Sections
< All Topics
Print

05. Hazrat Iyaas bin Muawiyah Muzani (رحمہ اللہ تعالی)

 

 Hazrat Iyaas bin Muawiyah Muzani (رحمہ اللہ تعالی)

“Amar bin maadi’karib” ki bahaduri, Hatim Tai ki sakhawat, Ahnaf bin Qais ki burdbaari aur Iyas bin muaia ki zood fehmi zarbul misal hain.”

 (ابو تمام)

Ameerul Momineen Umar bin Abdul Azeez ne tamam raat Bechaini-o-Beqarari mein guzaar di, Na aankh lagi na kisi karwat chain mila. Dar-Asal unhen Damishq ki is khank raat mein Basrah ke liye aik qazi ke taqarrur ka mas’alah darpesh tha jo riaaya mein Adl-o-Insaaf qayem kar sake, Un mein Allah  ke ahkamaat naafiz karsake aur haq ke parchaar mein koi khauf ya lalach uska raasta na rok sake, Kafi Soch-o-Bichaar ke baad unki Nazr-e-Intakhaab in do (2) admiyon par padi jo deeni faqaahat, Raah-e-Haq mein istaqaamat, Raushan khayaali aur baaligh nazri jaise ausaaf mein taqreeban barabar thay. Jab Khalifatul muslimeen ko kisi aik mein koi imtiyazi khoobi nazar aati to doosre mein bhi koi na koi khoobi uska hampalla dikhayi deti. Subah hui to usne Iraaq ke governor A’di bin Artaat ko bulaya jo us waqt Damishq mein hi tha aur usey kaha: Aye Adi! Iyaas bin Muawiyah Muzani aur Qasim bin Rabee’Harisi ke sath Basrah ka Qazi muqarrar karne ke mutalliq baat karen aur aakhir kaar in donon mein se kisi aik ko Basre ka qazi muqarrar kar dein, Governor ne kaha: Ameerul Momineen ka hukm sar ankhon par, Janab-e-Waala hukm ki fauri tameel hogi.

Iraaq ke governor A’di bin Artaah ne Qasim bin Rabee’ aur Iyaas bin Muawiyah ko bulaya aur kaha: Ameerul Momineen ne mujhe hukm diya hai ke main tum dono mein se aik ko Basre ka qazi muqarrar kar dun, Tumhara iske mutalliq kya khayaal hai? Donon mein se har aik ne apne saathi ke baare mein kaha ke woh mujh se is mansab ke liye zyada mozoon hain, Har aik ne apne doosre saathi ko ilm, Fazal, Kamaal, Aqal aur Fehm-o-Faraasat mein apne se fayeq, Laiq aur behtar saabit karne ki bharpoor koshish ki.

Governor A’di ne kaha jb tak tum donon kisi nateeje par nahi pohoch jate yahan se hargiz nahi ja sakte. 

Iyaas ne kaha: Janab-e-Governor  mere aur qasim ke mutalliq Hasan Basri aur Muhammad bin Seeran se pooch lijiye woh dono tamam logon se badh kar hum dono mein se is mansab ke liye behtar aur mozoon ka intakhaab kar sakte hain. Soorat-e-Haal yeh thi ke Qasim ka unke paas aana jana tha aur woh bhi gaahe bagaahe iske paas aaya jaya karte thay, Hazrat Iyaas (رحمہ اللہ) ka khayaal yeh tha ke jab un dono buzurgon se raaye li jayegi to woh mere saathi Qasim ke haq mein faislah denge. Is tarah mera daaman choot jayega. Kyunki mere mutalliq woh zyada jante hi nahi. Hazrat Qasim bhaanp gaye ke Hazrat Iyaas (رحمہ اللہ) is bahane mujhe phansana chahte hain, To fauran pukaar uthey: Janab-e-Governor! mere aur Iyaas (رحمہ اللہ) ke mutalliq kisi se kuch daryaft karne ki koi zarurat nahi. Mujhe qasam hai us zaat ki jiske siwa koi Mabood-e-Haqeeqi nahi main bilkul sach kehta hun ke mera saathi Iyaas (رحمہ اللہ) deeni malumaat mein mujh se zyada Fehm-o-Faraasat rakhta hai aur qazi ke aham mansab ke liye zyada mozoon hai, Agar main apni qasam mein jhoota hua to phir apke liye jayez nahi ke mujhe qazi banayen. Agar main apni qasam mein sachha hun to phir is aham ohde par fayez hone ka haq mere bhai Iyaas bin Muawiyah ka hai, Phir apke liye yeh qat’an durust nahi hai ke aik kamtar shakhs ko behtar par fauqiyat den, Hazrat Iyaas bin  Muawiyah  ne governor  ki taraf dekha aur kaha: Janab-e-Walaa apne qazi ke ohde ki peshkash kar ke humein jahannum ke kinare par la khada kiya hai. Mere saathi qasim ne jhoothi qasam ke zariye apna daaman bacha liya hai. Usey Allah ta’ala ke huzoor abhi maafi maangni chahiye aur andesha haaye daron se nijat pa leni chahiye. Yeh baat sun kar governor A’di (رحمہ اللہ) ne Hazrat Iyaas  se kaha tum jaisaa Zaheen-o-Fateen hi qazi ke mansab par fayez hona chahiye aur ise Basra ka qazi muqarrar  kar diya.

Yeh shakhs kaun hai jiska intakhaab khuda tars Ameerul Momineen Umar bin Abdul Azeez ne Basre ka qazi muqarrar karne ke liye kiya? Us shakhs ki Zahaanat-o-Fataanat aur zohad fehmi usi tarah zarbul misal thi jis tarah Hatim Taayi ki sakhawat, Ahnaf bin qais ki burdbaari aur Umar bin Maadi Karib ki shuja’at zarbul misal thin. Abu tamam ne Ahmad bin Motasim ki tareef mein ishaar kahe jis mein aik shayr yeh bhi tha.

اقدام عمرو فی سماعتہ حاتم
فی حلم احنف فی ذکإ ایاس

Umar bin Maadi Karib ki shuja’at, Haatim tai ki sakhawat, Ahnaf bin qais ka Hulm-o-Burdbari aur Iyaas  ki Fehm-o-Farasat zarbul misal hain.

Ayyiye is azeem shakhsiyat ki dastaan ka aghaaz karen aur uski nadir misali aur riqqat angeez seerat ke chand pahlu bayan karen.

Iyaas  bin  Muawiyah bin Qurrah Muzani 46 hijri ko Najad ke Ilaqey Yamamah mein paida huye aur apne khandan ke hamrah Basre muntaqil huye wahin nashonuma paayi aur taleem hasil ke. Unfawan-e-Shabaab mein kayi baar Damishq jaane ka ittefaaq hua aur jaleelul qadar Sahabah  kiraam  aur Tabieen-e-Izaam  se ilm hasil kiya, Qabeelah-e-Huzn ke is naujawan ke chehre par sharafat, Najabaat aur zahaanat ki alamatein numayaan nazar aati thin log uska bachpan ke halat Baataur-e-Misaal bayan karte thay.

Hazrat Iyaas bin Muawiyah  aik yahoodi ke school mein riyazi padha karte thay aik din ustaad ke paas uska chand yahoodi dost milne aaye woh Deen-e-Islaam ke mutalliq baatein karne lage aur yeh paas khade khamoshi se sunte rahe. Unka khayal tha yeh bacha hai isey kuch pata nahi.

Ustaad ne apne sathiyon se kaha: Musalman bhi kya ajeeb hain! kehte hain jannat mein ji bhar kar khayenge lekin Bol-o-Baraz nahi ay ga aaahahahaha bhala yeh bhi ho sakta hai? ahmaq kahin ke.

Iyaas bin Muawiyah ne kaha kya mujhe bhi baat karne ki ijazat hai? Ustaad ne kaha haan haan kyun nahi, kahiye kya kehna chahte ho. Usne poocha kya is duniya mein jo kuch khaya jata hai woh tamam ka tamam Bol-o-Baraz ke zariye badan se nikal jata hai.

Ustaad ne kaha nahi.

Iyaas ne poocha jo khana badan se nahi nikalta woh kahan jata hai? Ustaad ne kaha woh hazam ho kar Juzw-e-Badan ban jata hai.

Iyaas ne kaha: Agar woh tamam ka tamam jannat ke mahaul ko pakeezah aur saaf suthra rakhne ke liye Juzw-e-Badan bana diya jaye to tumhen is baat par kya taa’jjub hai? Is baat se un par sannata chaa gaya woh shashdar reh gaye.

Ustaad ne apne honhaar shagird ka hath bheenchte huye kaha:

Aree chookare marwa diya. Doston ke samne tune mujhe lajawaab kar diya, teri zahaanat aur hazir jawabi ki kya baat hai!

Jis tarah yeh naujawan umar mein sal basaal badhta gaya isi tarah uski zahaanat ki karishma saaziyon mein bhi pesh raft hoti gayi. Jab yeh Damishq pohcha to wahan aik jayyad aalim se bunyadi huqooq mein kisi istehqaaq ke mutalliq ikhtalaaf paida ho gaya. Jab woh aalim kisi bhi daleel se is naujawan ko mutma’in na kar saka to woh is naukhaiz jawan ko adalat mein ghaseet laya jab woh donon adaalat ke katehre mein qazi ke samne khade huye to naujawan ne Madd-e-Muqabil par dalayel ki bochaar kar di aur zordar awaz se garajne laga, Qazi ne kaha: Barkhurdar ahista bolo tere muqabley mein aik umar raseedah aur Qabil-e-Ihtaraam shakhsiyat khadi hai. Adab ko Malhooz-e-Khatir rakho.

Iyaas (رحمہ اللہ) ne kaha: Janab-e-Waala woh haq jo dalaail ki raushni mein apke samne pesh kar raha hun woh azmat mein kahin in se badh kar hai, Qazi yeh baat sun kar ghusse se bhadak utha aur garaj kar kaha: Khamosh ho jao gustaakh kahin ke.

Naujawan Iyaas (رحمہ اللہ) ne baghair kisi ghabrahat ke bade itmenaan se kaha:

Janab-e-Waala agar main khamosh ho gaya to mera muqaddamah apki adalat mein kaun pesh karega? Qazi ko aur ghussa aaya aur usne phankaarte huye kaha jabse tum adalat mein ay ho tar tar bole ja rahe ho. Naujawan Iyaas (رحمہ اللہ) ne yeh Soorat-e-Haal dekhte huye kaha Janab-e-Waala mujhe yeh batayen

لاالہ الا اللہ وحدہ لا شریک لہ  haq hai ya batil? Qazi yeh baat sun kar thanda ho gaya lambi saans li, Aik aah bhari phir dheeme andaaz mein bola Rabb-e-Kaaba ki qasam yeh kalma bilkul barhaq hai aur hum sab uske aajiz bande hain aur uske samne jawabdeh hain.

Jab yeh honhaar naujawan Husool-e-Ilm ki taraf mutawajjah hua to Chashmah-e-Ilm-o-Hikmat se khoob sairaab hua, Bilaakhir ilm-o-Adab ke is Aa’la-o-Arfa maqam par fayez hua ke bade bade mashayekh uski imaamat mein namazein padhne lage, Is se ilm haasil karne lage. Haalanke umar mein yeh unse bohot chhote thay, Masnad-e-Khilafat par fayez hone se pahle Abdul Malik bin Marwaan ne Basre ka daura kiya to usne ubharte huye aik aise naujawan ko dekha jiski abhi moonchein nahi phootti thin, Woh bazar se aisi Shaan-o-Shaukat se guzar raha hai ke uske peechy chaar baareesh bazurg sabz Jubbah w Qubaaa pehne huye ba-Adab andaz mein dheere dheere chal rahe hain. Abdul Malik bin Marwaan ne yeh manzar dekh kar taa’jjub se kaha: In baareesh buzurgon ki Aqal-o-Danish par bada afsos hai kya in mein koi bhi aisa qaabil buzurg nahi jo unke aage chalta, Inhone aik chokre ko apna qaid banaya hua hai, Phir uski taraf dekhte huye kaha: Arey naujawan tum kaun ho aur teri umar kitni hai?

Usne jawab diya: Ameer ki umar daraz ho aur iqbal buland ho.

Mera naam Iyaas  bin  Muawiyah  hai aur meri umar Usamah bin Zeed jitni hai jise Rasulallah ﷺ ne us lashkar ka Ameer muqarrar kiya tha jis mein Hazrat Abu Bakar Siddique (رضی اللہ عنہ) aur Hazrat Umar farooque (رضی اللہ عنہ) bhi shaamil thay, Yeh jawab sun kar Abdul Malilk bin Marwaan phadak utha aur kaha: Aye naujawan! Tum aage raho, Tujh mein waqayi qayaadat ki salahiyat hai. Allah teri jawani aur tere ilm mein barkat ata kare.

Aik saal log ramzan ka chaand dekhne gharon se bahar nikle aur in mein pesh pesh jaleel ul qadr sahabi Hazrat Anas bin Maalik Ansari (رضی اللہ عنہ) thay. Us waqt unki umar taqreeban so (100) saal thi, Logon ne aasman ki taraf ghaur se dekha unhen kahin chaand nazar na aya lekin Hazrat Anas bin Maalik Ansari (رضی اللہ عنہ) aasman ki taraf dekhte huye pukaar pukaar kar keh rahe hain woh dekho chaand nazar aa gaya aur apne haath se isharah kar ke logon ko chaand ki simat bata rahe hain. Logon ne badi koshish ki phir bhi kisi ko chaand nazar na aaya. Wahan Hazrat Iyaas ne Hazrat Anas (رضی اللہ عنہ) ki taraf dekha. Aik lamba safed baal bhanwohn se upar uth kar ankhon ke samne aaya hua hai. Hazrat Iyaas ne bade Adab-o-Ihtaram se ijazat li pyaar se apna haath badhaya, Badi mohabbat saleeqe se aankh pe hath pheir kar baal ko bhanwohn ke sath barabar kar diya aur phir poocha: Janab-e-Waala ab farmayiye kya chaand nazar aa raha hai? Hazrat Anas aasman ki taraf dekh rahe hain aur farma rahe hain ab chaand mujhe dikhayi nahi de raha waqayi bilkul dikhayi nahi de raha. Darasal Zuf-e-Basarat ki wajah se aankh ke saamne aaya hua safaid baal unhen bareek sa chaand maloom ho raha tha.

Hazrat Iyaas bin Muawiyah  ki zahaanat aur Fehm-o-Farasat ke tazkira Chahar-e-Daang aalam mein phail gaye, Har taraf log ilmi aur deeni umoor mein pesh amdah mushkilaat hal karane ke liye unke paas aane lage, Baaz log maloomaat haasil karne ke liye sawalaat karte aur baaz mubahise mein Madd-e-Muqabil par ghaalib aane ke liye ilmi nukte maloom karte.

Aik kisaan unki khidmat mein haazir hua usne poocha: Aye Abu waail kya sharaab haraam hai? Farmaya: Haan yeh haraam hai.

Usne kaha: Phal aur paani ko aag pe pakaya gaya hai, Asal mein yeh dono ajzaa halal hain phir aag pe pakane se haraam kaise ho gaye? Jabkeh is mein kisi haraam cheez ki aamezish nahi.

Aap ne kaha: Kisaan bhai kya baat khatm kar li ya aur baat kehna chahte ho? Usne kaha bass mera yahi sawal hai. Ab aap irshaad farmaiyye. Abu waail Iyaas bin Muawiyah ne kaha: Agar main pani ka aik chulluu tujhe de maarun? Kya us se tujhy koi takleef hogi? Usne kaha nahi.

Agar mitti ki aik mutthi tujhey de maarun? Kya takleef mehsoos karoge? Kaha nahi. Agar todi ki mutthi tujhey de maarun? Kya takleef mehsoos karoge? Kaha nahi. Aur agar main pani, Mitti aur toodi mila kar aik dheila banaoun aur woh dhoop mein khushk ho jaye phir usey utha kar tujhey de maarun kya takleef hogi? Usne kaha kyun nahi. Zarur. Ho sakta hai uske zariye tum mujhe qatal kar do.

Aap ne farmaya bas yahi misaal sharab ki hai. Jab ajzaa ko mila kar usey aag ki aanch di jaati hai us mein nasha paida ho jata hai jiske wajah se ise haraam qarar diya gaya hai.

Jab Hazrat Iyaas bin Muawiyah (رحمہ اللہ) ko qaza’a ka mansab sonpa gaya to adalaati faislon mein unki jaanib se kayi aik aise moqif khul kar samne aaye jo unki zahanat ki farawani, Tadbeer ki farotani aur haqaiq se pardah hatane ki kamal salahiyat par dalaalat karte hain. Un mein se yeh aik waaqiya mulahiza ho. Aik martaba do (2) shakhs aik muqaddamah lekar unke paas adalat mein aaye. Unme se aik ne daawa kiya maine apne sathi ko maal Bataur-e-Amanat diya tha jab main ne muttalba kiya to usne dene se inkaar kar diya. Iyaas bin Muawiyah ne mudda alaih se amaanat ke mutalliq poocha to usne kaha main ne maal liya hi nahi, Yeh jhooth bolta hai aur mujhe badnaam kar raha hai agar iske paas koi daleel hai to pesh kare warna main qasam dene ke liye tayyaar hun main begunaah hun. Yeh saraasar mujh par ilzaam hai. Hazrat Iyaas bin Muawiyah ne khuda daad baseerat se bhaanp liya yeh qasam ke zariye apne saathi ke maal ko hadap karna chahta hai. Qazi Iyaas (رحمہ اللہ) ne muddayi se poocha tu ne isey kis jagah apna maal Baataur-e-Amaanat diya tha?

Usne kaha yahan se kuch faisle par aik bada darakht hai hum ne uske saaye mein baith kar pahle khana khaya aur phir main ne apna maal uske sapurd kiya. Qazi Iyaas ne kaha tum abhi wahan jao shayad apka maal wahan kahin pada hua ho, Us jagah ka jaizah lekar seedha mere paas aana aur mujhe Soorat-e-Haal se agaah karna, Yeh hukm paa kar woh shakhs us jagah ki taraf rawanah ho gaya. Qazi Iyaas ne mudda alaiyh se kaha:

Apne sathi ke wapis aane tak mere paas baithay raho. Woh wahan chup saadh kar baith gaya. Qazi Iyaas deegar muqaddamaat niptaane mein masroof ho gaya. Lekin muqaddamaat ki samaat karte huye dazeedah nigaahon se gaahe gaahe mudda alaiyh ki taraf bhi dekh leta, Is tarah woh uske chehre ke taassuraat maloom karna chahta tha, Jab usne dekha ke yeh shakhs bilkul Aram-o-Sukoon se baitha hua hai, Iske chehre pe koi khauf-o-Hiraas nahi, Qazi samaat ke dauraan yakdam is shakhs ki taraf mutawajjah hua aur poocha apka kya khayaal hai ke woh us jagah pohoch gaya hoga jahan usne maal tere sapurd kiya tha? Usne bekhayaali mein jawab diya: Nahi woh jagah yahan se kaafi door hai. Abhi tak woh raaste mein ja raha hoga. Qazi ne ghazab naak ho kar kaha: Arey kambakht, Kameene tu maal lene ka inkaar karta hai aur us jagah ka aiteraaf karta hai jahan tune maal liya tha. Bakhuda tu khaa’in, Jhootha aur bad diyaanat hai, Woh achanak yeh hamla dekh kar khauf se kaanpne laga aur usne apne jurm ka aiteraaf kar liya aur amaanat wapis kar di.

Isi tarah aik aur waaqiya bayan kiya jata hai ke do (2) shakhs do (2) rumaalon ka muqaddama lekar adaalat mein pesh huye, Aik rumaal sabz rang ka naya aur qeemti tha aur doosra surkh rang ka phata hua aur boseedah tha. Muddayi ne istaghasah pesh karte huye kaha: Janab-e-Waala main hauz par nahane ke liye gaya aur apna sabz rumaal kapdon ke sath rakh kar hauz mein utar gaya, Thodi der baad yeh shakhs apne kapde hauz ke kinare mere kapdon ke paas hi rakh kar nahane ke liye hauz mein utar aaya lekin mujh se pehle hauz se naha kar nikla, Kapde pehne aur mera rumaal sar par liya aur chalta bana. Main uske qadmon ke nishanaat dekhta hua uski ta’alaash mein nikla, Bila’akhir usey pakadne mein kamyaab ho gaya. Qazi ne mudda alaiyh se poocha tum kya kehna chahte ho.

Usne kaha: Janab-e-Waala yeh rumaal mera hai, Mere qabze mein hai main uska maalik hun, Yeh mujh pe jhoota ilzaam aa’id karta hai, Qazi Iyaas ne muddayi se poocha tere paas koi daleel hai ke yeh rumaal waqayi tera hai. Usne kaha daleel mere paas koi nahi, Main apki adaalat mein insaaf ke liye aaya hun, Yeh mera qeemti rumaal mujhe dila dijiye, Allah tumhara bhala karega, Qazi ne apne darbaan se kaha: Aik kanghi laao. Darbaan kanghi le aaya, Qazi ne donon ke sar par kanghi pheiri aik sar se surkh reishe aur doosre ke sar se sabz reishe bar aamad huye. Lihaaza surkh rumaal use dediya jiske sar se surkh reishe nikle thay aur sabz rumaal uske sapurd kiya jiske sar se sabz reishe baraamad huye thay. Is tarah Adl-o-Insaaf ke mutabiq haq wale ko uska haq mil gaya.

Uski zahanat aur Fehm-o-Farasat ka aik aur waaqiya mashoor hai, Koofa mein aik shakhs logon ke samne apni khair khwahi, Wus’at-e-Zarfi, Akhlaaq aur taqwa ka parchaar kiya karta tha.Yahan tak ke log iski tareef karne lage jab uska aitemaad poori tarah dilon mein baith gaya, To log jab safar pe jate to apna maal uske paas Baataur-e-Amaanat rakh jate. Baaz log marte waqt yeh wasiyyat kar jate ke hamara maal iske supurd kar diya jaye aur yhi hamari aulad ka Sarparast-o-Nigraan hoga. Uski shohrat sun kar aik shakhs ne apna bohat sa maal iske paas Baataur-e-Amaanat rakh diya. Chand dinon ke baad jab usey zarurat padi to usne apne maal ki wapsi ka mutaalba kiya. Lekin usne dene se inkaar kar diya. Usey ye Soorat-e-Haal dekh kar bada sadma hua aur yeh muqaddama qazi ki adalat mein pesh kar diya.Qazi ne muqaddama pesh karne wale se poocha: Kya mudda alaiyh ko yeh maloom hai ke tum mere paas aaye ho? Usne kaha nahi. Qazi ne kaha aaj jao aur kal mere paas aana aur sath hi mudda alaiyh ko bulane ke liye paighaam bheja. Woh qazi ka paighaam sunte hi adaalat mein aaya. Qazi ne usey bade Aizaz-o-Ikaraam se bithaya aur kaha: Janab maine apki badi shohrat suni, Aap logon ki khidmat ka aham fareezah saranjaam de rahe hain, Main ne apko is liye bulaya ke mere paas aise yateemon ka kaseer miqdaar mein maal hai jinka koi waaris nahi, Main chahta hun yeh maal apke supurd kar dun jab woh bade ho jayein to aap unke hawale kar dena, kya itni badi miqdaar mein maal rakhne ka apke paas intazaam hai? Kis tarah ise sambhalenge?

Kya ghar mein aisa mazboot godaam hoga jis mein maal zaaya na ho. Kya yeh maal sambhalne ke liye tayyar hain? Usne bade tamtadaaq se kaha: Kyun nahi janab. Mujhe Allah ne paida hi awam ki khidmat ke liye kiya hai, Bandah-e-Aajiz is khidmat ke liye bakhushi tayyar hai.

Qazi ne kaha: Bohot khoob mujhe aapse yahi tawaqqo thi, Aap aisa karen ke kal ke baad mere paas aa jana aur sath do (2) mazdoor bhi lete aana. Usne kaha bohat acha. Yeh keh kar woh apne ghar chala gaya. Doosre din wada ke mutabiq muddayi Qazi Iyaas ke paas aaya. Qazi ne usey kaha jao aaj us shakhs se ja kar apne maal ka mutaalba karo. Agar woh inkaar kare to usey kehna main teri shikayat Qazi ke paas leke ja raha hun, Usne aise hi kiya. Jakar usse apne maal ka mutaalba kiya. Usne Hasb-e-Saabiq maal dene se inkaar kar diya. Usne kaha agar tum mera maal nahi doge to main tumhari shikayat Qazi ke paas karunga, Jab usne Qazi ka naam suna to fauran thanda pad gaya usey paas bithaya, Uski minnat ki, Maal wapis lautaya aur kuch mazeed dekar usey khush karne ki koshish ki taake qazi ko is baat ka ilm na ho. Woh apna maal lekar seedha qazi ke paas gaya uska shukriya ada kiya aur bataya ke usne mujhe mera haq wapis de diya hai. Allah apko jazaye khair ata kare, Jab waade ke mutabiq teesre roz woh shakhs qazi ke paas mazdoor lekar haazir hua to use dekhte hi qazi us par baras pada aur kaha: Arey kambakht tune duniya kamane ke liye deen ko jaal bana rakha hai. Tujhey sharam aani chahiye. Yeh Jubbah-o-Dastaar aur yeh ghinona kirdaar tuff teri aqal par! Jao meri ankhon se door ho jao aur abhi ja kar sb logon ki amanatein wapis karo warna tujhe aisi saza dunga jise teri naslein bhi yaad rakhengi. Woh haanpta kaanpta hua wapis gaya, aur sabke maal fauri taur par wapis karne laga, Unse maafi mangne laga tab ja kar logon ko uski asliyat ka ilm hua.

Qazi Iyaas ne apni bepanah zahanat, Qabil-e-Rashk Quwwat-e-Istadlaal, Zood fehmi aur hazir jawabi ke bawajood adalat mein aise ashkahs se bhi waasta pad jata jo apni baat dalaail se manwa liya karte thay. Aur unhe khamosh hone par majboor kar diya karte thay, Aisa hi waaqiya unhone khud bayan kya. Farmate hain: Aik shakhs ke ilawah aaj tak koi bhi guftagu mein mujh pe ghaalib na aa saka, Wohh is tarah hua ke main Basre ki adalat mein muqaddamaat niptaane ke liye baitha hua tha, Aik shakhs mere paas aaya aur usne bade tamtadaaq se kaha main yeh gawahi deta hun ke falan baagh falan shakhs ka hai. Usne bade hi Roa’b-o-Dabdabe se kaha main ne iski gawahi ka imtehaan lene ke andaz mein poocha:

Jis baagh ke mutalliq gawahi de rahe hain us mein kitne darakht hain. Usne sar jhukaya phir sar utha kar bola Janab-e-Waala gustaakhi maaf aap kitne arse se is Kamra-e-Adalat mein faisle sunane ka fareezah sa ranjaam de rahe hain. Farmaya: Kaafi arse se. Usne poocha: Kya aap bata sakte hain ke is kamre ki chat mein kitni lakadiyan istemaal hui hain. Main pareshan hua aur kaha iska mujhe ilm nahi aur sath hi maine sharminda ho kar usey kaha: Bhai apki gawahi sachhi hai. Main isey tasleem karta hun.

Jab Hazrat Iyaas bin Muawiyah (رحمہ اللہ) 76 baras ke huye to unhone khwab mein dekha wohh aur unke Waalid-e-Mohtaram do (2) ghodon par sawar barabar daude ja rahe hain. Na koi aik qadam aage hai aur na peeche, unke Waaalid-e-Mohtaram 76 baras ke ho kar faut huye thay. Aik raat Hazrat Iyaas apne bistar par daraz huye, Ghar walo se kaha: Kya tum jante ho ye raat kaunsi hai? Unhone kaha nahi.

Farmaya yeh wohh raat hai jis mein abba jaan ne apni umar tamam ki thi yeh kaha aur so gaye. Jab ghar walon ne subah dekha to yeh abdi neend so chuke thay.

انا للہ و انا الیہ راجعون.

Allah Qazi Iyaas bin muawiyah par apni be payaan rehmaton ki baarish naazil kare wohh bilashubah zahaanat, Fataanat, Haqq goii, Adl-e-Gastari, Zood fehmi aur haazir jawabi mein Naabghah-e-Asar aur fareed ul dahar thay.

Qazi Iyaas bin Muawiyah Muzni رحمة اللہ ke mufassal Halat-e-Zindagi maloom karne ke liye darj zail kitaabon ka muta’ala karen:

1: Akhbar ul Quzat (Wakee)                                    312-374
2: Hilyat ul Auliya                                                       3/123
3: Sarh ul almuqamat (bashrishi)                       1/113-115
4: Wafayat ul Aayan                                                   1/247
5: Al bayan wa altabyeen (Jafit(                           1/56
6: Nimar ul alquloob                                                    92-94
7: Al Aqd ul alfareed (ibn-e-Abd-e-Rabbihi)            dikhiy fahrist

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

حضرت ایاس بن معاویہ مزنی رضی اللّٰہ عنہ

 


 

عمرو بن معدی کرب کی بہادری حاتم طائی کی سخاوت احنف بن قیس کی بردباری اور ایاس بن معاویہ کی زود فہمی ضرب المثل ہیں۔

(ابو تمام)


امیرالمئومنین عمر بن عبدالعزیز نے تمام رات بے چینی و بے قراری میں گزاری نہ آنکھ لگی نہ کسی کروٹ چین ملا – دراصل انہیں دمشق کی اس خنک رات میں بصرے کے لیے ایک قاضی کے تقرر کا مسئلہ درپیش تھا جو رعایا میں عدل و انصاف قائم کر سکے , ان میں اللّٰہ کے احکامات نافد کر سکے اور حق کے پر چار میں کوئی خوف یا لالچ اس کا راستہ نہ روک سکے , کافی سوچ و بچار کے بعد ان کی نظر انتخاب ان دو آدمیوں پر پڑی جو دینی فقاہت , راہ حق میں استقامت , روشن خیالی اور بالغ نظری جیسے اوصاف میں تقریباً برابر تھے – جب فلیفتہ المسلمین کو کسی ایک میں کوئی امتیازی خوبی نظر آتی تو دوسرے میں بھی کوئی نہ کوئی خوبی اس کے ہم پلہ دیکھائی دیتی – صبح ہوتی تو اس نے عراق کے گورنر عدی بن ارطاۃ کو بلایا جو اس وقت دمشق میں ہی تھا – اور اسے کہا :
اے عدی , ایاس بن معاویہ مزنی اور قاسم بن ربعیہ حارثی کے ساتھ بصرے کا قاضی مقرر کرنے کے متعلق بات کریں اور آخر کار ان دونوں میں سے کسی ایک کو بصرے کا قاضی مقرر کر دیں, گورنر نے کہا :
امیر المئومنین کا حکم سر آنکھوں پر جناب والا حکم کی فوری تعمیل ہو گی –


 

عراق کے گورنر عدی بن ارطاۃ نے ایاس بن معاویہ اور قاسم بن ربیعہ کو بلایا اور کہا :

ربعیہ کو بلایا اور کہا: امیر المومنین نے مجھے حکم دیا ہے ۔ کہ میں تم دونوں سے کسی ایک کو بصرے کا قاضی مقرر کر دوں تمھارا اس کے متعلق کیا خیال ہے ؟ دونوں میں سے ہر ایک نے اپنے ساتھی کے بارے میں کہا : کہ وہ مجھ سے اس منصب کے لیے زیادہ موزوں ہے ہر ایک نے اپنے دوسرے ساتھی کو علم ، فضل ، کمال ، عقل اور فہم و فراست میں اپنے سے فائق ، لائق اور بہتر ثابت کرنے کی بھر پور کوشش کی۔

گورنر عدی نے کہا جب تک تم دونوں کسی نتیجے پر نہیں پہنچ جاتے یہاں سے ہرگز نہیں جا سکتے۔
ایاس نے کہا : جناب گورنر میرے اور قاسم کے متعلق حسن بصری اور محمد بن سیرین سے پوچھ لیجئے وہ دونوں تمام لوگوں سے بڑھ کر ہم دونوں میں سے اس منصب کے لیے بہتر اور موزوں کا انتخاب کر سکتے ہیں۔صورت حال یہ تھی کہ قاسم کا ان کے پاس آنا جانا تھا اور بھی گاہے بگاہے اس کے پاس آجایا کرتے تھے ، حضرت ایاسؒ کا خیال یہ تھا ۔ کہ جب ان دو بزرگوں سے رائے لی جائے گی تو وہ میرے ساتھی قاسم کے حق میں فیصلہ دیں گے ۔ اس طرح میرا دامن چھوٹ جائے گا ۔ کیونکہ میرے متعلق وہ زیادہ جانتے ہی نہیں۔ حضرت قاسم بھانپ گئے کہ حضرت ایاسؒ اس بہانے مجھے پھسانا چاہتے ہیں ، تو فوراً پکار اٹھے ۔ جناب گورنر میرے اور ایاسؒ کے متعلق کسی سے کچھ دریافت کرنے کی کوئی ضرورت نہیں مجھے قسم ہے اس ذات کی جس کے سوا کوئی معبود حقیقی نہیں میں بالکل سچ کہتا ہوں ۔ کہ میرا ساتھی ایاسؒ دینی معاملات میں مجھ سے زیادہ فہم و فراست رکھتا ہے- دینی معاملات میں مجھ سے زیادہ فہم و فراست رکھتا ہے – اور قاضی کے اہم منصب کے لیے زیادہ موزوں ہے ، اگر میں اپنی قسم میں جھوٹا ہوا تو پھر آپ کے لیے جائز نہیں کہ مجھے قاضی بنائیں ۔ اگر میں اپنی قسم میں سچا ہوں ، تو پھر اس اہم عہدے پر فائز ہونے کا حق میرے بھائی ایاس بن معاویہ کا ہے پھر آپ کے لیے یہ قطعا درست نہیں ہے کہ ایک کم تر شخص کو بہتر پر فوقیت دیں، حضرت ایاس بن معاویہ نے گورنر کی طرف دیکھا اور کہا: جناب والا آپ نے قاضی کے عہدے کی پیشکش کر کے ہمیں جہنم کے کنارے پر لا کھڑا کیا ہے ۔ میرے ساتھی قاسم نے جھوٹی قسم کے ذریعے اپنا دامن بچا لیا ہے۔ اسے اللّٰہ تعالٰی کے حضور ابھی معافی مانگنی چاہیے اور اندیشہ ہائے دروں سے نجات پا لینی چاہیے ۔یہ بات سن کر گورنر عدی نے حضرت ایاس ؒ سے کہا تم جیسا ذہین و فطین ہی قاضی کے منصب پر فائز ہونا چاہیے اور اسے بصرے کا قاضی مقرر کر دیا ۔


 

یہ شخص کون ہے جس کا انتخاب خدا ترس امیر المومنین عمر بن عبد العزیز نے بصرے کا قاضی مقرر کرنے کے لیے کیا؟ اس شخص کی ذہانت فطانت اور زود فہمی اس طرح ضرب الامثل تھی جس طرح حاتم طائی کی سخاوت ، احنف بن قیس کی بردبادی اور عمرو بن معدی کرب کی شجاعت ضرب الامثل تھیں ۔ ابو تمام نے احمد بن معتصم کی تعریف میں اشعار کہے جس میں ایک شعر یہ بھی تھا۔

 

اقدام عمرو فی سماعتہ حاتم

فی علم احنف فی ذکاء ایاس

 

عمرو بن معدی کرب کی شجاعت ، حاتم طائی کی سخاوت ، احنف بن قیس کا حلم و بردباری اور ایاس کی فہم و فراست ضرب المثل ہیں ۔


 

آئیے اس عظیم شخصیت کی داستان کا آغاز کریں اور اس کی نادر مثالی اور رقت انگیز سیرت کے چند پہلو بیان کریں ۔
ایاس بن معاویہ بن قرہ مزنی ٤٦ ھجری کو نجد کے علاقے یمامہ میں پیدا ہوئے اور اپنے خاندان کے ہمراہ بصرے منتقل ہوئے وہیں نشوونما پائی اور تعلیم حاصل کی غفوان شباب میں کئی بار دمشق جانے کا اتفاق ہوا اور جلیل القدر صحابہ کرام اور تابعین عظام سے علم حاصل کیا قبیلہ حزن کے اس نوجوان کے چہرے پر شرافت ، نجابت اور ذہانت کی علامتیں نمایاں نظر آتی تھیں لوگ اس کے بچپن کے حالات بطور مثال بیان کرتے تھے ۔


 

حضرت ایاس بن معاویہ ایک یہودی کے سکول میں ریاضی پڑھا کرتے تھے ایک دن استاذ کے پاس اس کے چند یہودی دوست ملنے آئے وہ دین اسلام کے متعلق باتیں کرنے لگے اور یہ پاس کھڑے خاموشی سے سنتے رہے۔ ان کا خیال تھا یہ بچہ ہے۔ اسے کچھ پتہ نہیں ۔

استاذ نے اپنے ساتھیوں سے کہا: مسلمان بھی کیا عجیب ہیں کہتے ہیں ۔ جنت میں جی بھر کر کھائیں گے لیکن بول و براز نہیں آئے گا آہاہاہا بھلا یہ بھی ہو سکتا ہے احمق کہیں گے ۔

ایاس بن معاویہ نے کہا کیا مجھے بھی بات کرنے کی اجازت ہے استاذ نے کہا ہاں ہاں کیوں نہیں ، کہیے کیا کہنا چاہتے ہو ۔ اس نے پوچھا کیا اس دنیا میں جو کچھ کھایا جاتا ہے وہ تمام کا تمام بول و براز کے ذریعے بدن سے نکل جاتا ہے ۔
استاذ نے کہا نہیں ۔
ایاس نے پوچھا جو کھانا بدن سے نہیں نکلتا وہ کہاں جاتا ہے؟ استاذ نے کہا وہ ہضم ہو کر جزوبدن بن جاتا ہے ۔
ایاس نے کہا :
اگر وہ تمام کا تمام جنت کے ماحول کو پاکیزہ اور صاف ستھرا رکھنے کے لیے جزو بدن بنا دیا جائے تو تمہیں اس بات پر کیا تعجب ہے اس بات سے ان پر سناٹا چھا گیا وہ ششدر رہ گئے۔
استاذ نے اپنے ہو نہار شاگرد کا ہاتھ بھنیچھتے ہوئے کہا:
ارے چھو کرے مروا دیا ۔ دوستوں کے سامنے تو نے مجھے لاجواب کر دیا تیری ذہانت اور حاضر جوابی کی کیا بات ہے!
جس طرح یہ نوجوان عمر میں سال بسال بڑھتا گیا اسی طرح اس کی ذہانت کی کرشمہ سازیوں میں بھی پیش رفت ہوتی گئی ۔ جب یہ دمشق پہنچا تو وہاں ایک جید عالم سے بنیادی حقوق میں کسی استحقاق کے متعلق اختلاف پیدا ہو گیا۔

جب وہ عالم کسی بھی دلیل سے اس نوجوان کو مطمئن نہ کر سکا تو وہ اس نو خیز جوان کو عدالت میں گھسیٹ لایا جب وہ دونوں عدالت کے کٹہرے میں قاضی کے سامنے کھڑے ہوئے تو نوجوان نے مد مقابل پر دلائل کی بوچھاڑ کردی اور زوردار آواز سے گرجنے لگا قاضی نے کہا: برخور دار آہستہ بولو تیرے مقابلے میں ایک عمر رسیدہ اور قابل احترام شخصیت کھڑی ہے ۔ ادب کو ملحوظ خاطر رکھو۔
ایاسؒ نے کہا: جناب والا وہ حق جو دلائل کی روشنی میں آپ کے سامنے پیش کر رہا ہوں وہ عظمت میں کہیں ان سے بڑھ کر ہے قاضی یہ بات سن کر غصے سے بھڑک اٹھا اور گرج کر کہا خاموش ہو جاؤ گستاخ کہیں کے۔
نوجوان ایاسؒ نے بغیر کسی گھبراہٹ کے بڑے اطمینان سے کہا ۔
جناب والا اگر میں خاموش ہو گیا تو میرا مقدمہ آپ کی عدالت میں کون پیش کرے گا ۔ قاضی کو اور زیادہ غصہ آیا ۔ اور اس نے پھنکارتے ہوئے کہا جب سے تم عدالت میں آئے ہو ٹر ٹر بولے جا رہے ہو ۔ نوجوان ایاسؒ نے یہ صورت حال دیکھتے ہوئے کہا جناب والا مجھے یہ بتائیں ۔
لا اله الا اللّٰہ وحدہ لا شریک له حق ہے یا باطل قاضی یہ بات سن کر ٹھنڈا ہو گیا لمبی سانس لی ایک آہ بھری پھر دھمیے انداز میں بولا رب کعبہ کی قسم یہ کلمہ بالکل بر حق ہے اور ہم سب اس کے عاجز بندے ہیں اور اس کے سامنے جوابدہ ہیں۔
 جب یہ ہونہار نوجوان حصول علم کی طرف متوجہ ہوا تو چشمہ علم و حکمت خوب سیراب ہوا بالاخر علم و ادب کے اس اعلیٰ و ارفع مقام پر فائز ہوا کہ بڑے بڑے مشائخ اس کی امامت میں نمازیں پڑھنے لگے اس سے علم حاصل کرنے لگے۔

و حکمت سے خوب سیراب ہوا بالاخر علم و ادب کے اس اعلی و ارفع مقام پر فائز ہوا کہ بڑے بڑے مشائخ اس کی امامت میں نمازیں پڑھنے لگے اس سے علم حاصل کرنے لگے۔ حالانکہ عمر میں یہ ان سے بہت چھوٹے تھے مسند خلافت پر فائز ہونے سے پہلے عبد الملک بن مروان نے بصرے کا دورہ کیا تو اس نے ابھرتے ہوئے ایک ایسے نوجوان کو دیکھا جس کی ابھی مونچھیں نہیں پھوٹی تھیں وہ بازار سے ایسی شان و شوکت سے گزر رہا ہے کہ اس کے پیچھے چار باریش بزرگ سبز جبہ و قبا پہنے ہوئے با ادب انداز میں دھیرے دھیرے چل رہے ہیں عبد الملک بن مروان نے یہ منظر دیکھ کر تعجب سے کہا : ان باریش بزرگوں کی عقل و دانش پر بڑا افسوس ہے کیا ان میں کوئی بھی ایسا قابل بزرگ نہیں جو ان کے آگے چلتا انہوں نے ایک چھوکرے کو اپنا قائد بنایا ہوا ہے ‘ پھر اس کی طرف دیکھتے ہوئے کہا ارے نوجوان تم کون ہو اور تیری عمر کتنی ہے؟

اس نے جواب دیا امیر کی عمر دراز ہو اور اقبال بلند ہو۔
 میرا نام ایاس بن معاویہ ہے اور میری عمر اسامہ بن زید جتنی ہے جسے رسول اللہ مینی یا تعلیمی نے اس لشکر کا امیر مقرر کیا تھا جس میں حضرت ابو بکر صدیق اللہ اور حضرت عمر فاروق ان بھی شامل تھے ‘ یہ جواب سن کر عبد الملک بن مردان پھڑک اٹھا اور کہا : اے نوجوان تم آگے رہو تجھ میں واقعی قیادت کی صلاحیت ہے۔ اللہ تیری جوانی اور تیرے علم میں برکت عطا کرے۔

ایک سال لوگ رمضان کا چاند دیکھنے گھروں سے باہر نکلے اور ان میں پیش پیش جلیل القدر صحابی حضرت انس بن مالک انصاری نہ تھے۔ اس وقت ان کی عمر تقریبا سو سال تھی لوگوں نے آسمان کی طرف غور سے دیکھا انہیں کہیں چاند نظر نہ آیا لیکن حضرت انس بن مالک انصاری الله آسمان کی طرف دیکھتے ہوئے پکار پکار کہہ رہے ہیں وہ دیکھو چاند نظر آگیا۔ اور اپنے ہاتھ سے اشارہ کر کے لوگوں کو چاند کی سمت بتا رہے ہیں۔ لوگوں نے بڑی کوشش کی پھر بھی کسی کو چاند نظر نہ آیا ۔ وہاں حضرت ایاس نے حضرت انس ان کی طرف دیکھا۔ ایک لمبا سفید بال بھووں سے اوپر اٹھ کر آنکھ کے سامنے آیا ہوا ہے حضرت ایاس نے بڑے ادب و احترام سے اجازت لی پیار سے اپنا ہاتھ بڑھایا بڑی محبت اور سلیقے سے آنکھ پہ ہاتھ پھیر کر بال کو بھووں کے ساتھ برابر کر دیا۔ اور پھر پوچھا : جناب والا اب فرمائیے کیا چاند نظر آرہا ہے۔ حضرت انس آسمان کی طرف دیکھ رہے ہیں۔ اور فرما رہے ہیں اب چاند مجھے دیکھائی نہیں دے رہا واقعی بالکل دیکھائی نہیں دے رہا۔ در اصل ضعف بصارت کی وجہ سے آنکھ کے سامنے آیا ہوا سفید بال انہیں باریک سا چاند معلوم ہو رہا تھا۔


 
حضرت ایاس بن معاویہ کی ذہانت اور فہم و فراست کے تذکرے چہار دانگ عالم میں پھیل گئے ہر طرف سے لوگ علمی اور دینی امور میں پیش آمده مشکلات حل کرانے کے لیے انکے پاس آنے لگے بعض لوگ معلومات حاصل کرنے کے لیے سوالات کرتے اور بعض مباحثے میں مد مقابل پر غالب آنے کے لیے علمی نکتے معلوم کرتے۔ ایک کسان ان کی خدمت میں حاضر ہوا اس نے پوچھا اے ابو وائل کیا شراب حرام ہے۔
 فرمایا ہاں یہ حرام ہے۔
 اس نے کہا: پھل اور پانی کو آگ یہ پکایا گیا ہے اصل میں یہ دونوں اجزاء حلال ہیں۔ اصل میں یہ دونوں اجزاء حلال ہیں پھر آگ پر پکانے سے حرام کیسے ہو گئے ‘ جبکہ اس میں کسی حرام چیز کی آمیزش نہیں۔
آپ نے کہا کسان بھائی کیا بات ختم کرلی یا اور بات کہنا چاہتے ہو۔ اس نے کہا بس میرا یہی سوال ہے۔ اب آپ ارشاد فرمائیے۔ ابو وائل ایاس بن معاویہ نے کہا اگر میں پانی کا ایک چلو تجھے دے ماروں کیا اس سے تجھے کوئی تکلیف ہوگی اس نے کہا نہیں۔
اگر منی کی ایک مٹھی تجھے دے ماروں تو کیا اس سے تکلیف ہوگی کہا نہیں ۔ اگر توڑی کی مٹھی تجھے ماروں کیا تکلیف محسوس کروگے کہا نہیں۔ اور اگر میں پانی، مٹی اور توڑی ملا کر ایک ڈھیلا بناؤں اور وہ دھوپ میں خشک ہو جائے پھر اسے اٹھا کر تجھے دے ماروں کیا تکلیف ہوگی۔ اس نے کہا کیوں نہیں ضرور ہو سکتا ہے اس کے ذریعے تم مجھے قتل کر دو۔ آپ نے فرمایا بس یہی مثال شراب کی ہے۔ جب اجزاء کو ملا کر اسے آگ کی آنچ دی جاتی ہے۔ اس میں نشہ پیدا ہو جاتا ہے جس کے وجہ سے اسے حرام قرار دیا گیا ہے۔


 

جب حضرت ایاس بن معاویہ کو قضاء کا منصب سونپا گیا۔ تو عدالتی فیصلوں میں ان کی جانب سے کئی ایک ایسے موقف کھل کر سامنے آئے جو ان کی ذہانت کی فراوانی تدبیر کی فروتنی اور حقائق سے پردہ ہٹانے کی کمال صلاحیت پر دلالت کرتے ہیں۔ ان میں سے یہ ایک واقعہ ملاحظہ ہو۔ ایک مرتبہ دو شخص ایک مقدمہ لے کر انکے پاس عدالت میں آئے ان میں سے ایک نے دعوی کیا میں نے اپنے ساتھی کو مال بطور امانت دیا تھا۔ جب میں نے مطالبہ کیا تو اس نے دینے سے انکار کر دیا ۔ ایاس بن معاویہ نے مدعی علیہ سے امانت کے متعلق پوچھا تو اس نے کہا میں نے مال لیا ہی نہیں یہ جھوٹ بولتا ہے اور مجھے بدنام کر رہا ہے اگر اس کے پاس کوئی دلیل ہے تو پیش کرے ورنہ میں قسم دینے کے لیے تیار ہوں میں بے گناہ ہوں یہ سرا سر مجھ پر الزام ہے۔ حضرت ایاس بن معاویہ نے خدا داد بصیرت سے بھانپ لیا یہ قسم کے ذریعے اپنے ساتھی کے مال کو ہڑپ کرنا چاہتا ہے قاضی ایاس نے مدعی سے پوچھا تو نے اسے کسی جگہ اپنا مال بطور امانت دیا تھا ؟
اس نے کہا یہاں سے کچھ فاصلے پر ایک بڑا درخت ہے ہم نے اس کے سایے میں بیٹھ کر پہلے کھانا کھایا اور پھر میں نے اپنا مال اس کے سپرد کیا۔ قاضی ایاس نے کہا تم ابھی وہاں جاؤ شاید آپ کا مال وہاں کہیں پڑا ہوا ہو اس جگہ کا جائزہ لے کر سیدھا میرے پاس آجانا اور مجھے صورت حال سے آگاہ کرنا یہ حکم یا کر وہ شخص اس جگہ کی طرف روانہ ہو گیا۔ قاضی ایاس نے مدعی علیہ سے کہا:

اپنے ساتھی کے واپس آنے تک میرے پاس بیٹھے رہو۔ وہ وہاں چپ سادھ کر بیٹھ گیا۔ قاضی ایاس دیگر مقدمات نپٹانے میں مصروف ہو گیا۔ لیکن مقدمات کی سماعت کرتے ہوئے دزدیدہ نگاہوں سے گاہے گاہے مدعی علیہ کی طرف بھی دیکھ لیتا اس طرح وہ اس کے چہرے کے تاثرات معلوم کرنا چاہتا تھا جب اس نے دیکھا کہ یہ شخص بالکل آرام وسکون سے بیٹھا ہوا ہے اس کے چہرے پر کوئی خوف و ہراس نہیں قاضی سماعت کے دوران یکدم اس شخص کی طرف متوجہ ہوا اور پوچھا آپ کا کیا خیال ہے کہ وہ اس جگہ پہنچ گیا ہو گا جہاں اس نے مال تیرے سپرد کیا تھا اس نے بے خیالی میں جواب دیا نہیں وہ جگہ یہاں سے کافی دور ہے۔ ابھی وہ راستے میں جا رہا ہو گا قاضی نے غضبناک ہو کر کہا : ارے کمبخت ‘ کمینے تو مال لینے کا انکار کرتا ہے۔ اور اس جگہ کا اعتراف کرتا ہے جہاں تو نے مال لیا تھا ۔ بخدا تو خائن ‘ جھوٹا اور بددیانت ہے ‘ وہ اچانک یہ حملہ دیکھ کر خوف سے کانپنے لگا اور اس نے اپنے جرم کا اعتراف کر لیا اور امانت واپس کر دی۔


 

اسی طرح ایک اور واقعہ بیان کیا جاتا ہے کہ دو شخص دو رومالوں کا مقدمہ لے کر عدالت میں پیش ہوئے ایک رومال سبز رنگ کا نیا اور قیمتی تھا اور دوسرا سرخ رنگ کا پھٹا ہوا اور بوسیدہ تھا۔ مدعی نے استغاثہ پیش کرتے ہوئے کہا : جناب والا میں حوض پر نمانے کے لیے گیا۔ اور اپنا سبز رومال کپڑوں کے ساتھ رکھ کر حوض میں اتر گیا تھوڑی دیر بعد یہ شخص اپنے کپڑے حوض کے کنارے میرے کپڑوں کے پاس ہی رکھ کر نمانے کے لیے حوض میں اتر آیا لیکن مجھ سے پہلے حوض سے نہا کر نکلا کپڑے پہنے اور میرا رومال سر پر لیا اور چلتا بنا۔ میں اس کے قدموں کے نشانات دیکھتا ہوا اس کی تلاش میں نکلا بالاخر اسے پکڑنے میں کامیاب ہو گیا۔ قاضی نے مدعی علیہ سے پوچھا تم کیا کہنا چاہتے ہو۔ اس نے کہا : جناب والا یہ رومال میرا ہے میرے قبضے میں ہے میں اس کا مالک ہوں ‘ یہ مجھ پہ جھوٹا الزام عائد کرتا ہے ‘ قاضی ایاس نے مدعی سے پوچھا تیرے پاس کوئی دلیل ہے کہ یہ رومال واقعی تیرا ہے۔ اس نے کہا دلیل میرے پاس کوئی نہیں ‘ میں آپکی عدالت میں انصاف کے لیے آیا ہوں یہ میرا قیمتی رومال مجھے دلا دیجئے اللہ تمہارا بھلا کرے گا قاضی نے اپنے دربان سے کہا : ایک کنگھی لاؤ۔ درمان کنگھی لے آیا قاضی نے دونوں کے سر پر کنگھی پھیری ایک کے سرے سرخ ریشے اور دوسرے کے سرسے سبز ریشے برآمد ہوئے۔ لہذا سرخ رومال اسے دے دیا جس کے سر سے سرخ ریشے نکلے تھے اور سبز رو مال اس کے سپرد کیا جس کے سر سے سبز ریشے برآمد ہوئے تھے۔ اس طرح عدل و انصاف کے مطابق حق والے کو اس کا حق مل گیا۔

اس کی ذہانت اور فہم و فراست کا ایک اور واقعہ مشہور ہے کوفہ میں ایک شخص لوگوں کے سامنے اپنی خیر خواہی ‘ وسعت ظرفی ‘ اخلاق اور تقوی کا پر چار کیا کرتا تھا۔ یہاں تک کہ لوگ اس کی تعریف کرنے لگے جب اس کا اعتماد پوری طرح دلوں میں بیٹھ گیا ‘ تو لوگ جب سفر پہ جاتے تو اپنا مال اس کے پاس بطور امانت رکھ جاتے۔ بعض لوگ مرتے وقت یہ وصیت کر جاتے کہ ہمارا مال اس کے سپرد کر دیا جائے اور یہی ہماری اولاد کا سرپرست و نگران ہو گا۔ اس کی شہرت سن کر ایک شخص نے اپنا بہت سا مال اس کے پاس بطور امانت رکھ دیا۔ چند دنوں کے بعد جب اسے ضرورت پڑی تو اس نے اپنے مال کی واپسی کا مطالبہ کیا ۔ لیکن اس نے دینے سے انکار کر دیا۔ اسے یہ صورت حال دیکھ کر بڑا صدمہ ہوا اور یہ مقدمہ قاضی کی عدالت میں پیش کر دیا۔ قاضی نے مقدمہ پیش کرنے والے سے پوچھا کیا مدعی علیہ کو یہ معلوم ہے کہ تم میرے پاس آئے ہو۔ اس نے کہا نہیں قاضی نے کہا آج جاؤ اور کل میرے پاس آنا اور ساتھ ہی مدعی علیہ کو بلانے کے لیے پیغام بھیجا۔ وہ قاضی کا پیغام سنتے ہی عدالت میں آیا قاضی نے اسے بڑے اعزاز و اکرام سے بٹھایا اور کہا: جناب میں نے آپ کی بڑی شہرت سنی آپ لوگوں کی خدمت کا اہم فریضہ سرانجام دے رہے ہیں ‘ میں نے آپ کو اس لیے بلایا کہ میرے پاس ایسے قیموں کا کثیر مقدار میں مال ہے جن کا کوئی وارث نہیں میں چاہتا ہوں یہ مال آپکے سپرد کر دوں جب وہ بڑے ہو جائیں تو آپ ان کے حوالے کر دینا کیا اتنی بڑی مقدار میں مال رکھنے کا آپ کے پاس انتظام ہے ‘ کس طرح اسے سنبھالیں گے۔
 کیا گھر میں ایسا مضبوط گودام ہو گا جس میں مال ضائع نہ ہو۔ کیا یہ مال آپ سنبھالنے کے لیے تیار ہیں- اس نے بڑے طمطراق سے کہا : کیوں نہیں جناب مجھے اللہ نے پیدا ہی عوام کی خدمت کے لیے کیا ہے بندہ عاجز اس خدمت کے لیے بخوشی تیار ہے۔
 قاضی نے کہا : بہت خوب مجھے آپ سے یہی توقع تھی آپ ایسا کریں کہ کل کے بعد میرے پاس آجانا اور ساتھ دو مزدور بھی لیتے آنا۔ اس نے کہا بہت اچھا یہ کہہ کر وہ اپنے گھر چلا گیا۔ دوسرے دن وعدہ کے مطابق مدعی قاضی ایاس کے پاس آیا۔ قاضی نے اسے کہا کہ جاؤ آج اس شخص سے جا کر اپنے مال کا مطالبہ کرو۔ اگر وہ انکار کرے تو اسے کہنا میں تیری شکایت قاضی کے پاس لے کے جا رہا ہوں اس نے ایسے ہی کیا جاکر اس سے اپنے مال کا مطالبہ کیا اس نے حسب سابق مال دینے سے انکار کر دیا۔ اس نے کہا اگر تم میرا مال نہیں دو گے تو میں تمہاری شکایت قاضی کے پاس کروں گا جب اس نے قاضی کا نام سنا تو فورا ٹھنڈا پڑ گیا اسے اپنے پاس بٹھایا اس کی منت کی مال واپس لوٹایا اور کچھ مزید دے کر اسے خوش کرنے کی کوشش کی تاکہ قاضی کو اس بات کا علم نہ ہو۔ وہ اپنا مال لے کر سیدھا قاضی کے پاس گیا اس کا شکریہ ادا کیا اور بتایا کہ اس نے مجھے میرا حق واپس دے دیا ہے۔ اللہ آپکو جزائے خیر عطا کرے ‘ جب وعدے کے مطابق تیسرے روز وہ شخص قاضی کے پاس مزدور لے کر حاضر ہوا۔ تو اسے دیکھتے ہی قاضی اس پر برس پڑا اور کہا: ارے کمبخت تو نے دنیا کمانے کے لیے دین کو جال بنا رکھا ہے۔ تجھے شرم آنی چاہیے۔ یہ جبہ و دستار اور یہ گھناؤنا کردار تف تیری عقل پر جاؤ میری آنکھوں سے دور ہو جاؤ۔ اور ابھی جا کر سب لوگوں کی امانتیں واپس کرو۔ ورنہ تجھے ایسی سزادوں گا جسے تیری آئندہ نسلیں بھی یاد رکھیں گی۔ وہ ہانپتا کانپتا ہوا واپس گیا اور سب کے مال فوری طور پر واپس کرنے لگا ان سے معافی مانگنے لگا تب جا کر لوگوں کو اس کی اصلیت کا علم ہوا۔


 

قاضی ایاس نے اپنی بے پناہ ذہانت ‘ قابل رشک قوت استدلال ‘ زود ضمی اور حاضر جوابی کے باوجود عدالت میں ایسے اشخاص سے بھی واسطہ پڑ جاتا جو اپنی بات دلائل سے منوالیا کرتے تھے۔ اور انہیں خاموش ہونے پر مجبور کر دیا کرتے تھے ‘ ایسا ہی ایک واقعہ انہوں نے خود بیان کیا فرماتے ہیں ایک شخص کے علاوہ آج تک کوئی بھی گفتگو میں مجھ پہ غالب نہ آسکا وہ اس طرح ہوا کہ میں بصرے کی عدالت میں مقدمات نپٹانے کے لیے بیٹھا ہوا تھا ایک شخص میرے پاس آیا۔ اور اس نے بڑے طمطراق سے کہا میں یہ گواہی دیتا ہوں کہ فلاں باغ فلاں شخص کا ہے۔ اس نے یہ بات بڑے ہی رعب و دبدبے سے کسی۔ میں نے اس کی گواہی کا امتحان لینے کے انداز میں پوچھا: جس باغ کے متعلق گواہی دے رہے ہیں اس میں کتنے درخت ہیں۔ اس نے سرجھکایا پھر سر اٹھا کر بولا۔ جناب والا گستاخی معاف آپ کتنے

عرصے سے اس کمرہ عدالت میں فیصلے سنانے کا فریضہ سر انجام دے رہے ہیں۔ فرمایا: کافی عرصے سے۔ اس نے پوچھا: کیا آپ بتا سکتے ہیں کہ اس کمرے کی چھت میں کتنی لکڑیاں استعمال ہوئی ہیں۔ میں پریشان ہوا اور کہا اس کا مجھے علم نہیں۔ اور ساتھ ہی میں نے شرمندہ ہو کر اسے کہا: بھئی آپکی گواہی کچی ہے۔ میں اسے تسلیم کرتا ہوں۔


 

جب حضرت ایاس بن معاویہ رحمہ اللہ چھتر برس کے ہوئے۔ تو انہوں نے خواب میں دیکھا وہ اور ان کے والد محترم دو گھوڑوں پر سوار برابر دوڑے جارہے ہیں۔ نہ کوئی ایک قدم آگے ہے اور نہ پیچھے انکے والد محترم چھتر برس کے ہو کر فوت ہوئے تھے۔ ایک رات حضرت ایاس اپنے بستر پر دراز ہوئے گھر والوں نے کہا: کیا تم جانتے ہو یہ رات کون سی ہے؟ انہوں کہا نہیں۔

فرمایا یہ وہ رات ہے جس میں ابا جان نے اپنی عمر تمام کی تھی یہ کہا اور سو گئے۔ جب گھر والوں نے صبح دیکھا تو یہ ابدی نیند سو چکے تھے۔ اناللہ و انا الیہ راجعون۔

اللہ قاضی ایاس بن معاویہ پر اپنی بے پایاں رحمتوں کی بارش نازل کرے وہ بلاشبہ ذہانت فطانت ‘ حق کوئی عدل گستری زود ضمی اور حاضر جوابی میں نابغہ عصر اور فرید الدھر تھے۔


قاضی ایاس بن معاویہ مزنی رحمہ اللہ کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے لیے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں۔

 

اخبار القضاہ (و کیع) ٣١٢-٣٧٤
حلیہ الاولیاء ٣ /١٢٣
شرح المقامات (بشریشی) ١١٣/١ – ١١٥
وفیات الاعیان ٢٤٧/١
البيان والتسين (حافظ) ٥٦/١
نمار القلوب ٩٢- ٩٤
العقد الفريد (ابن عبد ربہ) دیکھئے فہرست

 


 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر
Table of Contents