Sections
< All Topics
Print

05A. HAIZ KAY AHEKAAM; NAMAZ

PEHLA HUKUM: NAMAZ:

Pehla Hukm: Namaz
Dusra Hukm: Roza
Tesra Hukm: Tawaaf
Chawtha Hukm: Tawafe Widaa Ka Suqoot
Panchwa Hukm: Masjid mein Thairna
Chata Hukm: Jima
Saatva Hukm: Talaaq
Aathva Hukm: Talaaq KI iddat ke Aetebar
Nouva Hukm: (Istabraee Rahem)
Daswa Hukm: Wujoob-e-Ghusl

Haiza khatoon par farzi aur nafli  namaz haram hai wo namaz nahi parhsakti aur na hi ispar wajib hai- illa ye keh wo aik rakat ke qadr namaz ka waqt tuhur(paaki) mein paalen awwal mein ya akhir mein.

(i) Awwal waqt ki misaal:

Aik khatoon ki ghuroob-e-Shams ke ba’ad, aik rakat ki miqdar ke ba’ad haiz aya tou, jab haiz se paak hogi tou uspar Namaz-e-Maghrib ki qaza wajib hai kyunkeh haiz aane se pehle usne namaz ke waqt mein aik rakat ki miqdaar ko paaliya tha.

 

(ii) Akhri waqt ki misaal :

Agar koi khatoon tuloo’ shams se aik rakat ki miqdaar pehle haiz se paak hojaey tou jab wo taharat hasil karlegi uspar namaz-e-fajr ki qaza wajib hai kyunkeh isme namaz ke waqt mein aise hisse ko paaliya hai jisme aik rakat parhne ki gunjaish o wu’sat paaee jaati hai aur agar haiza aurat ne waqt ka itna hissa paya keh jisme aik mukammal rakat parhne ki gunjaish nahi hai misaal ke taur par, pehli misaal mein ghurub-e-shams ke ba’ad aik lahazah barabar ba’ad aurat ko haiz aya ya, dusri misaal mein tuloo-e-shams se aik lahazah qabal aurat taharat hasil karlen tou ispar namaz wajib nahi hogi kyunkeh Aap(ﷺ) ka farmaan hai:

 

“مَنْ أَدْرَكَ رَكْعَةً مِنَ الصَّلاَةِ فَقَدْ أَدْرَكَ الصَّلاَةَ ‏” ‏‏

“Jisne namaz ki aik rakat paali yaqeenan usne namaz paali.”

[Sahih Al Bukhari: 580]

Is hadees ka mafhoom yeh hai keh jisne aik rakat se kam pae wo namaz ko paane wala nahi hai-

Aur jab kisi aurat ne namaz-e-asr ke waqt mein aik rakat ka waqt paya tou kiya us khatoon par namaz-e-asr ke sath zuhr ki namaz wajib hogi? Ya namaz-e-isha ke waqt aik rakat paali tou kiya ispar namaz-e-isha ke sath maghrib ki namaz wajib hogi?

     Is baare mein ulama-e-ikraam ka ikhtilaf hai sahih baat ye hai ispar namaz wajib nahi hogi, sivae usi namaz ke jo usne pae hai aur wo sirf asr aur isha aakhirah ki namaz hai, Nabi Kareem(ﷺ) ke farmaan ke mutabiq:

 

”  وَمَنْ أَدْرَكَ رَكْعَةً مِنَ الْعَصْرِ قَبْلَ أَنْ تَغْرُبَ الشَّمْسُ فَقَدْ أَدْرَكَ الْعَصْرَ ‏”‏‏.‏

“Jis shakhs ne ghuroob-e-shams se pehle asr ki aik rakat pae yaqeenan usne asr ki namaz paee”

[Sahih al bukhari: 579]

      Tou is hadees mein Aap(ﷺ) ne 

 فَقَدْ أَدْرَكَ الظہر و الْعَصْرَ ‏ 

Ke alfaaz nahi farmaaye, tou Aap(ﷺ) ne ispar zuhr ke wajib ka zikr nahi kiya jabke asal baraat hai (keh wo namaz na parhe) aur yehi mazhab Imaam abu Haneefa(رحمه الله) aur imaam malik(رحمه الله) ka hai, Allamah Nawawi(رحمه الله) ne un dono se “Sharh al mahzab☆” mein naqal kiya hai.

[Sharh al mahzab: (3/70)]

Aur rahi baat zikr-o-azkaar, Allahu Akbar, Subhan Allah, Alhamdulillah parhna, khaane wagherah par Bismillah parhna, Hadees aur fiqh parhna, Dua karna aur ispar aameen kehna, aur Qur’an-e-azeem sunna in mazkoorah umoor mein se koi bhi cheez ispar haram nahi hai- aur bukhari, muslim wagerah mein ye sabit hai keh “Aap(ﷺ) Sayeda Ayesha(رضی اللہ عنہا) ki goud mein taik lagate the, Ayesha(رضی اللہ عنہا) haiz mein hoti the aur Aap(ﷺ) Qur’an-e-Hakeem parhte the.”

[Sahih Muslim]

Aur isi tarah bukhari aur muslim mein Sayeda Umm Aatiya(رضی اللہ عنہا) se marwi hai keh unho ne Nabi kareem(ﷺ) se ye kehete hue suna:

“Noujawaan, parda nasheen aur haiz waali khawateen namaz-e-eidan ke liye jaen aur musalmaanou ki dawat aur bhalai mein hazir hon aur haiz waali khawateen namaz se alag rahen.”

       Aur rahi baat haiza khatoon ke khud Qur’an parhne ki tou agar wo khatoon dekhkar ya dil ke sath ghaur o fikar kare baghair zuban ki harkat ke parhe tou isme koi harj nahi hai. Maslan: Qur’an ya takhti aage rakhdi jae tou haiza khatoon ayat ki taraf dekhti rahe aur dil mein parhti rahe Imaam Nawawi(رحمه الله) ne “Sharh mahzab” mein farmaaya hai: “Ye baghair kisi ikhtilaf ke jayez hai.”

[Sharh al mahzab: (2/188)]
 

      Agar khatoon zuban ke sath parhti hai tou jamhoor ulemah ke nazdik ye mamnoo aur na jayez hai.

Aur Imaam bukhari(رحمه الله) aur Imaam ibn jarir tabraani(رحمه الله) aur Imaam ibn manzar(رحمه الله) ne farmaaya “Yeh jayez hai.”

 

      Aur Imaam malik(رحمه الله) aur Imaam shafa’i(رحمه الله) ke qadeem qawl se yehi manqool hai Hafiz Ibn hajar(رحمه الله) ne in dono se “Fathul baari” mein naqal kiya hai.

[Fatah al baari: (1/486)]
 

“Imaam Bukhari ne imaam ibrahim naqee se “Mu’allaq” riwayat zikar ki hai keh “agar wo ayat parhti hai tou koi harj nahi hai.”

[Sahih Bukhari: (1/485) Ma al fatah)]

 

Shaykh Ul Islam ibn tayhmiyyah(رحمه الله) Fatawah majmoo’ ibn al qasim” mein farmaaya hai:

“Haiza ke Qur’an na parhne ke baare mein bilkul koi hadees nahi hai.”

Aur Aap(ﷺ) ki ye hadees: “Haiza khatoon aur jumbi Qur’an se kuch bhi na parhe.”

[Muhadiseen ke nazdik bil ittefaq zaef hai]

Aur Nabi kareem(ﷺ) ke zamane mubarak mein khawateen ko haiz aata tha agar unpar Qur’an ki qirat haram hoti ( Jis tarah namaz hai) tou isko Nabi kareem(ﷺ) apni ummat ke liye zarur bayan karte aur Ummahatul Momineen usse zarur janti hoten- Aur iska ta’luq (Aise masaiyl se hai) Jisko sahaba karaam logon mein naqal karte, jab kisi aik ne bhi Aap(ﷺ)  se is baare mein mumaniyat naqal nahi ki tou qirat ko haram therana jayez nahi hai bawajud iske keh Aap(ﷺ) ne isse roka nahi hai.

     Aap(ﷺ) ke zamane mein haiz ki kasrat hone ke bawajud jab Aap(ﷺ) ne haiza ko Qur’an parhne se roka nahi tou malum hua haiza ka Qur’an parhna haram nahi hai.

[Majmoo’ Al Fatawah: (191/26)]

Ahle ilm ka ikhtilaf janne ke ba’ad ye kehna munasib hoga keh zarurat ke baghair haiza Qur’an-e-paak na parhe- misal ke taur par haiza khatoon mu’alima(Alima teacher) hai usse apni talibat(Students) ko talqeen karne ki zarurat parhti hai ya imtehan ke waqt mu’alimah taliba ka imtehan parhkar leti hai ya us jaise dusre umoor hain.

[Baaqi raha Qur’an ko chune ka maslah is baare mein ulemah ki mukhtalif aaraa hain, Rajeh ye hai haiza aurat bila wajah Qur’an ko na chuay lekin parhne aur parhane ke waqt agar chuleti hai tou isme koi muzaeqa nahi hai]

[Fath Al baari: (1/407) Al wasiy ibn manzoor: (6/98); Muhalla ibn hazm: (1/77)] ; Fataawah Ibn taymiyyah: (26/191)]

REFERENCE:
BOOK: “NISWAANI TIBI KHOON KAY AHEKAAM”
TALEEF: SHAIKH MUHAMMAD BIN SALEH UTHAYMEEN RAHIMAHULLAH
URDU TARJUMA BY: HAFIZ RIYAZ AHMED HAFIDHAHULLAH

Laws About Menses

 

There are First: Menses and Salat (Prayers)

 

All kinds of Salat, obligatory or Sunnah, are prohibited for women in their menstruation. It is not obligatory on a woman to perform Salat unless she could get one complete Raka’ within the prescribed time of Salat. To illustrate this consider the following two examples:

 

Example One:

 

A woman had her menses right after sunset. However, she was clean for a period of time sufficient for her to get one Raka’ from the Maghrib (Sunset) prayer. Once she is completely clean, she must make up for her Maghrib prayer. many laws about menses. It is enough to mention those that are most needed:

 

Example two:

 

The menses of a woman stopped before sunrise and within the time sufficient for her to perform one Raka’ from Salat Al-Fajr (Dawn). Once she completely cleans herself, then she must make up for Salat Al-Fajr. In both examples, if the time is not enough for her to get one Raka’, then it is not mandatory upon her to perform Salat because the Prophet (ﷺ) said: “Whoever could get one Raka’ of a prayer (in its proper time) he has got the prayer”[1]. This Hadeeth implies that whoever could not get one Rak’a of a prayer in its proper time, then he has not got the prayer.Case:

suppose a woman could get one Raka’ of ‘Asr prayer in its proper time. Is it then obligatory upon her to perform Salat Al-Thuhr (Noon) with Salat Al- ‘Asr (Afternoon)? or if a woman could get one Raka’ of Isha’ prayer in its proper time, is it then obligatory upon her to perform Salat Al-Maghrib with Isha’?

There is dispute amongst the scholars about these issues. The right position, however, is that she should only perform what she is able to get of a particular prayer i.e., Salat Al-‘Asr and Isha’ only. This is based upon the Hadeeth of the Prophet (ﷺ): “Whoever could get one Raka’ of Salat Al-‘Asr before sunset, then he has gotten the ‘Asr.”(agreed upon [2].

He (ﷺ) did not say “then he/she has gotten Thuhr and ‘Asr prayer!”. He did not mention that it is mandatory to do Salat Al-Thuhr. This is the position of the schools of thought of Imam Malik and Imam Abu Haneefah.[3]

 

Case:

 

During Menses, it is not unlawful to celebrate Allah’s Praises (Saying Takbeer, Tasbeeh, and Tahmeed),[4] saying Bismillah before acting upon something (eating, drinking, etc..), reading Hadeeth, Islamic discussions, invocation upon Allah (Dua’), and listening to the recitation of Qur’an. It has been confirmed by ‘Aisha ( رضی اللہ عنہا) that the Prophet (ﷺ) used to: “lean on my lap and recite Qur’an while I was in menses” (Al-Bukhari and Muslim).[5] Also Umm ‘Atiyya reported that she heard the Prophet (ﷺ) saying: “The Unmarried young virgins and the mature girl who stay often screened or the young unmarried virgins who often stayscreened and the menstruating women should come out and participate in the good deeds as well as the religious gathering of the faithful believers but the menstruating women should keep away from the Musalla (praying place).”[6]

 

Case:

 

The reciting of the Qur’an by a menstruating woman either via direct looking or silently (in her heart) without the actual uttering by the tongue is permissible. The majority of the scholars are with the opinion that it is not prohibited for her to utter the Qur’anic recitation. Imam Bukhari, Ibn Jareer AtTabaree and Ibn Al-Munthir, Imam Malik, and Imam Ash-Shaafi’ee (in one of his earlier sayings) are with the opinion that it is permissible for her to recite the Ayah (verse in the Qur’an). Shayekul Islam Ibn Taymeeyah said: “Basically, there is no Sunnah to prevent her from reciting Qur’an. The “hadeeth” that: “A menstruating woman and the one who is in state of Jannabah[7] should not recite anything of the Qur’an”, is a weak hadeeth as agreed upon by the knowledgeable scholars of Hadeeth. In fact women at the time of the Prophet (ﷺ) used to have their monthly cycles of menses.

Had the recitation of Qur’an been prohibited for them (as it is the case with Salat) then the Prophet (ﷺ) would have made it clear to his Ummah (Islamic community) and his wives would have known about it and they would have dissipated this knowledge to the people. Because no one had related a prohibition by the Prophet (ﷺ) about this issue, then it cannot be made unlawful especially when it is known that he (ﷺ) did not prohibit it at the time when menses was very much present. Accordingly, recitation by the tongue is not Haram (legally unlawful).[8] This author said: “having known the dispute between the scholars about this matter, then it is more proper for the menstruating woman not to recite Qur’an by the tongue except when it is necessary e.g. if she is a teacher or if she is preparing for an exam.”

 

[1] Saheeh Al-Bukhari (Arabic-English), V.1, P. 322, Hadeeth # 554.

[2] Saheeh Muslim (English: translated by Abdul Hamid Siddiqi and published by Dar Al-Arabi; BeirutLebanon) V. 1, P. 298, Hadeeth # 1266.

[3] Abu Haneefah al-Nu’man Ibin Thabit Ibin Zouta (80-150 Hj/700-770 CE), one of the great Jurists of

Islam. He was born in Kufah and died in Baghdad. He saw the Sahabi, Anass Bin Malik when the latter came to Kufah. He was a pious scholar who respected the Hadeeth of the Prophet (ﷺ) to the degree that he would not narrate any hadeeth unless he knew it by heart. He considered the Hadeeth above his own saying. He did not call
people to blindly imitate him.

[4] Takbeer: saying Allahu Akbar (Allah is The Greatest); Tasbeeh: saying Subhana Allah (Most Glorified is Allah); Tahmeed: saying Al Hamdulil’lah: All Praise is due to Allah.

[5] Saheeh Al-Bukhari (Arabic-English) V.1, P.179, Hadeeth # 296.

[6] Agreed upon Hadeeth. In Saheeh Al-Bukhari (Arabic- English), V. 1, P. 192, Hadeeth # 321.

[7] Jannabah: Is the state in which a man (or a woman) has sexual discharge during sexual intercourse or
in a dream, etc. In this state a Muslim is not allowed to pray or do other kinds of worships unless and until he (she) performs Ghusl (have a full shower) or do Tayammum if he/she cannot use water for any reason.

[8] Ibin Taymeeyah in Al-Fatawa (religious decrees) V. 26, P. 191.
REFERENCE:
BOOK: NATURAL BLOOD OF WOMEN
By Shayekh Muhammad bin Salih Al-Utheimeen
Second Edition / Translated & Researched by Saleh-As .Saleh S .Dr

پہلا حکم :- نماز

 

حیض کے احکام بہت زیادہ ہیں۔ جو کہ 20 سے زائد ہیں ان احکام میں سے جو ہم ضروری اور اہم خیال کرتے ہیں وہ یہاں ذکر کریں گے ۔وہ احکام مندرجہ ذیل ہیں۔

 

پہلا حکم :- نماز

 

 حائضہ خاتون پر فرضی اور نفلی نماز حرام ہے وہ نماز نہیں پڑھ سکتی اور نہ  ہی اس پر واجب ہے۔ الا یہ کہ وہ ایک رکعت کے قدر نماز کا وقت طہر  میں پالے اول میں یا آخر میں۔

 

ا۔۔ اول وقت کی مثال

 

 ایک خاتون کو غروب  شمس کے بعد  ایک رکعت کی  مقدار کے بعد  حیض آیا تو جب حیض سے  پاک ہوگی  تو اس پر نماز مغرب کی قضا واجب ہے کیونکہ حیض آنے سے پہلے اس نے نماز کے وقت میں ایک رکعت کی مقدار کو پا لیا تھا۔

 

 ب۔ اخری وقت کی مثال

 

 اگر کوئی خاتون طلوع  شمس سے ایک رکعت کی مقدار پہلے حیض سے پاک ہوجائے تو جب وہ طہارت حاصل کرلے  گی اس پر نماز فجر کی قضاء  واجب ہے  کیونکہ اس نے نماز کے وقت میں ایسے حصے کو پایا ہے جس میں ایک رکعت پڑھنے کی گنجائش و وسعت پائی  جاتی ہے اور اگر  حائضہ عورت نے وقت کا اتنا حصہ پایا کہ جس میں ایک مکمل رکعت پڑھنے کی گنجائش نہیں ہے مثال کے طور پر پہلی  مثال میں غروب شمس  کے بعد ایک لحظ برابر بعد عورت کو حیض ایا یا دوسری مثال میں  طلوع شمس سے ایک لحظہ قبل عورت  طہارت حاصل کرلے تو اس پر نماز واجب نہیں ہو گی کیونکہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان   ہے.

”  وَمَنْ أَدْرَكَ رَكْعَةً مِنَ الْعَصْرِ قَبْلَ أَنْ تَغْرُبَ الشَّمْسُ فَقَدْ أَدْرَكَ الْعَصْرَ ‏”‏‏.‏

 

دیکھو صحیح بخاری مواقیت الصلوۃباب من ادرک من الصلوۃ رکعة رقم    (580)(68/2) مع الفتح اور صحیح مسلم المساجد و المواضع الصلوۃ باب من ادرک رکعة من الصلوۃ رقم (607)(251/4)

 

 “جس نے نماز کی ایک رکعت پالی یقینا اس نے  نماز پا لی”

 

اس حدیث کا مفہوم  یہ ہے کہ  جس نے ایک رکعت سے کم پائی وہ نماز کو پانے والا نہیں ہے ۔اور جب کسی عورت نے نماز عصر کے وقت میں ایک رکعت کا وقت پایا تو کیا اس خاتون پر نماز عصر کے ساتھ ظہر کی نماز واجب ہوگی ؟ یا نماز عشاء کے وقت ایک رکعت پالی  تو کیا اس پر نماز عشاء کے ساتھ مغرب کی نماز واجب ہوگی ؟

اس بارے میں علماء کرام کا اختلاف ہے ۔صحیح بات یہ ہے اس پر  نماز واجب نہیں ہوگی سوائے اسی نماز کے جو اس نے پائی ہے  اور وہ صرف عصر اور عشاء آخرہ کی نماز ہے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان کے مطابق ( من ادرک رکعة من العصر قبل ان تغرب الشمس فقد ادرک العصر) 

 

دیکھو صحیح بخاری رقم الحدیث (579) (67/1)اور صحیح مسلم رقم (608)(251/4)

 

“جس شخص نے غروب شمس سے پہلے عصر کی ایک رکعت پائی یقینا اس نے عصر کی نماز پائی”

 تو اس حدیث میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ” فقد ادرک الظهر والعصر ” کے الفاظ نہیں فرمائے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس پر  ظہر کے وجوب کا ذکر نہیں کیا جبکہ اصل برأت ہے ( کہ وہ نماز نہ پڑھے ) اور یہی مذہب امام  ابو حنیفہ اور امام مالک کا ہے ۔علامہ نووی نے ان دونوں سے  ” شرح المھذب” میں نقل کیا ہے.

 دیکھو شرح المھذب رقم (70/3)

 

 اور رہی بات ذکر و اذکار ، اللہ اکبر ،سبحان اللہ اور الحمد للہ پڑھنا کھانے وغیرہ پر بسم اللہ پڑھنا ،حدیث اور فقہہ پڑھنا،دعا کرنا اور اس پر امین کہنا اور قرآن مقدس سننا ،ان مذکورہ امور میں سے کوئی بھی چیز  اس پر حرام نہیں ہے ۔اور بخاری و مسلم وغیرہ میں یہ ثابت ہے کہ “آپ صلی اللہ علیہ وسلم سیدہ عائشہ کی گود میں ٹیک لگاتےتھے  سیدہ عائشہ حالت  حیض میں ہوتی تھیں اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم قرآن حکیم پڑھتے تھے۔

 دیکھیں صحیح بخاری کتاب الحیض باب قراۃ الرجل فی حجر امراته وھی حائض رقم الحدیث (297)(479/1)اور صحیح مسلم باب جواز غسل الحیض رأس زوجھا و ترجیله رقم الحدیث (1۔301)(1 /541 )

 

اوراسی طرح بخاری ومسلم میں سیدہ ام عطیہ سے مروی ہے کہ انہوں نے نبی کریمﷺ سے یہ کہتے ہوۓ سنا (تـخـرج الـعـواتـق وذوات الـخـدوروالحيض يعني إلى صلاة العيدين وليشهدن الخير ودعوة المؤمنين ويعتزل الحيض المصلى)  ’

 میں صحیح بخاری ، کتاب الحیض باب شهود الحائض العيدين و دعوة المسلمين

 

(324)(504/1) اور صحیح مسلم صلاة الـعـيـدين باب ذكر إباحة خروج النساء العيدين إلى المصلى رقم الحديث (890)

 

“’نوجوان، پردونشین اور حیض والی خواتین نماز عیدین کے لئے جائیں اور مسلمانوں کی دعوت اور بھلائی میں حاضر ہوں اور حیض والی خواتین نماز سے الگ رہیں‘‘۔ اور رہی بات حائضہ خاتون کے خودقرآن پڑھنے کی تو اگر وہ خاتون دیکھ کر بادل کے ساتھ غور وفکر کر کے بغیر زبان کی حرکت کے پڑھے تو اس میں کوئی حرج نہیں ہے مثلا : قرآن یا تختی آگے رکھ دی جاۓ تو حائضہ خاتون آیات کی طرف دیکھتی رہے اور دل میں پڑھتی رہے امام نووی نے شرح مهذب ‘‘ میں فرمایا ہے: ”یہ بغیر کسی اختلاف کے جائز ہے‘‘ 

 دیکھو:شرح المهذب (188/2)] (3) رکھو: فتح الباری (486/1)]

 

 اگر خاتون زبان کے ساتھ پڑھتی ہے تو جمہور علماء کے نزدیک یہ ممنوع اور نا جائز ہے ۔ اور امام بخاری ، امام ابن جریرطبری اور امام ابن منذر نے فرمایا یہ جائز ہے۔ اور امام مالک اور امام شافعی کے قدیم قول سے یہی منقول ہے حافظ ابن حجر نے ان دونوں سے ’فتح الباری میں نقل کیا ہے (3)

 

 امام بخاری نے امام ابراہیم نخعی سے ’معلق‘‘ روایت ذکر کی ہے کہ اگر وہ آیت پڑھتی ہے تو کوئی حرج نہیں ہے .

 

(4) دیکھو:صحیح بخاري كتاب الحيض المناسك كلها إلا الطواف بالبيت 
(485/1) مع الفتح

 

شیخ الاسلام ابن تیمیہ نے فتاوی مجموعة ابن القاسم ‘‘میں فرمایا ہے :

 

’’حائضہ کے قرآن نہ پڑھنے کے بارے بالکل کوئی حدیث نہیں ہے۔

اور آپﷺ کی بیحد یث:’’حائضہ خاتون اور جنبی قرآن پاک سے کچھ بھی نہ پڑھے۔

محدثین کے نزدیک بالاتفاق ضعیف  ہے.

 

یہ روایت امام ترمذی نے جامع ترمذی میں رقم(131)  اور امام ابن ماجہ نے  سنن ابن ماجہ رقم (595)  میں عبداللہ بن عمر رض سے نقل کی ہے ۔ یہ روایت سندا ضعیف ہے۔ اس کی سند میں اسماعیل بن عیاش اہل حجاز سے روایت کر رہا ہے۔ امام بخاری رح نے فرمایا ہے کہ  اہل حجاز اور عراق سے  یہ منکر احادیث روایت کرتا ہے۔ اور اس حدیث کا کوئی  طرق بھی حجت کے قابل نہیں ہے۔ تفصیل کے لیے دیکھیں ارواء الغلیل (206/1)(192)از البانی

 

 اور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ  مبارک میں خواتین کو حیض آتا تھا اگر ان پر قرآن کی قرأت حرام ہوتی  (جس طرح نماز ہے) تو اس کو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم  اپنی امت کے لئے ضرور بیان کرتے اور امہات المومنین اسے ضرور جانتی ہوتیں اور اس کا تعلق (ایسے مسائل سے ہے)جس کو صحابہ کرام لوگوں میں نقل کرتے ہیں  جب کسی ایک نے بھی آپ ﷺ  سے اس بارے ممانعت نقل نہیں کی تو قرأت کو حرام ٹھہرانا جائز نہیں ہے  باوجود اس علم کے کہ اپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس سے روکا نہیں ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں حیض کی کثرت ہونے کے باوجود جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے حیضہ کو قرآن پڑھنے سے روکا نہیں  تو معلوم ہوا حائضہ کا قرآن پڑھنا حرام نہیں ہے.

دیکھو مجموع الفتاوی(191/26)

 

 اہل علم کا اختلاف جاننے کے بعد یہ کہنا  مناسب ہوگا کہ ضرورت کے بغیر حائضہ قرآن پاک  نہ پڑھیں۔ مثال کے طور پر حائضہ خاتون معلمہ ہے  اسے اپنی  طالبات کو تلقین کرنے کی ضرورت پڑتی ہے یا امتحان کے وقت معلمہ  طلبہ کا امتحان پڑھ کر لیتی ہے  یا اس جیسے دوسرے امور ہیں .

  حائضہ عورت کے قرآن پڑھنے کے بارے  اہل علم کی آرا مختلف ہیں اس بار ے

 

راجح موقف   یہی ہے جس کو شیخ الاسلام  ابن تیمیہ نے نقل کیا  کیونکہ قرآن و حدیث میں کوئی صریح  اور صحیح نص  نہیں ہے۔ جس میں حیض والی خواتین کو قرآن مقدس کی تلاوت سے منع کیا  گیا ہو  اور یہ بہت اظہر من الشمس ہے کہ خواتین رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں حائضہ  ہوتی تھیں  اگر  قرآن کی تلاوت ان پر حرام ہوتی تو  رسول صلی اللہ علیہ وسلم انہیں قرآن کی تلاوت سے ضرور روک  دیتے جس طرح نماز پڑھنے اور روزہ رکھنے سے روک دیا تھا ۔ اور جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے عہد مبارک میں حیض کی  کثرت  کے باوجود کسی صحابی رسول صلی اللہ علیہ وسلم  یا امہات المومنین میں سے کسی ایک نے بھی  محسن  کائنات صلی اللہ علیہ وسلم سے اس   بارے ممانعت   نقل نہیں کی  تو معلوم ہوا کہ حائضہ کا قرآن پڑھنا جائز ہے اس چیز کا علم ہونے کے باوجود کہ  رسول صلی اللہ علیہ وسلم سے اس کی ممانعت بالکل منقول نہیں اس کو حرام کہنا سے ہی نہیں ہے۔ باقی رہا  قرآن مجید کو چھونے کا مسئلہ اس  بارے بھی علماء کی مختلف آراء ہیں  راجح یہ  ہے حائضہ عورت بلا وجہ  قرآن کو   چھوئے لیکن پڑھنے اور پڑھانے   کے وقت اگر چھو لیتی ہے تو اس میں کوئی مضائقہ نہیں)

 تفصیل کے لئے دیکھیں :-  فتح الباری (407/1) اوسط ابن المنذر (98/6) محلی ابن حزم (77/1) فتاویٰ ابن تیمیہ رح (191/26) نیل الاوطار (226/1) تمام المسئہ (ص 117) اور ارواء الغلیل (244/4)۔

 

حوالہ جات:
کتاب:  “نسوانی طبی خون کے احکام۔”
تالیف:  شیخ محمد بن صالح العثیمین (رحمة الله)۔
اردو ترجمہ:  حافظ ریاض احمد حفظ اللہ۔
Table of Contents