Sections
< All Topics
Print

48. AGAR , WAGAR KEHNA:

AGAR WAGAR KEHNA

 

Iske istemal ke liye (3) teen ahwaal hain:

 

1. Jawaaz:

 

Jab lafz “Agar” sirf ittela’ dene ke liye istemal kiya jae, maslan yun kaha jae: “Agar” aap dars me shareek hote tou zarur faida uthate.

Iski misaal:

 

Nabi Kareem (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) ne farmaaya: “Jo baat mujhe ba’ad mein m’alum hui agar pehle hi m’alum hoti tou mein hadee (Qurbani) saath na lata aur agar mere saath hadee na hoti tou mein bhi halal hojata.”

 

2. Mustajab: 

 

Jab lafz “Agar” khair o bhalai ki tamanna ke lie istemal kiya jae- Maslan yun kahe: “Agar mere paas maal hota tou main sadaqah karta.”

Iski daleel: 

 

Rasool Allah (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) ka wo farmaan e mubarak hai jo Aap صلی اللّٰہ علیہ وسلم ne (4) chaar aadmiyon ka qissa bayan karte hue irshad farmaaya: “unmein se aik ne kaha tha: 

‘Aur agar mere paas maal hota tou mein bhi fulan aadmi ki tarah aml karta’.”

Yani isne khair aur bhalai ki tamanna ki thi- is par Aap (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) ne farmaaya: “ye insaan ki apni niyyat par hai; aur un donon ka ajr barabar hai.”

 

[Rawahu Ahmad aur Tirmidhi]

 

3. Mumani’at: 

 

Jab lafz “Agar” in teen suraton mein istemal kiya jae: 

 

i. Shari’at par aiteraz.

 

Iski daleel: 

 

[Munafiqeen se naql kardah] Allah Ta’aala ka ye farmaan hai:

 

﴿لَوْ اَطَاعُوْنَا مَا قُتِلُوْا﴾

 

“Agar wo hamari baat maan lete tou na maare jaate.”

 

[Surah Aal e Imraan: 03:168]
 
ii. Taqdeer par aiteraz.

 

Iski daleel:

 

 [Munafiqeen se naql kardah] Allah Ta’aala ka ye farmaan hai:

 

﴿یَقُوْلُوْنَ لَوْ کَانَ لَنَا مِنَ الْاَمْرِ شَیْئٌ مَّا قُتِلْنَا ھٰہُنَا﴾

 

“Wo kehte hain keh agar hamare bas ki baat hoti tou ham yahan qatl hi na kiye jaate.”

 

[Surah Aal e Imraan: 03:154]

 

3. Shar o burai ki tamanna: 

Iski daleel :

 

Rasool Allah (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) ka farmaane mubarak hai jo Aap صلی اللّٰہ علیہ وسلم ne (4) chaar aadmiyon ka qissa bayan karte hue irshad farmaaya: “un mein se aik ne kaha tha : ‘Aur Agar mere paas maal hota tou mein bhi fulahn aadmi nki tarah aml karta’.”

Yani isne shar aur fasad ki tamanna ki thi- ispar Aap (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) ne farmaaya: “ye  insaan ki apni niyat par hai; aur un donon ka gunah barabar hai.

[Rawah Ahmad wa Tirmidhi]

 

Is baab mein insaan ko masaiyb aur mushkilat ke waqt sabr aur burdbaari ikhtiyar karne ki talqeen ki gae hai aur jo log sabr ka daman haath se chhor dete hain aur apne aapko taqdeer ki girift se azad rakhne ki koshish karte hain unki mazammat ki gae hai- masaiyb wa mushkilat ke waqt jaza’ faza’ karna shari’at e Islamia mein mana’ hai; aur ispar sakht tareen waeed sunae gae hai- lehaza har musalmaan par lazim hai keh wo taqdeer e Ilaahi ke saamne sar tasleem kham karke Allah Ta’aala ki bandagi ka fareeza anjaam de. Iski surat sirf ye hai keh insaan masaiyb wa mushkilat ko khanda peshaani se bardasht kare aur sakht tareen halaat mein sabr o isteqamat ka muzaherah kare.

 

Kyun keh imaan ke (6) chhay usoolon mein se aik ye hai keh Insaan taqdeer-e-Ilaahi par kamil imaan rakhta ho.

 

Sahih muslim mein Abu Hurairah (رضی اللّٰہ عنہ) se marwi hai keh Rasool Allah (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) ne farmaaya: 

((اِحْرِصْ عَلٰی مَا یَنْفَعُکَ وَ اسْتَعِنْ بِاللّٰہِ وَ لَا تَعْجَزَنَّ وَ اِنْ فَاِنَّ لَوْ تَفْتَحُ عَمَلَ الشَّیْطٰنِ۔)) 

 

“Nafa bakhsh cheez ki hirs kar aur Sirf Allah Ta’aala hi se madad maang aur ajiz na ban aur kisi waqt agar musibat mein giraftar hojao tou ye na kaha karo ‘agar mein aisa karta tou yun hota’ balkeh ye kaho keh Allah Ta’aala ne muqaddar kiya aur jo Us ne chaha wohi hua kyun keh ‘Agar Wagar’ shaitaani aml ka darwaza khol deta hai.” Is saare kalaam ka khulaasa yeh hai keh: 

 

1. Agar is lafz ka istemal Allah Ta’aala ki qaza wa qadr par aiteraz karte hue kiya jaega tou iska qayel gunahgaar hoga.

Maslan: Agar fulan shakhs safar karne se ba’az rehta tou use maut ka hadesa pesh na ata, wagherah.

 

2. Agar iska istemal kisi bure fail ki tamanna ke liye kiya jaega tou bhi uska qayel gunahgaar hoga. 

Maslan: Agar mere paas maal hota tou mein us se lahou wa la’ab aur mausiki ke aalat khareedta.

 

3. Agar iska istemal achhe kaam ki tamanna ke liye ho tou iska qayel ajar paega.

Maslan: Agar mere paas maal maujud hota tou mein masjid ta’meer karwata.

 

4. Agar iska istemal mazkurah bala ma’ani mein se kisi aik ke liye bhi na ho, tou phir uske qayel ko na tou ajar o sawab milega aur na hi wo kisi gunah ka murtakib hoga.

 

REFERENCE:
KITAAB “TAWHEED MUYASSAR” / ASAAN TAWHEED
BY: “ABDULLAH BIN AHMAD AL HAWAIL”
44 / 50 Sharah Kitaab Al Tawheed Class 14 Part 01

اگر وگر کہنا

اس کلمہ کے استعمال کے لیے تین احوال ہیں:

۱۔  جواز:

جب لفظ ’’اگر‘‘ صرف اطلاع دینے کے لیے استعمال کیا جائے، مثلاً یوں کہا جائے: ’’اگر‘‘ آپ درس میں شریک ہوتے تو ضرور فائدہ اٹھاتے۔

اس کی مثال:

’’نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:’’ جو بات مجھے بعد میں معلوم ہوئی اگر پہلے ہی معلوم ہوتی تو میں ہدی(قربانی) ساتھ نہ لاتا اور اگر میرے ساتھ ہدی نہ ہوتی تو میں بھی حلال ہو جاتا۔‘‘

۲۔  مستحب:

’’جب لفظ ’’ اگر‘‘ خیر وبھلائی کی تمنا کے لیے استعمال کیا جائے۔ مثلاً یوں کہے:’’ اگر میرے پاس مال ہوتا تو میں صدقہ کرتا۔‘‘

اس کی دلیل رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا وہ فرمان مبارک ہے جو آپ نے چار آدمیوں کا قصہ بیان کرتے ہوئے ارشاد فرمایا ؛ ان میں سے ایک نے کہا تھا:

’’ اوراگر میرے پاس مال ہوتا تو میں بھی فلاں آدمی کی طرح عمل کرتا۔‘‘

یعنی اس نے خیر اور بھلائی کی تمنا کی تھی۔اس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:’’ یہ انسان اپنی نیت پر ہے ؛ اور ان دونوں کا اجر برابر ہے۔‘‘

[رواہ أحمد و الترمذی]

۳۔ ممانعت: 

جب لفظ ’’اگر‘‘ ان تین صورتوں میں استعمال کیا جائے:

۱۔شریعت پر اعتراض:

اس کی دلیل[منافقین سے نقل کردہ]اللہ تعالیٰ کا یہ فرمان ہے:

﴿لَوْ اَطَاعُوْنَا مَا قُتِلُوْا﴾

’’ اگر وہ ہماری بات مان لیتے تو نہ مارے جاتے۔‘‘

(آل عمران:۱۶۸)
۲۔تقدیر پر اعتراض:

اس کی دلیل[منافقین سے نقل کردہ]اللہ تعالیٰ کا یہ فرمان ہے:

﴿یَقُوْلُوْنَ لَوْ کَانَ لَنَا مِنَ الْاَمْرِ شَیْئٌ مَّا قُتِلْنَا ھٰہُنَا﴾ 

’’وہ کہتے ہیں کہ اگر ہمارے بس کی بات ہوتی تو ہم یہاں قتل ہی نہ کیے جاتے۔‘‘

(آل عمران:۱۵۴)

 

۳ـ شرو برائي کي تمنا:

…اس کی دلیل رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا وہ فرمان مبارک ہے جو آپ نے چار آدمیوں کا قصہ بیان کرتے ہوئے ارشاد فرمایا ؛ ان میں سے ایک نے کہا تھا: ’’ اوراگر میرے پاس مال ہوتا تو میں بھی فلاں آدمی کی طرح عمل کرتا۔‘‘

یعنی اس نے شر اور فسادکی تمنا کی تھی۔اس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

’’ یہ انسان بھی اپنی نیت پر ہے ؛ اور ان دونوں کاگناہ برابر ہے۔ ‘‘

[رواہ أحمد و الترمذی]

اس باب میں انسان کو مصائب و مشکلات کے وقت صبر و بردباری اختیار کرنے کی تلقین کی گئی ہے اور جو لوگ صبر کا دامن ہاتھ سے چھوڑ دیتے ہیں اور اپنے آپ کو تقدیر کی گرفت سے آزاد رکھنے کی کوشش کرتے ہیں ان کی مذمت کی گئی ہے۔ مصائب و مشکلات کے وقت جزع فزع کرنا شریعت اسلامیہ میں منع ہے؛ اور اس پر سخت ترین وعید سنائی گئی ہے۔ لہٰذا ہر مسلمان پر لازم ہے کہ وہ تقدیر الٰہی کے سامنے سرتسلیم خم کر کے اللہ تعالیٰ کی بندگی کا فریضہ انجام دے اس کی صورت صرف یہ ہے کہ انسان مصائب و مشکلات کو خندہ پیشانی سے برداشت کرے اور سخت ترین حالات میں صبر و استقامت کا مظاہرہ کرے۔ کیونکہ ایمان کے چھ اُصولوں میں سے ایک یہ ہے کہ انسان تقدیر الٰہی پر کامل ایمان ہو۔صحیح مسلم میں سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ((اِحْرِصْ عَلٰی مَا یَنْفَعُکَ وَ اسْتَعِنْ بِاللّٰہِ وَ لَا تَعْجَزَنَّ وَ اِنْفَاِنَّ لَوْ تَفْتَحُ عَمَلَ الشَّیْطٰنِ۔)) ’’نفع بخش چیز کی حرص کر اور صرف اللہ تعالیٰ ہی سے مدد مانگ اور عاجز نہ بن اور کسی وقت اگر مصیبت میں گرفتار ہو جاؤ تو یہ نہ کہا کرو ’’اگر میں ایسا کرتا تو یوں ہوتا‘‘ بلکہ یہ کہو کہ اللہ تعالیٰ نے مقدر کیا اور جو اُس نے چاہا وہی ہوا کیونکہ ’’اگروگر‘‘ شیطانی عمل کا دروازہ کھول دیتا ہے۔‘‘

 

اس سارے کلام کا خلاصہ یہ ہے کہ: 

۱: اگر اس لفظ کا استعمال اللہ تعالیٰ کے قضاء وقدر پر اعتراض کرتے ہوئے کیا جائے گا تو اس کا قائل گناہ گار ہوگا۔ مثلاً: اگر فلاں شخص سفر کرنے سے باز رہتا تو اسے موت کا حادثہ پیش نہ آتا، وغیرہ۔ 

۲:اگر اس کا استعمال کسی برے فعل کی تمنا کے لیے کیا جائے گا تو بھی اس کا قائل گناہ گار ہوگا۔ مثلاً: اگر میرے پاس مال ہوتا تو میں اس سے لہو ولعب اور موسیقی کے آلات خریدتا۔ 

۳:اگر اس کا استعمال اچھے کام کی تمنا کے لیے ہو تو اس کا قائل اجر پائے گا۔ مثلاً: اگر میرے پاس مال موجود ہوتا تو میں مسجد تعمیر کرواتا۔ 

۴: اگر اس کا استعمال مذکورہ بالا معانی میں سے کسی ایک کے لیے بھی نہ ہو، تو پھر اس کے قائل کو نہ تو اجر وثواب ملے گا اور نہ ہی وہ کسی گناہ کا.

REFERENCE:
KITAAB “TAWHEED MUYASSAR” / ASAAN TAWHEED
BY: “ABDULLAH BIN AHMAD AL HAWAIL”
Table of Contents