Sections
< All Topics
Print

07. HALAT-E-IHRAM MEIN AURAT KA CHEHRA DHANPNA

HALAT-E-IHRAM  MEIN AURAT KA CHEHRA DHANPNA:

 

Ihram mein chehre se muta’alliq Imaam Ahmad (رحمه الله) wagherah ke mazhab mein do (2) qawl hain:

 

  1. Woh mard ke satar ki tarhoa hai, use dhaka nahi jae ga.
  1. Aurat ka chehra mard ke dono haathon ke hukm mein hai jise burqa aur niqab wagherah kisi aisi cheez se nahi chhupae gi jo khaas taur par chhupane ke liye banai gai ho, yehi qawl sahih hai kyunkeh Aap (ﷺ) ne halat-e-ihram mein aurat ko sirf niqab aur dastane ke istemal se mana’ farmaaya:

Isi liye halat-e-ihram mein auraten apne chehre par baghair kisi hayel ke mardon ki nazron se bachne ke liye ghunghat nikal liya karti theen.

Ummul momineen Ayesha (رضی اللہ عنہا) farmaati hain keh: “Hum log Allah ke Rasool (ﷺ) ke saath halat-e-ihram mein the jab log hamare paas se guzarte tou him ghunghat nikal lete aur jab guzar jaate tou chehre par se kapra hata lete”.

[Abu Dawood: 1833 Sanad Daeef]

 

Is se malum hua keh un ka chehra khud un ke apne haathon aur mardon ke haathon ki tarah hai aur jaisa keh yeh baat pehle aa chuki hai keh aurat poori ki poori chhupane ki cheez hai, is liye use apne chehre aur donon haathon ko chhupana hoga lekin aise kapre se jo insaani a’zaa ke mutabiq na silaya gaya ho bi’ainihee isi tarha halat-e-ihram mein mard pajama ya shalwar wagherah nahi pehne ga aur na hi tehband ka istemal kare ga.

Wallahu Subhaanahu a’lam.

 

REFERENCE:
BOOK: MASAIYL-E-SATAR-O-HIJAAB
TALEEF: SHAYKH UL ISLAM IBN TAYMIYYAH(رحمه الله)
URDU TARJUMA BY: SHAYKH MAQSOOD AL HASAN FAIZI HAFIZULLAH

 

 

Covering a woman’s face during Ehraam.. :-

About covering a woman’s face in the state of ehraam Imam Ahmad (rahimulla) and others have two opinions:

1- It is like the satar of man, so it will not be covered.

2- A woman’s face comes under ruling of man’s hands meaning it cannot be covered by burqa Or naqab Or anything which is specifically designed to cover. This is the correct ruling because Rasulallah sallalaahu alaihi wasallam forbade a woman from using only naqab and gloves

Hence the women in the state of ehraam in order avoid men’s gaze would take out a ghunghat.

Our Mother Hazarat Aisha (radiallahu anha ) states that ” When we were in the state of ehraam and men would pass from near us, we would take out a ghunghat and then removed it from our face when they left.

(Abu Dawood : 1833 Sanad Daeef)

So we come to know that their face are like their hands and like men’s hands and as it has already been explained before that a woman is something to be covered completely, so she has to cover her face and both hands but by such material that is unstitched, in the same way in the state of ehraam a man will not wear a pajama, shalwar etc nor use a stitched belt.

Allah knows best. ۔

حالت احرام میں عورت کا چہرہ ڈھانپنا

 

احرام میں عورت کے چہرہ سے متعلق امام احمد بن رحمہ اللہ وغیرہ کے مذہب میں دو قول ہیں:

  1. وہ مرد کے سر کی طرح ہے، اسے ڈھکا نہیں جاۓ گا۔

2. عورت کا چہرہ مرد کے دونوں ہاتھوں کے حکم میں ہے جسے برقعہ اور نقاب وغیرہ کسی ایسی چیز سے نہیں چھپاۓ گی جو خاص طور پر چھپانے کے لیے بنائی گئی ہو،
یہی قول صحیح ہے کیونکہ آپ صلى الله عليه وسلم نے حالت احرام میں عورت کو صرف نقاب اور دستانے کے استعمال سے منع فرمایا :

اس لیے حالت احرام میں عورتیں اپنے چہرے پر بغیر کسی حائل کے مردوں کی نظروں سے بچاؤ کے لیے گھونگھٹ نکال لیا کرتی تھیں ۔

ام المومنین حضرت عائشہ ﷺ فرماتی ہیں کہ ہم لوگ اللہ کے رسول اللّٰــــہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ حالت احرام میں تھے جب لوگ ہمارے پاس سے گزرتے تو ہم گھونگھٹ نکال لیتے اور جب گزر جاتے تو چہرے پر سے کپڑا ہٹا لیتے.
۔(ضعیف)سنن ابوداود، كتاب المناسك، باب في المحرمة تغطى وجهها: ۱۸۳۳، سنن ابن ماجه، کتاب المناسك باب المحرمة تسدل الثوب على وجهها : ٢٩٣٥، مذکورہ حدیث کی سند میں یزید بن ابی الز یا دراوی ضعیف ۔

 

اس سے معلوم ہوا کہ ان کا چہرہ خودان کے اپنے ہاتھوں اور مردوں کے ہاتھوں کی طرح ہے اور جیسا کہ یہ بات پہلے آ چکی ہے کہ عورت پوری کی پوری چھپانے کی چیز ہے اس لیے اسے اپنے چہرے اور دونوں ہاتھوں کو چھپانا ہوگا لیکن ایسے کپڑے سے جو انسانی اعضاء کے مطابق نہ سلا گیا ہو بعینہ اسی طرح حالت احرام میں مرد پا جامہ یا شلوار وغیرہ نہ پہنے گا اور نہ ہی تہبند کا استعمال کرے گا ۔

واللہ سبحانہ اعلم ۔

 

 

Table of Contents