے ۔ حسن بصری رحمہ اللہ فرماتے[2] ہیں کہ اگر چه مد و سدھائے ہوئے گھوڑے انہیں تیزی سے لے اڑ یں اور اپنی ٹاپوں کے ساتھ انہیں لے کر آگے بڑھیں لیکن ذلت ورسوائی ان کی گردنوں پر سوارر ہے گی ۔ اللہ تعالی کا سیاٹل فیصلہ ہے کہ وہ اپنے نافرمانوں کو رسوا کرے گا جس نے اللہ تعالی کی اطاعت کی اللہ تعالی نے اس اطاعت والے کام میں اس سے دوستی کی اور جس نے اس کی نافرمانی کی تو اس سے بقدر معصیت دشمنی کی.

[1] آپ کی کنیت ابوالفور اس ہے شاہی خاندان سے تعلق رکھتے تھے۔ لیکن تمام دنیاوی نعمتوں کو چھوڑ کر تن من سے زہد کے راستے پر لگ گئے ۔ ۲۷۰ھ کے بعد آپ کی وفات ہوئی ۔ حلية الاولياء: ١٠/ ۲۳۸، صفوة الصفوة: ٦٧/٤۔
 [2]  باپ کا نام بیمار اور کنیت ابوسعید ہے ۔ اہل بصرہ کے امام اور وقت کے علامہ تھے ۔ آپ کی ذات کسی تعارف کی محتاج نہیں ہے ۔۲۱ھ میں مدینہ المنورہ میں پیدا ہوۓ ۔ حضرت علی ان کے سایۂ عاطفت میں پلے بڑھے ۔ ۱۱۰ ھ میں بصرہ میں وفات پائی ۔: ٢٢٦/٢۔ _ *

اور دعائے قنوت میں وارد ہے:۔

“إنّه لَا يَزِّلُّ مِنْ وَّالَعْيِت وَلاَ يَعِزُّ مَنْ العَدَيْت”

جس کی اے اللہ تو نے سر پرستی کی وہ رسوا نہیں ہوسکتا، اور جس سے تو نے دشمنی کی وہ عزت نہیں پاسکتا۔“

اور برائی کے دلدادہ جو اپنی نظر نیچی نہیں رکھتے اور اپنی شرمگاہوں کی حفاظت نہیں کرتے اللہ تبارک و تعالی نے ان اوصاف حمیدہ کے برعکس بیماریوں سے موصوف کیا ہے ، یعنی مستی میں مبتلا اندھے پن کا شکار، جاہل، بے عقل، گمراہ، بغض و حسد میں گھرے ہوئے اور بصیرت سے محروم ، مزید برآں انہیں خبیث، فاسق ، حد سے تجاوز کرنے والا ، اپنے او پر زیادتی کرنے والا ، مفسد ومجرم، برائی کا شکار، اور فحاشی میں مبتلا وغیرہ قرار دیا ہے ۔ چنانچہ قوم لوط کے متعلق ارشاد ہے:

بَلۡ اَنۡتُمۡ قَوۡمٌ تَجۡہَلُوۡنَ ﴿۵۵﴾

 ” تم لوگ پرلے درجے کے جاہل ہو۔‘‘

[۲۷/النمل: 55۔]

اس آیت مبارکہ میں انہیں جاہل کہا گیا۔ انھی سے متعلق ایک اور جگہ ارشاد ہے:

لَعَمۡرُکَ اِنَّہُمۡ لَفِیۡ سَکۡرَتِہِمۡ یَعۡمَہُوۡنَ ﴿۷۲﴾ 

تیری عمر کی قسم وہ لوگ اپنے نشے میں مدہوش ہیں.”

[15/الحجر: ۷۲]

ایک اور جگہ ارشاد ہے:

(اَلَـیۡسَ مِنۡکُمۡ رَجُلٌ رَّشِیۡدٌ ﴿۷۸﴾

” کیا تم میں ایک بھی نیک چلن نہیں ہے ۔”

[۱۱/هود: ۷۸]

ایک اور جگہ ارشاد ہے:

(فَطَمَسۡنَاۤ اَعۡیُنَہُمۡ)

” تو ہم نے ان کی آنکھیں بے نور کر دیں ۔‘‘

[٥٤/القمر: ۳۷]

ایک دوسری جگہ ارشاد ہے:

(بَلۡ اَنۡتُمۡ قَوۡمٌ مُّسۡرِفُوۡنَ ﴿۸۱﴾

 ” تم لوگ حد سے تجاوز کر نے والے ہو۔“

[ ۷/الاعراف: ۸۱]

ایک اور جگہ ارشاد ہے:

“فَانۡظُرۡ کَیۡفَ کَانَ عَاقِبَۃُ الۡمُجۡرِمِیۡنَ ﴿٪۸۴﴾”

” پھر دیکھو مجرموں کا انجام کیسا ہوا۔‘‘

[7/الاعراف: ٨٤]

نیز ارشاد ہے:

اِنَّہُمۡ کَانُوۡا قَوۡمَ سَوۡءٍ فٰسِقِیۡنَ ﴿ۙ۷۴﴾

’’دولوگ بہت ہی بڑے اور نافرمان تھے۔“

[۲۱/الانبياء: ٧٤]

نیز ارشاد ہے:

اَئِنَّکُمۡ لَتَاۡتُوۡنَ الرِّجَالَ وَ تَقۡطَعُوۡنَ السَّبِیۡلَ وَ تَاۡتُوۡنَ فِیۡ نَادِیۡکُمُ الۡمُنۡکَرَ ؕ (۲۹)

” کیا تم لوگ شہوت رانی کے لیے عورتوں کو چھوڑ کر مردوں کے پاس جاتے ہو، رہزنی کرتے ہو اور اپنی مجلسوں میں برا کام کرتے ہو۔”

[۲۹/العنكبوت: ۲۹]

اس سورت میں آگے فرمایا کہ:

(قَالَ رَبِّ انۡصُرۡنِیۡ عَلَی الۡقَوۡمِ الۡمُفۡسِدِیۡنَ ﴿۳۰﴾
[۲۹/العنكبوت: 30]

اور آگے فرمایا:

(بِمَا کَانُوۡا یَفۡسُقُوۡنَ ﴿۳۴﴾)

”  یعنی ان کی نافرمانی کی پاداش میں ان کے اوپر آسان سے آفت اتاری گئی .”

[۲۹/العنكبوت: 34]

اور ارشاد ہے:

مُّسَوَّمَۃً عِنۡدَ رَبِّکَ لِلۡمُسۡرِفِیۡنَ ﴿۳۴﴾

”  حد سے گزرنے والوں کے لیے وہ پتھر تیرے رب کی طرف سے نشان زدہ تھے۔”

[51/الذاريات: ٣٤]

بلکہ کبھی ایسا بھی ہوتا ہے کہ نظر بازی اور لونڈے بازی شرک تک پہنچا دیتی ہے ۔جیسا کہ ارشاد باری تعالی ہے:

 
وَ مِنَ النَّاسِ مَنۡ یَّتَّخِذُ مِنۡ دُوۡنِ اللّٰہِ اَنۡدَادًا یُّحِبُّوۡنَہُمۡ کَحُبِّ اللّٰہِ ؕ ﴿۱۶۵﴾

“اور کچھ لوگ ایسے بھی ہیں جو اللہ کے سوا اس کا ہمسر اور مد مقابل بنا لیتے ہیں اور ان سے ایسی محبت کرتے ہیں جیسے کہ اللہ سے محبت کر نی چاہیے ۔‘‘

[۲۰/البقرة: 165]

اس لیے صورتوں کا عشق اس وقت پیدا ہوتا ہے جب دل میں اللہ کی محبت اور ایمان کمزور پڑ جائے۔ چنانچہ اللہ تبارک و تعالی نے ایسی والہانہ محبت کا ذکر قرآن عزیز میں یا تو عزیز مصر کی مشرکہ بیوی کے متعلق یا لوط علیہ السلام ) کی مشرک قوم کے متعلق کیا ہے۔ یہ حقیقت ہے کہ عاشق اپنے معشوق کا غلام، اس کے اشارے پر ناچنے والا اور دل سے اس کا اسیر ہو جا تا ہے

۔(واللہ اعلم).

Table of Contents