Sections
< All Topics
Print

19B. Hazrat Taoos Bin Kaisan (رحمہ اللہ) Hamrah Qutaibah Bin musalim Al Baahli

Hazrat Muhammad Bin Waase’ Al Azdi رحمہ اللہ

Hamrah Qutaibah Bin musalim Al Baahli

Muhammad Bin Waase” Azdi ki woh aik ungli Jo Allah ta’ala ki jaanib uthi hui hai, Un hazaar qeemti talwaaron say zyadah mehboob hai jo tajurba kaar, Taiz tarraar, Jihaad kay dhani nojawaanon kay hathon mein pakdi hui hon.

(Qutaibah Bin Muslim Baahli)

Ab 87 hijri mein Hayaat-e-Musta’ar kay din guzaar rahe hain. Fakhar-e-Lashkar-e-islaam azeem faateh general Qutaibah Bin Muslim Baahli Lashkar-e-Jarraar ki qayadat karta hua Bukhara ki taraf pesh qadmi kar raha hai. Dil mein yeh azam kiye huye keh maawra’a ul nahar kay baaqi mandah ilaqajaat ko fatah kar liya jaye. Naiz Chine kay Atraaf-o-Aknaaf apnay qabzay mein lekar us kay bashindon par tax aaid kiya jaye. General Qutaibah Bin Muslim abhi Daryaa-e-Aamu ko aboor karne bhi na paya tha keh Ahl-e-Bukhara ko khatarnaak Surat-e-Haal ka ilm ho gaya, Unho ne har taraf jung kay tabal baja diye aur apne Gird-o-Nawah abaad aqwaam ko madad kay liye pukara, To har rang, Nasal, Zubaan aur mazhab kay haamil ladaaka jawaan jatthon ki surat mein unkay paas pohnchany lage yahan tak keh un ki taa’dad Lashkar-e-Islaam say kahin zyadah badh gayi, Phir yeh log jangi hathiyaaron say lais Maidan-e-Jang mein nikle aur Lashkar-e-Islaam ki pesh qadmi kay saaray raastay masdood kar diye yahan tak keh General Qutaibah Bin Muslim Baahli kay liye yeh mumkin hi na raha keh kisi jasoos ko dushman ki saffon mein rakhna andaazi karne kay liye bhej sakay aur na hi un mein say koi fard wapis aa saka jinhein dushman ki khufiya karrwayion ki report kay liye pehle say wahan bhej rakha tha.


Qutaibah Bin Muslim ne apne lashkar kay hamrah buland sheher kay qareeb morcha laga liya woh yahan jam kar baith gaye.

Dushman har roz Subah say shaam tak un kay qadam ukhaadne kay liye koshaan rehta, Jab shaam ho jaati to apnaa sa munh lekar wapis apne mehfooz aur mazboot qilon mein jaa kar panah gazeen ho jata, Yeh Surat-e-Haal musalsal do maah tak jaari rahi. General Qutaibah Bin Muslim bhi bade pareshaan thay, Unhein kuch pata nahi chal raha tha keh kya karain? Aage badhe ya peechay hatt jayen.

Is nazul tarrn Surat-e-Haal say puri Millat-e-Islamia pareshaan thi, Har jagah har ghar mein yehi charcha tha keh General Qutaibah Bin Muslim Lashkar-e-Islaam kay hamrah dushman kay narghay mein hai. Kisi mahaaz say woh nakaam nahi lauta tha aur na hi woh kabhi dushman kay aage sarnagoon hua tha.

Tamaam governor ne apne Zer-e-Asar subaajaat mein awaam un naas say appeal ki keh mawra ul naher mein ghiray huye Lashkar-e-Islaam ki kaamyabi kay liye har namaaz kay baad Khuloos-e-Dil say du’aa karain. Lehazah Masjiden Bandgaan-e-Khuda ki duaaon say goonj uthein. Masajid kay meenar namazion ki girgiraahat, Aah-o-Zaarion aur siskiyon say goonj uthe. Ayimmah kiraam har namaaz mein du’ae qanoot padhne lage, Lashkar-e-Islaam ko kamak pohnchany kay liye Khalq-e-Kaseer mahaaz par jaane kay liye aamadah hui aur un sab say aage Jaleelul qadar tab’aeen Muhammad Bin Waase’ Azdi mujahidana Shaan-o-Shoquat say jaa rahe thay. Har aik kay dil mein aik hi umang thi keh Lashkar-e-Islaam ko dushman kay narghay say nikaal kar dam lenge.


General Qutaibah Bin Muslim ka aik ajmi nazaad jasoos Aqal-o-Danish, Fahem-o-Faraasat aur Tadbeer-o-Siyasat mein mashoor tha. Uska naam Taizar tha. Dushman ne us kay sath raabta kiya, Maal-o-Daulat ka laalach day kar us ko warghalaya keh woh apni zahaanat ko baroe kaar laa kar Lashkar-e-Islaam ko Naqaabil-e-Talaafi nuqsan pohnchay aur aisi koi tadbeer Baro-e-Kaar laaye keh musalman lade baghair hamaray ilaqa chod kar wapis chale jayen.


Maal-o-Daulat ki peshkash dekh kar Taizar kay munh mein paani aa gaya, Aankhain chundhiya gayi. Woh seedha General Qutaibah Bin Muslim Baahli kay paas gaya. Uskay haan muslim commandaron ki meeting ho rahi thi. Woh bedhadak ijazat liye baghair general kay pehlu mein jaa baitha phir jhuk kar us kay kaan mein kaha: Ameer-e-Lashkar agar ho sake to ijlaas ko abhi khatam kar dain. Aap say main ne badi khufiya aur zaroori baat karni hai. General ne Ahl-e-Majlis ko chale jaane ka ishaarah kiya, Lekin Ziraar Bin Husain ko apnay paas rok liya.

Taizar jasoos ne bade raazdarana andaz mein general say kaha:

Janaab meray paas aap kay liye aham khabrain hain.

General ne kaha: Jaldi bataaye kaun si khabrain hain?

Taizar ne kaha: Ameer ul Momineen ne governor Hajjaj Bin Yousaf ko ma’zool kar diya hai. Aur us kay tamaam commandaron ko bhi ma’zool kar diya hai jo us kay taabe’ farmaan hain. Aur ma’zool kiye jaane waalon mein aap ka naam bhi aata hai. Naye commandaron ko naamzad kar diya gaya hai. Aur woh apne mansab sambhalnay kay liye daarul hukumat Damishq say rawaana ho chukay hain. Aap ki jagah lenay kay liye bhi aik commander Subha-o-Shaam pohnchany wala hai. Mera mashwara yeh hai keh aap lashkar is ilaaqay say wapis le jayen yahan say kahin door jaa kar az sare nau koi program tarteeb dain yeh aap kay liye behter hoga. Warna aap ko Naqaabil-e-Talaafi nuqsan say do chaar hona padega.


Taizar apni baat abhi puri karne hi paaya tha keh general Qutaibah Bin Muslim ne jallaad ko hukm diya keh is dhokay baaz, Ghaddar aur khaain ki gardan uda do. Usne hukm ki taa’meel karte huye chashm-o-zadan mein us ki gardan uda di. General Qutaibah Bin Muslim ne apne paas baithay Ziraar Bin Husain say kaha: Dekho roye zameen par teray aur meray siwaa kisi ko yeh khabar nahi. Main Rabb-e-Kainat ki qasam kha kar kehta hoon keh agar ladai khatam hone say pehle kisi ko tumne bataaya to tera anjaam bhi is dhokay baaz jaisa hoga. Agar koi aisa khayaal bhi dil mein aa jaye to zubaan band rakhna. Achi tarah jaan lo is raaz ka afshaan lashkar ki taaqat ko paamaal kar denay ka baa’is banega. Jis say hamein ibrat naak shikast say dochaar hona padega. Phir aap ne commandaron ko ijazat di woh aap kay paas andar aaye. Jab unho ne Taizar ko zameen par gira hua khoon mein lat pat dekha woh Hairat-o-Angusht-e-Badnidaan reh gaye.

General Qutaibah ne unsay kaha: Khauf-o-Haraas mein mubtala hone ki zaroorat nahi hai aur na hi koi tajjub ki baat hai.

Main ne aaj aik ghaddaar, Khaain aur dhokay baaz ko qatal kiya hai. Unho ne kaha: Ham to isay musalmanon ka khair khwah samajhte thay. General ne bataya ye muslamanon ka ghaddaar tha. Itna arsa yeh maar aasteen bana raha mujhe to aaj is ki asliyat ka pata chala aaj is ne aik aisa daao lagaane ki koshish ki agar main is kay chakkar mein aa jata to Lashkar-e-Islaam ko bhaari jaani maali nuqsan say do chaar hona padta, Allah ta’ala ne usey apne ghinone jurm ki saza di hai, Phir buland awaaz say kaha: Mere sher dil jawaanon! Dushman ka safaaya karne kay liye maidaan mein utro. Aik aisa zor daar hamlah karo jis say dushman kay paaon ukhad jayen. Aaj jurrat, Bahaduri aur zindah dili ki misaal qaaim kar do. Ummat-e-Islamiyah ki nigaahain tum par lagi hui hain. Namoos-e-Islaam ki kaamyabi kay liye aage badho. Fatah-o-Kaamrani tumhara muqarrar banne waali hai.


Lashkar-e-Islaam apne qaaid ka hukm paa kar dushman say nabard aazma hone kay liye maidan mein utra. Jab dono lashkar aamne saamne huye musalman dushman foj ki tayyari dekh kar ghabra gaye, General Qutaibah Bin Muslim ne haalaat ka jaiza letay huye jab Lashkar-e-Islaam mein phele huye Khauf-o-Haraas ka mushahidaa kiya to jawaan ko hausla denay kay liye maidaan mein tezi say chakkar lagaana shuru kiya. Jahan say guzarte aap ki mominaana shuja’at dekh kar mujahideen kay hausle buland ho jaate. Aik jagah ruk kar general ne chaaron taraf nazar daudaai aur pucha: Muhammad Bin Waase’ Azdi nazar nahi aa rahe woh kahan chale gaye? Mujahideen ne bataaya: Woh lashkar ki daayen jaanib khade hain.

Puchaa: Woh wahan kya kar rahe hain? Unho ne bataaya: Woh Duniya-o-Maafiha say beniyaaz apne naizay par tek lagaye nigaah upar uthaaye aasman ki taraf apni ungli say ishaara kar rahe hain. Yun maloom hota hai jaise ungli kay ishaare say Baargah-e-Ilaahi mein dushman ki tabaahi aur Lashkar-e-Islaam ki Fatah-o-Kaamrani ki apeel kar rahe hain.

Mujahideen ne pucha: Kya ham usey bula layen. General ne kaha: Nahi usey wahin apne haal meim mast rehnay dein. Phir farmaaya: Rabb-e-Kainat ki qasam mujhe us ki yeh ungli jo Allah ta’ala ki jaanib uthi hui hai un hazaar qeemti talwaaron say zyadah mehboob hai jo tajurba kaar, Taiz tarraar, Jihaad kay dhani naujawaanon kay hathon mein pakdi hui hon. Usey apni haalat meim chod do. Du’aa mein mashghool rehnay do. Woh bilashubah mustajaab ul dawat hain, Allah us ki du’aaen qubool karta hai.


Dono lashkar aamne saamne aaye, Woh aik doosary kay sath is tarah takraaye jaise samandar ki talaatum khaiz mojain aapas mein takraati hain. Mujahideen ne dat kar muqabla kiya, Allah ta’ala ne un kay dilon mein sakinat nazil ki. Yeh din bhar dushman par shamsheer zani aur teer andaazi karte rahe. Yeh silsilah badastoor shaam tak jaari raha. Shaam dhale dushman kay paaon ukhad gaye, Un kay dilon par betahasha ro’ab taari ho gaya. Woh peeth phair kar bhaag nikale. Mujahideen ne door tak un ka peecha kiya, Be-daraigh un ki gardanein udaain. Baa’z ko qaidi banaya aur jo baaqi bachay unhon ne fidiya ada kar kay sulah ka paighaam General Qutaibah ko bheja. Aur unho ne sulah par aamaadgi ka izhaar kar diya.


Qaidiyon mein aik shar pasand shakhs giraftaar ho kar aaya jo apni qaum ko muslamanon kay khilaaf bhadkaya karta tha.

Us ne general say kaha: Ameer-e-Lashkar main apna fidiya day kar qaid say aazadi chahta hoon, Aap ne pucha kya fidiya ada karoge? Usne kaha: Panch hazaar ghaz cheeni resham ka kapda. General ne lashkar kay Arbaab-e-Haal-o-Aqad say pucha tumhari kya raaye hai? Sabne kaha: Fidiya wasool kar kay isay chod diya jaye. Is Fatah-o-Kaamrani kay baad is qisam kay badqumash muslamanon ka kuch nahi bigaad sakenge, Us kapde say baitul maal mein qeemti cheez ka izafah hoga. Jis say muslamanon ko khatir khwah faidah pohchega.

General ne Muhammad Bin Waase’ Azdi say raaye talab ki. Unho ne farmaaya: Muslaman apne ghar say Maal-e-Ghaneemat ikattha karne kay liye nahi nikle aur na hi Maal-o-Doulat jama karna unka Maqasad-e-Hayaat hai, Woh to sirf Allah ki razaa haasi karne aur roye zameen par us ka hukm naafiz karne nikle hain. Meri raaye mein yeh shakhs kisi bhi waqat muslamanon kay liye khatarnaak saabit ho sakta hai. General Qutaibah Bin Muslim ne yeh baat sun kar kaha: Allah aap ko Jazaa-e-Khair ata kare. Allah ki qasam main kisi aisy shakhs ko mu’af nahi karunga jo kisi bhi tarah say musalmaan ko gazand pohanchay ki salaahiyat rakhta ho. Khwah woh puri duniya ka maal apne fidiya mein ada karne kay liye tayyar ho. Waqayi ham apne gharon say maal ikattha karne kay liye nahi nikle. Hamara asal kaam Allah kay deen ki sar bulandi aur A’adaa-e-Islaam ka mukammal khatma hai. Phir general ne us nahinjaar ko qatal karnay ka hukm saadir farmaaya.


Muhammad Bin Waase’ Azdi ka ta’alluq Banu Umaiyya kay Umra’a mein say sirf Yazeed Bin Muhallab aur Qutaibah Bin Muslim Baahli kay sath hi nahi raha. Balkeh inkay ilawah bhi kayi aik governor aur sarbraahon kay sath t’alluqaat rahe, Un mein sab say zyadah numaayan aur Qaabil-e-Rashk t’alluqaat Basrah kay governor Bilaal Bin Abi Burdah kay sath rahe.

Aik din oon ka mota khadra aur purana libaas pehnay governor kay paas aaye. Governor Bilaal ne pucha: Abu Abdullah aap ko aisa phata purana libaas pehn’nay ki kya zarurat hai?

Allah na kare koi aisi majboori hai?

Unhon ne governor ki baat suni an suni kar di aur us ka koi jawaab na diya. Unho ne ne dobara kaha: Abu Abdullah kya baat hai aap mujhe jawaab kyun nahi detay?

Farmaaya: Mujhe acha nahi lagta main apne aap ko zahid keh kar khud sataai ka irtikaab karoon aur na hi mujhe yeh pasand hai keh Faqr-o-Faaka ka izhaar kar kay apne Rab ka shikwah karun. Na main yeh andaaz ikhtiyar karna chahta hoon aur na woh. Governor ne pucha: Abu Abdullah koi zarurat ho to bataayen ham usey In sha Allah puri karenge.

Farmaaya meri aisi koi zarurat nahi jis ka sawaal main logon say karun.

Haan apne musalmaan bhai ki aik zarurat aap ki khidmat mein pesh karta hoon. Agar aap usey Allah ki tofeeq say pura kar dain to Qaabil-e-Sataaish honge aur agar pura na kar sakain to phir bhi aap par koi gila nahi balkeh aap ko m’aazoor samjha jayega.

Governor Bilaal ne kaha ham usey zaroor pura karenge. Irshaad farmaaye: Usey kya zarurat hai! Aap ne woh zarurat bata di jise usi waqt pura kar diya gaya.

Governor Bilaal ne pucha Qaza-o-Qadar kay baare mein aap ki kya raaye hai?

Farmaaya: Qayanat kay roz Allah ta’ala Qaza-o-Qadar kay mut’alliq sawaal nahi karega. Balkeh har aik se us kay amaal kay mut’alliq poocha jayega.

Governor yeh baat sun kar sharmindah hua aur khaamosh ho gaya abhi woh apni jagah par hi baitha tha keh dopeher kay khaane ka waqat ho gaya. Governor ne Muhammad Bin Waase’ ko khaane ki dawat di. Unhon ne dawat qabool karne say inkaar kar diya.

Usne bada hi zor lagaya lekin aap khaane kay liye aamadah na huye. Governor Bilaal ne naraaz ho kar kaha: Aye Abu Abdullah mere khayaal mein aap hamare khaane say koi luqma uthana makrooh samajhte hain.

Farmaaya: Nahi. Yeh baat qat’an nahi. Phir irshaad farmaaya: Aye Umraa Banu Umaiyya tum mein say jo behter hain woh hamein apni aulaad aur khandaan say bhi zyadah azeez hain. Khaane ki mujhe talab nahi warna zaroor aap kay sath khana tanawul karta.


Muhammad Bin Waase’ Azdi ko kayi baar qaazi ka ohda pesh kiya gaya lekin aap ne yeh mansab qabool karne say saaf inkaar kar diya aur us inkaar ki wajah say apne aap ko takleef mein mubtala karna gawara kar liya. Aik martabah Basrah ki police kay sar barah Muhammad Bin Munzir ne unhein apne paas bulaaya. Aap tashreef le gaye. Unho ne kaha: Iraq kay governor ka abhi abhi paighaam aaya hai ke main aap ko governor kay mansab par faaiz karoon.

Aap ne farmaaya: Mujhe yeh mansab pasand nahi main m’aafi chahta hoon. Allah ta’alaa aap par karam karay.

Usne do teen dafa apna mutaalba dohraya aur unhein majboor kiya keh qazaa ka mansab sambhal lain, Lekin aap ne badi shiddat say us ka inkaar kiya, Police kay sarbaraah ne tang aa kar kaha: Allah ki qasam aap ko yeh ohda qabool karna padega, warna main aap ko Sar-e-Aam koday laga kar ruswaa karoonga. Aap ne bade itminaan say farmaaya: Meray sath yeh sulook karna pasand karte hain to badi khushi say shoq pura kijye, Meray nazdeek duniya ki takleef aakhirat ki takleef say kahin behter hai. Police ka sarbarah yeh sun kar sharminda hua aur unhein Adab-o-Ahtraam aur Husn-e-Sulook say rukhsat kiya.


Basrah ki markazi Masjid mein Muhammad Bin Waase’ Azdi ki ilmi majlis Ilm-o-Hunar kay matwaalon kay liye Maljaa-o-Maawa aur Hikmat-o-Danish kay mutalaashion kay liye meetha chashma bani hui thi.

Tareekh-o-Siar ki kitaabain is majlis ki daastaan say bhari padi hain, Ahl-e-Majlis mein say aik shakhs ne kaha: Abu Abdullah! Mujhe nasihat kijye, Farmaaya: Main tujhe wasiyat karta hoon keh tu Duniya-o-Aakhirat ka baadshah ban jaa.

Sawaal karne waala hairaani say puchta hai keh yeh kaise ho sakta hai?

Farmaaya jo kuch logon kay qabzay mein duniya ka maal hai us say beniyaaz ho jao. To tum duniya kay badshaah ho gaye. Aur jo kuch Allah ta’ala kay haan aakhirat mein hai usey apne Husn-e-Amal say haasil karne ki koshish karo to aakhirat kay badshaah ban jaoge.

Ahl-e-Majlis mein say aik shakhs ne kaha: Janaab main aap say mohabbat karta hoon.

Farmaaya Allah aap say mohabbat karay. Jisne tujhe apni khaatir mujh say mohabbat karne ki taufeeq ‘ataa ki. Phir woh shakhs yeh kehta hua chala gya: Ilaahi main teri panaah chahta hoon keh meray sath teray liye mohabbat ki jaye, Aur tu mujh say naraaz ho. Ilaahi tu mujh say raazi ho ja meray gunah baksh de.


Muhammad Bin Waase’ Azdi jab bhi kisi ko apni Tareef-o-Tauseef bayaan kartay huye suntay to irshaad farmaaty: Agar gunahon ki boo mehsoos hoti to koi bhi shakhs meray qareeb na aa sakta kyunkeh main bohat bada gunehgaar hoon, Paapi hoon, Gunaahon ki daldal mein phansa hua hoon, Woh hamesha apne shaagirdon ko Quran-e-Majeed par amal karne aur uske saaya mein zindagi basar karne ki talqeen kiya karte thay.

Woh aksar farmaaya karte thay:

Quran-e-Majeed momin ka baagh hai, Us baagh mein jahan bhi koi farokash hoga usey khushboo aur taro taazgi mehsoos hogi, Is tarah woh hamesha kam khaane ki talqeen kiya karty thay, Woh aksar farmaaya karte thay keh jis ne kam khaya us ne Fahem-o-Faraasat, Aqal-o-Danish aur qalbi Ikhlaas-o-Riqqat mein mumtaaz maqaam haasil kiya, Khaane ki zyadati insaan ko bojhal bana deti hai aur insaani Ifkaar-o-Khayalat ko ghina deti hai.


Muhammad Bin Waase’ Azdi ne Taqwa-o-Taharat mein aik mumtaaz maqaam haasil kiya. Aik din bazaar mein unhein apna gadha farokht karte huye dekha gaya. Kisi ne pucha janaab kya aap yeh gadha meray liye pasand karte hain keh mein isay khareed loon? Farmaaya agar yeh gadha mujhe pasand hota to main isay bechta hi kyun.


Janaab Muhammad Bin Waase’ Azdi ne apni puri zindagi apne gunahon say dartay huye apne Rab kay saamne peshi kay shadeed ahsaas mein guzaar di. Aap say pucha gaya Abu Abdullah subah kaise guzri? Farmaaya: Apni maut ko qareeb samajhte huye Ummid-o-Beem ko ba’eed girdaantay huye apni bad aamali Pesh-e-Nazar rakhte huye subha guzaari, Jab yeh sawaal karne waalon kay chehron par Khauf-o-Haraas aur dehshat kay asaar dekhtay to farmaate aap ka us shakhs kay mut’alliq kiya khayaal hai jo har roz aakhirat ki taraf apni manzil ka aik marhala tay kar leta ho?


Hazrat Muhammad Bin Waase’ Azdi jab marz ul maut mein mubtala huye to ayaadat karne waalon ka aap kay ghar jamgatha ho gaya, Kasrat say log aa ja rahe thay aur bohat say aap kay ghar khade aur baithay thay.

Aap ne pehlu badal kar chehra apne azeez ki taraf kiya aur farmaaya:

Mujhe yeh baat bataao jab mujhe peshaani aur paaon say pakad kar ghaseeta jayega to yeh log mujhe koi faidah pohancha sakenge? Agar mujhe pakad kar Jahannum mein daala gaya to kya yeh log mujhe chuda sakain gay? Phir apne Rab say iltijaa karne lage.

Ilaahi main har us buray maqaam par jahan main zindagi mein khada thaa us say panaah chahta hoon.

Ilaahi har buri jaga jahan meri aamadoraft rahi us say panaah chahta hoon.

Ilaahi har bura amal jo main ne kiya aur har buri baat jo main ne kahi us say m’aafi ka talabgaar hoon, Ilaahi un tamaam gunahon ki talab dasta m’aafi chahta hoon teri izzat ka waasta mujhe m’aaf kar day, Mujh pe Nazar-e-Karam farmaa.

Main giraftaar ho kar teray huzoor pesh kiye jaane say pehle hi pur aman aur salaamti kay sath aap say mulaqaat ki dili tamanna rakhta hoon, Yeh kaha aur aap ki rooh Qafs-e-Unsari say parwaaz kar gayi.


Hazrat Muhammad Bin Waase’ Azdi kay mufassal Halaat-e-Zindagi maloom karnay kay liye darjzail kitaabon ka mutaal’a karain:

1: Tarikh-e-Bukhari                                                                           1/255
2: Tarikh-e-Shagir                                                                              1/318-319
3: Al Jarah wal Tadeel                                                                        8/113
4: Hilyat ul Awliya                                                                             2/345-357
5: Al Wafi Bil Wafayat                                                                      5/372
6: Tahzeeb ul Tahzeeb                                                                        9/499-500
7: Shazart ul Zahab                                                                             1/161
8: Tabaqat-e-Khalifa                                                                          215
9: Tahzeeb ul Kamal                                                                          1283

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

حضرت طاؤوس بن کیسان رضی اللہ تعالی عنہا بحثییت واعظ وراھنما

 

اے ابوعبدالرحمان میں نے تجھے خواب میں دیکھا کہ توبیت اللہ کے اندر نماز پڑھا رہا ہے اور دروازے پر کھڑے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فرمارہے تھے اے طاؤوس اونچی آواز سے قرآن مجید پڑھو۔

                 (مجاھد)

 

خلیفتہ المسلمین سلمان بن عبدالملک بیت اللہ کی ایک جانب پڑاؤ کیے ہوے اسے شوق بھری نگاہوں سے دیکھ رہا تھا اس نے اپنے دربان سے کہا جیدعالم کو بلا کر لائے تاکہ وہ ہمیں ان مبارک دنوں کی مناسبت سےحج کے مسائل بتائے۔ دربان حباج اکرام سے امیرالمومنین کی خواہش کے مطابق کسی جید عالم کے متعلق پوچھنے لگا۔ اسے بتایا گیا کہ طاؤوسبن کیسان اس دور کے فقہاء و علما کے سردار ہیں’ دعوت و ارشاد کے میدان میں اس کا اندازہ سب سے زیادہ دلپذیر ہے ‘ آپ بے فکر ہو کر اسے ساتھ لے جائیں۔
دربان نے جناب طاؤوس کی خدمت عالیہ میں حاضر ہو کر مئودبانہ المتاس کی کے امیر المومنین نے آپ کو یاد فرمایا ہے آپ بغیر کسی تاخیر کے دربان کے ہمراہ امیر المومنین کے پاس جانے کے لیے تیار ہوگئے۔
آپ کا نظریہ یہ تھا ‘ کے ہر مبلغ پر لازم ہے کہ دعوت و ارشاد کے لیے ہر مناسب موقع کو غنیمت جانے۔ اور اسے کسی صورت ہاتھ سے نہ جانے دیں۔ اور انہیں اس بات پر پختہ یقین تھا کہ وہ بات سب سے افضل ہے جو کسی بادشاہ کو درست کرنے کے لئے یا اس سے ظالم و جور سے باز رکھنے کے لیے یا اسے اللہ کے قریب کرنے کے لیے کی جائے ۔


حضرت طاؤوس دربان کے ہمراہ چلے جب وہ امیرالمومنین کے پاس گئے اسے سلام کہا تو اس نے والہانہ استقبال کیا اور بڑی عقیدت سے سلام کا جواب دیا اور نہایت ہی عزت و کرام کے ساتھ اپنے پاس بٹھا یا پھر وہ آپ سے حج کے مسائل دریافت کرنے لگے ۔‌ اور بڑے ادب و احترام سے ان کے جوابات سننے لگا۔‌
حضرت طاوؤس فرماتے ہیں ۔
جب میں نے محسوس کیا کہ امیرالمومنین اپنا مقصد حاصل کر چکے ہیں اور اب کوئی سوال باقی نہیں رہا ‘ تو میں نے اپنے دل میں سوچا یہ ایک ایسی مجلس ہے کہ اللہ تعالی کی بارگاہ میں مجھ سے اس کے متعلق پوچھا جائے گا پھر تم نے سربراہ مملکت کو کوئی نصیحت کیوں نہیں کی ‘ یہ سوچ کر میں اس کی طرف متوجہ ہوا ‘ اور کہا ۔
اے امیر المومنین ‘ جہنم کے گرے گڑھے میں کنوئیں کی منڈھیرپر ایک پتھر تھا ‘ وہ اس میں گرا اور ستر سال کنوئیں کی تہہ تک پہنچا۔
اے امیرالمومنین کیا تم جانتے ہو جہنم کا یہ ہولناک کنواں اللہ تعالی نے کس کے لئے تیار کر رکھا ہے اس نے جواب دیا مجھے علم نہیں۔
پھر اس نے جھنجلاتے ہوئے دریافت کیا ۔ آپ ہی بتائیں وہ بھلا کس کے لیے تیار کیا گیا ہے۔
فرمایا :اللہ تعالی نے کنواں اس شخص کے لئے تیار کیا ہے کہ جسے اس نے مسلمانوں کا حک
مران بنایا لیکن اس نے اپنی رعایا پر ظالم و تشدد کیا۔
یہ سن کر خلیفہ سلیمان کے جسم میں لرزہ طاری ہوگیا مجھے یوں محسوس ہوا جیسے اس کے جسم سے روح پرواز ہوا چاہتی وہ زار و قطار رونے لگا اور رونے کی وجہ سے اس قدر ہچکی بندھی ہوئی تھی کہ یوں معلوم ہوتا تھا کہ اب ان کا آخری وقت ہے . اس حالت میں میں نے اسے چھوڑا اور واپس آ گیا ‘ وہ مجھے واپس ہوتے ہوئے دیکھ کر جزائے خیر کہہ رہا تھا ۔
             


حضرت عمر بن عبدالعزیز مسند خلافت پر فروکش ہوئے تو انہوں نے حضرت طاؤوس بن کیسان کی طرف پیغام بھیجا کے از راہ کرم مجھے کوئی وصیت کیجئے . حضرت طاؤوس نے انہیں لکھا جو صرف ایک سطر پر مشتمل تھا اس میں یہ جملہ لکھا ہوا تھا ۔
اگر آپ چاہتے ہیں کہ آپ کا تمام کام خیر و برکت ہو تو کاروبار حکومت کی ذمہ داریاں نے ایک لوگوں کے سپرد کیجیے۔
جب حضرت عمر بن عبدالعزیز نے خط پڑھا ۔تو پکار اٹھے اور بار بار کہنے لگے ۔
اتنی ہی نصیحت کافی ہے
اتنی ہی نصیحت کافی ہے


جب ہشام بن عبدالملک مسند خلافت پر جلوہ گر ہوا تو حضرت طاؤوس کیسان نے اسے حق نصیحت ادا کرتے ہوئے کئی مواقع پر مومنانہ جرات و بصیرت کا ثبوت دیا ۔

جو ہر خاص و عام میں مشہور معروف ہوا ‘ ان جملہ واقعات میں سے یہ واقعہ پیش خدمت ہے ۔
جب ہشام حج کرنے کی گردوں سے بیت اللہ پہنچا ‘ حرم میں بیٹھے ہوئے اس نے اپنے حکومت کے ان ذمہ دار ان افسران سے کہا جو مکہ معنلمہ میں متعین تھے کہ کسی صحابی رسول علیہ السلام کو ڈھونڈ کر لے آئیں۔
انہوں نے کہا: امیرالمومنین صحابہ کرام تو یکے بعد دیگرے اللہ کو پیارے ہو چکے ہیں ‘ اب تو ان میں سے کوئی باقی نہیں رہا ۔
تو اس نے کہا تابعين میں سے کسی کو لے آئیں۔
حضرت طاؤوس بن کیسان اللہ تعالی عنہا کو اس کی پاس لیا گیا۔
جب آپ اس کی پاس آئے تو اپنا جوتا اس کے تخت کے ایک طرف اتار دیا۔
اسے سلام کہا اور امیرالمومنین کے لقب سے اسے یاد نہ کیا ‘ بلکہ سیدھا اس کا نام لے کر مخاطب ہوئے لیکن ان کی جانب اور اس کی اجازت لئے بغیر بیٹھ گئے یہ منظر دے کر ہشام کی آنکھیں غصے سے سرخ ہو گئیں۔
اس نے طرزعمل کو شاہی دربار کے آداب کے منافی سمجھااور درباریوں کی موجودگی میں اسے اپنی بے ادبی اور گستاخی گروانا ‘ لیکن اس نے بیت اللہ کی حرمت کی پیش نظر اس غصے کا اظہار نہ کیا بلکہ نہایت ہی دھیمے انداز میں کہا۔
اے طاؤوس ایسا کرنے پر آپ کو کس چیز نے برانگیختہ کیا؟

آپ نے فرمایا: میں نے کیا کہا ہے؟
خلیفہ کو پھر غصہ آیا اور کہا:
تم نے میرے تخت کی ایک جانب جوتے اتارے اور شاہی دربار کے آداب کا کچھ خیال نہ کیا۔اور پھر تم نے امیرالمومنین کہہ کر سلام نہیں کیا
مزید برآں تم نے میرا گستاخانہ انداز میں میرا نام لیا اور کنیت بھی نہ لی پھر تم بغیر میری اجازت کے بیٹھ گئے۔ حضرت طاؤوس نام بڑے ہی نرم اور دھیمے انداز سے فرمایا:
جہاں تک تیرے تخت کے نزدیک جوتے اتارنے کا تعلق ہے ذرا میری بات دھیان سے سنو! میں روزانہ پانچ مرتبہ اللہ تعالی کی بارگاہ میں اپنے جوتے اتارتا ہوں اس نے آج تک نہ مجھے ڈانٹا ہے اور نہ ہی آج تک کبھی وہ مجھ سے ناراض ہوا ۔
رہی یہ بات کہ میں نے آپ کو امیر المومنین پکار کر سلام نہیں کیا ‘ تو اس کی اصل وجہ یہ ہے کہ آپ کی امارت پر تمام مسلمان متفق نہیں۔
رہی یہ بات کے تمہارا نام لیا ہے اور اور كینت سے نہیں پکارا تو سنو اللہ تعالٰی نے اپنے مہبوب انبیاءکو نام لے کر پکارا ہے جس طرح کہ قرآن مجید نے ارشاد فرمایا۔

یانوح۔۔۔۔۔۔۔یا داؤ د ۔۔۔۔۔
یایحی ۔۔۔۔۔یا موسیٰ ۔۔۔۔
یاعيسی اور اپنے دشمنوں کو كینت سے پکاراہے ۔

جیسا کے تبت یدا ابی لهب و تب سے ظاہر ہے۔ رہی یہ بات کے میں آپ کی اجازت کے بغیر ہی بیٹھ گیا اس کی اصل وجہ یہ ہے کہ میں نے امیر المومنین حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ کو یہ فرماتے ھوئے سنا : اگر کسی جہنمی کو دیکھنا چاہیں تو اس شخص کو دیکھ لیں جو خود بیٹھا ہو اور دوسرے لوگ دست بستہ اس کے ارد گرد کھڑے ہوں۔
مجھے نا گوارا گزارا کے آپ وہ شخص ہو جسے اہل جہنم میں شمار کیا جائے۔ ہشام نے یہ سن کر شرمندگی سے اپنا سر جھکایا۔ پھر اس نے اپنا سر اٹھایا اور کہا اے ابو عبدالرحمان مجھے کوئی نصیحت کیجیے۔
آپ نے فرمایا میں نے امیر المومنین حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ کو یہ فرماتے ہوئے سنا۔
جہنم میں لمبے اور موٹے ستونوں کی مانند خوف ناک سانپ ہوں گے اور خچروں کی مانند بچھو جو ہر اس حکمران کو ڈسیں گے جو آپنی رعایا میں انصاف نہیں کرتا یہ کہہ کر آپ وہاں سے اٹھے اور چلے گئے۔
حضرت طاؤوس ؓ بعض حکمرانوں کے پاس نصیحت اور تلقين کرنے کے لئے بخوشی چلے جایا کرتے تھے۔
اور بسااوقات تنبیہہ کے طور پر بلانے پر بھی حکمران کے پاس نہیں جاتے تھے ان کا فرزند ارحمند بیان کرتا ہے۔
کہ ایک سال میں ابا جان کے ساتھ حج کرنے کے لئے یمن سے روانہ ہوا ہم نے دوران سفر ایک شہر میں قیام کیا یہاں حکومت کی طرف سے ابن نبیح عامل مقرر تھا اور اس کی شہرت اچھی نہ تھی ‘ یہ حق کو پامال کرنے اور باطل کی طرفداری کرنے کی بنا پر بدنام ہو چکاتھا۔
ہم نماز ادا کرنے کے لئے مسجد میں گئے وہاں ابا جان کی آمد کا سن کر یہ بھی انہیں ملنے کے لیے آگیا ‘ اور اس نے آپ کے سامنے باادب ہو کر بیٹھ کر سلام عرض کی ‘ آپ نے اس کے سلام کا جواب نہ دیا بلکہ نفرت کی بنا پر اس سے اپنا مونہ پھیر لیا۔
اس نے آپکی دائیں طرف ہو کر بات کی آپ رو گردانی کرتے ہوئے بائیں مڑ گئے۔ اس نے بائیں جانب ہو کر بات کی تو آپ بدستور اس سے اعراض برتا۔ جب میں نے یہ منظر دیکھا تو میں نے آگے بڑھ کر اسے سلام کیا۔ اور عرض کی جناب میرے ابا جان نے آپ کو پہچانا نہیں۔
اس نے کہا: آپ کے ابا جان مجھے پہچانتے ہیں۔ یہ جو آپ مشاہدہ کر رہے ہیں یہ اس بات پر دلالت کرتا ہے یہ مجھے اچھی طرح پہچانتے ہیں۔
پھر وہ خاموشی سے چلا گیا۔
جب ہم واپس اپنے کمرے میں آئے تو اب جانے غصے سے مجھے کہا۔ ارے احمق تم غیر حاضری میں ان لوگوں کے خلاف باتیں کرتے ہو اور جب یہ سامنے آتے ہیں تو تم بھیگی بلی بن جاتے ہو۔
 یہ منافقت نہیں تو اور کیا ہے؟

حضرت طاؤوس بن کیسان صرف حکمرانوں کو ہی وعظ و نصیحت نہیں کیا کرتے تھے بلکہ ہر اس شخص کو پندونصائح سے نواز تے جو آپ سے مانوس ہوتا یا کسی ضرورت پر آپ کے پاس آتا۔
مشور و معروف تالبعی حضرت عطا بن رہاح فرماتے ہیں کہ ایک مرتبہ حضرت طاؤوس نے مجھے ایک حکمران کے پاس جاتے ہوئے دیکھ لیا تو آپ نے مجھے ارشاد فرمایا :عطاء میری بات غور سے سنو اپنی کوئی ضرورت ایسے شخص کے سامنے پیش نہ کرو جس نے اپنے دروازے بند کر رکھے ہوں ‘ اپنے دروازوں پر دربانوں کو بٹھا رکھے ہوں بلکہ اپنی ہر ضرورت اس کے سامنے پیش کروں جس نے ہر دم اپنے دروازے اپنے بندوں کے لئے کھلے رکھے ہوئے ہیں۔ وہ تم سے مطالبہ کرتا ہے کہ مجھ سے مانگو اور یہ وعدہ کررکھا ہے کہ میں اپنے بندوں کی دعا کو قبول کروں گا.


اپنے بیٹے کو مخاطب کرکے یہ ارشاد فرمایا:
میرے لخت جگر عقلمندوں کی مجلس میں بیٹھا کریں۔
تجھے بھی لوگ عقلمند کہیں گے اگر تم عقل و دانش کے اس معیار پر نہ بھی ہو۔
یاد رکھو جاہلوں کی صحبت سے بچو ورنہ لوگ تجھے بھی جاھل کہیں گے ۔

گے۔ اگرچہ جہالت کے ساتھ تیرا دور کا بھی واسطہ نہ ہو۔
خوب اچھی طرح جان لو ہر چیز کا کوئی نہ کوئی بنیادی مقصد ہوتا ہے۔
اور انسان کا مقصد اپنے فرائض کو پورا کرنا اور اپنی سیرت کو کمال درجہ تک پہنچانا ہے۔
ان کا فرزند ارحجند عبداللہ اپنے باپ کے نقش قدم پر چلا اور ان کے اخلاق حسنہ کو اپنایا۔
ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ عباسی خلیفہ ابو جعفر منصور نے حضرت طاؤوس کے بیٹے عبداللہ اور مالک بن انس کو ملاقات کے لیے بلایا جب یہ دونوں اس کے دربار میں گئے تو اس نے عبداللہ بن طاؤوس کی طرف دیکھا اور کہا۔
ہمیں کوئی ایسی نصیحت آموز بات بتلائیں جو آپ نے اپنے جان سے سنی ہو۔
اس نے کہا: مجھے ابا جان نے یہ حدیث سنائی ہے کہ قیامت کے دن سب سے زیادہ اس شخص کو عذاب ہوگا ‘ جسے اللہ تعالی نے لوگوں کا حکمران بنایا لیکن اس نے ظلم و تشدد سے کام لیا۔
حضرت مالک بن انس فرماتے ہیں کہ میں نے یہ بات سنتے ہی اس اندیشے سے اپنے کپڑے سمیٹ لیے کے خلیفہ غصے سے آگ بگولا ہو کر اس کی گردن اڑا دے گا اور کہیں خون کے چھینٹے میرے کپڑوں پر نہ پڑ جائیں۔ لیکن خلاف توقع ابوجعفر یہ تلخ حقیقت سن کر خاموش رہااور پر امن انداز میں ہمیں واپس جانے کی اجازت دی۔

حضرت طاؤوس بن کیسان نے سو سال سے کچھ زیادہ عمر پائی اس بڑھاپے میں بھی ان کا ذہن تروتازہ رہا ‘ فکرودانش میں بد ستور تيزی اور تازگی رہی ‘ گفتگو میں بے ساختگی ‘ کی طاقت اور روانی رہی ۔
عبداللہ شامی بیان کرتے ہیں کہ میں حضرت طاوؤس کا چرچا سن کر ان سے علم حاصل کرنے کے لئے ان کے گھر حاضر ہوا۔ پہلے میں نے آپ کو نہیں دیکھا تھا۔ میں نے دروازہ کھٹکھٹایا اندر سے ایک بڑی عمر کے شیخ برآمد ہوئے۔ میں نے انہیں سلام کہا: اور پوچھا کیا آپ طاوؤس بن کیسان ہیں ‘ انہوں نے فرمایا: نہیں میں ان کا بیٹا ہوں ‘ میں نے یہ سن کر کہا ، سبحان اللہ ‘ اگر آپ ان کے بیٹے ہیں تو وہ تو انتہائی بڑھاپے کی وجہ سے اپنا حافظ کھو بیٹھے ہونگے ‘ میں تو بہت دور سے علم حاصل کرنے کے لئے ان کی خدمت میں حاضر ہوا تھا۔
اس نے کہا: آپ غمگین نہ ہو وہ بالکل ٹھیک ہے قرآن مجید کے عالم کا حافظ آخر دم تک خراب نہیں ہوتا۔ آپ اندر تشریف لائیں ‘ ان سے ملاقات کريں ۔ میں اندر گیا سلام عرض کی اور اپنی آمد کا مقصد بیان کیا کہ میں بڑی دور سے چند غلطی مسائل سمجھنے کے لئے حاضر ہوا ہوں۔ آپ نے فرمایا: ٹھیک ہے سوال کیجئے لیکن مختصر ۔
میں نے عرض کی میں
انشاءاللہ حتی المقدور مختصر سوال کرنے کی کوشش کروں گا۔ میں ابھی سوال کرنے کے لئے پر تول ہی رہا تھا کہ آپ نے

ارشاد فرمایا :کہاں میں آپ کے سامنے تورات ‘ زبور ‘ انجیل اور قرآن کا خلاصہ نہ بیان کر دوں؟
میں نے کہا کیوں نہیں زہے قسمت ارشاد فرمائیے۔
اللہ تعالی سے اتنا ڈرو کےاس کے خوف پر کسی اور کا خوف کا غلبہ نہ ہونے پائے۔
اور اس سے اس قدر سے امید وابستہ رکھو کہ یہ امید اس کے خوف پر غالب آجائے۔
اور لوگوں کے لئے وہی پسند کرو جو تم خود اپنے لئے پسند کرتے ہو۔
۱۰ ذی الحجہ ۱۰۶ ھجری کی شام کو حضرت طاوؤس بن کیسان حجاج کرام کے ہمراہ میدان عرفات سے مزدلفہ کی جانب لوٹ رہے تھے یہ ان کا چالیسواں حج تھا۔ جب مزدلفہ پہنچے اس کی پاکیزہ فضا میں پڑاؤ کیا مغرب اور عشاء ملا کر نماز ادا کی : آرام کی غرض سے ابھی زمین پر دراز ہوئے ہی تھے کہ موت نے آپ کو آلیا اور اپنے خاندان اور وطن سے دور اس حال میں اللہ تعالی کو جا ملے کے آپ نے احرام باندھا ہوا تھا ‘ زبان پر لبیک اللھم لبیک کا دلفریب ترانہ تھا اللہ تعالٰی سے ثواب کی امید نہاں خانہ دل میں سمائی ہوئی تھی۔ حج کی وجہ سے گناہوں سے یوں پاک ہو چکے تھے جیسے آج ہی والدہ نے انہیں جنم دیا ہو۔
جب صبح ہوئی زیارت کرنے والے لوگوں کا اسقرر ہجوم ہو چکا تھا .
کہ جنازہ اور دفن کے لیے امیر مکہ کو پولیس کی مدد لینا پڑی تاکہ وہ لوگوں کو پیچھے ہٹانے کا فریضہ سرانجام دے تاکہ آپ کے کفن د فن کا اہتمام آسانی سے کیا جا سکے۔بڑی بھاری تعداد میں لوگ جنازے میں شریک ہوئے نماز جنازہ پڑھنے والوں میں خلیفہ وقت ہشام بن عبدالمالک بھی موجود تھا۔

 

حضرت طاوؤس بن کیسان کےمفضل حالات زندگی معلوم کرنے کے لئے درج ذیل کتابوں کا مطالع کریں.

 

1طبقات بن سعد. 537/5
2طبقات خلیفہ بن خیاط 287
3تاریخ خلیفہ بن خیاط 236
 4التاریخ الکبیر 365/4
5تاریخ الفسی. 705/1
6البحرح والعدیل 500/4
7حلیتہ الاؤلیاء. 233/4
8طبقات النقاءلشیرازی 73
9اللباب 241/1
10تہذت اتمزیب 101/2
11تاریخ الاسلام 162/4
12تذکرة الفہاظ. 90/1
13العبر. 130/1
14طبقات القراء 341/1
15النجوم الزاہدة 24/1
16شزرت الذاھب 133/

 

 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر
Table of Contents