Sections
< All Topics
Print

03. JADU [Sorcery/Witch/Black Magic]

JADU

✿ Kyun keh jadugar Jo hai, woh lazmi taur par kufur ka irtikab karta hai. Allah ta’ala ne farmaya:

وَ لٰكِنَّ الشَّیٰطِیْنَ كَفَرُوْا یُعَلِّمُوْنَ النَّاسَ السِّحْرَۗ

“Balkeh shayateen hi ne kufur ka irtikab kia, Jo logon ko Jadu sikhaya karte the”

(Al Baqarah 2:102)

➤ Shaitan mal’oon Jo insan ko Jadu sikhata hai uski mehez gharz yahi hai keh us kay Sath shirk kia jae, Allah ta’ala ne haaroot wa maroot kay baare mein khabar dete hue farmaya:

وَ مَا یُعَلِّمٰنِ مِنْ اَحَدٍ حَتّٰى یَقُوْلَاۤ اِنَّمَا نَحْنُ فِتْنَةٌ فَلَا تَكْفُرْؕ-فَیَتَعَلَّمُوْنَ مِنْهُمَا مَا یُفَرِّقُوْنَ بِهٖ بَیْنَ الْمَرْءِ وَ زَوْجِهٖؕ-وَ مَا هُمْ بِضَآرِّیْنَ بِهٖ مِنْ اَحَدٍ اِلَّا بِاِذْنِ اللّٰهِؕ-وَ یَتَعَلَّمُوْنَ مَا یَضُرُّهُمْ وَ لَا یَنْفَعُهُمْؕ-وَ لَقَدْ عَلِمُوْا لَمَنِ اشْتَرٰىهُ مَا لَهٗ فِی الْاٰخِرَةِ مِنْ خَلَاقٍ ﳴ

“Aur woh kisi ko nahin sikhate the jab tak unse keh na dete keh ham tou ek zariae azmaish hain. Pas Tum kafir na bano, (is kay bawajud) log unse woh baten seekhte, Jin se mian biwi mein judai ho aur woh Allah kay hukum kay Siwa kisi ko bhi zarar nahin pohoncha sakte aur logon ne woh baten seekhi Jo khud in kay lie zarar ka mujib hon aur woh unhen koi nafa’na pohonchaen, aur yaqeenan unhen malum tha keh Jin logon ne is cheez ko khareeda, un kay lie akhirat mein koi hissa na hoga”

(Al Baqarah 2:102)

Pas ham bohot si makhlooq ko dekhte hain keh woh gumrahi kay baa’is Jadu mein mubtala hoti hai aur woh ise mehez Haram tasawwur karte hain, aur unhen yeh sha’oor nahin keh woh kufur hai, pas woh alaamat ka ilm seekhne aur us par Amal ka aghaz karte hain aur yeh mehez Jadu hai. Woh Jadu kay zarie mian biwi kay darmian aqdo ta’alluq qaaim karte hain aur yeh mehez Jadu hai, mard ki aurat se muhabbat aur usse bughzo adawat ko paida karte hain aur isi tarah kay majhool kalimat kay zarie Amal karte hain , un mein se aksar shirko gumrahi par mabni hote hain, aur jadugar ki haddo saza qatal hai, kyun keh us ne Allah kay Sath kufur ya kufur kay mushabeh Fai’l ka irtikab kia.

➤ Nabi ﷺ ne farmaya:

“7 mohlikat se ijtinab karo”

Ap ne un mein Jadu ka bhi zikar kia .

[Bukhari : 2866; Muslim:  89]

➤ Pas bande ko apne Rabb se darte rehna chahie, use dunia-o-akhirat kay khasare wale kaam mein nahin parna chahie, Nabi ﷺ se sabit hai keh aap ne farmaya:

“Jadugar ki saza use qatal karna hai”

[(lekin Sahih yeh hai keh yeh Jundab ka qaul hai) Tirmidhi 1460]

➤ Aur bajalah bin Abdah se riwayat hai keh unhon ne kaha:

Umar رضي الله عنه ki taraf se apki wafat se ek saal pehle hamen ek khat mosul hua keh har jadugarni ko qatal kar do “

[Ahmad : 190-191/1; Abu Dawood:  3-43]

➤ Wahab bin munabbah bayan karte hain, main ne ba’az kutub mein parha keh Allah عزوجل farmata hai:

“Mere Siwa koi ma’bud nahin, jis ne Jadu kia aur jis kay lie Jadu kia gaya, jis ne kaahin Jesi bat Kahi ya jise kaahin Jesi bat Kahi gai aur jis ne parindon kay zarie bad shugooni li ya jis kay lie bad shugooni li gai woh mujh se nahin”

Ali bin Abi talib رضي الله عنه bayan karte hain, RasullAllah ﷺ ne farmaya:

“3 qisam kay log jannat mein dakhil nahin honge, aadi sharab nosh, qata’rehmi karne Wala aur Jadu ki tasdeeq karne Wala “

[Ahmad : 399/4  Iski sanad mein zo’af hai. Lekin apne shawahid ki wajah se Sahih hai)]

➤ Ibne Mas’ood رضي الله عنه marfoo’an riwayat karte hain, aap ne farmaya:

“Dam jhaar, tamaaim aur tiwalah shirk hain”

Tamaaim tameemah ki jama’ hai, yeh ghoonge aur manke hain, jo jahil log nazre bad se bachne kay khayal se apne, apni aulad aur apne chopayon kay gale mein latkate hain, ye Fai’le jahiliat hai aur jo esa Aqeedah rakhe tou us ne shirk kia.

At-tiwala taa kay neeche zair aur wow par zabar yeh Jadu ki qisam hai, is kay zarie aurat ki apne khawand se muhabbat paida ki jati hai.

Ise shirk qarar dene ki wajah yeh hai keh jahil log ye ai’teqad rakhte hain keh cheezen Allah ta’ala ki taqdeer kay bar’aks asar jamati hain.

➤ Imam khatabi رحمه الله ne farmaya:

[Imam Ahmad bin Muhammad bin Ibrahim bin Khattab Abu Sulaiman Khattabi, bohot si mufeed kitabon kay musannif hain, jese sharah Sunan Abi Dawood waghera, ap ne 388 hijri ko bast mein wafat paai] 

Jahan tak Quran majeed ya Allah ta’ala kay asmaae Husna kay zarie dam karne ka ta’alluq hai tou yeh mubah hai, kyun keh Nabi ﷺ Hasan aur Husain رضي الله عنهما ko in kalimat kay sath dam kia karte the.

“Main tum donon ko har Shaitan, har zehreele janwar aur har nazre bad se Allah kay kalimat ki panah mein deta hun”

Aur Allah hi se madad talab ki jati hai aur usi par bharosa hai.

REFERENCE:
Book: “Kabeerah Gunah”
Taleef: Shaikh Ul Islam Shams ad-Dīn adh-Dhahabī Rahimahullah.
Urdu Tarjumah: Abu Anas Muhammad Sarwar Gohar.
Episode 3 || Poem On Major Sins ||Urdu Course with Shaikh Zafar Ul Hasan Madani #amau

3. Sorcery/Witch/Black Magic

We mention sorcery here because it necessarily involves unbelief.Allah Almighty says:

“But the shaytans disbelieved, teaching people sorcery.” [02:102]

The sole aim of the accursed Shaytan in teaching people sorcery is to make them associate others with Allah.Allah Almighty says, referring to Harut and Marut:

“They taught no one without first saying to him, ‘We are merely a trial, so do not disbelieve. People learned from them how to separate a man and his wife, but they cannot harm anyone by it except with Allah’s permission.They have learned what will harm them and will not benefit them.They know that any who deal in it will have no share in the Next World” [02:102]

Many people get involved in sorcery out of misguidance, thinking it only to be forbidden and not realising that it actually constitutes disbelief. They embark on studying natural magic (“simiya”) and practising it, which is pure sorcery; they learn how to separate a man from his wife, which is sorcery; and how to cause a man to love or hate his wife and similar things through the use of unheard of words, most of which constitute shirk and misguidance.

The hadd punishment for a sorcerer is execution, because sorcery constitutes disbelief in Allah or something tantamount to disbelief. The Prophet (ﷺ) mentioned sorcery among the seven deadly wrong actions. “Deadly” means that they can ruin people. So one should fear his Lord and not involve himself in something which will lose him this world and the Next. It is reported that the Prophet (ﷺ) said, “The punishment for sorcerers is to be executed by the sword.” (at-Tirmidhi) We know, according to Jundub, that Bajala ibn ‘Abda said, “A letter from ‘Umar reached us a year before he died ordering us to kill every sorcerer and sorceress.” (Abu Dawud) Wahb ibn Munabbih said, “I read in a book that Allah Almighty says: “There is no god but Me. Anyone who practises sorcery or makes use of it, who is a soothsayer or has recourse to soothsaying, or who reads omens or asks for them to be read, is nothing to do with Me.”

Ali ibn Abi Talib (رضي الله عنه) said that the Messenger of Allah (ﷺ) said, “Three people will never enter the Garden: someone addicted to drink, someone who cuts off relatives, and someone who believes in sorcery.” Imam Ahmad related this in his Musnad.

Ibn Mas’ud (رضي الله عنه) said, “Incantations, amulets and witchcraft are shirk.” Amulets are beads and things which the ignorant attach to themselves, their children and their animals claiming that they ward off the evil eye. This is an act belonging to the time of Jahiliyya. Anyone who believes in that has committed shirk. Witchcraft is what a woman uses to make her husband love her. That is an aspect of shirk since ignorant people believe it has an effect which goes against the decree of Allah Almighty.

Al-Khattabi said, “An incantation using the Qur’an or the Names of Allah is permitted because the Prophet (ﷺ) used one for al-Hasan and al-Husayn. He said, ‘I seek refuge for you both with the perfect Words of Allah from every shaytan, avenging spirit, and critical eye.’”

Allah is the One who is asked for help and we rely on Him alone.

REFERENCE:
BOOK: “MAJOR SINS” OF IMAM SHAMSU ED-DEEN DHAHABI.
Distributed by : www.islambasics.com

(٣) جادو*

 

کیونکہ جادو گر جو ہے ، وہ لازمی طور پر کفر کا ارتکاب کرتا ہے ۔ اللّٰہ تعالیٰ نے فرمایا: 



*(وَ لٰکِنَّ الشَّیٰطِیۡنَ کَفَرُوۡا یُعَلِّمُوۡنَ النَّاسَ السِّحۡرَ )*

 

( البقرة: ٢/ ١٠٢ )

 

” بلکہ شیاطین ہی نے کفر کا ارتکاب کیا، جو لوگوں کو جادو سکھایا کرتے تھے” 

 

شیطان ملعون جو انسان کو جادو سکھاتا ہے ۔ اس کی محض غرض یہی ہے کہ اس کے ساتھ شرک کیا جائے اللّٰہ تعالیٰ نے ہاروت و ماروت کے بارے میں خبر دیتے ہوئے فرمایا: 

 

 *( وَ مَا یُعَلِّمٰنِ مِنۡ اَحَدٍ حَتّٰی یَقُوۡلَاۤ اِنَّمَا نَحۡنُ فِتۡنَۃٌ فَلَا تَکۡفُرۡ ؕ فَیَتَعَلَّمُوۡنَ مِنۡہُمَا مَا یُفَرِّقُوۡنَ بِہٖ بَیۡنَ الۡمَرۡءِ  وَ زَوۡجِہٖ  ؕ وَ مَا ہُمۡ  بِضَآرِّیۡنَ بِہٖ مِنۡ اَحَدٍ  اِلَّا بِاِذۡنِ اللّٰہِ  ؕ وَ یَتَعَلَّمُوۡنَ مَا یَضُرُّہُمۡ  وَ لَا یَنۡفَعُہُمۡ  ؕ وَ لَقَدۡ عَلِمُوۡا لَمَنِ اشۡتَرٰىہُ مَا لَہٗ فِی الۡاٰخِرَۃِ مِنۡ خَلَاقٍ )*

 

(البقرة/ ٢ : ١٠٢)

 

” اور وہ کسی کو نہیں سکھاتے تھے جب تک ان سے کہہ نہ دیتے کہ ہم تو ایک ذریعہ آزمائش ہیں۔ پس تم کافر نہ بنو ، ( اس کے باوجود) لوگ ان سے وہ باتیں سیکھتے ، جن سے زن و شو میں جدائی ہو اور وہ اللّٰہ کے حکم کے سوا کسی کو بھی ضرر نہیں پہنچا سکتے اور لوگوں نے وہ باتیں سیکھیں جو خود ان کے لیے ضرر کا موجب ہوں اور وہ انہیں کوئی نفع نہ پہنچائیں اور یقیناً انہیں معلوم تھا کہ جن لوگوں نے اس چیز کو خریدا ، ان کے لیے آخرت میں کوئی حصہ نہ ہوگا ۔ ” 

 

پس ہم بہت سی مخلوق کو دیکھتے ہیں کہ وہ گمراہی کے باعث جادو میں مبتلا ہوتی ہے اور وہ اسے محض حرام تصور کرتے ہیں، اور انہیں یہ شعور نہیں کہ وہ کفر ہے ۔ پس وہ علامات کا علم سیکھنے اور اس پر عمل کا آغاز کرتے ہیں اور یہ محض جادو ہے ۔ وہ جادو کے ذریعے میاں بیوی کے درمیان عقدو تعلق قائم کرتے ہیں اور یہ محض جادو ہے ۔مرد کی عورت سے محبت اور اس سے بغض و عداوت کو پیدا کرتے ہیں اور اس طرح کے مجہول کلمات کے ذریعے عمل کرتے ہیں۔ ان میں سے اکثر شرک و گمراہی پر مبنی ہوتے ہیں۔ اور جادو گر کی حدو سزا قتل ہے ۔ کیونکہ اس نے اللّٰہ کے

 

ساتھ کفر یا کفر کے مشابہ فعل کا ارتکاب کیا۔

 

نبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے فرمایا:

 

” سات مہلکات سے اجتناب کرو” ۔ آپ نے ان میں جادو کا بھی ذکر کیا ہے ۔ (١) 

 

پس بندے کو اپنے رب سے ڈرتے رہنا چاہیے ، اسے دنیا اور آخرت کے خسارے والے کام میں نہیں پڑنا چاہے ۔ نبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم سے ثابت ہے کہ آپ نے فرمایا:

 

” جادو گر کی سزا اسے قتل کرنا ہے ” ۔ (٢)

 

اور بجالہ بن عبدة سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا:  عمر رضی اللّٰہ عنہ کی طرف سے آپ کی وفات سے ایک سال پہلے ، ہمیں ایک خط وصول ہوا کہ ہر جادو گر اور جادو گرنی کو قتل کر دو” ۔ (٣)

 

وہب بن منبہ بیان کرتے ہیں ، میں نے بعض کتب میں پڑھا کہ اللّٰہ عزوجل فرماتا ہے: 

 

” میرے سوا کوئی معبود نہیں ، جس نے جادو کیا اور جس کے لیے جادو کیا گیا ، جس نے کاہن جیسی بات کہی یا جسے کاہن جیسی بات کہی گئی اور جس نے پرندوں کے ذریعے بدشگونی لی یا جس کے لیے بد شگونی لی گئی وہ مجھ میں سے نہیں ۔” 

 

علی بن ابی طالب رضی اللّٰہ عنہ بیان کرتے ہیں ، رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے فرمایا: 

 

” تین قسم کے لوگ جنت میں داخل نہیں ہوں گے ، عادی شراب نوش ، قطع رحمی کرنے والا اور جادو کی تصدیق کرنے والا “۔ (٤)

 

ابن مسعود رضی اللّٰہ عنہ مرفوعا روایت کرتے ہیں ، آپ نے فرمایا:

 

” دم جھاڑ ، تمائم اور  “تولہ” شرک ہیں ۔” 

 

” تمائم” تمیمہ کی جمع ہے ، یہ گھونگے اور منکے ہیں ، جو جاہل لوگ ، نظر بد سے بچنے کے خیال سے اپنے ، اپنی اولاد اور اپنے چو پاؤں کے گلے میں لٹکاتے ہیں ۔ یہ فعل جاہلیت ہے اور جو ایسا 

 

۔۔۔۔۔۔۔۔

 

(١) بخاری ( ٢٧٦٦)۔مسلم( ٨٩)

 

(٢) لیکن صحیح یہ ہے کہ یہ جندب رضی اللّٰہ عنہ کا قول ہے ۔ ترمزی( ١٤٦٠) 

 

(٣) احمد ( ١/ ١٩٠- ١٩١)۔ ابو داؤد ( ٤٣- ٣)

 

(٤) احمد ( ٤/ ٣٣٩) اس کی سند میں ضعف ہے لیکن اپنے شواہد کی وجہ سے صحیح ہے ۔

edited406:13

کتاب الکبائر 26

 

عقیدہ رکھے تو اس نے شرک کیا ۔

 

” التولتہ” تاء کے نیچے زیر اور واؤ پر زبر یہ جادو کی قسم ہے ، اس کے ذریعے عورت کی اپنے خاوند سے محبت پیدا کی جاتی ہے ۔

اسے شرک قرار دینے کی وجہ یہ ہے کہ جاہل لوگ یہ عتقاد رکھتے ہیں کہ چیزیں اللّٰہ تعالیٰ کی تقدیر کے برعکس اثر جماتی ہیں۔

 

امام خطابی رحمہ اللّٰہ (١) نے فرمایا: جہاں تک قرآن مجید یا اللّٰه تعالیٰ کے اسماء حسنی کے ذریعے دم کرنے کا تعلق ہے تو یہ مباح ہے، کیونکہ نبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم حسن اور حسین رضی اللّٰہ عنہما کو ان کلمات کے ساتھ دم کیا کرتے تھے ۔

 

” میں تم دونوں کو ، ہر شیطان ، ہر زہریلے جانور اور ہر نظر بد سے اللّٰہ کے کلمات کی پناہ میں دیتا ہوں “۔ 

 

اور اللّٰه ہی سے مدد طلب کی جاتی ہے اور اسی پر بھروسہ ہے ۔ 

 

_

 

 امام احمد بن محمد بن ابراہیم بن خطاب ابو سلیمان خطابی ، بہت سی مفید کتابوں کے مصنف ہیں، جیسے  شرح  سنن ابی داؤد وغیرہ آپ نے ٣٨٨ھ  کوبست میں وفات پائی۔

 

 

حواله جات:
“كتاب: كتاب الكبائر”
تاليف: “شيخ الاسلام الحافظ شمس الدين الزهبي (رحمه الله)

 

 

Table of Contents