Sections
< All Topics
Print

09. MAAN’E HAMAL KA HUKUM

MAAN’E HAMAL KA HUKUM

 

Aur rahi baat ye keh aisi cheez ka iste’mal karna jo hamal ko rokti ho uski do qismen hain.

 

Pehli Qism:

 

Hamal ko mustaqil taur par rokna najayez hai yeh, kyunkeh isse hamal khatam hojata hai aur nasal kam hojaegi aur ye Ummat-e-Islamia ki kasrat ka jo shaare(علیہ السلام) ka maqsood tha iske bhi khilaf hai.

(Nabi Kareem(ﷺ) ka is baare mein farmaan hai, Aap(ﷺ) ne farmaaya: “Us aurat se shadi karo jo ziyada mohabbat karne waali aur ziyada bache janne waali ho, main qayamat waale din ambiyah par tumhaari kasrat ke sabab faqar karonga.

 

[Abu Dawood: (2/542); Albani ne Hasan sahih kaha hai
Sahih Abu Dawood: 2050]

 

Aur dusra ye bhi maloom wo mamoon nahi keh jo aulaad moujood hai agar wo faut hogae tou khatoon aisi zaeef o kamzor aur mohtaj hojaegi keh uski koi aulaad bhi baaqi nahi rahegi.

DUSRI QISM:

 

Hamal ko aik waqt muqarrar tak roka jae misaal ki taur par aurat kasrat hamal waali hai aur hamal usse takleef deta hai tou khatoon ye chahati hai keh iska hamal do saal mein aik martaba muntazim hojae, ye is shart se jayez hai aik tou uska khawind usse ijazat den aur usse aurat ko nuqsaan na ho aur iski daleel ye hai keh Sahaba Akraam Aap(ﷺ) ke ahad mubarak mein apni aurtou se is wajha se “A’zl” karte the keh unki aurat hamela na ho to isse unko roka nahi gaya.

 

(i) Hazrat Jabir(رضي الله عنه) farmaate hain keh; Ham Rasool Allah (ﷺ) ke zamane mein Azl  karte the jabke Qur’an utarta tha. 

[Sahih Bukhari: (9/305) Raqm: 5208; Sahih Muslim: 2/1065 Raqm: 138]

 

(ii) Aur Hazrat Jabir(رضي الله عنه) se marwi hai keh: Ham Rasool Allah(ﷺ) ke zamane mein azl kiya karte the iski khabr Rasool Allah(ﷺ) ko pohanchi magar Aap(ﷺ) ne hame usse man’a nahi kiya: 

[Sahih Muslim: 1065]

 

Mazeed Tafseel ke liye “Fiqh Ul Sunnah” (2/230) mulhaeza farmaeye.

 

 

REFERENCE:
BOOK: “NISWAANI TIBI KHOON KAY AHEKAAM”
TALEEF: SHAIKH MUHAMMAD BIN SALEH UTHAYMEEN RAHIMAHULLAH
URDU TARJUMA BY: HAFIZ RIYAZ AHMED HAFIDHAHULLAH

THE USE OF CONTRACEPTIVES

 

FIRST: To Completely Prevent Pregnancy. This is not permissible because:

 

(a) it will diminish the Islamic population and this is against the objective of Sharee’aa which aims at increasing the population of Muslims.


(b) the woman is unable to guarantee against the death of her existing children and thus she may die without having any children.

 
SECOND:

 

To Temporarily Prevent Pregnancy. This applies if the woman had many pregnancies and this is beginning to weaken her. If she wants to regulate her pregnancy so as to have it once every two years, then given the approval of her husband, it is permissible for her to use contraceptives as long as their use does not harm her. The Sahabah used to perform Coitus Interrupts[1] and they were not prevented (i.e., by the Prophet ﷺ). This method involves regular sexual intercourse with the wife except at the time of ejaculation, the husband pulls out and ejaculates outside the private part of the woman.

 

[1] Narrated Jabir: “we used to practice Coitus Interrupts during the life of time of Allah’s Messenger (ﷺ)”. Collected by Al-Bukhari in his in Saheeh (Arabic-English) V.7, P.102
 
REFERENCE:
BOOK: NATURAL BLOOD OF WOMEN
By Shayekh Muhammad bin Salih Al-Utheimeen
Second Edition / Translated & Researched by Saleh-As .Saleh S .Dr

 

مانع حمل کا حکم 

 

اور رہی بات یہ کہ ایسی چیز کا استعمال کرنا جو حمل کو روکتی ہو اس کی دو قسمیں ہیں۔

 

پہلی قسم :

 

حمل کو مستقل طور پر روکنا یہ ناجائز ہے کیونکہ اس سے حمل ختم ہوتا ہے اور نسل کم ہوجائے گی اور یہ امت اسلامیہ کی کثرت کا جو شارع علیہ السلام کا مقصود تھا اس کے بھی خلاف ہے۔(1)؛اور دوسرا یہ بھی معلوم ہو مامون نہیں کہ جو اولاد موجود ہے اگر وہ فوت ہو گئی تو خاتون ایسی ضعیف و کمزور اور محتاج ہو جائے گی کہ اس کی کوئی اولاد بھی باقی نہیں رہے گی. 

 

(1)رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا اس بارے میں بھی فرمان ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

 

“(تزوجو الودود الولود  فاتي مكاثر بكم الانبياء يوم القيامه)”

 

“اس عورت سے شادی کرو جو زیادہ محبت کرنے والی اور زیادہ بچے جننے والی ہوں میں قیامت والے دن لیکن انبیاء پر تمہاری کثرت کے سبب فخر کروں گا”۔

 

[دیکھیں :(سنن ابی داود542/2) رقم الحدیث (2050)اس روایت کو علامہ البانی نے” حسن صیح “کہا ہے ملاخطہ ہو” صیح آبی داؤد “رقم(2050)]

 

دوسری قسم  : 

 

حمل کو ایک وقت مقرر تک ک روکا جائے مثال کے طور پر عورت کثرت حمل والی ہے اور حمل اسے تکلیف دیتا ہے تو خاتون یہ چاھتی  ہے کہ اس کا حمل دو سال میں ایک مرتبہ منظم ہو جائے  یہ اس شرط سے جائز ہے کہ ایک تو اس کا خاوند اسے اجازت دے اور دوسرا اس سے عورت کو نقصان نہ ہو اور اس کی دلیل یہ ہے کہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے عہد مبارک میں اپنی عورتوں سے اس وجہ سے “عزل” کرتے تھے کہ ان کی عورتیں حاملہ نہ ہوں تو اس سے ان کو روکا نہیں گیا۔

اور “عزل” یہ ہے کہ خاوند اپنی بیوی سے جماع کرتے ہوئے اپنے” ذکر” کو “انزال” کے وقت باہر نکال لے اور شرمگاہ اسے باہر انزال کرے۔

 

[“عزل”کی مشروعیت کے بارے میں چند درج ذیل احادیث ہیں۔]

 

 

1. حديث سيدنا جابر رضي الله تعالى عنه (قال, كنا نعزل على عهد رسول الله صلى الله عليه وسلم والقران ينزل)

ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں نازل کرتے تھے جبکہ قرآن اترتا تھا.”

[دیکھیں صحیح بخاری(305/9 رقم(5208) صحیح مسلم (1065/2)رقم(138)]

 

 

2: اورسيدنا جابر رضي الله تعالى عنها مروی ہے کہ ( قال٫ كنا نعزل على عهد رسول الله صلى الله عليه  فبلغ ذلك رسول الله صلى الله عليه وسلم واللهم فلم ینھنا)

حضرت جابر رضی اللہ تعالی عنہ سے مروی ہے کہ انہوں نے فرمایا کہ ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں” عزل” کیا کرتے تھے اس کی خبر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو پہنچی مگر آپ نے ہمیں اس سے منع نہیں فرمایا۔

[دیکھیں صحیح مسلم(1065/2) رقم(1440)
مزید تفصیل کے لیے “فقہ السنۃ” (230/2)ازسیدسابق ملا خطہ کریں]

 

حوالہ جات:
کتاب:  “نسوانی طبی خون کے احکام۔”
تالیف:  شیخ محمد بن صالح العثیمین (رحمة الله)۔
اردو ترجمہ:  حافظ ریاض احمد حفظ اللہ۔

 

Table of Contents