Sections
< All Topics
Print

10. NAWAQIZ-E-ISLAM [The Nullifiers of the Religion]

NAWAQIZ-E-ISLAM

 

Nawaqiz (Naaqiz ki jama(plural) hai) Naqiz kehte hain kisi kharab aml ko- ye umoor bohat ziada hain- lekin un mein se ziada khatarnaak aur kaseer ul waqu’ dus(10) cheezen hain: 

1. Allah Ta’aala ke sath shirk karna: shirk me se ghair Allah ke liye zibah karna bhi hai, jese kisi qabr par zibah karna ya phir jinnat(ya shayateen) ke liye zibah karna.

Allah Ta’aala ka farmaan hai: 

 
اِنَّ اللّٰہَ لَا یَغْفِرُ اَنْ یُّشْرَکَ بِہٖ وَ یَغْفِرُ مَا دُوْنَ ذٰلِکَ لِمَنْ یَّشَآئُ

“Yaqeenan Allah Ta’aala Apne sath shirk kiye jaane ko nahi bakhshta aur us se kum gunaah jise chahay bakhsh deta hai.”

[Sura Nisa: 04: 116]

2. Apne aur Allah Ta’aala ke darmiyaan wasta banana unko sifarishi banana unpar bharosa karna.

Iski daleel Allah ka ye farmaan hai: 

وَیَعْبُدُوْنَ مِنْ دُوْنِ اللّٰہِ مَالَا یَضُرُّہُمْ وَلَا یَنْفَعُہُمْ وَ یَقُوْلُوْنَ ھٰؤُلَآئِ شُفَعَآؤُنَا عِنْدَاللّٰہِ

“Ye log Allah Ta’aala ke elawa aison ki ibadat karte hain jo unko nuqsaan desakte hain na faida- aur kehte hain keh ye Allah Ta’aala ke yahan hamare sifaarishi hain.”

[Surah Yunus: 18]

Yehi haal o hukm un logon ka bhi hai jo qabron aur mazaraat par haziriyan dete hain, wahan wo ibaadaat baja late hain jo sirf Allah ke layeq hain jese Dua, nazar, zibah wa fariyad karna, qabron ke gir tawaf karna; ye sab kaam wo is umeed par karte haim keh ye qabron aur mazaron wale Allah Ta’aala ke yahan inki sifarish karenge- mojuda daur mein sab se ziada waaq’e hone wala aur sab se ziada khatarnaak islam ka mukhalif aur naqiz fail yehi hai- kyun keh islam ke bohat se naam lewaon ne jo islam se asal haqeeqatan waqif nahi hain apne aur apne Rab ke darmiyaan bohat se waseele aur zariye bana rakhe hain- ye log apne faasid khayalaat wa nazriyaat ki wajha se barah e rast Allah Ta’aala ko nahi pukarte balke kehte hain keh Allah Ta’aala tak rasaaee ke liye koi waseela aur zariya banana bohat zaroori hai, jese keh Duniya ke kisi Badshah ke paas jaaker barah raasat sawaal nahi kiya jasakta.

Allah Ta’aala tou in badshahon se barh kar hai Us ko barah-e-rast kese pukara jae? Jab ke wo ye keh kar Allah ki shaan mein ghustakhee kar rahe hain- kyun Nauzubillah- is tarha keh kar unhon ne tou Allah Ta’aala ko uski kamzor wa natawan makhluq se mushabeh wa misal kardiya hai.

unke muta’aliq irshad-e-Ilaahi hai.

قُلِ ادْعُوا الَّذِیْنَ زَعَمْتُمْ مِنْ دُوْنِ اللّٰہِ لَا یَمْلِکُوْنَ مِثْقَالَ ذَرَّۃٍ فِی السَّمٰوٰتِ وَلَا فِی الْاَرْضِ وَمَا لَہُمْ فِیْہِمَا مِنْ شِرْکٍ وَّمَا لَہٗ مِنْہُمْ مِن ظَہِیْرٍ o وَلَا تَنْفَعُ الشَّفَاعَۃُ عِنْدَہٗٓ اِلَّا لِمَنْ اَذِنَ لَ

“Farma dijye keh Allah kay siwa jin ka tumhain guman hai, sab ko pukar lo, Na un main se kisi ko asmaan aur zameen main se ek zarre ka ikhtyaar hai aur na hi is main in ka koi hissa hai, 

Na in main se koi Allah ka madadgaar hai. Kisi ki shafa’at Is ke paas kuchh faida nahi de gi siwae us kay jise Woh ijazat de.” 

[Surah Saba: 22-23]

Mushrikeen qadeem hon ya jadeed; shafa’at Qehri kay aqeede se wabastah ho kar shirk e akbar main mubtila ho chuke hain. Halankeh Allah Ta’alaa ne Qur’an e Kareem main kai maqamaat par Qayamat kay din esi kisi bhi qism ki shafa’at ki nafi ki hai jis ka yeh mushrikeen aqeedah aur guman rakhte hain. 

Farmaan e Ilaahi hai:

یٰٓاَیُّہَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا اَنْفِقُوْا مِمَّا رَزَقْنٰکُمْ مِّنْ قَبْلِ اَنْ یَّاْتِیَ یَوْمٌ لَّا بَیْعٌ فِیْہِ وَلَا خُلَّۃٌ وَّ لَا شَفَاعَۃٌ وَالْکٰفِرُوْنَ ہُمُ الظّٰلِمُوْنَ

“Aey Imaan walon! Jo maal Ham ne tumhain dya hai us main se kharch (Allah ki raah main) karte raho is se pehle keh woh din aye, jis main na koi tijarat kaam aye gi, na dosti aur na shafa’at aur Kafir hi zalim hain.” 

[Surah Baqarah: 02:256]

Neez Farmaan e Ilaahi hai:

وَاَنْذِرْ بِہِ الَّذِیْنَ یَخَافُوْنَ اَنْ یُّحْشَرُوْآاِلیٰ رَبِّہَمْ لَیْسَ لَہُمْ مّنْ دُوْنِہٖ وَلِیٌّوَّلَا شَفِیْعٌ لَّعَلَّہُمْ یتَّقُوْنَ

“Aur tum Qur’an kay zariye in logon ko darao jo is baat se darte hain keh woh aone Parwardigaar ki taraf uthae jaen ge (aur) Is ke siwa un ka koi kaarsaaz aur sifarish karne wala nahi, taake woh parhaizgaar banain.”

[Surah An’am: 06: 51]

In mazkoora bala ayaat se ma’loom hota hai kehjis shafa’at ki nafi ki gai hai woh shafa’at e Qehri hai yani mushrikeen yeh aqeedah rakhte the keh hamaare awliya o saaliheen ka Allah Ta’alaa kay haan esa maqam hai keh woh jis ko chahain Allah kay azab se chhura lain. Jesa keh hamaare daur kay log bhi kehte hain: “Khuda ka pakra chhurai Muhammad ﷺ……. Muhammad ﷺ ka pakra koi nahi chhura sakta.” aur kehte hain: “In ki jaah se talb ki jaane wali sifarish qabil e qubool ho gi.” 

Magar Irshad e Bari Ta’alaa hai:

مَنْ ذَا الَّذِیْ یَشْفَعُ عِنْدَہٗ اِلَّا بِاِذْنِہِ

“(Allah Ta’alaa ) ki ijazat kay baghair kon hai jo Is kay paas sifarish kare.” 

[Surah Baqarah: 02:255]

Ek aur maqam par farmaaya:

وَلَا یَشْفَعُوْنَ اِلَّا لِمَنِ ارْتَضٰی وَہُمْ مِّنْ خَشْیَتِہٖ مُشْفِقُوْنَ

“Yeh (farishtay) kisi ki sifarish nahi karte. Ilawa un kay jin se Allah Ta’alaa khush ho. Woh to khud Bait e Ilaahi se larzaan o tarsaan hain.” 

[Sura Anbiya: 28]

Farmaan e Ilaahi hai:

 
قُلْ لِّلّٰہِ الشَّفَاعَۃُ جَمِیْعًا لَہٗ مُلْلکُ السَّمٰوٰتِ وَالْاَ رْضِ ثُمَّ اِ لَیْہِ تُرْجَعُوْنَ

“Farma dijye keh: sab shafa’at Allah hi kay ikhtyaar main hai, Asmaanon aur zameen ki badshaahi Usi kay lye hai phir tum sab Us ki taraf loutae jao ge.”

[Sura Zumar: 44]

Irshad e Ilaahi hai:

 
وَکَمْ مِّنْ مَلَکٍ فِی السَّمٰوٰتِ لَا تُغْنِیْ شَفَاعَتُہُمْ شَیئًا اِلَّا مِنْ بَعْدِ اَنْ یَّاْذَنَ اللّٰہُ لِمَنْ یَّشَآئُ وَیَرْضٰی

“Bohat se Farishtay asmaanon main hain jin ki sifarish kuchh bhi nafa’ nahi de sakti, magar Allah Ta’alaa ki ijazat kay ba’ad aur is kay lye sirf jis ko Allah Ta’alaa chahe, aur pasand farmae.”

[Surah Najm:  26]

Shafa’at kay baab main do baaton ka khayal rakhna bohat zaruri hai:

1. Sifarish karne wala Allah Ta’alaa ki ijazat kay ba’ad hi koi sifarish kar sake ga.

Jesa keh Farmaan e Ilaahi hai:

مَنْ ذَا الَّذِیْ یَشْفَعُ عِنْدَہٗ اِلَّا بِاِذْنِہِ

“Kaun Shakhs hai jo Allah ki inazat ke baghair uske yahan shafa’at karega.”

[البقرۃ: ۲۵۵]

2. Shafa’at ki ijazat Allah Ta’aala ne sirf un logon ke liye rakhi hai jinse Allah raazi hoga aur pasand farmaega.

Jese keh Allah Ta’aala ka irshad: 

وَلَا یَشْفَعُوْنَ اِلَّا لِمَنِ ارْتَضٰی

“Ye (farishte) kisi ki sifarish nahi karte- elawa unke jinke Liye Allah Ta’aala pasand farmaate.”

 
[الانبیاء: ۲۸] 

Jab keh mushrikon ke a’maal kura kirkit ki manind zaya hojaen ge unke liye koi shafa’at na hogi- unke khaahishat ke bar’aks koi sifarish unko mayyasar na aegi, kyun keh jo shakhs tawheed par aml kiye baghair apni shafa’at chahta hai tou iska anjaam mehroomi ke siwa kiya hoga?

3. Jo shakhs mushrikon ko kafir na samajhta ho ya unke kufr mein shak karta hai ya unke mazheb ko Sahih samjhta hai tou ye shakhs kafir hai.[Ad durra ul Nadiyah] 

Matlab ye hai keh jo musalmaan is shakhs ke kafir hone mein shak kare jaise Ummat-e-Muhammadia ne bil itefaq  kafir qaraar diya ho jaise Esaee aur mushrik wagherah- shirk chand makhsoos cheezon ka naam nahi balke shirk ye hai keh Allah ke liye jo a’maal wa siffat khaas hain wo kisi aur ke liye maanna.

[الدرء النضیہ ص۱۸]

Allamah Anwar shah kashmiri(رحمہ اللّٰہ) farmaate hain:

“Is liye ham har us shakhs ko bhi kafir kehte hain jo islam ke elawa kisi bhi(dusre) mazheb ke maanne wale ko kafir na kahe; ya unko kafir kehne mein tardeed kare; ya unke kufr mein shak o shuba kare; ya unke mazheb ko durust kahe- agarchay ye shakhs apne musalmaan hone ka dawah bhi karta ho, aur Islam ke elawa har mazheb ko batil bhi kehta ho; tab bhi ye ghair mazheb walon ko kafir na kehne wala khud kafir hai-

Isliye keh ye shakhs, aik musallimah kafir ko kafir kehne ki mukhalifat karke Islam ki mukhalifat karta hai; aur ye Deen par khula hua ta’an aur iski takzeeb hai.”

Kuffar se bezaari, unke sath ikhtilat se parhez, aur unke ehkam jaanna zaruri hain, taake kufr ki haqeeqat ka pata chal sakay, aur musalmaan ke huqooq zaya na hoon; jaise huqooq werasat, huqooq e wilayat, huqooq e kafalat wa tarbiyat wagherah- kyun keh hamen musalmaanon ke sath dosti karni hai, kafiron ke sath nahi- aise hi wo shakhs bhi kafir aur dairah e Islam se kharij hai jo kisi kafir aur murtad ko taweel karke musalmaan sabit karne ki koshish kare.

Shaykh ul Islam Ibn Taymiyyah(رحمہ اللّٰہ) farmaate hain: 

“Jo shakhs yamaamah walon ke haq mein  taweel (karke unko musalmaan sabit) kare wo kafir hai, aur jo shakhs kisi qata’ee aur yaqeeni kafir ko kafir na kahe, wo bhi kafir hai.” 

[Minhaj ul sunnah 2, 233]

4. Islam par tarjih:

Is baat ka aeteqaad rakhna keh Rasool Allah(ﷺ) ke raste se hatkar kisi ka tareeqekaar ziada kamil aur achha hai, aur is mein kamyaabi hai- ya ye keh ghair ka hukm aur Rasool (ﷺ) ka hukm barabar hain, un mein koi farq nahi- ya phir jo koi Rasool Allah (ﷺ) ke hukm par kisi dusre taghut ke hukm ko tarjih deta ho; tou aisa insaan kafir hai.

Is main ba zail umoor shamil hain:

1. Ye aiteqaad rakhna keh logon ke tayyar karda nizaam aur qawaneen Allah ki shari’at se afzal hain. 

Farmaan-e-illahi hai:

أَمْ لَہُمْ شُرَکَائٌ شَرَعُوْا لَہُم مِّنَ الدِّیْنِ مَا لَمْ یَأْذَن بِہِ اللّٰهُ

“Kiya unke shareek hain jinhon ne unke liye Deen aijaad kiya hai, jiski Allah Ta’aala ne ijazat nahi di.” 

[Surah Shu’araa:  200]

Chunke Allah Ta’aala ne Aap(ﷺ) ko hakim aur imaam muqarrar kiya hai, lehaza Aap(ﷺ) ke hukm ko be choon wa charaan tasleem kiya jae, Irshad ilahi hai:

فَلَا وَرَبِّکَ لَا یُؤْمِنُوْنَ حَتَّیَ یُحَکِّمُوْکَ فِیْمَا شَجَرَ بَیْْنَہُمْ ثُمَّ لَا یَجِدُوْا فِیْ أَنفُسِہِمْ حَرَجاً مِّمَّا قَضَیْتَ وَیُسَلِّمُواْ تَسْلِیْماً
 

“Aap (ﷺ) ke Rabb ki qasm! Yeh is waqt tak momin nahi hosakte, jab tak apne apus ke tamam ikhtilafat mein Aap(ﷺ) ko hakim tasleem na karlen- aur phir apne nafoos mein Aap (ﷺ) ke faisle ke khilaf koi tangi bhi na paen aur usay sahih tour par maanlen.”

[Surah Nisa:04:65]

2. Ye aiteqaad rakhna keh “Deen Islam ki tatbeeq aur nifaaz mumkin nahi – aur ye Deen is daur ke musalmaanon ke pichhe reh jane ki wajah hai.”
3. Ya ye aiteqaad rakhna keh Deen insaan ke apne Rabb se ta’alluq ka naam hai, aur isay baaqi umoor e zindagi mein koi dakhal nahi.
4. Ya ye aiteqaad  keh shara’i hudood jaise chor ka hath kaatna aur shadi shuda zaani ko sangsaar karna, is zamane ke sath munasib nahi hai;

Halankeh Islam Qiyamat tak anay wale logon ka deen hai- jo keh Allah Ta’aala ne bandon ki ain maslihat ke mutabiq nazil kiya hai- aur aisa hargiz mumkin nahi keh Allah Ta’aala Apne bandon ko kisi kaam ke karne ka hukm den aur uska hona na-mumkin ho ; ye sarasar ilzam hai-

Allah Ta’aala farmaate hai:

 
لَا یُکَلِّفُ اللّٰہُ نَفْساً إِلَّا وُسْعَہَا لَہَا مَا کَسَبَتْ وَعَلَیْْہَا مَا اکْتَسَبَتْ

“Allah Ta’aala kisi jee ki uski taqat se barhkar kisi cheez ka mukallif nahi thehraate, har nafs ke liye wohi hai jo usne kamaya, aur uspar usi ka bojh hai jo usne kiya ho”.

[Surah Baqarah: 02: 286]

Allah Ta’aala farmaate hain: 

وَمَنْ لَّمْ یَحْکُمْ بِمَا أَنزَلَ اللّٰهُ فَأُوْلَـئِکَ ہُمُ الْکَافِرُونَ

“Aur jo koi Allah Ta’aala ke nazil karda ehkam ke mutabiq faisla na kare, pus wohi log kafir hai.”

[Sura Mai’dah: 05: 44]

Imaam Tawus ( رحمہ اللہ) is ayat ki tafseer mein farmaate hain: “Allah Ta’aala ki kitaab ke baghair faisla karne wala kafir hai.”

5. Nabi kareem (ﷺ) ke kisi tareeqe se nafrat aur bughz rakhna- agar uske mutabiq aml bhi karega tou kufr ka murtakib hoga.

Daleel: Allah Ta’aala farmaate hain:

ذَلِکَ بِأَنَّہُمْ کَرِہُوْا مَا أَنزَلَ اللّٰهُ فَأَحْبَطَ أَعْمَالَہُمْ

“Ye isliye hai keh unhon ne Allah Ta’aala ki nazil karda cheez ko napasand kiya tou Allah Ta’aala ne unke tamam a’maal bekaar kardiye.”

[Surah Muhammad:47: 09]

Aur Farmaaya: 

فَلْیَحْذَرِ الَّذِیْنَ یُخَالِفُوْنَ عَنْ أَمْرِہِ أَن تُصِیْبَہُمْ فِتْنَۃٌ أَوْ یُصِیْبَہُمْ عَذَابٌ أَلِیْمٌ

“So chahye keh wo log dar jaen jo Rasool Allah(ﷺ) ke hukm ki khilaf warzi karte hain keh unhe koi azmaish pohanche, ya dardnaak azab mein mubtila kardiye jaen.”

[Sura Noor: 63]

Nabi kareem(ﷺ) ne farmaaya : 

تَرَکْتُ فِیْکُمْ اَمْرَیْنِ لَنْ تَضِلُّوْا مَا تَمَسکتم بِہَا کِتَابُ اللّٰہِ وَسُنَّۃَ رَسُوْلِہٖ

“main tum mein do cheezen chhor kar jaraha hoon tum hargiz kabhi bhi gumraah na ho ge jab tak tum unko mazbooti se thaam rakhoge, wo hain Allah Ta’aala ki kitaab aur Us ke Rasool ki Sunnat.”

Neez isme Muhammad(ﷺ) se bughz rakhna.

6. Jisne Nabi kareem (ﷺ) ke deen mein kisi cheez ka ya sawab ya azaab ka mazaq urhaya.

Farmaan-e-ilahi:

قُلْ اَبِا اللّٰہِ وَ اٰیٰتِہٖ وَرَسُوْلِہٖ کُنْتُمْ تَسْتَہْزِؤُنَ لَا تَعْتَذِرُوْا قَدْ کَفَرْتُمْ بَعْدَ اِیْمَانِکُمْ

“(Ae Muhammad(ﷺ) ) un se kehdijye kiya Allah ya Us ki ayaat aur Us ke Rasool (ﷺ) ka tum mazaq urhate ho? Bahane matt banao tum imaan lane ke ba’ad kafir hochuke ho.”

[Surah Tauba: 09:65]

▫️Nabi Kareem (ﷺ) ko bura bhala kehna, sab wa shatam karke eza rasaani karna bhi shamil hain- Rasool Allah (ﷺ) ka mazaq urhana ya unhain takleef dena bhi ain kufr ke kamon mein se hai.

 

7. Jadu: isme nafrat ya mohabbat peda karne ke a’maal karwana bhi shamil hain.

Aur ye hukm un logon ko bhi shamil hai Jo jadu karte hon ya phir jadu par raazi rehte ho.

Farmaan-e-ilahi hai:

 
وَمَا یُعَلِّمٰنِ مِنْ اَحَدٍ حَتّٰی یَقُوْلَا اِنَّمَا نَحْنُ فِتْنَۃٌ فَــلَا تَکْفُرْ

“Wo kisi ko is waqt tak nahi sikhate jab tak ye na keh dete keh ham fitna hain”

[Sura Baqarah: 02:102]

▫️is main wo saare a’maal,  ta’weezat shamil hain jo do afraad yani miya biwi mein nafrat ya judaee peda karte hon- ya aise ta’weez ganday jo do afraad mein mohabbat peda karane ke liye kiye jaate hain; ye sab a’maal jadu mein shumar hote hain- ye shirkiya a’maal hain; kyunkeh inko nafa wa nuqsaan ka zariya samjha jata hai aur Allah ke elawa kisi aur se nafa ya nuqsaan ki tawaqqo rakhna shirk o kufr hai- 

Nabi Kareem(ﷺ) ne farmaaya: 

حَدَّ السَّاحِرٍ ضَرْبٌ بِالسَّیْف‘‘ ’

“Jadugar ki saza talwaar se uska sar qalm karna hai.”

 

Aur Farmaaya:

اِجْتَنِبُوْا سَبْعَ الْمُوْبِقَاتِ … وَالسَّحْرُ ‘‘ ’’ 

Saat(7) halak kardene wale gunaahon se bacho aur in main se ek ke muta’alliq farmaaya aur jadu se bacho.”

[Bukhari & Muslim]

 Jadu se murad wo a’maal hain aur heelay bhi hain jinse dil, ankhon aur jism mein taseer peda hoti hai- aur iske natije mein miya biwi mein judai, kisi ke dil mein kisi ki tarf raghbat daalna, insaan ko bemar aur pareshaan karna aur qatl karna bhi mumkin hota hai- 

Imaam Abu haneefa, Imaam Ahmed. Aur  imaam malil (رحمۃ اللہ علیہم)  ne jadu seekhne, sikhane, aur karne par kufr ka fatwaa diya hai- Ibn Qudaimah maqdasi ne ijmaa’ e ummat naql kiya hai keh: “Jadu seekhna aur seekhana aur jadu karna kufr hai”.

[افصاح: 226/2]

8. Musalmaanon ke khilaf mushrikeen ka sath dena aur unki madad karna: 

Allah Ta’aala ka farmaan: 

وَمَنْ یَّتَوَلَّہُمْ مِّنْکُمْ فَاِنَّہٗ مِنْہُمْ اِنَّ اللّٰہَ لَا یَہْدِی الْقَوْمَ الظّٰلِمِیْنَ

“Jisne tum mein se un kafiron se dosti ki wo inhi mein se hoga- Allah zalim qoum ko hidayat nahi karta.”

[Sura Mai’dah: 05:51]

▫️Imaan ke munafi umoor mein se ye bhi hai keh muminon ke muqabile mein kafiron se dosti rakhi jae, isliye keh musalmaanon par kafiron, yahud o nasara, neez tamam mushreekon se dushmani rakhni wajib hai aur inse mohabbat rakhne se ehtiyat aur parhez zaroori hai jese keh Allah Ta’aala ne farmaaya:

یَا أَیُّہَا الَّذِیْنَ آمَنُوْا لَا تَتَّخِذُوْا عَدُوِّیْ وَعَدُوَّکُمْ أَوْلِیَائَ تُلْقُوْنَ إِلَیْْہِم بِالْمَوَدَّۃِ وَقَدْ کَفَرُوْا بِمَا جَائَ کُم مِّنَ الْحَقِّ﴾

“Ae imaan walon! Mere aur apne dushmaan ko apna dost mat banao tum unko mohabbat ki nazar se dekhte ho, aur wo usi cheez ka kufr karte hain jo tumhare paas sach aa pohancha hai”

[Surah Mumtahena: 01] 

yahan tak keh agar baap dada kafir hon tou unse mohabbat rakhna haram hai, 

Allah Ta’aala ne farmaaya : 

لَا تَجِدُ قَوْمًا یُّؤ مِنُوْنَ بِا للّٰهِ وَ الْیَوْمِ الآخِرِ یُوَادُّ وْنَ مَنْ حَادَّ اللّٰهَ وَ رَ سُوْلَہُ وَ لَوْ کَا نُوْا آبَا ئَہُمْ اَوْ أبْنَائَہُمْ اَوْ اِخْوَانَہُمْ اَوْ عَشِیْرَ تَہُمْ

“Aur Akhirat ke din par imaan rakhne waalon ko Aap (ﷺ) Allah aur Us ke Rasool se dushmani karne waalon se mohabbat rakhte hue hargiz na paen ge agarcheh wo unke baap ya bete ya unke bhai ya unke kunbe (qabile) ke (aziz) hi kyun na ho.”

[Surah Mujadilah: 22]

Islam aur Musalmaanon ke ta’alluq se yahud o nasara ka makr o fareb, unki raisha dawaniyaan, Ahle Islam ke sath unki jangen aur deen ki raah mein rukawaten khari karna, Islam ko nuqsaan pohanchane ke liye bhari maal kharch karna, unke ye tamam mu’amilat bilkul wazeh hain- 

Moujuda daur mein kuffaar o mushrikeen keh sath baaz musalmaanon ki dosti ki ek surat ye hai keh unke sath baghair kisi dawati maqsad ke rihaish ikhtiyar ki jae, ya bila zarurat unke shehron ka safar kiya jae aur unka libaas, unki ‘aadaat wa atwaar aur aam tarz e zindagi mein unki mushabahat ikhtiyar ki jae, unki zaban o tehzeeb apnae jae.

9. Is baat ka aiteqaad rakhna keh baaz peeron aur waliyon ya kisi aur ko Muhammad Rasool Allah (ﷺ) ke shari’at keh khilaf kaam karne ki ijazat hai, jese Hazrat khizar (علیہ السلام) ko Hazrat Moosa (علیہ السلام) ki shari’at ke bar-‘aks kaam karne ki ijazat thi.

Allah Ta’aala ka farmaan: 

وَمَن یَّبْتَغِ غَیْرَ الإِسْلَامِ دِیْناً فَلَنْ یُّقْبَلَ مِنْہُ وَہُوَ فِی الْآخِرَۃِ مِنَ الْخَاسِرِیْنَ

“Jo koi Islam ke elawa koi aur Ddeen talaash karega wo is se hargiz qubool na kiya jaega aur wo insaan akhirat mein ghaataa panay walon mein se hoga.”

[Surah Ale Imraan: 03:85]

10. Allah Ta’aala ke deen se rugardaani karna- na iski taleem hasil kare aur na hi iske mutabiq aml kare.

Is se murad itni taleem ka husool hai jis se insaan apni roz marra ki ibadat ko ba tareeq husn ada karsake aur Tawheed aur shirk ki pehchan hasil ho.

Allah Ta’aala farmaate hain:

وَمَنْ أَظْلَمُ مِمَّن ذُکِّرَ بِآیَاتِ رَبِّہِ ثُمَّ أَعْرَضَ عَنْہَا إِنَّا مِنَ الْمُجْرِمِیْنَ مُنْتَقِمُوْنَ

“Is se barh kar zalim kaun hoga? Jisko iske Parwardigaar ki ayaat se yaad dihaani karaee gae, magar usne munh mora, Beshak Ham mujrimon se inteqam lene wale hain.”

[Surah Sajdah: 22]

Do ahem Note: 

1. In nawaqiz ka irtekab karne wale tamam logon ke liye aik hi hukm hai is meim koi farq nahi kiya jaega keh koi mazaq mein aisi baat keh raha hai ya sanjeedgi mein, ya phir khouf ke maare aisi baat kahe raha hai- sivae us insaan ke jispar zabardasti karte huay ye kalimat kehlwae jaen.
2. In tamam nawaqiz ke khatrat sab se ziada hain- aur aksar tour par pesh ane waali baten hain- musalmaan par wajib hota hai keh un baton se bach kar rahe aur apne nafs par in kalimat ke sadar hone ka khouf mehsoos karta rahe.
 
REFERENCE:
KITAAB “TAWHEED MUYASSAR” / ASAAN TAWHEED
BY: “ABDULLAH BIN AHMAD AL HAWAIL”
10 / 50 Sharah Kitaab Al Tawheed Class 04 Part 02

The Nullifiers of the Religion

 

With proofs There are plenty of nullifiers of Islam, but the most dangerous ones are ten, and they are as follows: 

 

1. Shirk“Polytheism”. 

 

اِنَّ اللّٰہَ لَا یَغْفِرُ اَنْ یُّشْرَکَ بِہٖ وَ یَغْفِرُ مَا دُوْنَ ذٰلِکَ لِمَنْ یَّشَآئُ

 

”Verily! Allaah forgives not (the sin of) setting up partners in worship with Him, but He forgives whom he pleases sins other than that, and whoever sets up partners in worship with Allaah, has indeed strayed far away-”

[An-Nisaa’, v. 116]

 

2. Placing intermediaries between one’s self and Allaah, calling unto them and asking intercession from them, and asking reliance in them.

 

3. Not holding the polytheists to be disbelievers, or having doubt about their disbelief or considering their ways and beliefs to be correct.

 

4.The belief that there is an existing guidance that is more complete than the Prophet Muhammad’s (ﷺ).

 

5. Hating something that the Messenger came with, even though the person may act upon it, he has still disbelieved.

 

6. Mocking or ridiculing any part of the Messenger’s Religion or its rewards and punishments. 

قُلْ اَبِا اللّٰہِ وَ اٰیٰتِہٖ وَرَسُوْلِہٖ کُنْتُمْ تَسْتَہْزِؤُنَ لَا تَعْتَذِرُوْا قَدْ کَفَرْتُمْ بَعْدَ اِیْمَانِکُمْ

Say: “Was it at Allaah, and His Ayat (proofs, evidences) and His Messenger that you were mocking?” Make no excuse; you have disbelieved after you had believed-”

[At-Taubah, V.65] 

 

7.Sorcery, which includes magic spells that cause a person to hate something he seeks after or love something he doesn’t seek after, performing it or being pleased with it both are nullifiers.

وَمَا یُعَلِّمٰنِ مِنْ اَحَدٍ حَتّٰی یَقُوْلَا اِنَّمَا نَحْنُ فِتْنَۃٌ فَــلَا تَکْفُرْ

”Sulaiman did not disbelieve, but the Shayatin (devils) disbelieved, teaching men magic-”

[Al-Baqara, V.102]

 

8.Supporting and assisting the polytheists against the Muslims. 

وَمَنْ یَّتَوَلَّہُمْ مِّنْکُمْ فَاِنَّہٗ مِنْہُمْ اِنَّ اللّٰہَ لَا یَہْدِی الْقَوْمَ الظّٰلِمِیْنَ

”And if any amongst you takes them as Auliya, then surely he is one of them. Verily, Allaah guides not those people who are the Zalimoon (polytheists and wrongdoers and unjust)-”

[Al-Maedah, V.51]

 

9.Believing that it is permitted for some people to be free of implementing the Sharee’ah (Islamic law) of Muhammad (ﷺ).

وَمَن یَّبْتَغِ غَیْرَ الإِسْلَامِ دِیْناً فَلَنْ یُّقْبَلَ مِنْہُ وَہُوَ فِی الْآخِرَۃِ مِنَ الْخَاسِرِیْنَ﴾

”And whoever seeks a religion other than Islam, it will never be accepted of him, and in the Hereafter he will be one of the losers-”

[Al-Imran, V.85] 

 

10.Turning away from Allaah’s religion, not learning it or implementing it. 

 

وَمَنْ أَظْلَمُ مِمَّن ذُکِّرَ بِآیَاتِ رَبِّہِ ثُمَّ أَعْرَضَ عَنْہَا إِنَّا مِنَ الْمُجْرِمِیْنَ مُنْتَقِمُوْنَ

”And who does more wrong than he who is reminded of the Ayat (proofs, evidences, verses, lessons, signs, revelations, etc.) of his Lord, then he turns aside therefrom? Verily, We shall exact retribution from the Mujrimoon (criminals, disbelievers, polytheists, sinners, etc.)-”

[As-sajda, V.22]

 

REFERENCE:
BOOK: “THE TAWHEED MADE EASY “
By Rayan Fawzi Arab.

نواقض اسلام

 

.

نواقض[ناقض کی جمع ہے؛ناقض]کہتے ہیں کسی عمل کو خراب، فاسد، باطل کرنے والے قول اور عمل کو۔یہ امو بہت زیادہ ہیں۔ لیکن ان میں سے زیادہ خطرناک اور کثیر الوقوع دس چیزیں ہیں.

1. اللہ تعالیٰ کیساتھ شرک کرنا :

شرک میں سے غیر اللہ کے لیے ذبح کرنا بھی ہے، جیسے کسی قبر پر ذبح کرنایا پھ جنات[یا شیاطین]کے لیے ذبح کرنا۔ اللہ تعالیٰ کافرمان ہے.

اِنَّ اللّٰہَ لَا یَغْفِرُ اَنْ یُّشْرَکَ بِہٖ وَ یَغْفِرُ مَا دُوْنَ ذٰلِکَ لِمَنْ یَّشَآئُ

’’یقینا اللہ تعالیٰ اپنے ساتھ شریک کیے جانے کو نہیں بخشتا اور اس سے کم گناہ جسے چاہے بخش دیتا ہے۔‘

[النساء: ۱۱۶]

2 ۔ اپنے اوراللہ تعالیٰ کے درمیان واسطے بنانا ان کوسفارشی بنانا ان پر بھروسا کرنا

اس کی دلیل اللہ تعالیٰ کایہ فرمان ہے :

وَیَعْبُدُوْنَ مِنْ دُوْنِ اللّٰہِ مَالَا یَضُرُّہُمْ وَلَا یَنْفَعُہُمْ وَ یَقُوْلُوْنَ ھٰؤُلَآئِ شُفَعَآؤُنَا عِنْدَاللّٰہِ

یہ لوگ اﷲ کے علاوہ ایسوں کی عبادت کرتے ہیں جو ان کو نقصان دے سکتے ہیں نہ فائدہ۔اور کہتے ہیں کہ یہ اللہ تعالیٰ کے ہاں ہمارے سفارشی ہیں ‘‘۔

[یونس:۱۸]

یہی حال و حکم ان لوگوں کا بھی ہے جو قبروں اور مزارات پر حاضریاں دیتے ہیں، وہاں وہ عبادات بجالاتے ہیں جو صرف اﷲ کے لئے لائق ہیں جیسے دعا، نذر، ذبح وفریاد کرنا، قبروں کے گرد طواف کرنا؛ یہ سب کام وہ اس امید پر کرتے ہیں کہ یہ قبروں اور مزاروں والے اﷲتعالیٰ کے ہاں ان کی سفارش کریں گے۔موجودہ دورمیں سب سے زیادہ واقع ہونے والا اور سب سے زیادہ خطرناک اسلام کا مخالف اور ناقض فعل یہی ہے۔کیونکہ اسلام کے بہت سے نام لیواؤں نے جو اسلام کی اصل حقیقت سے واقف نہیں ہیں اپنے اوراپنے رب کے درمیان بہت سے وسیلے اور ذریعے بنارکھے ہیں۔یہ لوگ اپنے فاسد خیالات ونظریات کی وجہ سے براہ راست اﷲتعالیٰ کو نہیں پکارتے بلکہ کہتے ہیں کہ اﷲتعالیٰ تک رسائی کے لئے کوئی وسیلہ اورزینہ بنانا بہت ضروری ہے، جیساکہ دنیا کے کسی بادشاہ کے پاس جا کربراہ راست سوال نہیں کیاجاسکتا۔اﷲتعالیٰ تو ان بادشاہوں سے بڑھ کر ہے اس کو براہِ راست کیسے پکاراجائے ؟جب کہ وہ یہ کہہ کر اﷲ کی شان میں گستاخی کررہے ہیں۔ کیونکہـ- نعوذ باﷲ-اس طرح کہہ کر انہوں نے تو اﷲتعالیٰ کواس کی کمزور وناتواں مخلوق سے مشابہ ومثل کردیاہے۔ ان کے متعلق ارشادِ الٰہی ہے

قُلِ ادْعُوا الَّذِیْنَ زَعَمْتُمْ مِنْ دُوْنِ اللّٰہِ لَا یَمْلِکُوْنَ مِثْقَالَ ذَرَّۃٍ فِی السَّمٰوٰتِ وَلَا فِی الْاَرْضِ وَمَا لَہُمْ فِیْہِمَا مِنْ شِرْکٍ وَّمَا لَہٗ مِنْہُمْ مِنْ ظَہِیْرٍ o وَلَا تَنْفَعُ الشَّفَاعَۃُ عِنْدَہٗٓ اِلَّا لِمَنْ اَذِنَ لَہٗ

’فرما دیجئے کہ اﷲ کے سوا جن کا تمہیں گمان ہے سب کو پکار لو نہ ان میں سے کسی کو آسمانوں اور زمینوں میں سے ایک ذرہ کااختیار ہے اور نہ ہی اس میں ان کا کوئی حصہ ہے۔نہ ان میں سے کوئی اﷲکا مددگار ہے۔ کسی کی شفاعت اس کے پاس کچھ فائدہ نہیں دے گی۔سوائے اس کے جسے وہ اجازت دے۔

[سبا:۲۲۔۲۳]’

مشرکین قدیم ہوں یا جدید؛ شفاعت قہری کے عقیدہ سے وابستہ ہوکر شرک اکبر میں مبتلاہوچکے ہیں، حالانکہ اﷲتعالیٰ نے قرآن کریم میں کئی مقامات پرقیامت کے دن ایسی کسی بھی قسم کی شفاعت کی نفی کی ہے۔ جس کا یہ مشر کین عقیدہ اور گمان رکھتے ہیں۔فرمانِ الٰہی ہے.

یٰٓاَیُّہَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا اَنْفِقُوْا مِمَّا رَزَقْنٰکُمْ مِّنْ قَبْلِ اَنْ یَّاْتِیَ یَوْمٌ لَّا بَیْعٌ فِیْہِ وَلَا خُلَّۃٌ وَّ لَاشَفَاعَۃٌ وَالْکٰفِرُوْنَ ہُمُ الظّٰلِمُوْن﴾

اے ایمان والو!جومال ہم نے تمہیں دیا ہے اس میں سے خرچ(اﷲکی راہ میں)کرتے رہواس سے پہلے کہ وہ دن آئے، جس میں نہ کوئی تجارت کام آئے گی نہ دوستی اورنہ شفاعت اور کافر ہی ظالم ہیں۔‘‘

[البقرۃ:۲۵۴]

نیزفرمان الٰہی ہے :

وَاَنْذِرْ بِہِ الَّذِیْنَ یَخَافُوْنَ اَنْ یُّحْشَرُوْآاِلیٰ رَبِّہَمْ لَیْسَ لَہُمْ مّنْ دُوْنِہٖ وَلِیٌّوَّلَا شَفِیْعٌ لَّعَلَّہُمْ یتَّقُوْنَ

’اور تم قرآن کے ذریعہ سے ان لوگوں کو ڈراؤجو اس بات سے ڈرتے ہیں کہ وہ اپنے پردردگار کی طرف اٹھا ئے جا ئیں گے(اور) اس کے سوا ان کاکو ئی کار سازاور سفارش کرنے والا نہیں ہے تاکہ وہ پرہیزگار بنیں ‘‘۔

[الا نعام:۵۱]

ان مذکورہ بالاآیات سے معلوم ہوتا ہے کہ جس شفاعت کی نفی کی گئی ہے وہ شفاعت قہری ہے۔یعنی مشرکین یہ عقیدہ رکھتے تھے کہ ہمارے اولیاء وصالحین کااﷲتعالیٰ کے ہاں ایسا مقام ہے کہ وہ جس کو چاہیں اللہ کے عذاب سے چھڑا لیں۔جیسا کہ ہمارے دور کے لوگ بھی کہتے ہیں: ’’خدا کا پکڑا چھڑائے محمد …محمد کا پکڑا چھڑا کوئی نہیں سکتا۔‘‘ اور کہتے ہیں: ان کی جاہ سے طلب کی جانے والی سفارش قابل قبول ہوگی۔ مگر ارشادِ با ری تعالیٰ ہے.

مَنْ ذَا الَّذِیْ یَشْفَعُ عِنْدَہٗ اِلَّا بِاِذْنِہِ

کی اجازت کے بغیر کون ہے جو اس کے پاس سفارش کرے۔’’(اﷲ)

[البقرۃ: ۲۵۵]

‘‘ ایک اورمقام پر فرمایا :

وَلَا یَشْفَعُوْنَ اِلَّا لِمَنِ ارْتَضٰی وَہُمْ مِّنْ خَشْیَتِہٖ مُشْفِقُوْنَ

’’یہ(فرشتے)کسی کی سفارش نہیں کرتے۔علاوہ ان کے جن سے اﷲتعالیٰخوش ہو۔وہ تو خود ہیبتِ الٰہی سے لرزاں و ترساں ہیں۔‘‘

[الانبیاء: ۲۸]

فرمان الٰہی ہے :

قُلْ لِّلّٰہِ الشَّفَاعَۃُ جَمِیْعًا لَہٗ مُلْلکُ السَّمٰوٰتِ وَالْاَ رْضِ ثُمَّ اِ لَیْہِ تُرْجَعُوْنَ

فرما دیجیے کہ: سب شفاعت اﷲ ہی کے اختیار میں ہے آسمانوں اور زمین کی بادشاہی اسی کے لئے ہے پھر تم سب اسی کی طرف لوٹائے جاؤگے‘‘۔

[الزمر: ۴۴]’

ارشادِ الٰہی ہے:

وَکَمْ مِّنْ مَلَکٍ فِی السَّمٰوٰتِ لَا تُغْنِیْ شَفَاعَتُہُمْ شَیئًا اِلَّا مِنْ بَعْدِ اَنْ یَّاْذَنَ اللّٰہُ لِمَنْ یَّشَآئُ وَیَرْضٰی

’’بہت سے فرشتے آسمانوں میں ہیں جن کی سفارش کچھ بھی نفع نہیں دے سکتی،مگر اﷲتعالیٰ کی اجازت کے بعد اور اس کے لئے صرف جس کواﷲتعالیٰچاہے،اور پسند فرمائے۔‘‘

[النجم: ۲۶]

شفاعت کے باب میں دوباتوں کا خیال کرنا بہت ضروری ہے

i. ۔سفارش کرنے والا اﷲتعالیٰ کی اجازت کے بعد ہی کوئی سفارش کرسکے گا۔ [1]

[1] اس کی دلیل اللہ تعالیٰ کایہ فرمان ہے:﴿وَیَعْبُدُوْنَ مِنْ دُوْنِ اللّٰہِ مَالَا یَضُرُّہُمْ وَلَا یَنْفَعُہُمْ وَ یَقُوْلُوْنَ ھٰؤُلَآئِ شُفَعَآؤُنَا عِنْدَاللّٰہِ﴾[یونس:۱۸]’’یہ لوگ اﷲ کے علاوہ ایسوں کی عبادت کرتے ہیں جو ان کو نقصان دے سکتے ہیں نہ فائدہ۔اور کہتے ہیں کہ یہ اللہ تعالیٰ کے ہاں ہمارے سفارشی ہیں ‘‘۔ یہی حال و حکم ان لوگوں کا بھی ہے جو قبروں اور مزارات پر حاضریاں دیتے ہیں، وہاں وہ عبادات بجالاتے ہیں جو صرف اﷲ کے لئے لائق ہیں جیسے دعا، نذر، ذبح وفریاد کرنا، قبروں کے گرد طواف کرنا؛ یہ سب کام وہ اس امید پر کرتے ہیں کہ یہ قبروں اور مزاروں والے اﷲتعالیٰ کے ہاں ان کی سفارش کریں گے۔موجودہ دورمیں سب سے زیادہ واقع ہونے والا اور سب سے زیادہ خطرناک اسلام کا مخالف اور ناقض فعل یہی ہے۔کیونکہ اسلام کے بہت سے نام لیواؤں نے جو اسلام کی اصل حقیقت سے واقف نہیں ہیں اپنے اوراپنے رب کے درمیان بہت سے وسیلے اور ذریعے بنارکھے ہیں۔یہ لوگ اپنے فاسد خیالات ونظریات کی وجہ سے براہ راست اﷲتعالیٰ کو نہیں پکارتے بلکہ کہتے ہیں کہ اﷲتعالیٰ تک رسائی کے لئے کوئی وسیلہ اورزینہ بنانا بہت ضروری ہے، جیساکہ دنیا کے کسی بادشاہ کے پاس جا کربراہ راست سوال نہیں کیاجاسکتا۔اﷲتعالیٰ تو ان بادشاہوں سے بڑھ کر ہے اس کو براہِ راست کیسے پکاراجائے ؟جب کہ وہ یہ کہہ کر اﷲ کی شان میں گستاخی کررہے ہیں۔ کیونکہـ- نعوذ باﷲ-اس طرح کہہ کر انہوں نے تو اﷲتعالیٰ کواس کی کمزور وناتواں مخلوق سے مشابہ ومثل کردیاہے۔ ان کے متعلق ارشادِ الٰہی ہے:

﴿قُلِ ادْعُوا الَّذِیْنَ زَعَمْتُمْ مِنْ دُوْنِ اللّٰہِ لَا یَمْلِکُوْنَ مِثْقَالَ ذَرَّۃٍ فِی السَّمٰوٰتِ وَلَا فِی الْاَرْضِ وَمَا لَہُمْ فِیْہِمَا مِنْ شِرْکٍ وَّمَا لَہٗ مِنْہُمْ مِنْ ظَہِیْرٍ o وَلَا تَنْفَعُ الشَّفَاعَۃُ عِنْدَہٗٓ اِلَّا لِمَنْ اَذِنَ لَہٗ﴾[سبا:۲۲۔۲۳]’’فرما دیجئے کہ اﷲ کے سوا جن کا تمہیں گمان ہے سب کو پکار لو نہ ان میں سے کسی کو آسمانوں اور زمینوں میں سے ایک ذرہ کااختیار ہے اور نہ ہی اس میں ان کا کوئی حصہ ہے۔نہ ان میں سے کوئی اﷲکا مددگار ہے۔ کسی کی شفاعت اس کے پاس کچھ فائدہ نہیں دے گی۔سوائے اس کے جسے وہ اجازت دے۔‘‘ مشرکین قدیم ہوں یا جدید؛ شفاعت قہری کے عقیدہ سے وابستہ ہوکر شرک اکبر میں مبتلاہوچکے ہیں، حالانکہ اﷲتعالیٰ نے قرآن کریم میں کئی مقامات پرقیامت کے دن ایسی کسی بھی قسم کی شفاعت کی نفی کی ہے۔ جس کا یہ مشر کین عقید ہ اور گمان رکھتے ہیں۔فرمانِ الٰہی ہے:﴿یٰٓاَیُّہَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا اَنْفِقُوْا مِمَّا رَزَقْنٰکُمْ مِّنْ قَبْلِ اَنْ یَّاْتِیَ یَوْمٌ لَّا بَیْعٌ فِیْہِ وَلَا خُلَّۃٌ وَّ لَا شَفَاعَۃٌ وَالْکٰفِرُوْنَ ہُمُ الظّٰلِمُوْنَ﴾[البقرۃ: ۲۵۴]’’اے ایمان والو!جومال ہم نے تمہیں دیا ہے اس میں سے خرچ(اﷲکی راہ میں)کرتے رہواس سے پہلے کہ وہ دن آئے، جس میں نہ کوئی تجارت کام آئے گی نہ دوستی اورنہ شفاعت اور کافر ہی ظالم ہیں۔‘‘نیزفرمان الٰہی ہے:﴿وَاَنْذِرْ بِہِ الَّذِیْنَ یَخَافُوْنَ اَنْ یُّحْشَرُوْآاِلیٰ رَبِّہَمْ لَیْسَ لَہُمْ مّنْ دُوْنِہٖ وَلِیٌّوَّلَا شَفِیْعٌ لَّعَلَّہُمْ یتَّقُوْنَ﴾[الا نعام:۵۱] ’’اور تم قرآن کے ذریعہ سے ان لوگوں کو ڈراؤجو اس بات سے ڈرتے ہیں کہ وہ اپنے پردردگار کی طرف اٹھا ئے جا ئیں گے(اور) اس کے سوا ان کاکو ئی کار سازاور سفارش کرنے والا نہیں ہے تاکہ وہ پرہیزگار بنیں ‘‘۔ ان مذکورہ بالاآیات سے معلوم ہوتا ہے کہ جس شفاعت کی نفی کی گئی ہے وہ شفاعت قہری ہے۔یعنی مشرکین یہ عقیدہ رکھتے تھے کہ ہمارے اولیاء وصالحین کااﷲتعالیٰ کے ہاں ایسا مقام ہے کہ وہ جس کو چاہیں اللہ کے عذاب سے چھڑا لیں۔جیسا کہ ہمارے دور کے لوگ بھی کہتے ہیں: ’’خدا کا پکڑا چھڑائے محمد …محمد کا پکڑا چھڑا کوئی نہیں سکتا۔‘‘ اور کہتے ہیں: ان کی جاہ سے طلب کی جانے والی سفارش قابل قبول ہوگی۔مگر ارشادِ با ری تعالیٰ ہے:﴿مَنْ ذَا الَّذِیْ یَشْفَعُ عِنْدَہٗ اِلَّا بِاِذْنِہِ﴾[البقرۃ: ۲۵۵]’’(اﷲ)کی اجازت کے بغیر کون ہے جو اس کے پاس سفارش کرے۔‘‘ ایک اورمقام پر فرمایا:﴿وَلَا یَشْفَعُوْنَ اِلَّا لِمَنِ ارْتَضٰی وَہُمْ مِّنْ خَشْیَتِہٖ مُشْفِقُوْنَ﴾[الانبیاء: ۲۸] ’’یہ(فرشتے)کسی کی سفارش نہیں کرتے۔علاوہ ان کے جن سے اﷲتعالیٰخوش ہو۔وہ تو خود ہیبتِ الٰہی سے لرزاں و ترساں ہیں۔‘‘ فرمان الٰہی ہے:﴿قُلْ لِّلّٰہِ الشَّفَاعَۃُ جَمِیْعًا لَہٗ مُلْلکُ السَّمٰوٰتِ وَالْاَ رْضِ ثُمَّ اِ لَیْہِ تُرْجَعُوْنَ﴾[الزمر: ۴۴]’’فرما دیجیے کہ: سب شفاعت اﷲ ہی کے اختیار میں ہے آسمانوں اور زمین کی بادشاہی اسی کے لئے ہے پھر تم سب اسی کی طرف لوٹائے جاؤگے‘‘۔ ارشادِ الٰہی ہے:﴿وَکَمْ مِّنْ مَلَکٍ فِی السَّمٰوٰتِ لَا تُغْنِیْ شَفَاعَتُہُمْ شَیئًا اِلَّا مِنْ بَعْدِ اَنْ یَّاْذَنَ اللّٰہُ لِمَنْ یَّشَآئُ وَیَرْضٰی﴾[النجم: ۲۶]’’بہت سے فرشتے آسمانوں میں ہیں جن کی سفارش کچھ بھی نفع نہیں دے سکتی،مگر اﷲتعالیٰ کی اجازت کے بعد اور اس کے لئے صرف جس کواﷲتعالیٰچاہے،اور پسند فرمائے۔‘‘ شفاعت کے باب میں دوباتوں کا خیال کرنا بہت ضروری ہے: ۱۔سفارش کرنے والا اﷲتعالیٰ کی اجازت کے بعد ہی کوئی سفارش کرسکے گا۔جیسا کہفرمان الٰہی ہے:

﴿مَنْ ذَا الَّذِیْ یَشْفَعُ عِنْدَہٗ اِلَّا بِاِذْنِہِ﴾[البقرۃ: ۲۵۵]’’کون شخص ہے جو اﷲکی اجازت کے بغیراس کے ہاں شفاعت کرے گا۔‘‘ ۲۔سفارش کی اجازت اﷲصرف انہی لوگوں کے لئے دے گاجن سے اﷲراضی ہوگا اور پسند فرمائے گا۔ جیساکہ ارشادِ باری تعالیٰ ہے:﴿وَلَا یَشْفَعُوْنَ اِلَّا لِمَنِ ارْتَضٰی﴾[الانبیاء: ۲۸] ’’یہ(فرشتے)کسی کی سفارش نہیں کرتے۔علاوہ ان کے جن کے لئے اﷲتعالیٰ پسند فرمائے۔‘‘ جبکہ مشرکوں کے اعمال کوڑا کرکٹ کی مانندضائع ہوجائیں گے ان کے لئے کوئی شفاعت نہ ہوگی۔ ان کی خواہشات کے برعکس کوئی سفارشی ان کو میسر نہ آئے گا، کیونکہ جو شخص توحید پر عمل کیے بغیراپنی شفاعت چاہتا ہے تو اس کا انجام محرومی کے سوا کیا ہوسکتا ہے؟ 

جیسا کہفرمان الٰہی ہے

3 ۔ جو شخص مشرکوں کو کافر نہ سمجھتاہو یا ان کے کفر میں شک کرتا ہے یا ان کے مذہب کو صحیح سمجھتا ہے تو یہ شخص کافر ہے۔

مطلب یہ ہے کہ جو مسلمان اس شخص کے کافر ہونے میں شک کرے جسے امت محمدیہ نے بالاتفاق کافر قرار دیا ہو جیسے عیسائی اور مشرک وغیرہ۔شرک چند مخصوص چیزوں کانام نہیں بلکہ شرک یہ ہے کہ اﷲ کے لئے جو اعمال و صفات خاص ہیں وہ کسی اور کے لئے ماننا۔(الدرء النضیہ ص:۱۸)۔علامہ انور شاہ کشمیری رحمہ اللہ فرماتے ہیں: ’’ اس لیے ہم ہر اس شخص کو بھی کافر کہتے ہیں جو اسلام کے علاوہ کسی بھی(دوسرے) مذہب کے ماننے والے کو کافر نہ کہے ؛ یا ان کو کافر کہنے میں تردد کرے؛ یا ان کے کفر میں شک وشبہ کرے؛ یا ان کے مذہب کو درست کہے۔ اگرچہ یہ شخص اپنے مسلمان ہونے کا دعویٰ بھی کرتا ہو، اور اسلام کے علاوہ ہر مذہب کو باطل بھی کہتا ہو؛ تب بھی یہ غیر مذہب والوں کو کافر نہ کہنے والا خود کافر ہے۔اس لیے کہ یہ شخص ایک مسلّمہ کافرکوکافرکہنے کی مخالفت کرکے اسلام کی مخالفت کرتا ہے ؛ اور یہ دین پر کھلا ہوا طعن اور اس کی تکذیب ہے۔‘‘[إکفار الملحدین:۲۲۱] کفار سے بیزاری، ان کے ساتھ اختلاط سے پرہیز، اور ان کے احکام جاننا ضروری ہیں، تاکہ کفر کی حقیقت کا پتہ چل سکے، اور مسلمان کے حقوق ضائع نہ ہوں ؛ جیسے حقوق وراثت،حقوق ولایت، کفالت وتربیت وغیرہ۔کیونکہ ہمیں مسلمانوں کے ساتھ دوستی کرنی ہے، کافروں کیساتھ نہیں۔ایسے ہی وہ شخص بھی کافر اور دائرہ اسلام سے خارج ہے جو کسی کافر اور مرتد کو تاویل کرکے مسلمان ثابت کرنے کی کوشش کرے۔ شیخ الاسلام ابن تیمیہ رحمہ اللہ فرماتے ہیں: ’’ جو شخص یمامہ والوں کے حق میں تاویل(کرکے ان کومسلمان ثابت)کرے وہ کافر ہے، اور جو شخص کسی قطعی اور یقینی کافر کو کافر نہ کہے، وہ بھی کافر ہے۔‘‘[منہاج السنۃ ۲؍۲۳۳] 

4. اسلام پر ترجیح

س بات کا اعتقاد رکھنا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے راستے سے ہٹ کر کسی کا طریق کار زیادہ کامل اوراچھا ہے، اور اس میں کامیابی ہے۔یا یہ کہ غیر کا حکم اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا حکم برابر ہیں، ان میں کوئی فرق نہیں۔یا پھرجو کوئی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم پر کسی دوسرے طاغوت کے حکم کو ترجیح دیتا ہو؛ تو ایسا انسان کافر ہے۔

س میں بذیل امور شامل ہیں:۱۔ یہ اعتقاد رکھنا کہ لوگوں کے تیا ر کردہ نظام اور قوانین اللہ کی شریعت سے افضل ہیں۔فرمان الٰہی ہے:﴿أَمْ لَہُمْ شُرَکَائٌ شَرَعُوْا لَہُم مِّنَ الدِّیْنِ مَا لَمْ یَأْذَن بِہِ اللّٰهُ﴾[الشوریٰ:۲۰]’’کیا ان کے شریک ہیں جنہوں نے ان کے لئے دین ایجاد کیا ہے،جس کی اللہ تعالیٰ نے اجازت نہیں دی۔‘‘ …چونکہ اللہ تعالیٰ نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو حاکم اور امام مقرر کیا ہے، لہٰذا آپ کے حکم کو بے چون وچراں تسلیم کیا جائے، ارشاد الٰہی ہے:﴿فَلَا وَرَبِّکَ لَا یُؤْمِنُوْنَ حَتَّیَ یُحَکِّمُوْکَ فِیْمَا شَجَرَ بَیْْنَہُمْ ثُمَّ لَا یَجِدُوْا فِیْ أَنفُسِہِمْ حَرَجاً مِّمَّا قَضَیْتَ وَیُسَلِّمُواْ تَسْلِیْماً﴾[النساء:۶۵]’’ آپ کے رب کی قسم! یہ اس وقت تک مومن نہیں ہو سکتے، جب تک اپنے آپس کے تمام اختلافات میں آپ کو حاکم تسلیم نہ کرلیں،اور پھر اپنے نفوس میں آپ کے فیصلہ کے خلاف کوئی تنگی بھی نہ پائیں اوراسے صحیح طور پر مان لیں۔‘‘ ۲۔یہ اعتقاد رکھنا کہ ’’ دین اسلام کی تطبیق اورنفاذ ممکن نہیں۔اوریہ دین اس دور کے مسلمانوں کے پیچھے رہ جانے کی وجہ ہے۔‘‘ ۳۔یا یہ اعتقاد رکھنا کہ دین انسان کے اپنے رب سے تعلق کا نام ہے، اور اسے باقی امور زندگی میں کوئی دخل نہیں۔ ۴۔یا یہ اعتقاد کہ شرعی حدود جیسے چور کا ہاتھ کاٹنا، اورشادی شدہ زانی کو سنگسار کرنا، اس زمانے کے ساتھ مناسب نہیں ہیں ؛ حالانکہ اسلام قیامت تک آنے والے لوگوں کا دین ہے۔جو کہ اللہ تعالیٰ نے بندوں کی عین مصلحت کے مطابق نازل کیا ہے۔اور ایسا ہر گز ممکن نہیں کہ اللہ تعالیٰ اپنے بندوں کو کسی کام کے کرنے کا حکم دیں، اور اس کا ہونا نا ممکن ہو؛ یہ سراسر الزام ہے۔ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:﴿لَا یُکَلِّفُ اللّٰہُ نَفْساً إِلَّا وُسْعَہَا لَہَا مَا کَسَبَتْ وَعَلَیْْہَا مَا اکْتَسَبَتْ﴾[البقرہ: ۲۸۶]’’ اللہ تعالیٰ کسی جی کو اس کی طاقت سے بڑھ کر کسی چیز کا مکلف نہیں ٹھہراتے،ہر نفس کے لئے وہی ہے جو اس نے کمایا، اور اس پر اسی کا بوجھ ہے جو اس نے کیاہو۔‘‘ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:﴿وَمَنْ لَّمْ یَحْکُمْ بِمَا أَنزَلَ اللّٰهُ فَأُوْلَـئِکَ ہُمُ الْکَافِرُونَ﴾[المائدۃ:۴۴] ’’ اور جوکوئی اللہ تعالیٰ کے نازل کردہ احکام کے مطابق فیصلہ نہ کرے، پس وہی لوگ کافر ہیں۔‘‘ امام طاؤس(رحمہ اللہ) اس آیت کی تفسیر میں فرماتے ہیں:’’اللہ تعالیٰ کی کتاب کے بغیر فیصلہ کرنے والا کافر ہے۔‘‘ 

5. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے کسی طریقہ سے نفرت اور بغض رکھنا۔اگر اس کے مطابق عمل بھی کرے گاتو کفر کا مرتکب ہوگا۔[2]

[2] دلیل: اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:﴿ذَلِکَ بِأَنَّہُمْ کَرِہُوْا مَا أَنزَلَ اللّٰهُ فَأَحْبَطَ أَعْمَالَہُمْ﴾[محمد:۹]’’ یہ اس لئے ہے کہ انہوں نے اللہ تعالیٰ کی نازل کردہ چیز کو نا پسند کیا تو اللہ تعالیٰ نے ان کے تمام اعمال بیکار کردیے۔‘‘ اور فرمایا:﴿فَلْیَحْذَرِ الَّذِیْنَ یُخَالِفُوْنَ عَنْ أَمْرِہِ أَن تُصِیْبَہُمْ فِتْنَۃٌ أَوْ یُصِیْبَہُمْ عَذَابٌ أَلِیْمٌ﴾[نور:۶۳]’’سو چاہیے کہ وہ لوگ ڈر جائیں جو رسو ل ا للہ صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم کی خلاف ورزی کرتے ہیں کہ انہیں کوئی آزمائش پہنچے، یا دردناک عذاب میں مبتلا کردیے جائیں۔‘‘ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:((تَرَکْتُ فِیْکُمْ اَمْرَیْنِ لَنْ تَضِلُّوْا مَا تَمَسکتم بِہَا کِتَابُ اللّٰہِ وَسُنَّۃَ رَسُوْلِہٖ)) ’’میں تم میں دو چیزیں چھوڑ کر جا رہا ہوں تم ہر گز کبھی بھی گمراہ نہ ہوگے جب تک ان کو مضبوطی سے تھام رکھوگے، وہ ہیں اللہ تعالیٰ کی کتاب اور اس کے رسول کی سنت۔‘‘نیز اس میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے بغض رکھنا،[جاری ہے]

6 ۔ جس نے رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم کے دین میں سے کسی چیز کا یا ثواب یا عذاب کا مذاق اڑایا۔[3]

آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو برا بھلا کہنا، سب و شتم کرکے ایذا رسانی کرنا بھی شامل ہے۔رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا مذاق اڑانا یا انہیں تکلیف دینا بھی عین کفر کے کاموں میں سے ہے۔

[3] دلیل: اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:﴿ذَلِکَ بِأَنَّہُمْ کَرِہُوْا مَا أَنزَلَ اللّٰهُ فَأَحْبَطَ أَعْمَالَہُمْ﴾[محمد:۹]

’’ یہ اس لئے ہے کہ انہوں نے اللہ تعالیٰ کی نازل کردہ چیز کو نا پسند کیا تو اللہ تعالیٰ نے ان کے تمام اعمال بیکار کردیے۔‘‘

اور فرمایا:﴿فَلْیَحْذَرِ الَّذِیْنَ یُخَالِفُوْنَ عَنْ أَمْرِہِ أَن تُصِیْبَہُمْ فِتْنَۃٌ أَوْ یُصِیْبَہُمْ عَذَابٌ أَلِیْمٌ﴾[نور:۶۳]

’’سو چاہیے کہ وہ لوگ ڈر جائیں جو رسو ل ا للہ صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم کی خلاف ورزی کرتے ہیں کہ انہیں کوئی آزمائش پہنچے، یا دردناک عذاب میں مبتلا کردیے جائیں۔‘‘

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:((تَرَکْتُ فِیْکُمْ اَمْرَیْنِ لَنْ تَضِلُّوْا مَا تَمَسکتم بِہَا کِتَابُ اللّٰہِ وَسُنَّۃَ رَسُوْلِہٖ))

’’میں تم میں دو چیزیں چھوڑ کر جا رہا ہوں تم ہر گز کبھی بھی گمراہ نہ ہوگے جب تک ان کو مضبوطی سے تھام رکھوگے، وہ ہیں اللہ تعالیٰ کی کتاب اور اس کے رسول کی سنت۔‘‘نیز اس میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے بغض رکھنا،

آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو برا بھلا کہنا، سب و شتم کرکے ایذا رسانی کرنا بھی شامل ہے۔رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا مذاق اڑانا یا انہیں تکلیف دینا بھی عین کفر کے کاموں میں سے ہے۔

فرمان الٰہی ہے:

﴿قُلْ اَبِا اللّٰہِ وَ اٰیٰتِہٖ وَرَسُوْلِہٖ کُنْتُمْ تَسْتَہْزِؤُنَ لَا تَعْتَذِرُوْا قَدْ کَفَرْتُمْ بَعْدَ اِیْمَانِکُمْ﴾[التوبہ:۶۶]

’’(اے محمد!) ان سے کہہ دیجئے کیااﷲ یا اس کی آیات اور اس کے رسول کا تم مذاق اڑاتے ہو؟بہانے مت بناؤ تم ایمان لانے کے بعد کافر ہوچکے ہو۔‘‘

۷۔ جادو:…اس میں نفرت یامحبت پیدا کرنے کے اعمال کروانابھی شامل ہیں [4]

اور یہ حکم ان لوگوں کو بھی شامل ہے جو جادو کرتے ہوں یا پھر جادو پر راضی رہتے ہوں۔فرمان ِ الٰہی ہے:

﴿وَمَا یُعَلِّمٰنِ مِنْ اَحَدٍ حَتّٰی یَقُوْلَا اِنَّمَا نَحْنُ فِتْنَۃٌ فَــلَا تَکْفُرْ﴾[البقرہ:۱۰۲]

’’وہ کسی کو اس وقت تک نہیں سکھاتے تھے جب تک یہ نہ کہہ دیتے کہ ہم فتنہ ہیں تم کفر مت کرو۔‘‘

[4] اس میں وہ سارے اعمال، تعویذات شامل ہیں جو دو افراد یعنی میاں بیوی میں نفرت یا جدائی پیداکرتے ہوں۔ یا ایسے تعویذ گنڈے جو دو افراد میں محبت پیداکرنے کے لئے کیے جاتے ہیں ؛ یہ سب اعمال جادو میں شمار ہوتے ہیں۔ یہ شرکیہ اعمال ہیں ؛کیونکہ ان کو نفع و نقصان کا ذریعہ سمجھا جاتا ہے اور اﷲ کے علاوہ کسی اور سے نفع یا نقصان کی توقع رکھنا شرک وکفر ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ’’حَدَّ السَّاحِرٍ ضَرْبٌ بِالسَّیْف‘‘ ’’جادو گر کی سزا تلوار سے اس کا سر قلم کرنا ہے۔‘‘اورفرمایا:’’ اِجْتَنِبُوْا سَبْعَ الْمُوْبِقَاتِ … وَالسَّحْرُ ‘‘ ’’ سات ہلاکت خیز گناہوں سے بچو… اور ان میں سے ایک کے متعلق فرمایا: ’’اور جادوسے بچو۔‘‘[بخاری] جادو سے مراد وہ اعمال اور حیلے بھی ہیں جن سے دل، آنکھوں اور جسم میں تاثیر پیدا ہوتی ہے۔ اور اسکے نتیجہ میں میاں بیوی میں جدائی، کسی کے دل میں کسی کی طرف رغبت ڈالنا، انسان کو بیماراور پریشان کرنا اورقتل کرنا بھی ممکن ہوتا ہے۔ امام ابو حنیفہ، امام احمد اور امام مالک رحمۃ اللہ علیہم نے جادو سیکھنے، سکھانے، اور کرنے پر کفر کا فتویٰ دیا ہے۔ ابن قدامہ مقدسی نے اجماع امت نقل کیا ہے کہ: جادو سیکھنا اورسکھانا اور جادوکرنا کفر ہے۔(افصاح:226/2)

۸ ۔مسلمانوں کے خلاف مشرکین کا ساتھ دینا اور ان کی مدد کرنا: اللہ تعالیٰ کا فرمان گرامی ہے:

﴿وَمَنْ یَّتَوَلَّہُمْ مِّنْکُمْ فَاِنَّہٗ مِنْہُمْ اِنَّ اللّٰہَ لَا یَہْدِی الْقَوْمَ الظّٰلِمِیْنَ﴾

’’جس نے تم میں سے ان کافروں سے دوستی کی وہ انہی میں سے ہوگا۔اﷲ ظالم قوم کو ہدایت نہیں کرتا۔‘‘[5][المائدہ:۵۱](مجموعۃ التوحید)

[5] ایمان کے منافی امور میں سے یہ بھی ہے کہ مومنوں کے مقابلہ میں کافروں سے دوستی رکھی جائے،اس لئے کہ مسلمانوں پر کافروں،یہود و نصاریٰ، نیزتمام مشرکوں سے دشمنی رکھنی واجب ہے اوران سے محبت رکھنے سے احتیاط وپرہیزضروری ہے۔جیساکہ اللہ تعالیٰ نے فرمایاہے:﴿یَا أَیُّہَا الَّذِیْنَ آمَنُوْا لَا تَتَّخِذُوْا عَدُوِّیْ وَعَدُوَّکُمْ أَوْلِیَائَ تُلْقُوْنَ إِلَیْْہِم بِالْمَوَدَّۃِ وَقَدْ کَفَرُوْا بِمَا جَائَ کُم مِّنَ الْحَقِّ﴾[الممتحنہ: ۱]’’ اے ایمان والو! میرے اور اپنے دشمن کو اپنا دوست مت بناؤ تم ان کو محبت کی نظر سے دیکھتے ہو، اور وہ اس چیز کا کفر کرتے ہیں جو تمہارے پاس سچ آپہنچا ہے۔‘‘ یہاں تک کہ اگر باپ داداکافرہوں توان سے محبت رکھناحرام ہے، جیساکہ اللہ تعالی نے فرمایاہے:﴿لَا تَجِدُ قَوْمًا یُّؤ مِنُوْنَ بِا للّٰهِ وَ الْیَوْمِ الآخِرِ یُوَادُّ وْنَ مَنْ حَادَّ اللّٰهَ وَ رَ سُوْلَہُ وَ لَوْ کَا نُوْا آبَا ئَہُمْ اَوْ أبْنَائَہُمْ اَوْ اِخْوَانَہُمْ اَوْ عَشِیْرَ تَہُمْ﴾(المجادلۃ: ۲۲)’’اللہ اورآخرت کے دن پرایمان رکھنے والوں کوآپ اللہ اوراس کے رسول سے دشمنی کرنے والوں سے محبت رکھتے ہوئے ہرگزنہ پائیں گے اگرچہ وہ ان کے باپ یاان کے بیٹے یاان کے بھائی یاان کے کنبہ(قبیلہ)کے(عزیز) ہی کیوں نہ ہوں۔‘‘ اسلام اورمسلمانوں کے تعلق سے یہودونصاریٰ کامکروفریب،ان کی ریشہ دوانیاں، اہل اسلام کے ساتھ ان کی جنگیں،اوردین کی راہ میں رکاوٹیں کھڑی کرنا،اسلام کو نقصان پہنچانے کے لئے بھاری مال خرچ کرنا،ان کے یہ تمام معاملات بالکل واضح ہیں۔موجودہ دور میں کفارومشرکین کے ساتھ بعض مسلمانوں کی دوستی کی ایک صورت یہ ہے کہ ان کے ساتھ بغیر کسی دعوتی مقصد کے رہائش اختیارکی جائے،یابلاضرورت ان کے شہروں کاسفرکیاجائے اوران کالباس،ان کی عادات واطوار اور عام طرززندگی میں ان کی مشابہت اختیارکی جائے،ان کی زبان وتہذیب اپنائی جائے۔

۹۔ اس بات کا اعتقاد رکھنا کہ بعض پیروں اور ولیوں، یا کسی اورکو محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی شریعت کے خلاف کام کرنے کی اجازت ہے،جیسے حضرت خضر علیہ السلام کوحضرت موسیٰ علیہ السلام کی شریعت کے برعکس کام کرنے کی اجازت تھی۔ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:

﴿وَمَن یَّبْتَغِ غَیْرَ الإِسْلَامِ دِیْناً فَلَنْ یُّقْبَلَ مِنْہُ وَہُوَ فِی الْآخِرَۃِ مِنَ الْخَاسِرِیْنَ﴾[آل عمران:۸۵]

’’جو کوئی اسلام کے علاوہ کوئی اور دین تلاش کرے گا وہ اس سے ہر گز قبول نہ کیا جائے گا اوروہ انسان آخرت میں گھاٹا پانے والوں میں سے ہو گا۔‘‘

۱۰۔ اللہ تعالیٰ کے دین سے روگردانی کرنا۔ نہ اس کی تعلیم حاصل کرے،اور نہ ہی اس کے مطابق عمل کرے۔[6] اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:

﴿وَمَنْ أَظْلَمُ مِمَّن ذُکِّرَ بِآیَاتِ رَبِّہِ ثُمَّ أَعْرَضَ عَنْہَا إِنَّا مِنَ الْمُجْرِمِیْنَ مُنْتَقِمُوْنَ﴾[السجدہ:۲۲]

’’ اس سے بڑھ کر ظالم کون ہوگا؟ جس کواس کے پروردگار کی آیات سے یاد دہانی کرائی گئی، مگر اس نے منہ موڑا، بے شک ہم مجرموں سے انتقام لینے والے ہیں۔‘‘

[6] اس سے مراد اتنی تعلیم کا حصول ہے جس سے انسان اپنی روز مرہ کی عبادت کو بطریق احسن ادا کرسکے؛ اور توحید وشرک کی پہچان حاصل ہو۔

دو اہم نوٹ:

٭ پہلی بات:… ان نواقض کا ارتکاب کرنے والے تمام لوگوں کے لیے ایک ہی حکم ہے اس میں کوئی فرق نہیں کیا جائے گاکہ کوئی مذاق میں ایسی بات کہہ رہا ہے یا سنجیدگی میں، یا پھر خوف کے مارے ایسی بات کہہ رہا ہے۔ سوائے اس انسان کے جس پر زبردستی کرتے ہوئے یہ کلمات کہلوائے جائیں۔

٭ دوسری بات:… ان تمام نواقض کے خطرات سب سے زیادہ ہیں۔ اور اکثر طور پر پیش آنے والی باتیں ہیں۔مسلمان پر واجب ہوتا ہے کہ ان باتوں سے بچ کر رہے اور اپنے نفس پر ان کلمات کے صادر ہونے کا خوف محسوس کرتا رہے۔

REFERENCE:
KITAAB “TAWHEED MUYASSAR” / ASAAN TAWHEED
BY: “ABDULLAH BIN AHMAD AL HAWAIL”

Table of Contents